محمد وقاص رشید کی تحاریر

اسلامی جمہوریہ پاکستان کی عورت (خلیل الرحمن قمر صاحب کے نام)۔۔محمد وقاص رشید

خلیل الرحمن قمر صاحب آپ درست کہتے ہیں ان کی سوچ ٹھیک نہیں جو کچھ یہ لوگ لکھتے پڑھتے بولتے ہیں وہ حقیقت کے نزدیک نہیں یہ لبرل فیمنسٹ آزاد خیال لوگ یہ سچے پاکستانی بھی نہیں انکے اندر آپ←  مزید پڑھیے

آزادی کی سحر۔۔محمد وقاص رشید

(ہراسانی کے اندوہناک واقعہ میں رکشے میں دونوں خواتین کے درمیان میں بیٹھی بچی کے منظوم تاثرات ) ماں ۔۔ ماں کون ہیں یہ ؟ کون ہیں یہ اور کیا چاہتے ہیں ہم نے انکا کیا بگاڑا ہے یہ کیوں←  مزید پڑھیے

عورت ہونے کا گناہ۔۔محمد وقاص رشید

پہلا سانحہ  مخبر۔۔۔ پاکستانی قوم کی ایک بیٹی سے زیادتی ہوئی ہے۔۔ ملائیت۔۔۔ جینز شرٹ میں ملبوس تھی ؟ مخبر۔۔۔ جی ہاں ملائیت۔۔۔ شلوار قمیض پہنتی ناں،اسی کا قصور ہے!  دوسرا سانحہ  مخبر۔۔۔ملت کی ایک اور بیٹی سے درندگی کا←  مزید پڑھیے

افغانستان! ماضی کے آئینے میں۔۔محمد وقاص رشید

فرد ہو گھرانہ ،ادارہ یا پھر ایک قوم حال کا سفر ،ماضی کے تجربات کی روشنی میں مستقبل کے راستے پر جاری رہتا ہے ۔ یہی انسانی ارتقاء کی سادہ ترین تعریف ہے۔ غورطلب بات یہ ہے کہ تجربات ہمیشہ←  مزید پڑھیے

میری خیر اے۔۔محمد وقاص رشید

ڈپلومہ کالج سے فارغ ہو کر نوکری کی تلاش تھی ۔گرمیوں کی ایک تپتی دوپہر میں گھر میں بیٹھا جاگتی آنکھوں سے مستقبل کے خواب دیکھ رہا تھا کہ۔ ۔ ستّو لے لو ستّو۔۔۔ ستّو لے لو ستو یہ آواز←  مزید پڑھیے

پاکستان دنیا کا سستا ترین ملک کیسے بنا ؟۔۔محمد وقاص رشید

ایک تو پاکستانی قوم بھی ناں۔ ۔ بڑی نا شکری ہے،وہ جس مدظلہ محترم وزیراعظم پاکستان کا دولاکھ روپے تنخواہ میں گھر کے دو افراد کے ساتھ اپنا گزارہ نہیں ہوتا تھا وہ مہنگائی پر قابو پا کر پاکستان کو←  مزید پڑھیے

نزع کی ہچکی۔۔محمد وقاص رشید

غربت نے اس کے کاندھے سے بستہ اتار کر مزدوری کا بوجھ لاد دیا بھوک نے ہاتھوں سے قلم چھین کر اوزار تھما دیے اور یوں شعور کو احتیاج نے آنکھ کھلنے سے پہلے ہی گلا گھونٹ کر مار دیا۔بھوکی←  مزید پڑھیے

مقابلے کا امتحان (ڈرامہ)۔۔محمد وقاص رشید

کردار۔ پروردگارو شہنشاہِ عالم۔ فرشتے اور جنات ، ابلیس۔ آدم۔ حوا (پہلا سین) نور کا ایک دربار سجا ہوا ہے۔ ۔یہ دربار ازل سے ابد تک کے شہنشاہ کا دربار ہے۔ شہنشاہِ عالم۔۔۔ باشاہِ کائنات خدا کا دربار بہت سے←  مزید پڑھیے

نسیم بی بی کا خواب سچا تھا۔۔محمد وقاص رشید

یہ مہوٹہ موہڑہ کا جنگل نما سنسان و ویران علاقہ تھا۔جنگلی جانور بہت بے چین تھے۔ درندے خوفزدہ تھے اور وحشی حیوان سراسیمگی کے عالم میں تھے۔ ایک ہُو کا عالم تھا۔۔۔جنگل کے پورے نظام پر سکوت و ہیبت طاری←  مزید پڑھیے

“نور مقدم ” (ریاست کے نام)۔۔محمد وقاص رشید

جو نور مقدم تھی ،وہ اب بےنور اور غیر مقدم ہو چکی ہائے اک اور زندگی یہاں ہے سے تھی میں مدغم ہو چکی اک اور وحشی مرد نے یہاں خون کی ہولی کھیلی ہے ملت کی اک اور بیٹی←  مزید پڑھیے

نور مقدم- کاش اے کاش۔۔محمد وقاص رشید

جو نور مقدم تھی۔۔۔وہ آج بے نور اور غیر مقدم ہوئی  ۔اس قوم کی ایک اور بیٹی کو بہیمانہ طریقے سے موت کے گھاٹ اتار دیا گیا۔ اس دھرتی کے طول و عرض میں پھیلے قبرستانِ ناحق میں ایک تازہ←  مزید پڑھیے

گرم آنڈے۔۔محمد وقاص خان

کل ناشتے کی میز پر بیگم انڈہ ابال کر لائی تو بیٹی نے منہ بسور لیا۔۔”مجھے نہیں کھانا یہ انڈہ ونڈہ “۔۔ہر روز ابلا ہوا انڈہ نہیں کھایا جاتا مجھ سے۔۔۔۔ اسکی طرف مڑ کر میں نے دیکھا تو پیشانی←  مزید پڑھیے

مکافات کی چکی۔۔محمد وقاص رشید

مکان کی بوسیدگی کی گواہی اسکی رنگ و روغن سے عاری دیواریں ہی نہیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار فرش بھی دے رہا تھا۔مزید برآں دیواروں کی دراڑیں یہاں موجود زندگی کے چہرے کی جھریاں نظر آتی تھیں۔مکان میں بے سروسامانی←  مزید پڑھیے

آ” آدھا بم “۔۔محمد وقاص رشید

یہ ہوا جس میں ہم سانس لیتے ہیں، جو سانس زندگی کی علامت دھڑکن بنتی ہے،نبض بن کر رگوں میں دوڑتی ہے یہ ہوا سیدھی ہمارے نظام تنفس تک نہیں پہنچتی بلکہ خدا کی پیدا کردہ یہ آزاد ہوا اب←  مزید پڑھیے

عثمان مرزا سوچ،نہ خوفِ خدا نہ خوفِ خدائی۔۔محمد وقاص رشید

خدا کا نائب زمین پر اپنے حاصل شدہ اختیار کے تناظر میں دو عامل قوتوں کے زیرِ اثر کم از کم آخری درجے پر فائض رہتے ہوئے انسانیت کا بھرم قائم رکھ کر انسان کہلانے کا حق دار ہے۔۔۔ایک خوفِ←  مزید پڑھیے

خدا کا گھر۔۔وقاص رشید

وہ ایک یخ بستہ شام تھی اپنے گلی میں کھڑے ہاتھ ہلاتے بچوں کو خدا حافظ کہہ کر میں “واللہ خیر الرازقین ” کے عملی ترجمے و تفہیم کے لیے گھر سے فیکٹری جانے کے لیے نکلا تھا۔ ملکوال سے←  مزید پڑھیے

سانحہ ساہیوال سے سانحہ منی ایپلس تک ۔۔محمد وقاص رشید

دو ممالک ہیں۔ ۔ایک پاکستان ایک امریکہ!  ایک ملک اسلام کے نام پر بنا ہے۔۔جس کو بنانے والوں نے ایک نعرے کی صورت میں یہ بتایا تھا کہ اس ملک کا مطلب و مقصد “لا الہ الا اللہ ” ہے←  مزید پڑھیے

ٹک ٹاک پر انسانیت سوز نعرے- “فلاں فلاں “زندہ باد۔۔محمد وقاص رشید

“فلاں فلاں” زندہ باد۔  مجھے اپنے کانوں پر یقین ہی نہیں آیا۔۔یوں لگا جیسے میرے کانوں میں کسی نے سیسہ پگھلا کر ڈال دیا ہے جس نے اندر جا کر بچے کھچے دماغ کو جلا کر کوئلہ بنا دیا اور←  مزید پڑھیے

ریپ اور عمران خان صاحب کی نرگسیت(2،آخری حصّہ)۔۔محمد وقاص رشید

٭کیا عمران خان 22 سالہ اپوزیشن لیڈر ہونے کے ناطے ایک ناقد ، ایک واعظ اور ایک زبانی جمع خرچ کے عادی بلند و بانگ دعوے کرنے والے کی چھاپ خود پر سے کبھی اتار پائیں گے ؟ کیونکہ وہ←  مزید پڑھیے

ریپ اور عمران خان صاحب کی نرگسیت(1)۔۔محمد وقاص رشید

عمران خان صاحب کی جماعت کا ایک کارکن رہتے ہوئے میں انکے جلسوں اور دھرنوں وغیرہ میں جاتا رہتا تھا ۔ان جلسوں اور دھرنوں میں ایک چیز جو میرے لیے سب سے زیادہ ذہنی اذیت کا باعث ہوا کرتی تھی←  مزید پڑھیے