مجھ سا مبہوت عاشق۔۔۔۔۔۔۔ رفیق سندیلوی/نظم

SHOPPING

کیسی مخلوق تھی

آگ میں اُس کا گھر تھا

الاؤ کی حدّت میں

موّاج لہروں کو

اپنے بدن کی ملاحت میں

محسوس کرتی تھی

لیکن وہ اندر سے

اپنے ہی پانی سے ڈرتی تھی

کتنے ہی عشاق

اپنی جوانی میں

پانی میں

اک ثانیہ

اُس کو چُھونے کی خواہش میں

نیچے،عمق میں بہت نیچے اُترے

مگر پھر نہ اُبھرے

سمندر نے منتھن سے

اُن کے وجودوں کوضم کرلیا

دودھیا جھاگ

اورکُہنہ نمک نے

انھیں اَپنی تیزابیت میں گُھلایا

بھڑکتی ہُوئی آگ نے

جزرومد میں لپیٹا اُنھیں

سر سے پا تک جلایا

مگر کوئی شعلوں سے کندن سا

سیپوں سے موتی سا

باہر نہ آیا

وہ اب بھی سمندر میں

اٹھلاتی سطحوں کے نیلے بہاؤ میں

اپنے الاؤ میں

قصرِ زُمرّد میں تنہا بھٹکتی ہے

اک ہا لۂ آب و آتش میں

رنگوں کی بارش میں

اب بھی وہ زُلفیں جھٹکتی ہے

توعود وعنبر کی مہکار آتی ہے

قطرات اُڑ کر

دہَن کتنے گھونگوں کا بھرتے ہیں

اُس کی جھلک دیکھنے کے لئے

آج بھی لوگ مرتے ہیں

اب بھی یہاں کشتیوں ،آبدوزوں‘

جہازوں کے عرشوں پہ

اُس کی ہی باتیں ہیں

دُنیا کے سیّاح

ساتوں سمندر کے ملّاح

اُس کے نہ ہونے پہ

ہونے پہ تکرار کرتے ہیں

اُس کی کشش میں

بہت دور کے پانیوں میں

سفر کے لئے

خود کو تیار کرتے ہیں!

مَیں بھی یہاں

مضطرب اور بے حال

خستہ و پارینہ تختے پہ بہتا ہُوا

ایک خفتہ جزیرے کے نزدیک

کیا دیکھتا ہوں

کہ وہ ایک پتھرپہ بیٹھی ہے

پانی پہ طاری ہے

اک کیف سا

چاندنی کی لپک

اورہَوا کی مدھر لَے پہ

مچھلی سا، نیچے کا دھڑ اُس کا

شفّاف پانی میں ہلتا ہے

ابریشمیں نورمیں

عکس سیماب سا

اُس کے گلنارچہرے پہ کِھلتا ہے

اب دیکھئے

مجھ سا مبہوت عاشق

اُسے اپنی آغوش میں کیسے بھرتا ہے

غرقاب ہوتا ہے

SHOPPING

مرتا ہے!!

SHOPPING

مکالمہ
مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *