عبداللہ خان چنگیزی کی تحاریر
عبداللہ خان چنگیزی
عبداللہ خان چنگیزی
ہمم دشتِ جنوں کے سودائی

شرط۔۔۔۔عبداللہ خان چنگیزی

“کہاں تھے تم کل سے تم کو بول رکھا تھا آج کے میلے میں جانے کو کیا کرتب تھے اس پہلوان کے” ایسا کیا دیکھا تم نے جو اتنی تعریفیں کر رہے ہو؟ “تم کیا جانو وہاں عقل کو مات←  مزید پڑھیے

مجھے جینے دو۔۔۔۔ عبداللہ خان چنگیزی

وہ جب بھی اُس بوسیدہ سے مکان سے نکلنے کا سوچتی تو اُس کے سامنے وہ لا تعداد کالی، سرخ  اور کچھ سستی شراب کے خمار میں ڈوبی غلیظ آنکھیں اُس کا تعاقب کرتی رہتی لیکن وہ اب اِس سب←  مزید پڑھیے

خاکی ابلیس۔۔۔۔ عبداللہ خان چنگیزی/افسانہ

گندے بدبودار گہرے مٹیالے گٹر کا پانی رواں دواں تھا ہر کوئی اپنا دامن بچاتا ہوا کبھی یہاں کبھی وہاں چھلانگیں لگاتا ہوا جارہا تھا سمجھ نہیں  آتا تھا کہ  شہر کے بلدیاتی نظام کو کس کی نظر لگی تھی←  مزید پڑھیے

حکم کریں صاحب — عبداللہ خان چنگیزی

زندگی کے ساتویں سال میں داخل ہوتے ہی نوید کی بچپن کی بہاروں میں ظالم خزاں نے ڈھیرے جما لئے لیکن وہ اُس خرگوش کو دیکھتے ہوئے بہت خوشی محسوس کرتا رہا جو بنگلے کے لان میں یہاں سے وہاں←  مزید پڑھیے

سڑک کے اس پار۔ عبداللہ خان چنگیزی

ہمارے ایک دوست بھی عجیب طرح کے انسان نما ٹھرکی ہیں وہ بھی درجہ اول کے ۔ نام کے مرزا ہیں کام کے اول مقام کے کاہل و ناہنجار۔ عادات کے اتنے کچے جیسے مٹی کا گھڑا اُس سے لاکھ←  مزید پڑھیے