آغر ندیم سحر کی تحاریر
آغر ندیم سحر
تعارف آغر ندیم سحر کا تعلق منڈی بہاءالدین سے ہے۔گزشتہ پندرہ سال سے شعبہ صحافت کے ساتھ وابستہ ہیں۔آپ مختلف قومی اخبارات و جرائد میں مختلف عہدوں پر فائز رہے۔گزشتہ تین سال سے روزنامہ نئی بات کے ساتھ بطور کالم نگار وابستہ ہیں۔گورنمنٹ کینٹ کالج فار بوائز،لاہور کینٹ میں بطور استاد شعبہ اردو اپنی خدمات سرانجام دے رہے ہیں۔اس سے قبل بھی کئی اہم ترین تعلیمی اداروں میں بطور استاد اہنی خدمات سرانجام دیتے رہے۔معروف علمی دانش گاہ اورینٹل کالج پنجاب یونیورسٹی لاہور سے اردو ادبیات میں ایم اے جبکہ گورنمنٹ کالج و یونیورسٹی لاہور سے اردو ادبیات میں ایم فل ادبیات کی ڈگری حاصل کی۔۔2012 میں آپ کا پہلا شعری مجموعہ لوح_ادراک شائع ہوا جبکہ 2013 میں ایک کہانیوں کا انتخاب چھپا۔2017 میں آپ کی مزاحمتی شاعری پر آسیہ جبیں نامی طالبہ نے یونیورسٹی آف لاہور نے ایم فل اردو کا تحقیقی مقالہ لکھا۔۔پندرہ قومی و بین الاقوامی اردو کانفرنسوں میں بطور مندوب شرکت کی اور اپنے تحقیق مقالہ جات پیش کیے۔ملک بھر کی ادبی تنظیموں کی طرف سے پچاس سے زائد علمی و ادبی ایوارڈز حاصل کیے۔2017 میں آپ کو"برین آف منڈی بہاؤالدین"کا ایوارڈ بھی دیا گیا جبکہ اس سے قبل 2012 میں آپ کو مضمون نگاری میں وزارتی ایوارڈ بھی دیا جا چکا ہے۔۔۔آپ مکالمہ کے ساتھ بطور کالم نگار وابستہ ہو گئے ہیں

جنگ اور اداسی کی نظمیں/آغرؔ ندیم سحر

پہلے تین نظمیں ملاحظہ فرمائیں:نظم‘‘ایک خواب کے تعاقب میں’’ رات آندھی چلی رات بلیوں کے رونے کی آوازیں آتی رہیں رات ایک شخص مر گیا صبح اس کی لاش شہر کے مصروف چوک میں دیر تک گرین بیلٹ پر پڑی←  مزید پڑھیے

کھوکھلا نظام، بنجر آنکھوں کا نوحہ/آغر ندیم سحر

پاکستان کی سیاسی ومعاشی صورت حال نے معاشرے کو اخلاقی طور پر بھی دیوالیہ کر دیا ہے، طاقتور اشرافیہ نے سسٹم کو اپنے تابع کرتے کرتے اس قدر بنجر اور کھوکھلا کر دیا ہے کہ اس کی درستی اب ناممکن←  مزید پڑھیے

احمد فرہاد:ادیب برادری کہاں ہے؟-آغر ندیم سحر

احمد فرہاد ایک دبنگ لہجے کا تیکھا شاعر ہے،ایک ایسا دردِ دل رکھنے والا سخن ور جس نے ہر اس واقعے اور حادثے پر آواز اٹھائی جس سے مظلوموں کی داد رسی ہو سکتی تھی،اس نے نتیجے کی پروا کیے←  مزید پڑھیے

پاکستان چھوڑنے کا مشورہ/آغر ندیم سحر

یہ 2013ء کی بات ہے، میں نے سائپرس کے لیے سٹڈی ویزہ اپلائی کیا، دو ماہ میں ویزہ لگ گیا مگر میری حب الوطنی آڑے آ گئی اور یوں میں اوورسیز پاکستانی بنتے بنتے رہ گیا۔ پھر پانچ سال قبل←  مزید پڑھیے

شہرت کی بھوک/آغر ندیم سحرؔ

شہرت کی بھوک،روٹی کی بھوک سے زیادہ خوف ناک ہوتی ہے،اس بھوک کا شکار شخص ہر چیز کو پروٹوکول کی آنکھ سے دیکھتا ہے،اسے لگتا ہے اس دنیا کا نظم و نسق میرے بغیر نامکمل ہے،وہ خود کو سپیریئر سمجھنا←  مزید پڑھیے

حافظ نعیم الرحمٰن سے تین سوال/آغر ندیم سحرؔ

حافظ نعیم الرحمن جماعت اسلامی کے نومنتخب امیر ہیں، آپ ایک شفاف اور جمہوری عمل سے اس اہم منصب تک پہنچے، آپ کی سادگی، راست بازی اور دلیری کا ایک زمانہ مداح ہے۔ مجھے کراچی پریس کلب کے پنڈال میں←  مزید پڑھیے

وزیر اعظم کے نام ایک خط/آغر ندیم سحرؔ

وہ نوجوان کئی روز سے کال کر رہا تھا،میں نے عید کی چھٹیوں میں بلا لیا،اس کے ہاتھ ایک خط تھا،وہ چاہتا تھا کہ اسے کالم میں شائع کروں،سو یہ خط پیش ہے: سلام و رحمت جنابِ وزیر اعظم! رحمتوں←  مزید پڑھیے

خدا سے تجارت کریں/آغر ندیم سحر

حضرت موسیٰ کوہِ طور پر خدا سے ملاقات کے لیے جا رہے تھے،راستے میں مفلوک الحال شخص ملا جس کے مالی حالات انتہائی پریشان کُن تھے،وہ ایک وقت کی روٹی بھی پیٹ بھر کر نہیں کھا سکتا تھا،موسیٰ ؑ کو←  مزید پڑھیے

شہباز حکومت، من مانی بھرتیاں اور ہمارا نوجوان/آغر ندیم سحرؔ

میں نے کہیں پڑھا تھا کہ ڈکٹیٹر مشرف دور میں ایک ریٹائرڈ فوجی جنرل ارشد محمود کو پنجاب یونیورسٹی کا وائس چانسلر لگا دیا گیا، ایک میٹنگ میں اس ریٹائرڈ جنرل نے ڈاکٹر مجاہد کامران سے پوچھا! “شاہ جی آپ←  مزید پڑھیے

ادیب کو سرکاری اعزاز لینا چاہیے؟-آغر ندیم سحر

ژاں پال سارتر بیسویں صدی کا ایک عظیم فلسفی ،ادیب،ناول نگار،ڈرامہ نگار اور نقاد تھا،وہ وجودیت اور مظہریت پر یقین رکھتا تھا،بیسویں صدی کے فلسفیوں میں وہ فرانسیسی سماجی محرکات اور مارکس ازم کا عظیم علم بردار تھا۔اس نے فرانسیسی←  مزید پڑھیے

سائنس دان ڈاکٹر ہنری لارسن کا قبول اسلام/آغر ندیم سحر

ہارورڈ یونیورسٹی کے سینیئر پروفیسر اور اہم ترین مغربی سائنس دان ڈاکٹر ہنری لارسن نے یکم رمضان المبارک کو اسلام قبول کیا اور عمرے پر روانہ ہو گئے، ہنری، اہم ترین امریکی یونیورسٹی ہارورڈ سے وابستہ ہیں، آپ موروثی نابینا←  مزید پڑھیے

رمضان،عوام اور راشن کی تقسیم/آغر ندیم سحرؔ

رمضان المبارک میں راشن کی تقسیم کا سلسلہ سرکاری سطح پر بھی جاری ہے اور نجی سطح پر بھی،مختلف تنظیموں اور این جی اوز کی طرف سے غربت کی چکی میں پسے عوام کے لیے رمضان پیکج تقسیم ایک مثبت←  مزید پڑھیے

تیرا باپ بھی دے گا آزادی/آغر ندیم سحر

سانحہ موٹروے ہوا جس کے بعد دل واقعی دکھی ہے اور اس واقعے کی جتنی بھی مذمت کی جائے، کم ہے۔ پاکستان میں جس تیزی کے ساتھ ایسے واقعات بڑھتے جا رہے ہیں اور پوری دنیا میں پورن گرافی میں←  مزید پڑھیے

رمضان نشریات اور ہمارے نجی چینلز/آغر ندیم سحرؔ

جوں جوں رمضان کا مہینہ نزدیک آ رہا ہے ٹی وی اور سٹیج کے معروف چہرے اسلامی باتیں کرنا شروع ہو گئے ہیں یعنی وہ اداکار، گلوکار اور فنکار جو پورا سال ہمیں اپنے اداکاری، گلوکاری اور ڈانس سے لطف←  مزید پڑھیے

حلقہ اربابِ ذوق کے نئے سیکرٹری سے چند گزارشات/آغر ندیم سحر

عام انتخابات اور سیاسی گہماگہمی اپنے اختتام کو پہنچی تو حلقہ اربابِ ذوق کے سالانہ انتخابات آ پہنچے،یہ انتخابات قومی انتخابات سے یکسر مختلف ہوتے ہیں، سیاسی انتخابات میں ووٹرز بِک جاتے ہیں یا پھر ان کا قائد،یہاں ایسا نہیں←  مزید پڑھیے

ہم سو سال بعد بھی یہاں ہوں گے/آغر ندیم سحر

2024ء کے یادگار انتخابات نے پوری دنیا میں ہمیں برہنہ کر دیا، ہمیں اور ہمارے سسٹم کی بددیانتی کی مزید وضاحت کمشنر راولپنڈی کی پہلی پریس کانفرنس نے کر دی، اس کانفرنس کے بعد اسے ذہنی مریض کہا گیا، جب←  مزید پڑھیے

الیکشن ڈیوٹی اور ظلم کی داستان/آغر ندیم سحر

8 فروری کو ملک بھر میں عام انتخابات ہوئے جس میں پاکستان تحریک انصاف کے حمایت یافتہ آزاد امیدواروں نے میدان مار لیا،مسلم لیگ نواز دوسرے اور پیپلز پارٹی تیسرے نمبر پہ رہیں،حکومت بنانے کے لیے مسلم لیگ نون اور←  مزید پڑھیے

ووٹ کسے دینا چاہیے؟/آغر ندیم سحرؔ

آٹھ فروری ،ہماری چھہتر سالہ تاریخ کا اہم ترین دن،اس دن ہم نے اپنے ووٹ کے ذریعے یہ فیصلہ دینا ہے کہ ہمیں اپنی نسلوں کے لیے کیسا پاکستان چاہیے ،ہمیں آج ہی کے دن یہ فیصلہ کرنا ہوگا کہ←  مزید پڑھیے

اورینٹل کالج ایلومنائی میٹ اپ/آغر ندیم سحرؔ

اورینٹل کالج لاہور کو قائم ہوئے تقریباً ڈیڑھ صدی کا زمانہ بیت گیا،اس طویل مدت میں مشرق کی اس عظیم دانش گا ہ نے تحقیق و تنقیداورتصنیف و تالیف کے میدان میں جو عظیم الشان روایت قائم کی اس کی←  مزید پڑھیے

لولی لنگڑی جمہوریت نہیں چاہیے/آغر ندیم سحر

الیکشن سے چوبیس دن پہلے پاکستان کی سب سے مقبول اور اہم ترین پارٹی سے بلے کا نشان چھین لیا گیا،اس کے امیدواروں کو ریٹرننگ آفیسرز کے دفاتر سے اٹھایا گیا،پارٹی کے چیئرمین کے گھر چھاپہ مارنا اور اس کی←  مزید پڑھیے