پاکستانی سیاست کے مشہور ترین بوسے

SHOPPING

پاکستانی کی سیاسی جماعتوں کے کارکن پارٹی قیادت سے محبت کا اظہار کرنے کیلئے کئی طرح انداز اپناتے ہیں۔

اس مرتبہ الیکشن قریب آتے ہی ایک میٹھی میٹھی رومان پرور فضاء چل پڑی ہے اور ہر طرف بوسوں کی بارش ہورہی ہے۔ اس فضاء سے پاکستان پیپلز پارٹی کے کارکن کافی متاثر نظر آتے ہیں، جو اپنے قائد یا لیڈر کو دیکھتے ہی ان کا منہ چومنے کیلئے اتاولے ہوجاتے ہیں۔

جبکہ پارٹی لیڈران بوسوں کے ان اچانک ڈرون حملوں سے کافی محتاط نظر آتے ہیں۔ کوئی نہیں جانتا کب کون کہاں سے کس گال پر ایک “چمّی” ثبت کرجائے۔ بات کریں بلاول کی تو ان کے چہرے کی معصومیت دیکھتے ہی  ان پر پیار آتا ہے۔ ایسے میں اگر کوئی جیالا فرط جذبات پر بندھے بند کو توڑتے ہوئے ایک عدد بوسہ جڑ دے تو کوئی بعید نہیں۔

4

یاد ماضی عذاب ہے یارب، چھین لے مجھ سے حافظہ میرا۔۔۔

zzz

لیکن حیرت تو اس وقت ہوئی جب ایسا ہی ایک واقعہ خورشید شاہ کے ساتھ پیش آیا جب ایک جیالے نے اپنی محبت کا اظہار کرنے کیلئے ایک پپّی انہیں بھی چپکا دی۔  خورشید شاہ اس موقع پرپرستار سے جان چھڑوانے کیلئے ادھر ادھر ہوتے رہے لیکن جیالے نے چہرہ چوم ہی لیا۔ اس موقع پربعض کارکنان نے اس جیالے کوروکنے کی کوشش بھی کی۔ بوسہ لینے پرخورشید شاہ نے جیالے سے اکتاہٹ کا اظہار بھی کیا۔

1

اس سے قبل چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے عبداللہ شاہ غازی کے مزار پرحاضری دی تواس موقع پرایک جیالے نے انہیں بھی نہ بخشا اور دے ڈالی ایک عدد۔۔۔ سمجھ تو گئے ہوں گے آپ۔ بلاول نے بھی نے جیالے کے بوسے سے بچنے کی بہت کوشش کی لیکن اس کے باوجود ان کی بھی لے لی گئی “پپّی”۔

zzzz

بات صرف پیپلز پارٹی اور ان کے کارکنوں تک محدود نہیں ہے۔ پاکستان کی سیاسی تاریخ میں کچھ مشہور بوسے بھی موجود ہیں جنہوں نے کافی پذیرائی حاصل کی۔

نواز شریف اور شیخ رشید کو آج کی نسل ایک دوسرے کا دشمن سمجھتی ہے، لیکن ایک واقت ایسا تھا جب ان دونوں حکمرانوں کا سیاسی رومانس عروج پر تھا۔

nawaz

وہ مصطفی کمال جو آج ایم کیوایم کے بانی اور موجودہ ایم کیو ایم  لندن کے سربراہ (قائد تحریک) کو برا بھلا کہتے ہیں، ایک وقت تھا جب ان کے سب سے بڑے فین تھے۔ مصطفیٰ کمال اپنے ماضی میں بانی ایم کیو ایم کے دفاع کیلئے لڑتے رہے ہیں اس لئے ایک موقع پر انہیں لندن میں اعزازی “چمّی” سے بھی نوازا گیا۔

یعنی کہ ۔۔۔ ایک پپی اِدھر، ایک پپی اُدھر۔۔

233750-formernazimmustafakamal-1313608490-216-640x4801

ایسا نہیں کہ صرف نواز شریف کو بوسہ ملا ہی ہے، بلکہ انہوں نے خود بھی بوسے دئے ہیں۔

ascfasc

2

ویسے تو آپ دیکھ ہی چکے ہیں کہ شیخ رشید کو بوسے لینا کتنا پسند ہے، لیکن جب انہیں بوسہ دینے کی باری آئی تو ان کا رد عمل کافی غصیلہ تھا۔ شاید بے چارے چاہنے والے کی پپی ہی گیلی تھی۔

zzzzz

خیر۔۔۔ قصور ان میں سے کسی کا بھی نہیں، نہ بوسہ لینے والوں کا نہ دینے والوں کا۔  قصور اس کیمرہ بردار شخص کا بھی نہیں جس کی بدولت آج یہ تحریر لکھنے کی نوبت آئی۔ بات تو ساری یہ ہے کہ پاکستان کی ہوا میں ہی محبت ہے اور جب تک یہ فضاء قائم ہے، بوسہ کناریاں تو چلتی ہی رہیں گی۔

SHOPPING

Save

SHOPPING

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *