ذیشان محمود کی تحاریر
ذیشان محمود
طالب علم اور ایک عام قاری

اپنی زبان سنبھالیے۔۔ذیشان محمود

ہم جب پانچویں میں تھے تو سکول کی دوسری یا تیسری جماعت میں ایک چھوٹا سا لڑکا اسد نام کا تھا۔ اس پر پنجابی کی یہ مثل ثابت آتی ہے جس کا ترجمہ یوں ہے ج”تنا زمین کے اوپر ہے←  مزید پڑھیے

بنگالی بابا اور پاکستان۔۔ذیشان محمود

شاہ فیصل کراچی میں ہمارے ایک مالک مکان بنگالی تھے۔  بنگالی بابا عرف ظہور بابا نام تھا۔ عام بنگالیوں کی طرح نہ تھے۔ عمر رسیدہ ضرور تھے ، بوڑھے ، نحیف نہ تھے بلکہ بھاری بھر کم وجود کے مالک←  مزید پڑھیے

سو لفظ: انصاف/ذیشان محمود

آپ باہر عدالت کے خلاف کیا کہتے پھرتے ہیں؟ جناب صرف تاریخ پر  تاریخ ملتی ہے۔ اب ایک لفظ بھی کہا تو توہین عدالت شمار ہوگا۔ لیکن جناب انصاف۔۔۔ تو کیا آپ سمجھتے ہیں کہ ہم انصاف نہیں کرتے؟ جناب←  مزید پڑھیے

سو لفظ: منصف/تحریر_ذیشان محمود

بابا! منصف کا مطلب کیا ہے؟ بیٹا! انصاف کرنے والا اور فیصلہ کرنے والا۔ انصاف لرنے والوں کو لوگ پسند کیوں نہیں کرتے! جب منصف یعنی عادل غلط فیصلے کرے یا جانبداری دکھائے  تو پھر لوگ پسند نہیں کرتے۔ یہ←  مزید پڑھیے

سو لفظ: کھانا/ذیشان محمود

لالہ! تیار رہ! کیوں چھوٹے؟ ابّا جب صاب کے ساتھ کسی پارٹی میں جاتا ہے تو واپسی پر ہمارے لئے ضرور لاتا ہے۔ یاد ہے پچھلے ہفتے افطاری پر کتنا آیا تھا؟ ہاں لالہ! پر کُکڑی کی ٹانگ تو کھا←  مزید پڑھیے

سو لفظ: عداوتی عید مبارک۔۔ذیشان محمود

دور جدید کے ناجائز تقاضوں کی خاطر، دل میں بغض، کینہ اور منافرت کے ساتھ، شکست خوردہ دلوں میں چور دبائے، ٹانگ کھینچنے کے پلان، اور دوستی کے سفاک بھرم لئے، غبار آلود دلوں کی عمیق در عمیق، اتھاہ گہرائیوں←  مزید پڑھیے

سو لفظ: یکم مئی یوم مزدور۔۔ذیشان محمود

تین ہزار گھر کا کرایہ، پانچ ہزار کا راشن، دو ہزار بچوں کی فیس، دو ہزار ادھار واپس، دو ہزار دودھ کے، پندرہ سو بجلی اور پانچ سو گیس کا بل کل سولہ ہزار! یہ تو ہزار اوپر چلا گیا۔←  مزید پڑھیے

قرطبہ کا قاضی پارٹ ٹو (اسلام آباد)۔۔ذیشان محمود

قرطبہ کے اس چاکلیٹی ہیرو کی سزا کو عملی جامہ پہنانے   سے ہر یک شخص انکار کر دیتا ہے۔ بالآخر قاضی یعنی مجرم کا باپ خود اپنے ہاتھوں سے، اپنی دی گئی سزا کو، اپنا فرض سمجھ کر انجام دیتا ہے اور انصاف کا بول بالا کرنے کے لئے پورے شہر کو عدل کا درس پڑھا جاتا ہے←  مزید پڑھیے

عامر لیاقت اور خواجہ سراؤں کی اَن بَن۔۔ذیشان محمود

عامر لیاقت جو عالم دین کے ٹائٹل کے ساتھ ساتھ کئی قسم کے تمغے سجائے ہوئے ہیں، نے اپنے ایک ٹی وی پروگرام میں پاکستانی قوم کو خواجہ سراؤں سے بات کرتے ہوئے تمیز اور دائرہ اخلاقیات میں رہنے کا سبق دیا←  مزید پڑھیے

بچے کی دعا بزبانِ اقبال۔۔ذیشان ممود

بچے کی دعا اسمبلی میں دہرانا اور 10 سال تک دہراتے رہنا اس وقت تو شاید  سکول کے لئے اور طلباء کے روشن مستقبل کی امید جگانے کے لئے ضروری تھی۔ کہنے کو تو یہ ایک مختصر سی نظم ہی ہے لیکن اس نظم نے کئی طور سے مستقبل میں ترقی کی آشا اور امید جگائی۔←  مزید پڑھیے

مزاح کہتے تھے جسے۔۔ذیشان محمود

پنجاب آکر معلوم ہوا  کہ یہاں مِزاح کو جگت بازی کہتے ہیں لیکن جیسے مزاح اور مذاق میں فرق ہے اسی طرح مزاح اور جگت بازی میں بھی زمین و آسمان کا فرق ہے۔ مذاق تو تفننِ طبع کے لئے←  مزید پڑھیے

“نارمل ” کا کیا مطلب ہے؟۔۔ذیشان محمود

عنوان پڑھ کر آپ فوراً بولیں گے کہ اس کا مطلب ہے “عام یا سادہ”۔ لیکن ذرا پھر سوچیے شاید کوئی اور معنی بھی نکل آئے۔ نارمل کا لفظ ایک شادی شدہ عورت کے لئے کسی معجزے سے کم نہیں۔←  مزید پڑھیے

ربوہ یا چناب نگر۔۔ذیشان محمود

پاکستان کے وسط میں دریائے چناب کے کنارے، پہاڑوں میں اور سبز و شاداب درختوں سے گھرا چناب نگر ایک ایسا شہر جس کے قیام پر آج 20 ستمبر 2021ء کو 72 سال گزر گئے۔ یہ شہر ربوہ تو 72 ←  مزید پڑھیے

وضاحت اپنی ذمہ داری پر۔۔ذیشان محمود

ہمارے عربی کے استاد محترم لفظ مَجَال کے بنیادی معنی بتاتے ہوئے یہ مثال دیتے تھے کہ اگر گھوڑے کو ایک سر سبز میدان میں ایک کِلِّی سے باندھا جائے تو کچھ دن بعد گھوڑا اس کلی کے اردگرد  کی←  مزید پڑھیے

روٹی کی خاموش صدا۔۔ذیشان محمود

اٹھارہ بیس سال قبل کی بات ہے، کراچی میں ہمارے گھر سے تین چار گلیوں کے فاصلے  پر جب فاطمہ جناح ڈینٹل کالج کورنگی کریک کی بلڈنگ بن رہی تھی تو اس وقت عمارتی سامان کی حفاظت کے لئے ایک←  مزید پڑھیے

کابل، امریکہ اور گیم آف تھرونز۔۔ذیشان محمود

کارل مارکس کا مشہور قول ہے: ‘تاریخ اپنے آپ کو دہراتی ہے ، اول المیہ کے طور پر ، دوسرا طنز کے طور پر۔’ کابل دنیا کا وہ معروف شہر جو زبان زد عام ہے۔ لیکن ٹھہریے یہ دبئی، پیرس،←  مزید پڑھیے

جشن آزادی مبارک۔۔ذیشان محمود

ہماری گلی میں دو جڑواں رہتے تھے۔ دونوں ہم شکل  تھے لیکن بڑے بھائی کی نشانی   دبلا اور کان کٹا ہونا تھی۔ بڑے بھائی کا دعویٰ تھا کہ وہ 5 منٹ پہلے پیدا ہوا اس لئے بڑا ہے جبکہ 5←  مزید پڑھیے

سو لفظ: یکم مئی “یوم مزدور”۔۔ذیشان محمود

“ہمیں چاہیے کم از کم آج کے دن مزدوروں کو بخش دیں ،لیکن ہم لوگوں میں احساس نام کی کوئی شے نہیں۔ آج تو لوگ اپنے گھر کے کام خود اپنے ہاتھ سے کام کریں۔” وزیر صاحب یکم مئی کی←  مزید پڑھیے

کراچی، محرم ، سبیل اور حلیم۔۔ذیشان محمود

بچپن سے ہم نے محرم کو ایک غیر محفوظ مہینہ کی طرح سنا اور دیکھا۔محرم شروع ہوتے ہی گھر سے  سکول اور سکول سے سیدھے گھر واپس آنے کی سخت ہدایت ہوتی۔ رستے میں محلے کی واحد پارک میں موجود←  مزید پڑھیے

سو لفظ: دودھ کا عالمی دن۔۔۔ذیشان محمود

اس نےتسلی سے دودھ میں پانی ملایا۔ شہر جاکر دودھ بیچا۔ گھر آکراسے شدید بھوک لگی لیکن کچھ سر درد بھی تھا۔ بیوی سے کہا پہلے اچھی سی دودھ پتی بنا دو۔کیونکہ اسے پانی والی چائے   پسند نہیں  تھی۔←  مزید پڑھیے