خیال۔۔سارہ خان

وہ میرے ہی گیٹ پہ چوکیدار سے میرے بنگلے کا پتہ پوچھ رہا تھا اور میں دعاؤں کی قبولیت پہ کبھی حیران کبھی پریشان اور کبھی دل میں ڈھیروں شکر ادا کرتی۔۔۔میں کیا کرتی میری خوشی میرے اختیار میں کب تھی۔۔۔۔۔۔
6بج کے پینتالیس منٹ
سنہری گیٹ سے سیڑھیوں تک بائیس قدم۔۔۔اور سیڑھیوں سے دروزے تک سات ۔۔۔پورے سات قدم تھے
مغرب کی ملگجی روشنی میں اس کی گہری نیلی شرٹ مزید گہری ہو چکی تھی نیلا  رنگ میرا پسندیدہ تھااور اس پہ خوب جچتا تھا ۔۔سدید، سیاہ نیلا سرمئی یہ سب رنگ تمہارے لئے ہیں۔۔۔۔جانتے ہو۔۔۔۔
ہاں ۔۔۔۔۔۔جانتا ہوں۔۔۔۔
مگر میرے لئے صرف تم۔۔۔۔
صرف تم۔۔۔
اسکا گندمی رنگ لو دے رہا تھا۔۔۔۔۔وہی لو جو میری آنکھوں کا شرار تھی
ایک دو تین چار پانچ چھ سات۔۔۔۔۔۔۔اور ہر قدم میرے دل پہ پڑتا تھا پلکیں جیسے جھپکنا بھول جائیں دل جیسے دھڑکنا بھول جائیں۔۔۔۔۔
اس نے آتے ہیں سلام کے لئے ہاتھ بڑھایا اور پھر میرا  بڑھا ہوا  ہاتھ تھامنے کی بجائے اپنا نیلا اور سیاہ بیگ ایک دم میری طرف اچھا دیا۔۔۔۔۔۔
اففف مارنا ہے مجھے کیا۔۔۔۔
افففف مرو گی کیا۔۔۔۔
کوئی تمیز ہوتی ہے کسی کے ہاں جانے کی ۔۔۔۔
میں بھی یہی کہہ رہا ہوں کوئی تمیز ہوتی ہے کسی کو اپنے ہاں بلانے کی۔مہمان بے چارہ دروازے پہ منتظر کہ اندر آنے کا کہا جائے اور میزبان  اپنے بٹن جیسے انٹارے کھول کھول کے دیکھ رہا ہو۔۔۔
اب تو حد ہوگئی بیہودگی کی۔۔جواب دینا پڑے گا اس فضول انسان کو
۔۔۔ستیاناس مار دیا سارے رومینس کا ہونہہ
بیٹھو مرو۔۔۔۔۔چائے پیو گے یا ٹھنڈا تمہارے سر کے اوپر گرانے کےلئے  لاؤں۔۔۔۔فائنلی میری مہمان نوازی گھاس چرنے چلی گئی ۔۔۔فضول شخص کیا کیا سوچا تھا آتے ہی  گلے لگ کے روؤں  گی، کتنا کہا تھا دیکھو مجھے بہت سا  رونا ہے  اور مجھے بہت سا ہنسنا ہے تمہارے ساتھ وہ ہمیشہ میرے جواب میں کہتا
مگر ایک بار تو رونے دو بہت تھکن ہے۔۔۔۔۔
ہاں ضرور۔۔۔۔۔بس اتنا سا جواب ہوتا
مگر ہمیشہ یہی ہوتا وہ جب آتا مجھے الجھا کے رکھ دیتا ہم ہنستے ہنستے اور صرف ہنستے۔۔۔۔۔۔وہ میری آنکھوں میں نمی آنے سے پہلے انہیں چوم لیتا اور خزاں میں بہار کھلکھلانے لگتی۔۔۔۔۔
میرے ہاتھ کپکپاتے تو تھام لیتا
میرے ہونٹ تھرتھراتے تو ان پہ اپنی انگلی رکھ دیتا
میرا بدن تھکن سے نڈھال ہو کے گرنے لگتا تو اسکا سینہ میرا چہرہ چھپانے کو ہمیشہ خوش آمدید کہہ رہا ہوتا اور اس کی  بانہیں خود بخود مجھے اپنے قریب کرلیتیں۔۔۔۔اور ہم کئی لمحے خاموش صرف خاموش ایک دوسرے کے وجود کو محسوس کرتے  معمولی سی بھی حرکت   کیے بنا۔اور سارا دن میرے چہرے سے لٹیں ہٹاتے ہٹاتے اس کے جانے کا وقت ہو جاتا۔۔۔۔بس جا رہے ہو
ہاں جاناں جانا تو ہو گا نا۔۔
پھر۔۔۔پھر کب آؤ  گے
تمہاری پلکیں بھیگنے سے پہلے۔۔۔۔۔۔
اور میں یہی سوچتی رہ جاتی ارے میں تو ایکبار نہیں اداس ہوئی ۔۔۔۔
وہ ایسا ہی تھا میرا شوخ۔۔۔۔ہر دم ہنسنے والا ہنسانے والا۔۔۔
ہیں۔۔۔۔
تو صدیاں بیت، گئیں تمہیں دیکھے۔۔۔۔۔کیا کوئی ہوا تمہیں خبر نہیں دیتی کہ یہ آنکھیں بنجر ہوتی جا رہی ہیں۔۔۔۔۔
کیا کوئی آہ فلک پہ نہیں پہنچتی۔۔۔۔۔۔مدت ہوئی اپنے  گالوں پہ( جنہیں چھوتے ہوئے تم کہتے کیا یہ روئی کے  بنے  ہیں۔۔۔۔۔کوٹن کینڈی ہو تم میری)تمہارا لمس محسوس کئے ہوئے اب خشک آنسو گرتے ہیں گرتے رہتے ہیں کوئی آنسو بھی جانتے ہیں انہیں چننے والی پوریں اب جانے کہاں ہیں سو وہ بھی بے دردی سے دھڑا دھڑ بہتے چلے جاتے ہیں مگر میرے من میں ۔۔ایک آنسو گال تک نہیں آتا کہ ان کی انا انہیں چھلکنے سے روکے رکھتی ہے یا وہ بھی شاید تمہارے انتظار میں ہیں
آج لگتا ہے سب بند ٹوٹ جائیں گے آج آنکھیں سہار نہیں پائیں گی۔۔۔۔۔میں نے خود سے کہا۔۔۔۔آئینہ کہہ رہا تھا آج بس۔۔۔اندھیرا پھیل رہا تھا ارےمغرب کا وقت ہو گیا۔۔۔نماز۔۔۔۔۔۔۔۔6.45 منٹ ہوگئے
اور آج تو میں نے لباس بھی وہی پہنا تھا۔۔۔۔۔۔۔کالی قمیض جس پہ سفید پھول کڑھے تھے۔۔۔۔اس میں اسکی خوشبو تھی ۔۔۔۔۔۔مگر وہ نہیں تھا کہیں بھی نہیں۔۔۔دائیں آنکھ کے دائیں کونے میں ایک آنسو چھلکنے کے لئے  بے تاب تھا
اور۔۔۔
ٹپ ٹپ ٹپ۔۔۔۔میرے گارڈن کے اوپر ٹین کی چھت کو موقع درکار ہوتا ہے شور مچانے کا پہلی ہی بوند پہ شور مچا کے اعلان کر دیتی ہے۔۔۔۔۔۔
ارے کیا باہر بارش ہو رہی ہے۔۔۔۔۔
بارش میں کوئل مست ہو کے گیت گانے لگی تھی ۔۔۔۔۔
اور۔۔۔۔۔
اس بار اسے پتہ پوچھنے کی ضرورت تھی نہ دستک کی۔۔۔ہاں مگر میرے آنسو ایک نرم لمس میں  جذب ہو چکے تھے!!

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *