ادب اور جدید دنیا۔۔آفتاب احمد سندھی

اپنے نئے کام سے  کوشش یہ ہے کہ ادب کے بارے میں روایتی طنزیہ گفتگو سے باہر نکلیں۔ اس لیے میں تقریباً مکمل شدہ نئے کام کے اس ٹکڑے کو اس پر ایک سنجیدہ گفتگو کے طور پر رکھتا ہوں۔ آج بھی چند چیزیں  سمجھنے  سے بہت کچھ سیکھنے اور سنوارنے کا موقع ملا ہے۔ ادب کی وجہ سے میں مکالمے کے تجربے سے گز رتا ہوں جیسا کہ نقاد رچرڈ ای رچرڈسن ہوا کرتا تھا، اور میں یہاں دوستوں کے ساتھ پہلے بھی اسی طرح چیزوں کے بارے میں اسی طرح کے نتائج اخذ کر چکا ہوں۔ امید ہے کہ اچھی کہانیاں میرے پاس آئیں گی، مثبت اور منفی ایک لحاظ سے اتنی ہی اہم ہیں۔

ادب
افسانوں کو ادب سمجھنا ہے لیکن جیسا کہ یہ تمام ادب ہے اس کے لیے ادب میں سے کچھ کو ذہن میں رکھنا ضروری ہے۔ ادب کی اقسام کا بھی تذکرہ کریں اور پھر تفصیل سے افسانوی نثری ادب کی طرف لوٹیں اور اسے وسیع تناظر میں سمجھیں بلکہ اسے انگریزی ادب سے نقل کرنے کی کوشش کریں۔
ادب کی تعریفیں وسیع پیمانے پر مختلف ہوتی ہیں، اگر عام طور پر روایتی طرز کی تعریفوں سے خلاصہ کیا جائے: “ابتدائی شاعری اور کہانیاں آج کے دور میں کہانیاں اور خیالات اور نظریات بتاتی ہیں۔” ادب کی مختلف اصناف کی تحریریں اور شاعری جمالیاتی لحاظ سے خوش کُن اور دلچسپ ہیں۔ اپنے آپ کو اکثر تعریف اور پڑھتے ہوئے پاتے ہیں: “ادب زندگی کا آئینہ ہے یا ادب زندگی کا عکس ہے۔” لیکن وقت کے ساتھ ساتھ جیسے جیسے ادب میں وسعت آئی ہے، موضوعات اور انواع مزید نفیس ہوتے گئے ہیں، اور انسانی خیالات اس قدر پھیل چکے ہیں کہ مصنفین اور ڈیزائنرز کائنات اور ہر جاندار چیز کے لیے آئیڈیاز لے کر آئے ہیں۔ بہت سی افواہوں نے تصور اور جستجو پر زور دینا شروع کر دیا ہے، لہٰذا آج ہم کہہ سکتے ہیں: “مختلف ادبی اصناف کے ذریعے متن میں اگلا اظہار گولڈ، سیٹیوا، متاثر کن انداز اور تخلیقی صلاحیت جو کائنات کے ہر پہلو کو بیان کرتی ہے یا پھر سے سمجھانا، یا کسی اور الیکٹرانک طریقے سے لوگوں تک پڑھنے، دیکھنے یا سننے تک پہنچاتی ہے، ادب ہے۔
یہاں میں نے لکھا تھا کہ “لوگوں تک پڑھنے اور گننے کے لیے پہنچیں” کیونکہ جدید ترین ٹیکنالوجی تیزی سے انسانی زندگی میں داخل ہو رہی ہے، اور “مصنوعی ذہانت” انسانوں، اور روبوٹس یا کمپیوٹرز کے طور پر کام کرنے لگی ہے۔، پڑھنے کے لیے لٹریچر دستیاب ہے۔ اور ڈیوائسز کی اسکرین یا اس طرح کے کسی دوسرے آلے کو چھونے یا چھونے سے گنتی ہے، تاکہ اسے اسی طرح پڑھا اور سمجھا جا سکے۔ اور اس طرح کی مستقبل کی مصنوعات، خاص طور پر روبوٹس یا ڈیجیٹل مشینوں پر لٹریچر، انسانوں کے طور پر ہم پر کیسے اثر انداز ہو سکتا ہے؟ یا اسے کسی اور طریقے سے متاثر کیا جا سکتا ہے۔ پہلے کوئی اور جانتا تھا کہ بہت سی چیزیں انسانی متبادل کے طور پر کام کریں گی۔ اور یہ بھی ہو سکتا ہے کہ یہ غیر انسانی چیزیں بھی ’’ادب‘‘ کرنے لگیں! جو کچھ تجربہ دیتا ہے۔ مثالیں ویب ناولوں اور کہانیوں کے لیے کچھ سافٹ ویئر اور ایپلیکیشنز ہیں۔

Advertisements
julia rana solicitors london
FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

 کیا روبوٹ ناول لکھ سکتے ہیں؟ 
تاہم تجزیے کے مطابق مشین کو اب بھی انسانوں کی ضرورت ہے۔ یہ کافکا جیسا ناول نہیں لکھ سکتا۔ لیکن جس رفتار سے انسان اس ٹیکنالوجی کو استعمال کر رہا ہے اور آج کی جادوئی چیزیں حقیقت کا روپ دھار چکی ہیں، وہاں کوئی اپنے تخیل اور تخیل کو “حیرت انگیز وژن” کے لیے کہاں وقف نہیں کر سکتا؟! فی الحال عقل اسے تسلیم نہیں کرتی اور نہ ہی ایسا کوئی واقعہ سامنے آتا ہے۔ لیکن جو کچھ سامنے آیا ہے وہ کوئی چھوٹی بات نہیں ہے۔ یہ تمام سائنسی ترقی اور ٹیکنالوجی کا استعمال ادب کی طرف رہنمائی کر رہا ہے۔ مشینی یا ڈیجیٹل طور پر تیار کردہ ادب یا تو ایک الگ صنف کے طور پر آئے گا جسے مشینیں اور انسان پڑھیں گے اور سمجھیں گے، اور انسان انسانی تخلیق کردہ ادب کی وضاحت کرنے کی اپنی صلاحیت سے فائدہ اٹھائیں گے۔ یہ ہریکین نیورل نیٹ ورکنگ کے ذریعے ہو رہا ہے۔
میں اوپر کی جگہ “ادبی” کی اصطلاح استعمال کرتا ہوں کیونکہ تخلیق کا تعلق تخیل   سے ہوتا ہے۔ اس وقت “ویب ناولز”، “ویب اسٹوریز” وغیرہ لکھنے کے لیے کچھ سافٹ وئیر بھی دیے گئے ہیں، جن میں ناول، کہانی وغیرہ کو کسی بھی قسم کی انسانی مداخلت سمیت “گھسنے” کے لیے کچھ اقدامات دیے گئے ہیں۔جنرل چیٹ لاؤنج چنانچہ ادب اپنے ارتقائی دور سے گزرتا ہے۔ لیکن اب تک جو کچھ ہوا ہے اس کے بعد محرک انسان ہے اور انسان کے پیچھے محرک اس کا فطری اور فطری ہنر ہے؛ یا پھر اسے اپنے مسائل کے خاتمے کے لیے کیوں استعمال کریں؟ ان تمام مسائل کی وجہ سے ادب کی وسعت اس قدر بڑھ گئی ہے کہ یہ کائنات کی کسی بھی ممکنہ دیوار سے چمکنے کی کوشش کرتا ہے تو اس کی کھڑکی کھل جاتی ہے۔ وجہ یہ ہے کہ ادب ادراک اور ایجاد کا نتیجہ یا پیداوار ہے۔ انگریزی کلاسیکی شاعری سے جیسے جیسے شاہ لطیف کی نظموں کے رموز کھلتے ہیں، یہ یقینی ہے کہ مزید “نظر انداز” نہ کیا جائے گا۔

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply