• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • زگ زیگ ٹیکنالوجی سے اینٹوں کے بھٹوں کی فضائی آلودگی کا انسداد۔۔سید عارف مصطفیٰ

زگ زیگ ٹیکنالوجی سے اینٹوں کے بھٹوں کی فضائی آلودگی کا انسداد۔۔سید عارف مصطفیٰ

ایک عرصے سے مملکت پاکستان کو ایک ایسے دشمن کا سامنا ہے کہ جو ان دیکھا بھی نہیں ہے ، باہر سے درانداز بھی نہیں ہوا ہے یعنی قطعی مقامی ہے مگر جسکی وقفے وقفے سے ہونے والی ضرر رسانی کی زد میں تقریباً آدھے سے زیادہ وطن عزیز ہے- اور اسکے نقصانات کا اثر کسی ایک شعبے تک محدود بھی نہیں ہے ۔ بات یہاں آنے تک ہر قاری یقیناً یہ سمجھ ہی گیا ہوگا کہ ہم یہاں دھند یا  سموگ کا تذکرہ کررہے ہیں۔
درحقیقت  سموگ انسانی جانوں اور معیشت دونوں ہی کے لیئے ایک بہت بڑا خطرہ ہے ۔ جب بھی کبھی کوئی علاقہ اسکی لپیٹ میں آتا ہے وہاں تنفس اور پھیپھڑوں کے امراض میں نمایاں اضافہ ہوجاتا ہے اسکے علاوہ بینائی دھندلی ہوجانے اور حد نظر کم ہوجانے کے باعث مختلف حادثات جنم لیتے ہیں خصوصی طور پہ ٹریفک حادثات کا تناسب غیر معمولی طور پہ بہت بڑھ جاتا ہے۔

اس تحریر میں  سموگ یا دھند کو بہت بڑا دشمن قرار دینے کی وجہ یہ ہے کہ جب بھی اسکی نمو ہوتی ہے اس کی لپیٹ میں آکے شاہراہیں اور رستے بیحد پُر خطر ہوجاتے ہیں جس کی وجہ سے ذرائع نقل و حمل صحیح طور پہ متحرک نہیں رہ پاتے جسکے باعث لیبر فورس کو اپنے کام پہ پہنچنے اور خام مال اور تیار مال کو اپنی منزل تک لےجانے میں شدید دقت کا سامنا رہتا ہے اور یوں صنعتی و زرعی امور اور تعمیراتی شعبے کی سرگرمی بری طرح متاثر ہوجاتی ہے۔ یہاں تعمیراتی شعبے کا حوالہ زیادہ اہمیت کا حامل اس لیے ہے کیونکہ کنسٹرکشن کے کام کا عمومی انحصار سیمنٹ اور سریے  پہ ہے اور ان دونوں اجزاء کے کارخانے صرف چند بڑے اضلاع ہی میں واقع ہیں اور دیگر درکار اشیاء جیسے ٹائلز اور سینیٹری کا سامان بھی دور دراز جگہوں سے ہی پہنچتا ہے جہاں سے انکی آمد اور دستیابی کا راست تعلق ذرائع نقل و حمل کی فراہمی و سڑکوں اور رستوں کے قابل سفر ہونے سے ہے۔

tripako tours pakistan

لیکن اب یوں لگ رہا ہے کہ اس دھند یا  سموگ کے ہاتھوں پہنچنے والے نقصانات میں بہت کمی واقع ہونے جارہی ہے کیونکہ ایک بڑی خوشخبری یہ ملی ہے کہ صوبہ پنجاب کی حکومت نے اس بابت اصلاح احوال کے لئے ایک بڑا فیصلہ کن قدم اٹھالیا ہے کیونکہ ماحولیات سے متعلق ماہرین کی تحقیقی رائے سامنے آچکی ہے جس کے مطابق  سموگ بننے میں اینٹوں کے بھٹوں سے نکلنے والے بے تحاشا دھوئیں کا بھی اہم کردار ہے اس لئے اب ضرورت اس امر کی ہے کہ اینٹوں کے بھٹوں کے کام میں بہتری لا کر سموگ کی پیدائش میں خاطر خواہ کمی لائی جائے- کیونکہ اینٹوں کے  استعمال کا راست تعلق کنسٹرکشن کے شعبے سے ہےاور اس شعبے سے افرادی قؤت کا بڑا حصہ منسلک ہے اس لیئے ان بھٹوں کے معاملات کی بہتری اور بھی ضروری ہے اور اسی لیئے اب حکومتی سطح پہ ایک بڑا کام یہ ہوا ہے کہ جدید ٹیکنالوجی بروئے کار لا کے 37 فیصد اینٹوں کے بھٹوں کو جدید زگ زیگ ٹیکنالوجی پہ منتقل کردیا گیا ہے – یہاں یہ بتانا بھی ضروری ہے کہ زگ زیگ ٹیکنالوجی کے تحت بھٹوں میں اینٹوں کی جگہ زگ زیگ انداز میں رکھی گئی ہے جس سے کوئلے کی کھپت میں  کمی آتی ہے اور ہر حصے میں رکھی اینٹوں کو یکساں طور پہ گرمی فراہم کی جاسکتی ہے۔ روایتی فکسڈ چمنی والے بھٹوں میں اینٹوں کو ایک ہی رخ پہ سیدھے انداز میں جوڑا جاتا ہے جس میں بہت زیادہ ایندھن یا کوئلہ جلانا پڑتا ہے مگر اس کے باوجود بہتر کوالٹی میسر نہیں آپاتی اور A- گریڈ کی اینٹوں کی بہت کم پیداوارحاصل ہوتی ہے۔

زگ زیگ ٹیکنالوجی کی مد میں اک اہم عنصر یہ بھی ہے کہ اس سے چلنے والے بھٹوں میں اندر ایک پنکھا بھی ہوتا ہے جو کہ ائیرکنٹرول سسٹم مہیا کرتا ہے اور کوئلہ جلانے کے عمل کو اور موثر بنا دیتا ہے اور یوں اس ماحول دوست ٹیکنالوجی نے پرانے اینٹوں کے بھٹے سے نکلنے والے گاڑھے کالے دھوئیں کو بھی کم آلودگی والے سفید رنگ کے دھویں  میں تبدیل کرنے میں مدد فراہم کی ہے۔ زگ زیگ  ٹیکنالوجی اپنانے کے باعث اور اس اہم حکومتی اقدام کی وجہ سے ملک میں ماحول کی آلودگی کی صورتحال میں بھی کافی بہتری آئے گی خصوصاً صوبہ پنجاب میں کہ جوآبادی کے لحاظ سے سب سے بڑا صوبہ ہے اور ملک کی نصف سے زائد آبادی کا حامل ہے اور وسیع و عریض علاقے کے لحاظ سے دوسرا سب سے بڑا صوبہ ہے اور جسے ہر موسم سرما کے آغاز ہی سے سموگ کی وجہ سے شدید ہنگامی صورتحال کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ ملکی سطح پہ دھند سے ہونے والی فضائی آلودگی جس انسانی المیے کو جنم دے رہی ہے اسے اس ضمن میں ایک بین الاقوامی طبی جریدے دی لانسیٹ کی جاب سے کی گئی ایک خصوصی تحقیق سے بخوبی سمجھا جاسکتا ہے جس کے مطابق فضائی آلودگی پاکستان میں بچوں سمیت ہر سال کم وبیش 135،000 اموات کا سبب بن رہی ہے اور اس ہوا کی آلودگی نے بنیادی طور پر پھیپھڑوں اور متعلقہ اعضاء کی حساسیت میں بھی بہت اضافہ کیا ہے اور سانس کی بیمایاں بڑھتی جارہی ہیں ۔ واضح رہے کہ اگر دل کی بیماری کے مریضوں میں سانس کی بیماری طوالت پکڑلے تو یہ امر بھی انکی موت کا باعث بنتا ہے

صوبہ پنجاب میں فضائی آلودگی کی صورتحال کی گھمبیرتا سمجھنے کے لیئے یہ بتانا ہی کافی ہے کہ اس کے 36 اضلاع میں تقریباً  8،554 اینٹوں کے روایتی طور پہ تعمیر کردہ بھٹوں کا گھنا دھواں شب و روز ہوائی آلودگی کی صورتحال بد سے بدتر بنا رہا ہے کیونکہ یہ کوئلے ، پلاسٹک ، ٹائر اور ایسے ہی دیگر خام مال کو بطور ایندھن استعمال کرتے ہیں‌- لیکن یہ نہایت خوش آئند بات ہے کہ پنجاب ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (PDMA) کے ایک عہدیدار کے مطابق کہ اب 37 فیصد یعنی 3،203 اینٹوں کے بھٹوں کو کامیابی کے ساتھ زگ زیگ طریقہ کار میں تبدیل کردیا گیا ہے جس میں مؤثر ماحول دوست متبادل ایندھن استعمال کرکے بہتر معیار کی اینٹوں کی تیاری کو یقنی بنایا جاتا ہے یہ سب وزارت موسمیاتی تبدیلی (ایم او سی سی) ، نیشنل انرجی ایفیشنسی اینڈ کنزرویشن اتھارٹی (این ای ای سی اے) نے بین الاقوامی سنٹر برائے انٹیگریٹڈ ماؤنٹین ڈویلپمنٹ (آئی سی آئی ایم او ڈی) کے تعاون سے ہی ممکن ہوا ہے – ابتک پنجاب کے 10 اضلاع نے اپنے 50 فیصد سے زائد اینٹوں کے بھٹوں کو ماحول دوست ٹیکنالوجی میں تبدیل کردیا ہے اور باقی اضلاع میں یہ کام کسی نہ کسی درجے میں جاری ہے۔

یہاں ڈائریکٹر جنرل پاکستان ماحولیاتی تحفظ ایجنسی (ڈی جی پاک – ای پی اے) فرزانہ الطاف شاہ کے اس ٹویٹ کا حوالہ بے محل نہیں کہ “اینٹوں کے بھٹوں میں تیزی سے مثبت تبدیلی سے یہ ظاہر ہوا ہے کہ معیشت کے اس بڑے اور غیر تسلیم شدہ شعبے نے زگ زیگ ٹیکنالوجی کے بل پہ فضائی آلودگی پر قابو پانے اور صاف ستھرا پاکستان کی طرف اقدامات کے لئے نہایت قابل قدر اور بہترین کارکردگی کا اظہار کیا ہے۔ خدا کرے کہ وطن عزیز میں  سموگ اور فضائی آلودگی پانے کی اس مہم کی جلد سے جلد تکمیل ہو تاکہ ملکی معیشت اور عوامی حفظان صحت کو لاحق اس صورتحال کا مکمل خاتمہ ہوسکے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *