فاروق بلوچ کی تحاریر
فاروق بلوچ
فاروق بلوچ
مارکسی کیمونسٹ، سوشلسٹ انقلاب کا داعی اور سیاسی کارکن. پیشہ کے اعتبار سے کاشتکار.

یہ کمپنی نہیں چلے گی۔۔ کامریڈ فاروق بلوچ

رومی سلطنت کا زوال صدیوں کے عرصہ میں ہوا اور اس کے ساتھ انتہائی خوفناک معاشی، معاشرتی، اخلاقی اور فلسفیانہ انحطاط بھی ہوا۔ زوال کا وہ طویل عرصہ ایک سیدھی لکیر میں آگے نہیں بڑھا تھا بلکہ بار بار بحالی←  مزید پڑھیے

جانوروں کے جنسی استحصال کی جدلیات۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

یقیناً قارئین کی اکثریت خواہش کرے گی کہ کاش یہ تحریر نہ پڑھی ہوتی کیونکہ اِس موضوع سے متعلق حقائق خاصے تلخ ہیں۔ جبکہ معلومات کا افشاء ہونا بھی اہم تاکہ اِن قبیح امور پہ حَد جاری ہو سکے۔ امریکہ←  مزید پڑھیے

حالیہ امریکی منظر نامہ ۔۔۔ کامریڈ فاروق بلوچ

نوآبادیاتی دور کے امریکہ میں نسل پرستی کی باقاعدہ ایک تاریخ موجود ہے جس میں گورے امریکیوں کو قانونی اور معاشرتی طور پر دیگر اقوام کی نسبت بہتر مراعات اور حقوق حاصل ہیں. یورپی نسل خاص طور پر امیر سفید←  مزید پڑھیے

ٹرولنگ کی جدلیات۔۔ کامریڈ فاروق بلوچ

ٹرولنگ ابتداء میں دوسروں کو محض شہہ دینے، دہکانے اور غصہ دلانے والی ہی ایک شریر بچگانہ حرکت سمجھی جاتی تھی لیکن نیوز اور سوشل میڈیا کے ذریعہ جدید استعمال کے ساتھ اس کی نوعیت، استعمال اور اثرات میں تبدیلی←  مزید پڑھیے

اک وبا چل پڑی ہے۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

ایسا نہیں ہے کہ دنیا میں وبا،بیماری ایسے ہی اچانک کہیں سے آتی ہے یا نازل ہوتی ہے یا پیدا ہو جاتی ہے۔ کائنات میں ہونے والے ہر عمل،امر کے پیچھے کوئی نہ کوئی وجہ،جواز،پسِ جواز ضرور ہوتا ہے۔ ہر←  مزید پڑھیے

گھٹیا افسانہ نمبر 31۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

“بابا تمہاری ہارڈویئر کی دوکان ہے اس میں ہمارا تو کوئی قصور نہیں ہے۔ ہر کوئی کو اُن کا بابا پارکاں میں لے جاتا ہے، اک ہمارا بابا ہے مجال ہے جو کبھی پارکاں میں لے جائے۔” ایسے کئی فقرے←  مزید پڑھیے

اُردو کے سو پسندیدہ شعر۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ/4،آخری قسط

پاکستان کے مشہور ماہر تعلیم اختر شمار کا شعر دیکھیے کہ جس نے خاموشی کے پس جواز تلاشنے میں مدد دی کہ: میں تو اس واسطے چپ ہوں کہ تماشا نہ بنے تو سمجھتا ہے مجھے تجھ سے گلا کچھ←  مزید پڑھیے

گھٹیا افسانہ نمبر 30۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

“لگتا ہے ایک سو اٹھائیس جی بی بھی اب کم پڑ جائے گا، اب کوئی دو سو چھپن جی بی والا فون ڈھونڈنا پڑے گا”، سارا دن خود اپنے آپ سے باتیں کرتے گزر رہا ہے۔ دماغ اپنے آپ تک←  مزید پڑھیے

اُردو کے سو پسندیدہ شعر۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ/قسط3

اُردو کے سو پسندیدہ شعر۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ/قسط2 مخدوم محی الدین خالصتا مزدور طبقہ کے شاعر اور نمائندہ تھے۔ عملی سیاست میں آکر بھی اہل اقتدار سے لے کر تانگے والے تک، ہر کسی سے تعلق برقرار رہا۔ انہوں نے حیدرآباد←  مزید پڑھیے

جب راج کرے گی خلق خدا۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

ہم اپنے نظامِ شمسی میں دور دور تک پہنچ رہے ہیں، ہم نے خود کار کاریں تیار کر لی ہیں، اور ساتھ ہی ابھی تک ہم اپنے روزمرہ کے مسائل حل کرنے میں بے اختیار ہیں۔ سائنس اور ٹیکنالوجی کی←  مزید پڑھیے

اُردو کے سو پسندیدہ شعر۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ/قسط2

بھارتی سرکار نے 2013ء میں پانچ سو روپے کا ٹکٹ جاری کیا جس پہ شکیل بدایونی کی تصویر کندہ کی گئی تھی۔ نوشاد، روی، ہیمنت کمار، ایس ڈی برمن اور سی رام چندر جیسے ممتاز موسیقاروں کی دُھنوں پر سوا←  مزید پڑھیے

اُردو کے سو پسندیدہ شعر۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ/قسط1

اس وقت شاید ہم میٹرک میں تھے یا کالج آ چکے تھے۔ دوستوں نے سو سو پسندیدہ شعر رجسٹر میں لکھنے کا پلان بنایا۔ ہم سب نے اپنے الگ الگ رجسٹر لیکر یہ دھندہ سر لے لیا۔ ابھی عیدالاضحیٰ سے←  مزید پڑھیے

اسلام فوبیا اور امریکہ فوبیا۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

جیسے جیسے ہم ایک سے بڑھ کے ایک سماجی، سیاسی اور اقتصادی بحرانوں کا سامنا کر رہے ہیں، دنیا میں اسلام فوبیا بھی شدت اختیار کرتا جا رہا ہے۔ جواب میں مسلم دنیا کے اندر امریکہ مخالف مہم میں بھی←  مزید پڑھیے

گھٹیا افسانہ نمبر29۔۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

ریاض کچھ بھی کرو یہ ایف آئی آر درج نہیں ہونی چاہیے”، میرا پیٹ ٹینشن کی وجہ سے درد کر رہا ہے۔ مروڑ اٹھ رہے ہیں۔ “او بھئی ذرا صبر کر مجھے دماغ لڑانے دے، پکا بندہ ڈھونڈنے دے” “یار←  مزید پڑھیے

ہتھوڑا اور درانتی۔۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

ہم عموماً ایک نشان دیکھتے ہیں جس کے اندر ایک ہتھوڑا اور اُس کے اردگرد درانتی گھومتی ہوئی نظر آتی ہے. ہتھوڑا اور درانتی ایک علامت ہیں، جو پرولتاریہ کی یکجہتی کی نمائندگی کرتا ہے. یہ کسانوں اور مزدور طبقے←  مزید پڑھیے

ایمیزون:مختصر تجزیہ۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

پچپن لاکھ مربع کلومیٹر پہ مشتمل عظیم ایمیزون بارش کا جنگل شمال مغربی برازیل کے زیادہ تر حصے پر پھیلا ہوا ہے۔مزید حصے کولمبیا ، پیرو اور دیگر جنوبی امریکہ کے ممالک تک پھیلا ہوئے ہیں۔ دنیا کا سب سے←  مزید پڑھیے

دامن سرمایہ چاک۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

جاگیردارانہ یورپ میں صنعتی سرمایہ داری کا آغاز تجارتی سرمایہ داری (مرکنٹائل کیپٹلزم) سے ہوا تھا۔ تیرہویں صدی کے اٹلی میں سرمایہ دارانہ طرزِ پیداوار کی کچھ شہادتیں ضرور ملتی ہیں  لیکن یہ کوئی غالب نظام نہ تھا۔ سترہویں صدی←  مزید پڑھیے

دولت اور جرم کا رشتہ۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

ایک بار فورڈ موٹرز کے مالک مشہور سرمایہ دار ہنری فورڈ نے کہا “میں اپنی زندگی میں کسی بھی وقت احتساب کیلئے تیار ہوں سوائے اِس کے کہ میں نے اپنی پہلا ایک ارب کیسے بنایا”۔ مودویو آرٹگا یورپ کا←  مزید پڑھیے

گھٹیا افسانہ نمبر 28۔۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

میں صدارت کی کرسی پہ براجمان ہو چکا ہوں۔ پرنسپل کی سیٹ سنبھالنے کے بعد یہ پہلا موقع ہے کہ میں کسی تقریب کی صدارت کر ریا ہوں۔ تمکنت میرے چہرے سے جھلکے یا نہ جھلکے مگر اُس کی پیدائش←  مزید پڑھیے

گھٹیا افسانہ نمبر 27۔۔۔۔۔۔۔کامریڈ فاروق بلوچ

عبداللہ مزاری کی عمر ساٹھ کے پیٹے میں ہو گی، یہ دھیما دھیما بولنے والا بلوچ میرے پاس دوسری مرتبہ آیا ہے۔ رات کو زور زور سے چیختا ہے، بلبلاتا ہے، دھاڑیں مارتا ہے، ایک بار چارپائی سے اٹھ کر←  مزید پڑھیے