کالم    ( صفحہ نمبر 137 )

منو بھائی کو مرنے کا کوئی حق نہیں ۔۔اسد مفتی

وجیہہ شخصیت،درمیانہ قد، گٹھا ہوا بدن، سفیدی مائل گندمی رنگ، شگفتہ مسکراتا کتابی چہرہ ،زندگی سے بھرپور آنکھیں ، آنکھوں تک پھیلی مسکراہٹ ،کلین شیو، اونچی لمبی ناک، پرکشش بڑی بڑی آنکھیں ، ان پر خوبصورت فریم کا چشمہ چہرہ←  مزید پڑھیے

صحافت اور عطائیت۔۔نجم ولی خان

ریاست اور سیاست تو دبڑ دوس ہوتی رہی ہیں مگر اب الیکٹرانک میڈیا آنے کے بعد صحافت بھی دبڑ دُوس ہو گئی ہے۔ یہ لفظ دبڑدوس میرے لئے بھی نیا ہے اور ایک ایسے شخص نے اسے متعارف کروایا ہے←  مزید پڑھیے

طوطے کا وطن اور بندروں کا دادا۔۔محمد اظہار الحق

طوطے کا وطن اور بندروں کا دادا باغوں اور باغیچوں کے اس شہر میں بحرالکاہل کی طرف خنک ہوا کے جھونکے چلے آئے جارہے ہیں ۔ درجہ حرارت جوکل اس وقت تیس سے اوپر تھا ‘اٹھارہ ہوچلا ہے۔۔سفر کی شام←  مزید پڑھیے

کابل کے انسانوں کا لہو بھی سرخ ہی ہے۔۔ڈاکٹر ندیم عباس بلوچ

ایک ایمبولینس بڑی تیزی سے کابل کے انتہائی محفوظ سمجھے جانے والے علاقے کی طرف بڑھ رہی ہے۔ چیک پوسٹ پر اسے اہلکار روکتے ہیں اور ایمبولینس سمجھ کر زیادہ تحقیق مناسب نہیں سمجھتے اور آگے جانے کی اجازت دے←  مزید پڑھیے

تارکین وطن کھائی کے کنارے پر۔۔محمد اظہار الحق

تارکین وطن ایک عجیب و غریب صورت حال سے دو چار ہیں ۔ایک طرف  پہاڑ کی سر بفلک چوٹی ہے ۔دوسری طرف کھائی ہے۔مہیب گہری کھائی۔ واپس آئیں تو عزت نفس  سلامت ہے نہ مال اور جان کی سلامتی ۔پورا←  مزید پڑھیے

مسکراہٹوں اور آنسوؤں کو بھی تولا جائے گا۔۔محمد اظہار الحق

جنرل کمال اکبر صاحب تشریف لائے،ضروری بات جو کرنا تھی ،پھر کہنے لگے”بیٹھوں گا نہیں “ایک مہم درپیش ہے”۔ جنرل صاحب تھری سٹار جرنیل ہیں ۔مسلح افواج کے “سرجن جنرل”رہے۔مگر مزاج میں خالص درویش!ان کی ساری زندگی کا ماحصل دو←  مزید پڑھیے

ووٹ کا تقدس یوں بھی بحال کریں۔۔۔طاہر یاسین طاہر

ہر ایک کا عدل، انصاف، خبر، سچائی اور جھوٹ کا اپنا اپنا معیار ہے۔ یہ معیار ذاتی مفادات کی چادر اوڑھے ہوئے ہے۔ اسی چادر کی اوٹ سے معیارات جانچے جاتے ہیں۔ اگر کوئی جے آئی ٹی بنتی ہے اور←  مزید پڑھیے

ترکی کی فوجیں شام میں ۔۔ثاقب اکبر

اہل شام کے امتحانات ابھی ختم نہیں ہوئے، ایک نیا محاذ گرم ہو گیا ہے۔ ترکی نے شام کے شہر عفرین میں اپنی فوجیں داخل کر دی ہیں۔ جب کہ دو روزقبل 20جنوری2018 کو ترک فوج نے کہا تھا کہ←  مزید پڑھیے

تارکین وطن شیر کی سواری کررہے ہیں۔۔محمد اظہار الحق

اردو کا ایک معجزہ یہ بھی ہے کہ ساری دنیا میں پھیل گئی ہے۔لاس اینجلز ہو یا ناروے ‘جاپان ہو یا بارسلونا’ اردو بولنے والے سمجھنے والے لکھنے والے ہر جگہ موجود ہیں ۔ اردو کی بستیاں کرہ ارض کے←  مزید پڑھیے

ہر بارہ ہزار عربوں کے لیے صرف ایک کتاب۔۔سبحان اللہ/اسد مفتی

القائدہ کے سعودی رکن ابراہیم الربائش نے انٹر نیٹ پر پیش ایک آڈیو پیغام میں سعودی حکمران شاہ سلمان پر الزام لگایا ہے کہ انہوں نے سعودی عرب میں مخلوط تعلیم کی پہلی یونیورسٹی قائم کرکے اسلام کے اصولوں کی←  مزید پڑھیے

وہم کی چار ٹانگیں اور رنگ سفید۔۔محمد اظہارالحق

میں آپ کو بیو قوف سمجھتا ہوں ۔ نہ صرف بیوقوف بلکہ گاؤدی! میرے دائیں ہاتھ میں گلاس ہے۔گلاس میں پانی ہے،میں پانی پیتا ہوں اور آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ میرے ہاتھ میں گلاس ہے نہ پانی! میں←  مزید پڑھیے

غریب کے بچوں کی باہمی سر پھٹول۔۔ رؤف کلاسرہ

پنجاب یونیورسٹی میں تخت کے پرانے دعویدار جمیعت اور نئے نئے دعویدار بلوچ پشتون سٹوڈنٹ فیڈریشن کے درمیان سر پھٹول ہوئی ہے اور اب جامعہ پولیس کے حوالے ہے۔ کچھ احباب اس پہ پریشان ہیں تو ان سے عرض ہے←  مزید پڑھیے

پارسائی کے پیکر۔۔محمد اظہار الحق

بے لوث،بے غرض،نیکوکاروں کا یہ گروہ ملک ملک پھرا،دیس دیس گھوما،ہر براعظم کی خاک چھانی،تمام بڑے بڑے ملکوں میں گیا مگر گوہر مقصود ہاتھ نہ آیا۔ پھر ایک دن تھک ہار کر اس گروہ کے ارکان بیٹھ گئے۔مایوس،نامراد۔ان کے سربراہ←  مزید پڑھیے

زینب کا قاتل یہ نظام بھی ہے۔۔۔ طاہر یاسین طاہر

ہم وحشتوں کے سفیر ہیں،ہیجان پسند معاشرے کے افراد۔آئے روز کوئی نہ کوئی ہیجان خیز معاملہ ہمارے نفسیاتی ذوق کی تسکین کرتا ،نئے واقعے کی راہ ہموار کر رہا ہوتا ہے ،ہم مگر روایتی مذمتی بیانات،اور سوشل میڈیا ٹرینڈز کو←  مزید پڑھیے

کتنے شیریں ہیں تیرے لب کہ رقیب۔۔محمد اظہار الحق

میلبورن کے ایک پر رونق بازار برگنڈی سٹریٹ کی ایک دکان سے جنوبی ایشیا کا سودا سلف مل جاتا ہے۔یوں تو آسٹریلیا کے تمام بڑے شہروں میں پاکستانی،بھارتی اور بنگالی بساچی دکانیں کھولے بیٹھے ہیں مگر کوشش سب خریداروں کی←  مزید پڑھیے

کیا پنجاب صرف ایک شہر کا نام ہے؟۔۔محمد اظہار الحق

ضلع اٹک میں داخل ہونے کے چھ بڑے راستے ہیں۔ پہلا ٹیکسلااور حسن آباد کے ذریعے۔دوسرا راولپنڈی سے ترنول کے ذریعے۔تیسرا کے پی سے آتے ہوئے دریائے سندھ پار کرکے۔چوتھا کوہاٹ سے آتے ہوئے خوشحال گڑھ کے ذریعے(یاد رہے کہ←  مزید پڑھیے

ایگزیکٹ کے سیاں بھئے کوتوال،بول کو ڈر کا ہے کا۔۔سید عارف مصطفٰی

 ایک بار پھر ایک اہم تحقیقی رپورٹ کی بدولت بدیسی فضاؤں میں پاکستان کا نام گونجا ہے ۔ لیکن یہ حوالہ کسی انسانی خدمت کا نہیں اور نہ ہی کوئی فخر کا مقام ہے بلکہ اب کے بھی یہ مشہوری←  مزید پڑھیے

روح کی غربت۔۔لال خان

سو سال قبل 1917ء میں روس کی زار شاہی تقریباً پانچ سو سال پرانی ہوچکی تھی۔ آخری زار نکولس دوم مسند اقتدار پر براجمان تھا۔ لیکن اصل طاقت اس کی جرمن نژاد ملکہ (زارینہ) الیگزینڈرا فیوڈوروونا کے پاس تھی۔ زار←  مزید پڑھیے

کچھ نیکیاں ایسی بھی ہونی چاہییں جن کا کوئی گواہ نہ ہو۔۔اسد مفتی

بات کرنا بھی ایک فن ہے اور اس میدان میں ہر آدمی فنکار نہیں ہوتا۔مجھے خود بات کرنے کی مشق نہیں ہے جو لوگ نا خوش یا نا راض ہونا چاہتے ہیں وہ ہو ہی جاتے ہیں آپ سب لوگوں←  مزید پڑھیے

لڑ رہا ہوں رسا قبیلہ وار۔۔محمد اظہار الحق

یہ تاشقند تھا اور میں اس کے چغتائی محلہ میں گھوم رہا تھا ریستو رانوں سے شش لیک (تکّوں) کی مہکار آ رہی تھی۔صدیوں سے یہ محلے،یہ بازار، یہ میوہ جات کی منڈیاں یوں ہی بیچنے والوں اور خریدنے والوں←  مزید پڑھیے