• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • ٹیلی کلینک اور ٹیلی میڈیسن: صحت کی دیکھ بھال میں ایک نیا اضافہ/ڈاکٹر رحمت عزیز خان چترالی

ٹیلی کلینک اور ٹیلی میڈیسن: صحت کی دیکھ بھال میں ایک نیا اضافہ/ڈاکٹر رحمت عزیز خان چترالی

ٹیلی کلینک اور ٹیلی میڈیسن جو کبھی مستقبل کا تصور تھا، اب جدید صحت کی دیکھ بھال کا ایک ناگزیر پہلو بن کر سامنے آ گیا ہے، جغرافیائی رکاوٹوں کو عبور کرتے ہوئے اور مریضوں کی دیکھ بھال میں ٹیلی کلینک نے انقلاب برپا کر دیا ہے۔ پاکستان میں ایک طبی تنظیم پاکستان اسلامک میڈیکل ایسوسی ایشن (PIMA) کی جانب سے ٹیلی کلینک کا تعارف صحت کی دیکھ بھال کی خدمات تک رسائی اور معیار کو بڑھانے کی جانب ایک اہم پیش رفت کے طور پر ہمارے سامنے ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors

دیگر ممالک کی طرح پاکستان کو بھی صحت کی دیکھ بھال کی مساوی رسائی فراہم کرنے میں کافی چیلنجز کا سامنا ہے، خاص طور پر چترال، کالاش، گلگت بلتستان، کشمیر اور بلوچستان کے دور دراز اور پسماندہ کمیونٹیز کو صحت کے بے شمار مسائل کا سامنا ہے، چترال کے اکثر بنیادی مرکز صحت ڈاکٹرز کی سہولت سے محروم ہیں، عوام کو کمپاونڈرز، عاطائیوں، یونیو پھیتھ اور دیگر پیرامیڈیکل اسٹاف کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے۔ صحت کی دیکھ بھال کی فراہمی کے روایتی ماڈل اکثر مریضوں اور صحت کی دیکھ بھال فراہم کرنے والوں کے درمیان فرق کو ختم کرنے کے لیے جدوجہد کرتے ہیں، خاص طور پر دیہی علاقوں میں ڈاکٹرز کی تعیناتی کرکے عوام کا دیرینہ مطالبہ پورا کیا جاسکتا ہے۔ تاہم ٹیلی کلینک اور ٹیلی میڈیسن کا ظہور ان چیلنجوں سے نمٹنے میں ایک مثالی تبدیلی کی نمائندگی کرتا ہے۔ ٹیکنالوجی اور مواصلات کے بنیادی ڈھانچے میں ترقی کے ساتھ ساتھ، ٹیلی میڈیسن فاصلے اور وقت کی رکاوٹوں کو دور کرنے کے لیے ایک قابل عمل حل پیش کرتی ہے، اس طریقہ علاج سے فائدہ اٹھا کر صحت کی دیکھ بھال کے نتائج کو بہتر بنایا جاسکتا ہے۔
ٹیلی کلینک اور ٹیلی میڈیسن صحت کی دیکھ بھال کی فراہمی میں ایک گیم چینجر کے طور پر ہمارے سامنے ہیں۔ واٹس ایپ جیسے پلیٹ فارم کے ذریعے سہولت فراہم کردہ ٹیلی کلینک کی آمد نے طبی مہارت تک رسائی کو ہر خاص و عام کے لیے قابل رسائی بنا دیا ہے۔ مریض اب کسی کلینک یا ہسپتال میں جسمانی طور پر جانے کی ضرورت کے بغیر مستند ڈاکٹروں سے آن لائن چیک اپ اور طبی مشورہ لے سکتے ہیں۔ یہ اختراع نہ صرف وقت اور وسائل کی بچت میں اہم کردار ادا کرے گا بلکہ افراد کے درمیان صحت کی دیکھ بھال کے لیے سرگرم رویے کو بھی فروغ دے گا۔ ڈیجیٹل پلیٹ فارمز کا فائدہ اٹھا کر ٹیلی کلینکس عوام کے صحت کی دیکھ بھال کے تسلسل کو یقینی بنائیں گے، خاص طور پر ایسے حالات میں جہاں جسمانی نقل و حرکت محدود ہو جیسے کہ وبائی امراض یا قدرتی آفات کے دوران عوام کا ڈاکٹرز اور ہسپتال تک رسائی ممکن نہ ہو یہ سہولت بروقت مریضوں کی جان بچانے میں مسیحا کا کردار ادا کرے گا۔
ٹیلی کلینک کی افادیت کو بڑھانے کے لیے مندرجہ ذیل سفارشات پر عمل کا جائے:
اگرچہ ٹیلی کلینکس میں ہر خاص و عام کے لیے ہر مرض کے علاج کے لیے بے پناہ صلاحیتیں موجود ہیں، لیکن ان کے زیادہ سے زیادہ استعمال اور تاثیر پر غور کرنے کے لیے کئی عوامل ہیں جن پر عمل کرکے اس شعبے کو کامیاب بنایا جاسکتا ہے جو کہ یہ ہیں:
ٹیکنالوجی انفراسٹرکچر: ہموار رابطے اور ڈیٹا کی حفاظت کو یقینی بنانے کے لیے مضبوط ٹیکنالوجی کے بنیادی ڈھانچے میں مسلسل سرمایہ کاری ضروری ہے۔ریگولیٹری فریم ورک: ٹیلی کلینک اور ٹیلی میڈیسن کے معیارات اور مریضوں کی حفاظت کو برقرار رکھنے کے لیے ٹیلی میڈیسن پریکٹس کو کنٹرول کرنے والے واضح قواعد و ضوابط اور رہنما اصول کا قیام بہت ضروری ہے۔
صحت کی خواندگی: باخبر فیصلہ سازی اور ٹیلی میڈیسن خدمات کے استعمال کو فروغ دینے کے لیے آبادی میں صحت کی خواندگی کو بڑھانے کے لیے مزید آگاہی مہمات اور کوششیں کی جائیں۔
تربیت اور صلاحیت کی تعمیر: صحت کی دیکھ بھال کے پیشہ ور افراد کو ٹیلی میڈیسن اور ٹیلی کلینک کے طریقوں کو مؤثر طریقے سے اپنانے کے لیے مناسب تربیت اور مدد کی ضرورت ہوگی۔
بنیادی نگہداشت کے ساتھ انضمام: بنیادی دیکھ بھال کی خدمات کو مکمل کرنے اور مریضوں کے جامع انتظام میں سہولت فراہم کرنے کے لیے ٹیلی کلینکس کو موجودہ صحت کی دیکھ بھال کے نظام میں ضم کیا جانا چاہیے۔
خلاصہ کلام یہ ہے کہ ٹیلی کلینکس اور ٹیلی میڈیسن کا عروج صحت کی دیکھ بھال کی فراہمی میں ایک نئے دور کا آغاز کرتے ہیں، جس کی خصوصیت ہر ایک کے لیے قابل رسائی، سب سے سستی اور کارکردگی بروقت ہے۔ ٹیکنالوجی کی سہولت کو بروئے کار لاتے ہوئے پاکستان کا صحت کی دیکھ بھال کا منظر نامہ تبدیلی کے لیے تیار ہے، جو اس کے تمام شہریوں کے لیے معیاری صحت کی دیکھ بھال تک مساوی رسائی کو یقینی بنائے گا۔ جیسا کہ ہم جدید صحت کی دیکھ بھال کی پیچیدگیوں کے بارے میں بات کرتے ہیں، ٹیلی میڈیسن امید کی کرن کے طور پر ہمارے سامنے ہے، جو آن لائن طبی خدمات کی فراہمی میں جدت اور شمولیت کے جذبے کے ساتھ عوام کو بروقت طبی سہولیات فراہم کرے گا ان شا الله۔

Facebook Comments

ڈاکٹر رحمت عزیز خان چترالی
*رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، ورلڈ ریکارڈ سرٹیفیکیٹس، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔ کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں، اس واٹس ایپ نمبر 03365114595 اور rachitrali@gmail.com پر ان سے رابطہ کیا جاسکتا ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply