پشتون تحفظ موومنٹ اور افغانستان۔۔عارف خٹک

افغان صدر کی حالیہ منظور پشتین کی گرفتاری پر ردِ عمل جہاں پشتون تحفظ موومنٹ کو مشکوک بنانے کی ایک کوشش ہے۔وہاں اس ردِ عمل سے اشرف غنی  نےپاکستان کے افغانستان میں حالیہ امن کردار سے پاکستانی انتظامیہ کو متنفر کرکے امن مذاکرات کو ممکن حد تک نقصان پہنچانے کی ایک مذموم کوشش بھی  کی ہے۔

افغانستان میں حالیہ انتخابات میں اشرف غنی کو ابھی تک گرین چٹ نہیں مل پائی، لہذا اشرف غنی کیلئے سب سے آسان راستہ طالبان مذاکرات کسی طور رکوا کر اپنی صدارت کو دوام پہنچانا ہے۔
افغانستان میں سابقہ کمیونسٹ کارکنان جنہوں نے ڈاکٹر نجیب کیساتھ بہت قریبی وقت گزارا ہے، روز ِاول سے وہ پشتون تحفظ موومنٹ کو شک کی نظر سے دیکھ رہے ہیں۔ وہ ابھی بھی اس کو پاکستانی خفیہ ایجنسیوں کی پروڈکٹ سمجھ رہے ہیں۔ اشرف غنی کی بھی کوشش رہی ہے کہ وہ بھی گاہے بہ گاہے اس تحریک کو نقصان پہنچا سکیں لہذا حالیہ ٹویٹ اور بامیان میں منظور کی رہائی کیلئے احتجاج سے اشرف غنی یا پشتون تحفظ موومنٹ کو کیا فائدہ حاصل ہوگا۔ اگر اس تحریک کے پیچھے افغان اداروں یا تنظیموں کا کوئی ہاتھ ہوتا تو وہ کبھی بھی اتنی غیر ذمہ داری سے پشتون تحفظ موومنٹ کا ذکر نہیں کرتے۔
پاکستان میں بھی اسی حوالے سے کافی سارے شکوک و شبہات پائے جارہے ہیں۔ کیونکہ پچھلے چھ ماہ سے منظور پشتین اور اس کی تحریک آہستہ آہستہ گمنامی کی طرف گامزن تھی کہ اچانک ریاست کے اس طرح کے اقدامات سے تحریک میں ایک نئے سِرے سے  جان پڑ جاتی ہے۔
ایک سرکردہ قوم پرست شخصیت کے مطابق کہ منظور پشتین کی شکل میں خیبر پختونخوا کے پرانے سیاسی سیٹ میں تبدیلیاں وقوع پذیر ہوں گی۔ جس کا بڑا نقصان اے این پی اور جمعیت علماء اسلام کو پہنچے گا۔ لہذا وہ اس معاملے کو شک کی نگاہ سے دیکھ رہے ہیں۔
سرحد پار ایک یہ سوچ بھی پائی جارہی ہے کہ وہاں موجود ہندوستانی قونصلیٹ نے ایک دیرپا اور طویل المدتی منصوبہ بندی کی ہے کہ پاکستان میں مغربی سرحدی پٹی کو تقسیم سے دوچار کرکے پاکستان کو مشکلات سے دوچار کرسکیں۔ جس کیلئے افغانستان میں کوشش کی جاتی رہی ہے کہ امن مذاکرات کو کسی طریقے سے رک دیا جائے۔ مگر پاکستان نے اس تحریک کو اٹھا کر گویا ان کی مستقبل کی  منصوبہ بندیوں کو لگام ڈالی ہے۔
ان سب تجزیات سے قطع نظر یہ ایک حقیقت   یہ ہے کہ پشتون تحفظ موومنٹ نے آئین کی بات کی ہے۔ حقوق کی بات کررہے ہیں۔ جو اتنا بڑا جرم نہیں ہے ،جیسا پورٹریٹ کیا جارہا ہے۔ اگر اس تحریک سے جڑے دو تین لوگوں کو نکال دیا جائے تو تحریک میں موجود سارے پشتون محب وطن اور پڑھے لکھے ہیں۔ جن کو اپنے مسائل کا بخوبی ادراک ہے۔ سو بجائے اس کے کہ مزید کانسپریسی تھیوریز پر ہم اپنی توانائیاں ضائع کریں۔ آئیں ہم ایک دفعہ  پھر امن کی بات کرتے ہیں۔ مسائل کی بات کرتے ہیں۔ مگر اس سے پہلے ہمیں راؤانوار کو انصاف کے کٹہرے میں کھڑا کرنا ہوگا۔ ورنہ دن بدن ہم کھیل کھیل میں کہیں اپنے پیروں پر کلہاڑی تو نہیں مار رہے۔

عارف خٹک
عارف خٹک
بے باک مگر باحیا لکھاری، لالہ عارف خٹک

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست 2 تبصرے برائے تحریر ”پشتون تحفظ موومنٹ اور افغانستان۔۔عارف خٹک

  1. MashaaAllah sy apki tehreer bohat achi or nappi tuli alfazon ka chunaao kia hai lakin sath sath apko arz krun k ap ki tehreer parhny valon mai aksriyat log angryzi zuban nhi smjhty urdu parhna bhi un k liye dushvaar hota to ap plz asan alfaz istimal frmaayn or dosri dosri arz yh krna tha k hmary pory pakistan ki satah pr ap apny plateform sy petrol pump ; cng pump ; diesel pump mai jo jo naap tool mai shadiid crouption jari hai khudara is ko ap apny tmam k tmam unvaan mai highly priorities pr high light kia kryn taky ap ka msg.jb jb jo jo muhibb e vatan pakistani parhyga to inshaaAllah is fuel ki chori krny valon k khilaf muassar karvaiyan supreeme court k notice pr shuru hojayngi or 2nd meri ap sy yh guzarish hi k ap apny tor pr pakistan mai moujod tmam ki tmam vehicle companies heavy duty hon ya light duty ya bikes ya raksha vagera companies k c.e.o’s ko around hr 2sy3mahino mai ik jandar shandar mouzon pr latter likhyn k “jnab c.e.o’s of companies” jb ap apni vehicles like bikes; etc tmam vehiles mai itny sary option vagera add kr rahy hian to khudara ap plz km sy km vehicle mai fuel tank mai ik guage bhi add kryn taky avam jb fuel dal vay to usko adaza hojay k kitni chori ho rahi hai or kitny payson mai kitna fuel dala gya hai jis pr avami action shuru hoga to hmari murdar adalaton ko hosh aayga ….jzaa Allah

  2. 2nd think is that k jna hmari schools mai jo nisaab parhaya ja rha hai usko filfoor change kryn misal k tor pr karachi smaith sindh bhr mai jo class 3rd sy class 9th tk subj sindhi subject parrhai jarahi hai khudara isko mukamal khatm kia jay or sindhi k bjaay english ka ik or subject shuru krdyn jis mai class three to class 9th tk muslal jb student english parrhya to us ko after matric english mai uboor hoga or mulk bhi traqqi kryga misal k tor pr jb bacha chota hota hai to madrsa mai hifaz krlyta hai quran pak q k us vaqat uska zehan kacha hota hai hr chiz pick krny ki salahiyat hoti hai us mai lyhaza jysa hr koi janta hai angraiz ny duniya mai mehnat ki hai or apna sikka manvaya hai or english ko international zuban bna dia hai to ise trha hmara pakistan jb traqqi krya jb hm english mai uboor hasil kryngy getting my point ?? jb ap sindhi ko supreem court k hukm sy khatmm krvayngy matlab mazboot sy mazboot tareen unvahanat pydar py likhyngy bar bar likhygy to hmari soi vi ya biiqi hoi huqmaran tabqa hoash k nakhun lyna shuru krygi or inshaaAllah supreeme court k order sy sindh bhr sy yh baqvas zuban sindhi ka na sirf khatma hoga blky avam mai shahoor bydar hoga

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *