ایم بلال ایم کی تحاریر
Avatar
ایم بلال ایم
ایم بلال ایم ان لوگوں میں سے ہیں جنہوں نے اردو بلاگنگ کی بنیاد رکھی۔ آپ بیک وقت اک آئی ٹی ماہر، فوٹوگرافر، سیاح، کاروباری، کاشتکار، بلاگر اور ویب ماسٹر ہیں۔ آپ کا بنایا ہوا اردو سافٹ وئیر(پاک اردو انسٹالر) اک تحفہ ثابت ہوا۔ مکالمہ کی موجودہ سائیٹ بھی بلال نے بنائی ہے۔ www.mBILALm.com

زندگی میں رنگ بھرنے کے لئے – پہلی ویڈیو۔۔۔۔۔۔ایم بلال ایم

ہمارے گلگت بلتستان کے سفر 2019ء پر بنی ویڈیو سیریز کا پہلا حصہ شائع ہو چکا ہے۔ اس ویڈیو لاگ(ولاگ) کی پہلی قسط میں شامل ہے، ہمارا وادی استور کا سفر، استور میں ہماری لڑائی، یاروں کی دل لگیاں، راما←  مزید پڑھیے

زندگی میں رنگ بھرنے کے لئے بھورے ریچھ کی تلاش۔۔۔ایم بلال ایم

دوست احباب بار بار مشورہ دیتے رہے مگر ازلی سستی آڑے آتی رہی۔ آخرکار وقت کا تقاضا ایسا ہوا بلکہ سچ پوچھیں تو ”یہ عشق نچاوے ہے… زنجیریں پہناوے ہے“۔۔۔ اور پھر حالیہ سفر پر حال یہ تھا کہ حسبِ←  مزید پڑھیے

منہ فوٹو واسطے پورا لیکچر – ایڈا توں فوٹوگرافر۔۔۔۔۔ایم بلال ایم

دیوسائی میں ریچھ صاحب نے مسٹر مارموٹ کو تصویر بنانے کا کہا نہ مارموٹ نے ریچھ کو، لیکن لیپرڈ اور عقاب سمیت سبھی ایک دوسرے کی تصویریں بناتے پائے گئے۔ ٹھیک ہے کہ کیمرے کے ویوفائنڈر سے دیکھنے والا کیمرے←  مزید پڑھیے

دیوسائی میں ہماری ریچھ کہانی۔۔۔ایم بلال ایم

کہتے ہیں کہ عموماً جنگلی جانور آدم خور نہیں ہوتے، بلکہ درندے بھی انسان سے ڈر کر بھاگتے ہیں۔ البتہ جب مدبھیڑ ہو جائے یا انسان اس انداز میں جانور کے قریب چلا جائے کہ جانور کو خطرہ محسوس ہو←  مزید پڑھیے

پربت کے دامن میں (دوبارہ)۔۔۔۔۔ایم بلال ایم

خواتین و حضرات! میں ہوں اس داستان کا میزبان منظرباز۔۔۔ زندگی جیتے تمام مسافروں سے التماس ہے کہ برائے مہربانی انسان سے وابستہ امیدوں اور شکوہ شکایت کا بوجھ اتار دیجیے، اور سفری و سیاحتی سامان باندھ لیجیے۔ یوں قوی←  مزید پڑھیے

اور جب ہم بازارِ حُسن گئے۔۔۔۔۔ایم بلال ایم

تین چار سال پہلے کی بات ہے کہ سعد ملک کے ساتھ لاہور آوارگی ہو رہی تھی۔ میں نے کہا کہ استاد آج لگے ہاتھوں شاہی محلہ ہی دکھا دے۔ اس نے جواب دیا ”کچھ خدا کا خوف کر۔ میں←  مزید پڑھیے

بھان متی نے تصویر جوڑی، شمال و جنوب سے لی تھوڑی تھوڑی۔۔۔۔۔۔ایم بلال ایم

کہتے ہیں کہ ایک تصویر ہزار الفاظ سے بھی بھاری ہوتی ہے۔ بس جی! دنیا اسی بھار کے چکروں میں ہلکی ہو رہی ہے۔ وہ کیا ہے کہ اگر ایک تصویر ہزار الفاظ سے بھاری تو ایک جعلی تصویر ہزاروں←  مزید پڑھیے

حاجی بطوطہ کمبل پوش اور ہم۔۔۔ایم بلال ایم

ایک تھے مشہورِ زمانہ سیاح ابنِ بطوطہ صاحب اور ایک تھے ہندوستانی سیاح جناب یوسف خان کمبل پوش۔ وہی کمبل پوش جنہوں نے 1837-38ء میں کئی ممالک کا سفر کرنے کے بعد اردو کا سب سے پہلا سفرنامہ”تاریخِ یوسفی المعروف←  مزید پڑھیے

آ تیرے جِن کڈاں۔۔۔ ایم بلال ایم

ہم دیہاتی کچھ دن پہلے پنجاب کے سونے (گندم) کی گہائی(Threshing) میں مصروف تھے، اتفاق سے اسی وقت شہر لاہور سے ہمارے دوست رانا صاحب کا فون آیا۔ جناب کو معلوم ہوا کہ گہائی ہو رہی ہے تو فوراً بولے←  مزید پڑھیے

جوگیوں کے ساتھ ٹلہ جوگیاں ۔۔ایم بلال ایم

ٹلہ جوگیاں پر ساری رات تیز ہوا چلتی رہی اور خیمے ”شڑشڑاپ“ کرتے رہے۔ اس وجہ سے کئی دفعہ آنکھ کھلی مگر ”اب تو عادت سی ہے مجھ کو ایسے ’سونے‘ میں“۔ پھر دور کے دیسوں میں شمس نے انگڑائی←  مزید پڑھیے

ماں ۔۔۔۔ ایم بلال ایم

سیروسیاحت سے واپسی پر بعض اوقات امی جان کو کچھ کچھ احوال سناتا۔ تصاویر دکھاتا۔ نئے بننے والے دوست اور اپنے ہمسفروں کے متعلق بتاتا۔ میرے بلاگر، لکھاری، فوٹوگرافر یا سوشل میڈیا کے قریبی دوست ہوں یا میرے ساتھ سفر←  مزید پڑھیے

ژوب کا نظارۂ شب۔۔۔ایم بلال ایم

یہ اس زمانے کی بات ہے کہ جب نیا نیا ڈی ایس ایل آر(DSLR) کیمرہ خریدا تھا۔ انہی دنوں بلوچستان یاترا کے لئے نکلا۔ ژوب(بلوچستان) میں جس جگہ ٹھہرے، وہاں سے شہر کا زبردست نظارہ دیکھنے کو ملا۔ پھر شام←  مزید پڑھیے

ان آنکھوں کی مستی میں۔۔۔ایم بلال ایم

ایک دفعہ پھر حسینہ سے ملاقات ہو گئی۔ بلکہ اب کی بار اس کے ذاتی کمرے میں رات گزارنے اور اسے چھونے کا موقع بھی ملا۔ لیکن ہم نے ”شرعی حدود“ کا مکمل خیال رکھا۔ یوں تو رات بھر حسینہ←  مزید پڑھیے

سائیکل سلامت، سفر بخیر۔۔۔۔ایم بلال ایم

ایک کتاب جو مکمل لکھی ہونے کے باوجود اپنے لکھاری کی ازلی سستی کے باعث آج تک شائع نہیں ہو سکی، اس کتاب کے ایک صفحہ پر درج ہے کہ یہ دریائے جہلم کا پُل ہے اور اس کو عبور←  مزید پڑھیے

فوٹوگرافی میں ایکسپوژر – شٹر، اپرچر اور آئی ایس او۔۔۔۔ایم بلال ایم

جاندار کی آنکھ ہو یا پھر کیمرے کی آنکھ، دونوں روشنی کی مدد سے چیزوں کو دیکھتی ہیں۔ کیمرہ بھی کچھ آنکھ کی طرح ہی کام کرتا ہے۔ مثال کے طور پر جس طرح ضرورت سے کم یا زیادہ روشنی←  مزید پڑھیے

میرا پیغام محبت ہے۔۔۔ایم بلال ایم

ابھی ٹھیک طرح سے قلم پکڑنا بھی نہیں سیکھا تھا کہ جب زندگی کا پہلا فائر کیا۔ دراصل بچے کی ضد پر ماموں نے ہاتھ پکڑ کر وہ فائر کروایا تھا۔ سچ پوچھیں تو عموماً بچوں کی طرح اپنا بھی←  مزید پڑھیے

پردے کے پیچھے کیا ہے؟۔۔۔۔ایم بلال ایم

ہاں تو دوستو! فوٹوگرافی کے حوالے سے پردے کے پیچھے یہ ہے کہ کبھی منظر آسانی سے پکڑ میں آتے ہیں اور کئی دفعہ تو بڑی خجل خرابی کے بعد بھی مطلوبہ منظر نہیں ملتا۔ بعض اوقات فقط ایک تصویر←  مزید پڑھیے

دنیا کو میری ضرورت ہے یا نہیں؟۔۔۔۔ایم بلال ایم

آج آپ کو ایک کہانی سناتا ہوں اور آپ مجھے ہی اس کہانی کا کردار سمجھ لیں۔ ویسے یہ کہانی صرف میری ہی نہیں، بلکہ بہت سارے لوگوں کی ہے۔ کیونکہ دنیا ایسے عجوبوں سے بھری پڑی ہے۔ کہیں آپ←  مزید پڑھیے

کیا اس زمین پر کوئی ہے؟۔۔۔۔ایم بلال ایم

بھلے زمانوں کی بات ہے کہ ایک پاکستانی الیکٹریکل انجینئر مدینہ منورہ گیا۔ وہیں روزگار سے وابستہ ہوا اور زندگی کے چالیس سال حرم مدنی کی خدمت میں گزار دیئے۔ اس دوران پائی پائی جمع کر کے پاکستان کے شہر←  مزید پڑھیے

جوگیوں کے ساتھ ٹلہ جوگیاں۔۔۔۔ایم بلال ایم

پھول کی پتی سے کٹ سکتا ہے ہیرے کا جگر! مردِ ناداں پر کلامِ نرم و نازک بے اثر! معروف جہاں گرد رانا عثمان اکثر کہا کرتا ”یار منظرباز! ٹلہ جوگیاں جانا ہے“۔ کئی دفعہ پروگرام بنا مگر نہ جا←  مزید پڑھیے