رمشا تبسم کی تحاریر

برہنہ معاشرے کی بُجھی ہوئی قندیل۔۔۔۔رمشا تبسّم

نوٹ:قندیل بلوچ سے متعلق ہر دو طبقے کی رائے مکالمہ پر شائع ہوچکی ہے،یہ مضمون اسی سلسلے کی ایک کَڑی ہےاور آزادیِ اظہارِ رائے کے تحت شائع کیا جارہا ہے! ہم ایک ایسے برہنہ معاشرے کا حصہ ہیں جہاں ہم←  مزید پڑھیے

“درد کی تُم”۔رمشا تبسم کی ڈائری “خاک نشین” سے “خود کلامی کی اذیت” کا اقتباس

“تم کتنا بولتی ہو”۔۔۔ “اچھا چپ ہو جاتی ہوں”۔۔۔ “ارے پاگل !بولو تم بولتی ہو تو ہی مجھے میرا زندہ ہونا محسوس ہوتا ہے۔ ورنہ تو میں مر چکا ہوں۔میرا وجود کائی زدہ ہے۔میری سانسیں عذاب ہیں۔۔میری زندگی میں زندگی←  مزید پڑھیے

تَن کی میل , مَن کا اندھیرا۔۔۔رمشا تبسم کی ڈائری “خاک نشیں” سے اقتباس

بعض اوقات باہر جتنی شدید روشنی ہوتی ہے انسان کے اندر اتنا ہی گہرا اندھیرا  چھایا ہوتا ہے۔۔۔دنیا کی روشنی کبھی بھی دل و دماغ اور روح کو روشن نہیں کر  سکتی۔۔باہر کی تیز روشنی ہمیں بس مغرور کرتی ہے۔۔←  مزید پڑھیے

شیخ رشید اور پاکستان ریلوے پر چھائے نحوست کے سائے ۔۔۔ رمشا تبسم

آج 11 جولائی 2019 بروز جمعرات صبح 4.15 بجے صادق آباد کے مقام پر حادثہ ہوا۔ لاہور سے کوئٹہ جانے والی اکبر ایکسپریس کھڑی مال گاڑی سے ٹکڑا گئی۔ 6 بوگیاں اور انجن ٹریک سے اتر گئے۔ بے شمار خاندان اجڑ گئے۔ اپنے پیاروں کے لاشے خون میں لت پت لئے ہر آنکھ اشک بار تھی مگر وزیر ریلوے کا کہنا تھا میں کیا کروں یہ ماضی کی حکومتوں کی نا اہلی ہے۔←  مزید پڑھیے

رَنڈی اِن مَنڈی، ٹرینڈ۔۔۔۔۔رمشا تبسم

نوٹ:چند روز پہلے ٹویٹر پر مریم نواز کے منڈی بہاؤ الدین  جلسے کو لے کر ایک ٹرینڈ بنا یا گیا “رنڈی اِن منڈی”۔رمشا تبسم نے آج اِسی حوالے سے قلم اٹھایا ہے۔اگرچہ یہ  لفظ قابلِ مذمت ہے،لیکن اس سے بھی←  مزید پڑھیے

آپ سے آتی ہے , تو آنے دو۔۔۔۔رمشا تبسّم

ایک مولوی صاحب کے گھر میں پڑوسی کا مرغ آ گیا۔ ان کی بیوی نے مرغ پکڑ لیا اور ذبح کر کے پکا بھی لیا۔ جب مولوی صاحب شام کو کھانے پر بیٹھے تو مرغ دیکھ کر پوچھا کہ ’’یہ←  مزید پڑھیے

یاد کا گُھنگُرو۔۔۔رمشا تبسم کی ڈائری “خاک نشین” سے “خود کلامی کی اذیت” کا اقتباس

کل شام جب میں نے سُوکھے پتوں پر پاؤں رکھا۔۔ پتوں کی آواز نے عجیب سی کیفیت طاری کردی! مجھے محسوس ہوا جیسے کوئی مختصر زندگی گزار کر۔۔ موت کی آغوش میں چلا گیا ہو۔۔ بہاریں جب خزاؤں کو خوش←  مزید پڑھیے

عورت کا “میکہ” اہم اور مرد کا “میکہ” غیر اہم کیوں؟۔۔۔۔رمشا تبسّم

کچھ  روز  قبل مکالمہ ویب سائیٹ کے چیف ایڈیٹر محترم انعام رانا کی ایک پوسٹ پڑھی عنوان تھا “بیوی کو میکے بھیجیں” جس میں محترم انعام رانا نے مرد حضرات کو مخاطب کر کے بہت خوبصورت الفاظ میں سمجھایا کہ ←  مزید پڑھیے

پریشر کُکر نُما انسان۔۔۔رمشا تبسّم

آج کل پریشر کُکر کا زمانہ ہے جس میں کھانا جلدی پکتا ہے مگر حقیقت میں کھانا صرف پکتا ہی نہیں بلکہ پریشر سے ٹوٹ بھی جاتا ہے اور ذائقے میں کمی آتی ہے۔ کھانے کی اصلیت قائم نہیں رہتی۔←  مزید پڑھیے

روتے جاؤ, روتے جاؤ!ببلو تیری تبدیلی سلو ہے کیا؟۔۔۔۔۔رمشا تبسّم

اللہ بخشے کنٹینر والے تبدیلی کے خواہش مند مرحوم افراد اگر آج زندہ ہوتے تو یقیناً پاکستان ایک الگ ہی پاکستان ہوتا۔جہاں انصاف کا بول بالا ہوتا,امیر غریب برابر ہوتے, تمام افراد تعلیم کی دولت سے مالا مال ہو رہے←  مزید پڑھیے

گوچڑ موچڑ۔۔۔رمشا تبسم کی ڈائری “خاک نشین” سے “خود کلامی کی اذیت” کا اقتباس

آج بہت عرصے بعد میں نے خود کو سنوارا ۔۔تمہارا دیدار جب سے میسر نہیں ۔۔تمہارا خیال رکھنا بھی چھوڑ بیٹھی ہوں۔۔تم ہی تو کہتے تھے۔میں خود کو سنواروں تو تم سنور جاتے ہو۔۔میرا رنگ درحقیقت تمہارے حسن کو عروج←  مزید پڑھیے

سرخ چاندنی۔۔معاشرے کے ناسور کی تشہیر۔۔۔۔رمشا تبسم

اسما نبیل کی تحریر کردہ ڈرامہ سیریل “سرخ چاندنی ”  اے۔آر۔وائی سے نشر کیا جا چکا ہے۔ اس کی  پروڈیوسر  ثمینہ ہمایوں سعید اور ثنا شاہنواز جبکہ ڈائریکٹر شاہد شفاعت ہیں۔ اس کی کاسٹ میں سوہائے علی ابڑو ,عثمان خالد←  مزید پڑھیے

سچ خونی درندہ ہے۔۔۔ رمشا تبسم کی ڈائری “خاک نشین” سے اقتباس

ہر روز یہاں قتل ہوتا ہے۔ہر روز ارضِ وطن ماتم کناں ہوتی ہے۔۔ہر روز زمین کی آبیاری کسی نہ کسی کے خون سے کی جاتی ہے۔۔قاتل بھی سچا ,مقتول بھی سچا۔۔ قاتل کا سچ اور ہے مقتول کا سچ اور←  مزید پڑھیے

بابا جانی۔۔۔ یہ زندگی باپ کی وجہ سے ہی تو زندگی ہے/رمشا تبسم

ان کے سائے میں بخت ہوتے ہیں باپ گھر میں درخت ہوتے ہیں “بابا جانی, ابوجی,پاپا جانی, دوست, محافظ,سایہ, کہوں یا زندگی کہوں کس نام سے پکاروں, کن الفاظ میں پکاروں؟۔ انگریزی, اردو,فارسی بلکہ تمام زبانوں میں ایسا کوئی لفظ←  مزید پڑھیے

روتے قہقہے۔۔۔رمشا تبسم کی ڈائری”خاک نشین” سے “خود کلامی کی اذیت” کا اقتباس

کسی کے آ کر چلے جانے سے کتنی اذیت ہوتی ہے۔خدا نہ  کرے کبھی تم اس اذیت سے گزرو۔۔۔ہر شخص اس کرب, اس تکلیف کو برداشت نہیں کر سکتا۔۔۔جو روح کو دہکتے کوئلوں میں جھلسا دے۔۔ تم نے کہا تھا←  مزید پڑھیے

عمران خان: بس کردو اب۔۔۔رمشا تبسم

میں بذاتِ خود ایک بہت دیندار,ایماندار یا اسلامی قوانین کو ہر طرح سے اپنا کر زندگی گزارنے کا دعویٰ  نہیں کرتی۔ہم سب انسان ہیں اور کہیں نا کہیں ہم سب سے غلطیاں اور کوتاہیاں سرزد ہو ہی جاتی ہیں۔جن کی←  مزید پڑھیے

ڈرامہ” رانجھا رانجھا کر دی” پر اظہارِ خیال۔۔۔۔رمشا تبسم

نجی ٹی وی کا ڈرامہ سیریل ’’ رانجھا رانجھا کردی‘‘ اپنا خوبصورت سفر مکمل کر کے اختتام پذیر ہو گیا۔فائزہ افتخار کا  تحریر کردہ ڈرامہ سیریل کے ہدایت کارکاشف نثارہیں۔مومنہ درید پروڈکشنز کی پیشکش کے نمایاں اداکاروں میں اقراء عزیز،عمران←  مزید پڑھیے

تڑپتی عیدیں۔۔۔ رمشا تبسم کی ڈائری “خاک نشین” سے “خود کلامی کی اذیت ” کا اقتباس

چاند نظر آ گیا ہے۔۔۔میں نے میسیج لکھا۔۔لکھا تھا کہ”میرے چاند کو چاند مبارک ہو”۔میسیج بھیجتے ہوئے مسکراہٹ تھی جو کسی فقیر کے چہرے پر پوری دنیا فتح کرنے کے بعد بھی نظر نہیں آتی۔آنکھوں میں چمک تھی،ایسی چمک جو←  مزید پڑھیے

کرشماتی بابا بنی گالہ۔۔۔رمشا تبسم

راقم کے علاقے میں ایک بابا “بابا اللہ ہُو” کے نام سے مشہور تھا۔بابا اللہ ہُو لوگوں کو دَم درود کرتا اور لوگ محسن جان کر بابا حضور کو مختلف تحفے تحائف دیتے۔ کبھی سالم بکرا تو کبھی مرغیاں۔اکثر مٹھائیوں←  مزید پڑھیے

عید کا دن اور دیمک زدہ وجود ۔۔۔ رمشا تبسم کی ڈائری “خاک نشین” سے اقتباس

عید کا دن یوں تو خوشی کا دن ہوتا ہے۔ہر شخص روزمرہ زندگی سے تھورا ہٹ کر خوشیاں منانا چاہتا ہے۔کچھ وقت اپنوں کے ساتھ گزارنا چاہتا ہے۔کچھ لمحے محبت کے سائے میں جینا چاہتا ہے۔ اپنے سے وابستہ رشتوں←  مزید پڑھیے