شاعر : درید بن صمہ (م ٨ ه‍)۔۔۔۔۔ترجمانی : احمد تراث

SHOPPING
SHOPPING

ساری قوم
میری گواہی دے گی
کہ میں نے عارض اور اس کے ساتھیوں
اور بنو سوداء کے گروہ کو
نصیحت کی تھی
اور ان سے کہا تھا
کہ دو ہزار مسلح جنگجوؤں کا گمان رکھو
جن کے سردار
ایرانی زرہوں میں ملبوس ہوں گے
مگر جب ان سب نے
میری بات نہ مانی
تو میں بھی ان کے ساتھ ہو گیا
حالانکہ میں ان کی اور اپنی غلط روی کو
دیکھ رہا تھا
میں نے مقام لِوٰی کے موڑ پر ہی
اپنی بات
ان کے روبرو پیش کر دی تھی
مگر ان کو صحیح بات کی سمجھ
اگلے روز
چاشت کے وقت آئی
میں بھی بنو غَزِیَّہ کا ہی ایک فرد ہوں
اگر وہ بھٹکیں گے تو میں بھی بھٹک جاؤں گا
اگر وہ راہ راست پر رہیں گے
تو میں بھی رہوں گا

SHOPPING

انہوں نے آواز لگائی
کہ شہسوار کو
شہسوار نے مار گرایا
میں نے پوچھا
کیا یہ گر جانے والا عبد اللہ ہے ؟
پھر میں اس کے پاس آیا
تو نیزے اس کے بدن پر ایسے لگ رہے تھے
جیسے جولاہے کا کانٹا
بُنے جانے والے کپڑے میں
پیوست ہوتا جاتا ہے
(یہ دیکھ کر)
میں ایسے ہو گیا
جیسے وہ اونٹنی جس کے بچے کی کھال میں بھوسہ بھرا جا چکا ہو
اور جب وہ کسی بےنام اندیشے سے گھبرا کر (بچے کی طرف) متوجہ ہو
تو اس کے ننھے اور بوٹیاں ہو چکے بچے کی کھال ہی باقی رہ گئی ہو
پھر میں اس (اپنے بھائی) کے دفاع میں
نیزہ زنی کرنے لگا
یہاں تک کہ
سخت سیاہ غبار
مجھ پر چھا گیا
میں نے اس شخص کی طرح نیزہ زنی کی
جو اپنی جان کی بازی لگا کر
اپنے بھائی کی غمخواری کرتا ہے
حالانکہ اس کو معلوم ہوتا ہے
کہ (دنیا میں) کسی کو بھی
دوام نہیں دلایا جا سکتا
سو آج اگر عبد اللہ بھی
اپنی جگہ خالی چھوڑ کر چلا گیا ہے
تو وہ رک جانے والا ہی کب تھا
عبد اللہ کے ہاتھوں پر کبھی رعشے جیسی کپکپی طاری نہیں ہوئی
وہ اپنا تہبند اونچا کر کے رکھتا تھا
اور اپنی پنڈلی کا آدھا حصہ (تہبند سے) باہر رکھتا تھا
آفتوں سے دور
اور عظمت کے مقام تک
رسائی پا لینے والا تھا
مصائب کی شکایت بہت کم کرتا
اور کل ظاہر ہونے والے حوادث کے انجام کی پیش بندی
آج ہی کر لیتا تھا
تم اسے دیکھتے تھے
کہ دبلے پیٹ والا تھا
اگرچہ سامان خوردونوش
ہر وقت موجود اور تیار رہتا تھا
پھٹی پرانی قمیص میں نظر آتا
اگر کبھی اس پر
تنگدستی اور مشکل آ جاتی
تو اس کی سخاوت
اور جو کچھ ہاتھ میں ہوتا اس کو اڑا دینے کی عادت میں
اور اضافہ ہو جاتا تھا
مجھے اس بات کی خوشی ہے
کہ میں نے عمر بھر
اس کو ایسی بات نہیں کہی
جو اس کے لیے
رنج کا باعث ہو
نہ ہی کبھی
(اس کے معاملے میں)
بخل سے کام لیا

SHOPPING

مکالمہ
مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *