کتبہ۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

اور پھر جب میرے پیچھے اپنا پھاٹک بند کر کے
اور اس پر ’’داخلہ ممنوع ہے” کے
امتناعی حکم کا نوٹس لگا کر
مجھ کو باہر برف زا موسم کی سردی میں اکیلا چھوڑ کر
(اگلے پڑاؤ  پر پہنچنے کے لیے تاکید کر کے)
پاسبان ِ زیست مُڑ جائے گا اندر ۔۔۔

کیا میں اک لمحہ رُکوں گا؟—-
کیا میں سوچوں گا، مرے احباب
میرے مہرباں، میرے مر ّ یی
یا مرے ہمعصر ، میرے نام سے واقف پڑوسی
میرے بارے میں عموماً کیا کہیں گے؟

tripako tours pakistan

آدمی اڑیل تھا، اپنی دھُن کا پکّا۔۔
کام کتنا کر گیا ہے، یہ تو دیکھو

ساٹھ سے اوپر کتابیں ہی لکھی ہیں
جامعہ میں اتنے برسوں تک پڑھانا
سینکڑوں، بلکہ ہزاروں نوجوانوں کا معلم
علم سے بہتر بھی رزق ِ خیر کیاہے
اس کا مرنا دوستوں کے واسطے اک سانحہ ہے

Advertisements
merkit.pk

یوں اگر دو چار باتیں تعزیت کی
جاتے جاتے میرے کانوں میں بھی پڑ جائیں، تو شاید
برف زا سردی کے موسم میں مجھے
اگلا سفر آساں لگے گا!

  • merkit.pk
  • merkit.pk

ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply