آخری چٹان تک۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

ریت کے ٹیلے تھے، سوکھی کائی تھی

پانی اُترتا جا رہا تھا

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

ہر طرف اک مضمحل ، بیمار سی بوُ تھی ہوا میں

آنے والی شام کی گہری اداسی

اور گہری ہو رہی تھی

برق پا ہِرنوں سے کالے، گیلے سائے

ماند پڑتی روشنی کی

سعیء لاحاصل میں دوڑے جا رہے تھے

جسم کے ایسے مراحل ان گنت تھے

جن سے وہ ہر بار گذرا تھا، مگر اک

لا شعوری خوف کے زیرِ اثر وہ

لوٹ آیا تھا، اسے خدشہ تھا شاید

وہ پہنچ کر بھی نہ منزل پا سکے گا!

وہ پہنچنا چاہتا تھا

ریت کے ٹیلوں سے آگے

ضمحل بیمار سی بُو سے گذر کر اور آگے

ریتلا ساحل جہاں پر

گھاس، کائی، جھاڑیوں کے درمیاں

اک گہری ، کالی کھائی میں تبدیل ہو جاتا تھا

اور شہوت دریدہ ڈائنوں سی تُند لہریں

سر پٹختی پھِر رہی تھیں

یہ جگہ منزل تھی اس کی!

Advertisements
julia rana solicitors london

وہ ہوس کی آخری چٹان تک پہنچا تو پانی چڑھ چکا تھا!!

  • julia rana solicitors
  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london

ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply