ایم بلال ایم کی تحاریر
Avatar
ایم بلال ایم
ایم بلال ایم ان لوگوں میں سے ہیں جنہوں نے اردو بلاگنگ کی بنیاد رکھی۔ آپ بیک وقت اک آئی ٹی ماہر، فوٹوگرافر، سیاح، کاروباری، کاشتکار، بلاگر اور ویب ماسٹر ہیں۔ آپ کا بنایا ہوا اردو سافٹ وئیر(پاک اردو انسٹالر) اک تحفہ ثابت ہوا۔ مکالمہ کی موجودہ سائیٹ بھی بلال نے بنائی ہے۔ www.mBILALm.com

ذلت کی زندگی سے کرونا بھلا۔۔ایم بلال ایم

اس تحریر سے ”باوقار“ لوگ دور رہیں اور پیشگی معذرت قبول کریں۔۔۔ کیونکہ کل میں نے جو دیکھا، اُس کے بعد یہ کہنے پر مجبور ہوں کہ کورونا منظور ہے مگر غریب دیہاتیوں سے رکھا رویہ منظور نہیں۔ تم لاک←  مزید پڑھیے

افسانہ افسانی۔۔ایم بلال ایم

ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ بلاگستان ”افسانہ افسانی“ ہوا پڑا تھا۔ کئی بلاگرز افسانے لکھ رہے تھے۔ ایسی صورتحال میں ہم جاتے تو کدھر جاتے؟ ”سانحے در سانحے“ کے بعد بھی ہمارا قلم حرکت میں نہ آئے، بھلا یہ←  مزید پڑھیے

مجھے اپنا رانجھا راضی کرنا ہے۔۔ایم بلال ایم

پہاڑوں پر شام اُتر رہی تھی مگر ہم پہاڑ چڑھ رہے تھے۔ اُس دن کی آخری چڑھائی ختم ہونے کو تھی اور میں دن بھر کی تھکاوٹ سے بے حال ہوا پڑا تھا۔ ایک جگہ سانس لینے رُکا۔ نظر اٹھائی←  مزید پڑھیے

پھل موسم دا تے گل ویلے دی۔۔ایم بلال ایم

پچھلی رات بالائی پہاڑوں پر برف پڑی تھی۔ چاروں اور خوبصورت نظارہ تھا۔ ہم دریائے نین سکھ(کنہار) کنارے بیٹھے تھے۔ ہمارے پاس آم تھے اور عام تھے۔ بابا غالب کی روح یقیناً خوش ہوئی ہو گی۔۔۔ یہ ایک دہائی پہلے←  مزید پڑھیے

کرتار پور کی یاترا۔۔ایم بلال ایم

اب وہاں بہت کچھ بدل گیا ہے۔ فصلوں کے بیچ و بیچ باباجی کا ڈیرہ ایک بڑے کمپلیکس میں تبدیل ہو چکا ہے۔ پاک و ہند سے سکھ برادری کے ساتھ ساتھ مسلمان یاتری(سیاح) بھی جوق در جوق وہاں پہنچ←  مزید پڑھیے

سوچ پر ہتھوڑے چلاتے، کوڑے برساتے افسانے “سوچ زار”۔۔۔۔۔۔ایم بلال ایم

محبت کے ساتھ، خلوص کے ساتھ، جناب فلاں صاحب کے لئے، ٹھپ دستخط۔۔۔ کچھ یوں مجھ جیسے عام قارئین کے لئے اکثر بڑے لکھاری اپنی کتاب دستخط کرتے ہیں۔ ویسے اس میں کوئی مضائقے والی بات بھی نہیں۔ کیونکہ کتاب←  مزید پڑھیے

اور وہ اپنی ہی سانسوں میں جل گئے۔۔ایم بلال ایم

حرارت زندگی ہے مگر حرارت کی بے احتیاطی موت ہے۔ بے شک ہم سیانے نہ سہی، مگر سیانوں کے پاس بیٹھتے رہتے ہیں۔ مگر ہوتا کیا ہے کہ جب سیانے احتیاطی تدابیر بتائیں تو عموماً لوگ ایک کان سے سن←  مزید پڑھیے

جب ٹلہ جوگیاں پر مور ناچتے تھے۔۔ایم بلال ایم

کچھ پرانی یادیں، کچھ پرانی باتیں وہ بھی ایک جوگی تھا کہ جو چرخے کی کوک سن کر پہاڑ سے اتر آیا اور یہ بھی سیروتفریح کا شوقین ایک جوگی فوجی افسر تھا کہ جو ٹلہ سے نیچے فائرنگ رینج←  مزید پڑھیے

اے سالِ رفتہ 2019ء۔۔ایم بلال ایم

اے سالِ رفتہ مجھے تجھ سے کوئی گلہ نہیں۔ مگر جب تک سانسیں ہیں، میں تمہیں کبھی نہ بھولوں گا۔ تیری وہ اک شام بھی نہ بھولوں گا کہ جب میری امی جان اس دنیا سے چلی گئیں اور میں۔۔۔←  مزید پڑھیے

ہڑپہ سے ہری یوپیہ۔۔ایم بلال ایم

ویران کھنڈر اور پرانی عمارتیں دیکھنا مجھے پسند ہیں۔ مٹ چکی تہذیبوں کے آثار کی سیاحت کا شوق رکھتا ہوں۔ موہنجو دڑو مجھے کھینچتا ہے۔ مگر پتہ نہیں کیوں، کبھی ہڑپہ نے اس حد متاثر نہ کیا کہ اسے دیکھنے←  مزید پڑھیے

ٹلہ جوگیاں پر جوگی فوٹوگرافی۔۔ایم بلال ایم

ان جوگیوں کی محبت، عزت اور حوصلہ افزائی نے ایک دفعہ تو منظرباز کو تقریباً رُلا ہی دیا تھا۔ آخر ہوا کیا تھا؟ الجواب: ہوا کچھ یوں کہ جوگی ٹلہ جوگیاں کو پل بھر آباد کرنے ایک مرتبہ پھر۔۔۔ جی←  مزید پڑھیے

زندگی میں رنگ بھرنے کے لئے – پہلی ویڈیو۔۔۔۔۔۔ایم بلال ایم

ہمارے گلگت بلتستان کے سفر 2019ء پر بنی ویڈیو سیریز کا پہلا حصہ شائع ہو چکا ہے۔ اس ویڈیو لاگ(ولاگ) کی پہلی قسط میں شامل ہے، ہمارا وادی استور کا سفر، استور میں ہماری لڑائی، یاروں کی دل لگیاں، راما←  مزید پڑھیے

زندگی میں رنگ بھرنے کے لئے بھورے ریچھ کی تلاش۔۔۔ایم بلال ایم

دوست احباب بار بار مشورہ دیتے رہے مگر ازلی سستی آڑے آتی رہی۔ آخرکار وقت کا تقاضا ایسا ہوا بلکہ سچ پوچھیں تو ”یہ عشق نچاوے ہے… زنجیریں پہناوے ہے“۔۔۔ اور پھر حالیہ سفر پر حال یہ تھا کہ حسبِ←  مزید پڑھیے

منہ فوٹو واسطے پورا لیکچر – ایڈا توں فوٹوگرافر۔۔۔۔۔ایم بلال ایم

دیوسائی میں ریچھ صاحب نے مسٹر مارموٹ کو تصویر بنانے کا کہا نہ مارموٹ نے ریچھ کو، لیکن لیپرڈ اور عقاب سمیت سبھی ایک دوسرے کی تصویریں بناتے پائے گئے۔ ٹھیک ہے کہ کیمرے کے ویوفائنڈر سے دیکھنے والا کیمرے←  مزید پڑھیے

دیوسائی میں ہماری ریچھ کہانی۔۔۔ایم بلال ایم

کہتے ہیں کہ عموماً جنگلی جانور آدم خور نہیں ہوتے، بلکہ درندے بھی انسان سے ڈر کر بھاگتے ہیں۔ البتہ جب مدبھیڑ ہو جائے یا انسان اس انداز میں جانور کے قریب چلا جائے کہ جانور کو خطرہ محسوس ہو←  مزید پڑھیے

پربت کے دامن میں (دوبارہ)۔۔۔۔۔ایم بلال ایم

خواتین و حضرات! میں ہوں اس داستان کا میزبان منظرباز۔۔۔ زندگی جیتے تمام مسافروں سے التماس ہے کہ برائے مہربانی انسان سے وابستہ امیدوں اور شکوہ شکایت کا بوجھ اتار دیجیے، اور سفری و سیاحتی سامان باندھ لیجیے۔ یوں قوی←  مزید پڑھیے

اور جب ہم بازارِ حُسن گئے۔۔۔۔۔ایم بلال ایم

تین چار سال پہلے کی بات ہے کہ سعد ملک کے ساتھ لاہور آوارگی ہو رہی تھی۔ میں نے کہا کہ استاد آج لگے ہاتھوں شاہی محلہ ہی دکھا دے۔ اس نے جواب دیا ”کچھ خدا کا خوف کر۔ میں←  مزید پڑھیے

بھان متی نے تصویر جوڑی، شمال و جنوب سے لی تھوڑی تھوڑی۔۔۔۔۔۔ایم بلال ایم

کہتے ہیں کہ ایک تصویر ہزار الفاظ سے بھی بھاری ہوتی ہے۔ بس جی! دنیا اسی بھار کے چکروں میں ہلکی ہو رہی ہے۔ وہ کیا ہے کہ اگر ایک تصویر ہزار الفاظ سے بھاری تو ایک جعلی تصویر ہزاروں←  مزید پڑھیے

حاجی بطوطہ کمبل پوش اور ہم۔۔۔ایم بلال ایم

ایک تھے مشہورِ زمانہ سیاح ابنِ بطوطہ صاحب اور ایک تھے ہندوستانی سیاح جناب یوسف خان کمبل پوش۔ وہی کمبل پوش جنہوں نے 1837-38ء میں کئی ممالک کا سفر کرنے کے بعد اردو کا سب سے پہلا سفرنامہ”تاریخِ یوسفی المعروف←  مزید پڑھیے

آ تیرے جِن کڈاں۔۔۔ ایم بلال ایم

ہم دیہاتی کچھ دن پہلے پنجاب کے سونے (گندم) کی گہائی(Threshing) میں مصروف تھے، اتفاق سے اسی وقت شہر لاہور سے ہمارے دوست رانا صاحب کا فون آیا۔ جناب کو معلوم ہوا کہ گہائی ہو رہی ہے تو فوراً بولے←  مزید پڑھیے