Fozia Qureshi کی تحاریر

ہائے وہ معصوم مہمان۔۔۔۔ فوزیہ قریشی

ہمارا گھر ساتویں منزل پر ہے جہاں پہنچنے کے لئے ایک عدد لفٹ کی اشد ضرورت ہوتی ہے  اور لفٹ خراب ہونے کی صورت میں جب سیڑھیوں سے جانا پڑے تو دادی  نانی سسرالی  اور دور پار کے سب رشتے←  مزید پڑھیے

سنڈریلا۔۔۔۔ فوزیہ قریشی

یہ دوسری دفعہ کا ذکر ہے ۔ “کہتے ہیں اسی دور میں ایک شہزادی تھی جس کا نام تو ملیحہ تھا لیکن اس کی بچپن کی دوست اسے سنڈریلا بلاتی تھی کیونکہ اس کے حالات بلاکل سنڈریلا والے تھے.” وہ←  مزید پڑھیے

تہذیب کا برزخ۔۔۔۔فوزیہ قریشی

“ارے۔۔۔ بھلا یہ بھی کوئی زندگی ہے؟۔ جب دیکھو اور جسے دیکھو بس نصیحت پہ نصیحیت کرنے پر تلا ہے۔۔۔ سب کا بس مجھ ہی پر کیوں چلتا ہے؟” جینا ، ان وقت ناوقت ملی نصیحتوں کی بھرمار سے بری←  مزید پڑھیے

میرے خیالوں کی ہمسفر۔۔۔۔۔  فوزیہ قریشی

آج بھی جب وہ یاد آتی ہے تونجانے کیوں؟میری آنکھیں بھیگ جاتی ہیں۔ دل کے موسم پر ویرانی کی بدلی سی چھا جاتی ہے۔۔مجھے تو اس سے کبھی محبت تھی ہی نہیں۔۔۔۔۔پھر ایسا کیا ہوا؟ کب،کیوں اور کیسے ہوگیا؟ یہی←  مزید پڑھیے

میکس اور میرا تقسیم شدہ وجود ۔۔۔فوزیہ قریشی

پورے پانچ برس بعد لندن میں شدید برف باری ہو ئی جس کی وجہ سے  موسم آئے دن  خراب رہنے لگا تھا۔۔۔راستوں پر جمی ٹھوس برف  کا شیشے کی مانند  سخت ہوجانا   میرے جیسے  روزانہ  نوکری  پر جانے  والوں کے←  مزید پڑھیے

بڑی عمر کا مزاجی عشق۔۔۔فوزیہ قریشی

کہتے ہیں عشق و مشک چھپائے نہیں چھپتے اور ایسے میں بڑی عمرمیں عشق ہو جائے تو بندہ کہیں کا نہیں رہتا۔ ہمارے ایک دور پار کے بچے کچے دادا ابا حضور جو رشتے میں ابا کے چچیرے بھائی کے←  مزید پڑھیے

ملال…سچی کہانی ۔۔ فوزیہ قریشی

میں اکثر سوچتی ہوں۔ ماں جی کسی بات پر ملال کیوں نہیں کرتی تھیں؟ “اگر کبھی زبان سے کوئی غم بیان کرتی تو اندازایسا صابر کہ مجال ہے خدا کی ذات سے کوئی شکوہ ہو۔ اتنے غم میری ماں جی نے←  مزید پڑھیے

دور کے رشتے دار۔۔۔فوزیہ قریشی

اِن دور کے رشتے داروں سے دور رہنا ہی بہتر اور خوشگوار ہو سکتا ہے۔جس قدر رہ سکیں ہمارے لئے ہی بہتر ہوگا۔بس بھئی!   اب ہم نے بھی  ٹھان لی ہے۔۔ ان کم بختوں کو دور سے ہی سلام کریں←  مزید پڑھیے

ساکت نین ۔۔۔فوزیہ قریشی

پت جھڑ کی وہ شام مجھے آج بھی نہیں بھولتی جب اس کے ساکت نینوں نے مجھے اپنے حصار میں لے لیا تھا۔ ساکت نین، نہیں دیکھے نہ کبھی۔ میں نے بھی پہلی بار دیکھے تھے وہ دو ساکت نین۔۔اب←  مزید پڑھیے

وجود سے وجود تک۔۔۔فوزیہ قریشی

اللہ نے اسے پانچ برس بعد اس خوشخبری سے نوازا تھا ۔ جس کے لیے وہ پل پل ترسی تھی۔۔ اب اسکے بھی اولاد کی مہک آئے گی،اس کا سونا پن بھی اب دور ہو جائے گا۔.” “وہ عاشر کو←  مزید پڑھیے

محبت جاوداں میری۔۔۔فوزیہ قریشی

محبت کرنے والوں کی شخصیت میں تضاد ہوتا ہے۔ اس کی شخصیت میں بھی تضاد تھا۔ گہرا تضاد۔ یوں تو محبت کی کوئی عمر نہیں ہوتی، نہ تو کوئی مذہب اس کے آڑے آتا ہے اور نہ ہی کوئی سرحد۔←  مزید پڑھیے

دوسرا مرد۔۔۔فوزیہ قریشی

جب مرد کسی سے محبت کرتا ہے تو کیا سچ مچ واقعی اسی سے محبت کرتا ہے،کیا پھر اس سے شادی بھی کر لیتا ہے ؟ ” وہ مجھ سے آج رو رو کر پوچھ رہی تھی۔ ساون کی کالی←  مزید پڑھیے

رقصِ مرگ۔۔۔فوزیہ قریشی/افسانہ

ایک عجیب سی بے بسی کا امڈتا ہوا سمندر اس کی آنکھوں سے عیاں تھا۔ چہرے پر انمٹ صدمات کی دھول عمیق اداسیوں کی مہر ثبت کر چکی تھی۔ اب تو شاید، اس کی سوچنے سمجھنے کی صلاحیتیں بھی بوڑھی←  مزید پڑھیے

حسن ِنظر ۔۔۔فوزیہ قریشی

’’ارے رکو، سنو تو کائنات۔۔۔ کائنات‘‘ میری آواز آس پاس کے شور میں کہیں دب کر رہ گئی اور وہ اس کا ہاتھ تھامے بس میں سوار ہو گئی۔ ’’وہ کون تھا اور اس کا ہاتھ اس کے ہاتھ میں←  مزید پڑھیے

سوا نیزے پہ ٹھہرا سورج۔۔۔فوزیہ قریشی

نجانے کتنے برسوں سے آگ برسا رہا تھا ۔ لو کے تھپیڑے اور چلچلاتی گرم دوپہروں نے ہر سانس لینے والے حشرات کا جینا دوبھر کر رکھا تھا ۔ ایک پراسرار سی خاموشی اطراف میں چھا ئی ہوئی تھی۔ پہاڑ←  مزید پڑھیے

می ٹو،میں بھی تو ہوں ۔۔۔۔ فوزیہ قریشی

Harassment کے معنی متشدّدانہ دباؤ، غیر معمولی طور پر اپنے سے نیچا دکھانا، متعصبانہ رویّے، غیر مہذب جسمانی حرکات، جنسی دعوت دینے والے پوشیدہ لین دین، زبانی کلامی و جسمانی حرکات سے کسی کی عزت، غیرت اور حمیت کا تقاضا←  مزید پڑھیے

گہرے گھاؤ۔۔فوزیہ قریشی

نومبر کی وہ وحشت نا ک شام اس کے لا شعور میں کائی کی طرح جم چکی تھی ۔ اسے اپنے ہاتھ لال اور ہرے رنگ کا ایک شاہکار دکھائی دیتے تھے. جیسے کسی آرٹسٹ نے اپنے دل کے رنگین←  مزید پڑھیے

ہاکنگ اور ہمارا رویہ۔۔۔ فوزیہ قریشی

“چھوڑ دو جنت اور جہنم کے فیصلے سونے رب پر” آج اسٹیفن ہاکنگ بھی اس دنیا سے رخصت ہوگئے۔۔۔۔ہر شئے فانی ہے۔ کل کس کی باری ہوگی کون جانے؟ لیکن لوٹ کر ہم نے اسی کی طرف جانا ہے لیکن←  مزید پڑھیے