نواز شریف، - ٹیگ

خیال سے خطاب۔۔محمد اسد شاہ

آپ خود بھی جانتے ہوں گے کہ آپ کی طبیعت میں خودپرستی بدرجۂ اتم موجود ہے ۔ جب سے آپ نے ہوش سنبھالا ، آپ نے اقتدار کے خواب دیکھنا شروع کیے ۔ ہر اس راستے کو اختیار کیا جو←  مزید پڑھیے

سیاسی منظر نامہ۔۔مہرساجدشاد

دعا کریں حکومت کے خلاف کوئی سازش کامیاب نہ ہو اور یہ اپنی مدت پوری کرے۔ لیکن اس پر ایک ردعمل یہ آئے گا کہ کچھ تو سوچیں مہنگائی اور کاروباری ابتری نے تباہ کر دیا ہے ،یہ حکومت چلتی←  مزید پڑھیے

جنرل مشرف ۔ بین الاقوامی اور مقامی اسٹیبلشمنٹ کے لئے صرف چلا ہوا کارتوس ۔۔غیور شاہ ترمذی

گئے زمانوں میں رواج تھا کہ عنان حکومت بادشاہوں کے ہاتھ ہوا کرتی تھی اور وہ تمام سیاہ و سفید کے مالک ہوا کرتے تھے۔ اُن کی زبان سے نکلا ہر لفظ قانون ہوا کرتا تھا۔ مگر پھر وقت نے←  مزید پڑھیے

کٹ پیس اور سانحۂ پی آئی سی کے تناظر میں حکومت اور میڈیا کا کردار۔۔ذیشان نور خلجی

وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے کہا ہے “شو بازیوں کا دور گزر چکا ہے۔” اور الیکشن کے بعد تحریک انصاف کی منتخب حکومت نے اقتدار سنبھال لیا ہے۔ اس لئے عمران خان اینڈ کمپنی کو چاہیے۔ مخالفین پہ کرپشن کے←  مزید پڑھیے

پنجاب میں اقتدار کا نیا کھیل۔۔اسلم اعوان

پنجاب میں بڑے پیمانے پہ انتظامی تبدیلیاں بادی النظری میں اتحادی جماعتوں کی لیڈرشپ کے مابین اختلافات کا شاخسانہ دکھائی دیتی ہیں کیونکہ حالیہ سیاسی بحران کے دوران نوازشریف کی علاج کی غرض سے بیرون ملک روانگی کا معاملہ ہو←  مزید پڑھیے

کشمکش سسٹم میں توازن لائے گی؟۔۔اسلم اعوان

سابق وزیراعظم نوازشریف کی علاج کی غرض سے بیرون ملک روانگی اور مریم نواز کی سیاسی گوشہ نشینی کے بعد ہمارے سیاسی ماحول پہ چھانے والا اک گوناں سکوت قومی سیاست میں وسیع تر مفاہمت کے امکان کی خبر دے←  مزید پڑھیے

اِک بھرم جو ٹوٹ گیا۔۔۔فراست محمود

عمران خان سے مجھے ہزاروں نہیں بلکہ لاکھوں اختلاف ہیں مگر ایک نقطہ جو کبھی کبھی خان کی طرفداری پہ مجبور کرتا ہے، وہ یہ  ہے کہ خان صاحب کی نیت۔۔۔۔مگر صرف اچھی نیت سے جیت تو نہیں مل سکتی←  مزید پڑھیے

میاں نواز شریف اور آصف زارداری کے ساتھ کھیلا جانے والا خطرناک اور جان لیوا حکومتی کھیل۔۔ غیور شاہ ترمذی

تحریک انصاف حکومت میں وزیر اعظم عمران خان اور اُن کے وزراء اور مشیروں و معاونین خصوصی میں مراد سعید، فواد چودھری، شیریں مزاری،علی امین گنڈاپور، فیصل واوڈا، فردوس عاشق، شہزاد اکبر، فروغ نسیم اور شہریار آفریدی سمیت کچھ ایک←  مزید پڑھیے

شہباز شریف ’’برادر یوسف‘‘ ہرگز نہیں ۔۔نصرت جاوید

مولانا فضل الرحمن کے ’’آزادی مارچ‘‘ سے آج گریز کا ارادہ ہے۔ٹھوس معلومات تک رسائی کے بغیر جو دکھائی دے رہا ہے اسے ذہن میں رکھتے ہوئے اپنے تئیں اس موضوع پر کافی ’’تجزیہ‘‘ بگھارچکا ہوں۔ریگولر اور سوشل میڈیاکی پھیلائی←  مزید پڑھیے

سیاسی مقابلے۔۔۔ابرار صغیر

سیاست بڑا الگ اور منفرد کھیل ہے یہ ایک ایسا کھیل ہے جس میں کرکٹ ٹیم کی طرح کئی ٹیمیں ہوتی ہیں اور کئی کھلاڑی ہوتے ہیں  ،جیتاکوئی ایک ہےسیاست میں جیتنے والے کو ہارنے والے سے مبارک باد نہیں←  مزید پڑھیے

میاں نواز شریف کو جمہوریت کی گڑتی کیوں نہیں ہے ؟۔۔۔احسن بودلہ

چند دن پہلے ارشد سلہری صاحب کا ایک مضمون “نواز شریف کو جمہوریت کی گُڑتی نہیں ہے” نظر سے گزرا ۔ ارشد صاحب قابلِ عزت اور سینئر کالم  نگار ہیں۔  اپنے مضمون میں انھوں نے گڑتی کا اسلامی اور کلچرل←  مزید پڑھیے

غریب قیدیوں کے غم میں مرے جا رہے ہمارے وزیر اور لیڈران۔۔۔ غیور شاہ ترمذی

نیتوں کا حال تو صرف قدرت جانتی ہے مگر جب کوئی صرف اپنے آپ کو سچا اور دوسروں کو جھوٹا قرار دینے لگےتو اسے نرم سے نرم الفاظ میں خود پسند کہا جا سکتا ہے۔ خود پسند انسان میں تکبر←  مزید پڑھیے

موجودہ احتجاجی سیاست(پسِ منظر اور اس کا مستقبل)۔۔۔۔خالد محمود عباسی/قسط1

قوم کو ایک اور دھرنے کا سامنا ہے۔ایک سوال ہر زبان پر ہے۔۔ دھرنے کے پیچھے کون ہے؟اصل ہاتھ کس کا ہے؟ یہ سوال باشعور لوگ اٹھاتے ہیں یا خبطی،اس بحث میں پڑے بغیر خالص سیاسی حرکیات کی روشنی میں←  مزید پڑھیے

جنگ بھڑک اُٹھی ہے۔۔۔اسلم اعوان

مولانا فضل الرحمٰن کے آزادی مارچ کے دوران مسلم لیگ کے سپریم لیڈر نواز شریف کی نیب تحویل میں گرتی ہوئی صحت سے منسوب خبروں نے پورے سیاسی ماحول کو گرفت میں لے لیا،سوشل میڈیا کے علاوہ قومی دھارے کا←  مزید پڑھیے

آسیب زدہ ریاست۔۔۔محمد منیب خان

یوں تو فکر کا پیٹ بھرنے کو سوچ کے سارے در واء  ہیں اور نظاروں کا ایک اژدھام ہے۔ آنکھوں کی پتلیاں ان نظاروں کو دیکھتے ہوئےحیرت سے پھیلتی جا رہی ہیں۔ خیال کے آنگن میں عوام کے مستقبل سے←  مزید پڑھیے

نواز شریف اور عمران خان۔ دو مسافر ہیں ایک رستہ ہے۔۔محمد اظہار الحق

نہیں!یہ مسئلہ کرپشن کا نہیں! طرز حکومت کا ہے! ایسا طرزِ حکومت جو میرٹ پر نہیں‘ دوست نوازی پر مشتمل ہے! نواز شریف کا طرزِ حکومت جمہوری نہیں‘ قبائلی تھا۔ چلیے ‘ قبائلی کی اصطلاح کُھردری ہے تو شخصی کہہ←  مزید پڑھیے