آزادی کی نیلم پری اور استحصال کا عفریت۔ ۔ ۔ڈاکٹر عرفان شہزاد

تقسیم سے پہلے جب بنگالیوں کا استحصال ہوتا تھا تو ان کے قائدین، دانش وروں اور مصلحین نے انہیں سمجھایا کہ تمہارا استحصال تمہارے مسلمان ہونے کی وجہ ہو رہا ہے۔ چنانچہ انہوں نے اپنا خون دے کر الگ مسلم ملک حاصل کر لیا۔لیکن ان کا استحصال جب پھر بھی جاری رہا تو اس دفعہ سمجھانے والوں نے سمجھایا کہ تمہارے بنگالی ہونے کی وجہ سے تمہارا استحصال ہو رہا ہے۔ انہوں نے ایک بار پھر خون کی بازی لگائی اور اپنا الگ بنگالی ملک بنا لیا۔اب اس خالص بنگلہ دیش میں بھی ان کا استحصال ہوتا ہے۔ اب وہ کس منہ سے اور کس سے علیحدہ ہوں؟ لیکن اب ان کے دانش ور اور مصلحین انہیں مزید علیحدگی کی بجائے سماجی انصاف قائم کرنے کی تلقین کر رہے ہیں۔ دیکھیے بنگالیوں کو مسئلے کے اصل حل پر آنے کے لیے تاریخ کو کتنی بار اپنے خون سے سرخ کرنا پڑا ۔یہی بات اگر وہ پہلے سمجھ جاتے کہ اصل مسئلہ مذھب یا نسل کے فرق اور اختلاف کا نہیں ، بلکہ طاقت ور کا کمزور کے استحصال کرنے کا ہے، تو انہیں اتنی بہت سی رائیگاں قربانیاں دینے کی ضرورت نہ پڑتی اور سماجی انصاف کے قیام کا سفر بھی بہت پہلے شروع کر سکتے تھے۔

آزادی، جان سے زیادہ پیاری ہے یہ نعرہ قومیت کے تصور کے بعد ایجاد ہوا۔ اس سے پہلے صرف حکمران اور رعایا ہوا کرتے تھے۔ عوام کو اس سے غرض نہیں ہوتی تھی کہ حکمران اپنی قوم کا ہے یا غیر قوم کا۔ انہیں غرض تھی تو اچھی طرز حکمرانی سے۔ برا حکمران اپنی قوم کا بھی ہوتا تو اس کی جگہ غیر قوم کے حکمران کو حکومت کا موقع فراہم کرنے میں عوام اس کا ساتھ دے دیا کرتے تھے۔ لیکن پھر لوگوں کو بے وقوف بنانے کا ایک حربہ ہاتھ آ گیا، اور وہ تھا قومیت کا تصور۔ قومیت کا تصور آیا تومیرٹ کی بجائے قومیت کو معیار حکمرانی قرار دے دیا۔ یعنی اپنی قوم کی نالائق بد دیانت اور استحصالی ایلیٹ کلاس بیرونی ایلیٹ کلاس سے ہر حال میں بہتر سمجھی گئی ، چاہے غیر قوم کی حکمران ایلیٹ کلاس اپنے طرز حکمرانی میں بہت بہتر ہی کیوں نہ ہو۔ قومیت کا یہ تصور دراصل عصبیت کا تصور ہے،جس نے ایک جھوٹے نبی مسیلمہ کذاب کے ہم قوم پیرو کاروں کی زبان سے یہ نکلوایا کہ بنو ہاشم کے سچے نبی سے ہمارے قبیلے کا جھوٹا نبی بہتر ہے۔

tripako tours pakistan

غلامی اور آزادی اضافی اقدار ہیں۔ عوام غلام ہی ہوتے ہیں چاہے ہم قوم افراد کے ہوں یا غیر قوم کے افراد کے۔ آزادی کی جنگ دراصل غیر قوم کی ایلیٹ کلاس اور ہم قوم کی ایلیٹ کلاس کے درمیان اقتدار کی جنگ ہے۔ دونوں اپنے اقتدار کے لیے عوام کو استعمال کرتے ہیں۔ قومیت کے تصور کے آنے کے بعد ہم قوم ایلیٹ کلاس کے لیے عوام کو اپنے اقتدار کے لیے استعمال کرنا آسان ہو گیا ہے۔اقتدار کے اس کھیل میں عوام استعمال ہوتے ہیں۔ جنھیں آقاؤں کی تبدیلی کے لیے آزادی کے نام پر استعمال کیا جاتا ہے۔

بیرون ملک غلامی کرنے والے ہم قوموں کو کوئی نہیں ورغلاتا کہ آپ غیر کے غلام ہیں۔ اپنے ملک میں سادہ عوام کو البتہ ورغلایا جاتا ہے کہ آپ غیر قوم کے غلام ہیں ان سے آزادی حاصل کرو۔ یہ ورغلانے والے کون ہوتے ہیں ؟ وہی جو اقتدار پر قابض ہونا چاہتے ہیں۔ انہیں ان غیر ملکی آقاؤں کے ہوتے یہ موقع نہیں مل پاتا۔ چنانچہ وہ عوام کو سیڑھی بناتے ہیں اور ان کی لاشوں کا زینہ بنا کر اقتدار کی کرسی پر بیٹھ جاتے ہیں۔کوئی قوم باہر سے آکر آپ کو غلام بنا لے تو یہ جائز نہیں۔ لیکن آپ خود اس قوم کے دیس میں جا کر اس کی غلامی اختیار کر لیں تو یہ اعزاز کی بات ہے۔

لوگ پہلے بیرونی آقاؤں سے آزادی حاصل کرنے کے مرتے ہیں اور پھر آزادی کے بعد اپنے بیرونی آقاؤں کے دیس میں ان کی نوکری کرنے کے لیے مرے جاتے ہیں۔ یعنی آپنے ملک میں اپنے خون سے آزادی حاصل کرکے بیرونی آقاؤں کے سابقہ غلاموں کے ہاتھ میں آزادی کے ثمرات تھما کر، پھر خود غلامی کے لیے پہلے والے آقاؤں کے دیس میں غلامی کرنے چلے جاتے ہیں۔ کیوں؟ اس لیے کہ بیرونی آقاؤں کے ہاں استحصال نہیں ہے یا کم ہے۔
تو مسئلہ کیا ہے، کسی قوم سے آزادی یا استحصال سے آزادی؟

آزادی کے نام پر یہی ہوتا ہے اور یہی ہو رہا ہے۔

مکالمہ
مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *