جنوبی پنجاب کی عوام اور عثمان بزدار۔۔۔۔۔عابد حسین

انسانیت زندگی میں دوسروں کے دکھ کو محسوس کرنے اور مشکل لمحوں میں بلا تفریق سہارا بننے کا نام ہے۔بابا اشفاق احمد مرحوم فرمایا کرتے تھے کہ انسان وہ ہے جو اووروں کا درد محسوس کرے صرف اپنا درد تو جانور بھی محسوس کرتے ہیں ـ۔

چند روز قبل تحصیل و ضلع ڈیرہ غازی خان میں ایک خوفناک حادثہ پیش آیا دو بسوں کے تصادم میں تیس افراد اپنی جان گنوا گئے اور پچاس افراد شدید زخمی ہوئی جن میں بچے اور خواتین بھی شامل تھیں ـ۔سوشئل میڈیا پہ خبر چلتے ہی وہاں کی مقامی آبادی سمیت آس پاس کے دیہات اور شہر کی عوام فوراً ضلعی ہسپتال ڈیرہ غازی خان پہنچے اور بِلا شبہ انسانیت کی مثال قائم کردی تقریباً تین ہزار افراد نے خون کے عطیات دئیے اور اس سے دگنی تعداد وہاں اس جذبے اور نیت سے موجود تھی کہ کہیں کسی کی زندگی خون کی کمی کی وجہ سے ضائع نہ ہو جائے۔اور ہر کوئی اس کوشش میں تھا کہ آج وہ کسی انسان کی زندگی بچا لے ـ۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

یقیناً خداوند نے ایسے سچے اور بے لوث جذبات کیلئے ہی فرمایا ہے  کہ جس نے ایک انسان کی جان بچائی گویا اس نے پوری انسانیت کی جان بچائی۔حادثات زندگی کا حصہ ہیں اور سر پہ آئی کو بھلا کون ٹال سکا ہے ـ مگر اس حادثے میں کسی کی موت کا سبب خون کا میسر نہ ہونا نہیں تھا اور نہ ہی زخمیوں کیلئے ڈاکٹروں کو اس پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔یقیناً ڈیرہ غازی خان کی عوام نے اپنے فرض کو خوب نبھایا اور اپنے عظیم ہونے کا ثبوت دیا ۔ـ

مظفر گڑھ روڈ اور انڈس ہائی وے پر اس وجہ سے بھی زیادہ ٹریفک رہتی ہے کہ یہ شہر چاروں صوبوں کیلئے ایک سنگم ہے ـ جس وجہ سے یہاں چوبیس گھنٹے ہیوی ٹریفک کی آمد و رفت کا سلسلہ جاری رہتا ہے ـ۔جائے حادثہ محترم وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار صاحب کے سیاسی حلقے  کے نزدیک کا علاقہ ہے ایک طرف وہاں کی عوام جو تعریف کے حقدار ہیں دوسری طرف محترم وزیر اعلیٰ کی غیرذمہ داری اور بے حسی بھی قابل ملاحظہ اور افسوس کے لائق ہے ـ۔۔

خاص و عام کو امید تھی کہ وزیر اعلیٰ صاحب اپنی مصروفیت ترک کر دیں گے زخمیوں کی عیادت کو پہنچیں گے ،انتظامیہ کو تمام ضروری سہولیات میسر کرنے کا حکم جاری کریں گے۔مناسب امداد کا اعلان کریں گے کیونکہ پبلک ٹرانسپورٹ حادثات میں اکثر جان سے جانے والے اور زخمی ہونیوالے غریب ـ مزدور طبقہ سے ہوتے ہیں ـ گھر کے سر پرست اور خود کفیل ہوتے ہیں، ایسے اچانک حادثہ پیش آنے کی وجہ سے ماؤں کیلئے گھروں میں چولہا جلانا ممکن نہیں رہتا، ـ بچوں کیلئے تعلیم جاری رکھنا مشکل ہو جاتا  ہے ۔ـ علاج کیلئے فی الفور پیسے نہیں ہوتے ـ لیکن یا محترم وزیر اعلیٰ صاحب کو اس حادثہ کی خبر تک نہیں ہوئی یا وزیراعلیٰ پنجاب اتنے زیادہ خدمت خلق میں مصروف ہیں کہ انہیں ایک عام سے اظہارِ ہمدردی کے بیانئے کا بھی وقت نہیں مل سکا ـ۔

Advertisements
julia rana solicitors

ایک طرف یہی جنوبی پنجاب کے سیاستدان سابقہ دورِِ حکومت کی اس خطے سے ہونے والی ناانصافیوں کے گلے شکوے کرتے نظر آتے تھے مگر اب عملاً جب اقتدار کی دیوی ان پر مہربان ہوئی تو یہاں کی عوام کو زبانی اظہارِ ہمدردی کے قابل بھی نہیں سمجھا ـ ۔سنا تھا کہ اقتدار کی دیوی اندھی اور بہری ہوتی ہے مگر پنجاب میں یہ دیوی اندھی اور بہری ہونے کے ساتھ گونگی بھی ہے۔ ـ

  • julia rana solicitors
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply