” وصال ” عاشق” علی سدپارہ” اور دیوی “K2″کا آخری مکالمہ  

دیوی۔۔۔ خوش آمدید میرے عاشق مرحبا تہنیت و احترام
عاشق۔۔۔ تیری رفعتوں کی خیر۔۔ تیری بلندیوں کو سلام
دیوی۔۔۔ میں حسن کی ملکہ، میری فطرت میں زیر ہونا نہیں
عاشق۔۔۔میرا عشق تیری قامت کا دیوانہ مجھے نشیبوں سے سیر ہونا نہیں
دیوی۔۔۔ سو تیرا عشق تجھے لے آیا مجھے سر کرنے۔۔
عاشق۔۔ ہاں اے حسن کی دیوی دیکھ میں آگیا تیرے دل میں گھر کرنے
دیوی۔۔۔ہاں وہ عشق ہی کیا جو معشوق کا فاتح بننے کا جنون نہ پالے
عاشق۔۔۔ہاں وہ عشق ہی کیا جو محبوب میں ضم ہو کر سکوں نہ پا لے
دیوی۔۔۔ حسن فاتحِ عشق ہے۔۔۔ میرے مجنوں میرے دیوانے
عاشق۔۔حسن ،مفتوحِ عشق ہے دیوی یہی تو آیا تجھے بتانے
دیوی۔۔۔مگر میری سرد مہری تیری رگوں کا لہو جما دے گی
عاشق۔۔۔ تو کیا ہوا۔۔کیا میری روح میں مچلتی دھڑکنیں تھما دے گی
دیوی۔۔۔ سو پھر آج تیار رہ۔۔جنونِ عشق کی وارفتگی کا امتحان ہے
عاشق۔۔۔میں جانتا تھا کہ تجھے سر کرنے کی قیمت یہ میری جان ہے
دیوی۔۔۔سو آج یہاں تیرے عشق کی داستان تمام ہونے والی ہے
عاشق۔۔۔ نہیں۔۔اک ابدیت میرے عشق کے نام ہونے والی ہے
دیوی۔۔۔ تو میرے طوفانوں کے آگے قائم نہیں رہ سکتا۔ انہیں نہیں سہہ سکتا
عاشق۔۔۔ میرے عشق کے بادبان کو کوئی اہلِ دل ہارا ہوا نہیں کہہ سکتا
دیوی۔۔۔ تو پھر اگر مانگ لوں تجھ سے تیری دھڑکنوں اور سانسوں کا خراج
عاشق۔۔۔ہائے ہائے میری ملکہ! انکار نہ جنوں کی روایت نہ عشق کا مزاج
دیوی۔۔۔ عشق کو یہاں قیمت دینی پڑتی جنوں کو فدیہ بھرنا پڑتا ہے
عاشق۔۔۔ ہاں ہاں میں جانتا ہوں یہاں جینے کے لئے مرنا پڑتا ہے
دیوی۔۔۔تو پھر آتیرےعشق کی حدت رگوپےمیں سمو لوں
عاشق۔۔۔ آ تیرے حسن کی برف پوش ردا اوڑھ کے سو لوں
دیوی۔۔۔ کبھی سوچا تھا کہ اس شاہکار عشق کی یہ نہج اور یہ حد ہو گی
عاشق۔۔۔ کیا تو نے کبھی سوچا تھا کہ تو پربتوں کی شہزادی اک عاشق کی لحد ہو گی
دیوی۔۔۔ جب جہاں جنوں و عشق کی بات ہو گی تیرا نام بھی آئے گا
عاشق۔۔۔ اور دلِ محبوب میں عاشق کے عشق کا مقام آئے گا
دیوی۔۔۔ واہ میرے سدپارہ کاش تجھے میں زندگی کا دے پاتی اک انعام
عاشق۔۔۔اے میری کے ٹو کی ملکہ سبھی کچھ فنا ہو گا رہے گا بس خدا کا نام
( انا للہ و انا الیہ راجعون)

  • merkit.pk
  • merkit.pk

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply