• صفحہ اول
  • /
  • کالم
  • /
  • سرحد کے اطراف دو پارٹیاں ، ایک کہانی(1)۔۔افتخار گیلانی

سرحد کے اطراف دو پارٹیاں ، ایک کہانی(1)۔۔افتخار گیلانی

دسمبر کے مہینہ کو جنوبی ایشیا کی سیاسی تاریخ میں ایک کلیدی اہمیت حاصل ہے۔ اسی ماہ میں ہی اس خطے کی دواہم سیاسی جماعتیں انڈین نیشنل کانگریس اور آل انڈیا مسلم لیگ معرض وجود میں آئیں۔ 136سال قبل 28دسمبر 1885کو ایک برطانوی سول سروس آفیسر اور ریفارمر آلائن اوکٹاوئین ہیوم نے وائسرائے لارڈ ڈیفرین کی ایما پر ممبئی میں کانگریس کی داغ بیل ڈالی اور امیش چندر بنرجی کو اسکا پہلا صدر منتخب کیا گیا۔ مسلم لیگ کا قیام 30دسمبر 1906کو موجودہ بنگلہ دیش کے دارالحکومت ڈھاکہ میں عمل میں آیا اور سلطان محمد شاہ آغا خان سوم کو اسکا پہلا اعزازی صدر منتخب ہونے کا اعزاز حاصل ہوا۔ دونوں جماعتیں ابتدا میں اشرافیہ کی نمائندگی اور ان کی آواز حکومتی ایوانوں تک پہچانے کیلئے بنائی گئی تھیں، مگر جلد ہی انہوں نے عوامی تائید حاصل کرکے ، جنوبی ایشیا میں ایک تاریخ رقم کی۔ نئی دہلی میں کانگریس کے صدر دفتر 24اکبر روڈ میں ہر سال 28دسمبر کو پارٹی کا یوم تاسیس تزک و احتشام کے ساتھ منایا جاتا ہے۔ دونوں جماعتوں نے یورپ کے سیاسی اور جمہوری نظام کی نقل کرکے عوام کو بااختیار بنانے اور اقتدار تک پہنچے کا راستہ اختیار کیا۔ مگر ایک صدی بعد دونوں پارٹیوں کا جائزہ لیتے ہوئے یہ عیاں ہوتا ہے کہ تنظیم کے ا ندر جمہوری اقدار کے فقدان کے سبب انہوں نے بنیادی اصولوں سے انحراف کیا ہے۔ دونوں پارٹیوں کا وجود اسوقت مخصوص خاندانوں کا مرہون منت ہے۔ ان کے بغیر ان کی کوئی وقعت ہی نہیں ہے۔ بھارت میں تو ویسے موجودہ کانگریس کے اندر1885کی کانگریس کی شبیہہ ابھی بھی کسی حد تک نظر تو آتی ہے، مگر پاکستان میں مسلم لیگ کسی بھی حالت میں 1906کی پارٹی کی جان نشین نہیں لگتی ہے۔ یورپ کی سیاسی جماعتوں کے برعکس کسی لائق و فائق فرد کو پارٹی کی کمانڈ نہ دینے سے اور ایک ہی خاندان پر تکیہ کرنے اور اندرونی جمہوریت کا جنازہ نکالنے سے ، دونوں نے اپنے اقدار سے سودا کیا ہوا ہے۔ بھارت میں تو کانگریس پارٹی کا حال تو قابل رحم ہے۔ 1988کے بعد اس پارٹی کو اپنے بل بوتے پر ابھی تک حکومت کرنا نصیب نہیں ہوا ہے۔ 1990میں نرسمہاراوٗ اور بعد میں 2004میں من موہن سنگھ ، اتحادیوں کی بیساکھیوں کے سہارے ہی اقتدار میں پہنچے۔ موجودہ حکمران ہندو قوم پرست بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) اور اسکی مربی تنظیم راشٹریہ سیوئم سیوک سنگھ (آر ایس ایس) کا اصل نشانہ بھی کانگریس ہے اور ا س نے تہیہ کیا ہواہے کہ بھارت سے کانگریس کو صاف کرنا ہے۔ اس میں اس نے خاصی حد تک کامیابی حاصل کی ہے۔ اگر بھارت کے انتخابی نقشہ کا جائزہ لیا جائے، تو پتہ چلتا ہے کہ لوک سبھا کی 543سیٹوں میں سے 190پر کانگریس کا براہ راست مقابلہ بے جے پی سے ہوتا ہے۔ ان میں سے کانگریس کو صرف 15 نشستوں پر پچھلے انتخابات میں کامیابی حاصل ہوئی ہے۔ یعنی کانگریس کے خلاف بی جے پی کا اسٹرائک ریٹ 90فیصد ہے، جبکہ دیگر علاقائی پارٹیوں کے خلاف اس کا اسٹرائک ریٹ 70 فیصد ہے۔ بی جے پی کے 38فیصد ووٹ بینک کے مقابلے کانگریس کا ووٹ بینک 20فی صد ہی ہے۔ مگر حقیقت یہ ہے کہ بی جے پی کے بعد کانگریس ہی اس وقت ملک کی واحد پارٹی ہے جس کا دائرہ ملک گیر سطح پر پھیلا ہوا ہے اور ملک کے ہر صوبے میں اس کی اکائی موجود ہے، مگر ملک کی بعض اہم ریاستوں میں اس کا تنظیمی ڈھانچہ بری طرح ٹوٹ پھوٹ گیا ہے اور وہ حاشیہ پر پہنچ گئی ہے۔ چند ماہ قبل ملک کے مقتدر سیاستدان اور نیشنلسٹ کانگریس پارٹی کے صدر شرد پوار نے کہا تھا کہ کانگریس پارٹی ایک ایسے جاگیردار کی طرح ہے، جس کا سب کچھ لٹ چکا ہے۔ زمینیں فروخت ہو چکی ہیں، حویلی خستہ ہو چکی ہے، مگر اسکی اناباقی ہے اور یہ انااسکو خواب سے حقیقت کی دنیا میں آنے نہیں دیتی ہے۔ پچھلے 30سالوں میں شمالی صوبوں بشمول اتر پردیش میں یہ سیاسی قوت کھو چکی ہے۔ان صوبوں میں مقامی سیکولر پارٹیو ں نے سیاسی خلا پر کر لی ہے۔ وہ کسی بھی صورت میں اپنی سیاسی زمین دوبارہ کانگریس کو دیکر اپنی بقا پر سوالیہ نشان نہیں لگا سکتے ہیں۔ 1998میں سونیا گاندھی ، جب پارٹی کی سربراہ مقرر ہوئی ، کانگریس کے تین اہم برین اسٹارمنگ اجلاس منعقد ہوئے ، جن میں پارٹی کی اسٹرٹیجی طے ہوئی۔ 1998میں مدھیہ پردیش کے مقام پنچ مڑی میں پاس کی گئی قرارداد، 2003کا شملہ سنکلپ اور پھر 2013میں جے پور اجلاس، اس پارٹی کی اہم سیاسی پڑائو رہے ہیں۔ گو کہ نرسمہاراوٗ کے وزارت اعظمیٰ کے وقت بھی پارٹی کی قیادت عملاً گاندھی فیملی کے پاس ہی تھی، مگر سونیا گاندھی نے براہ راست کمان 1998میں ہی سنبھالی۔ چونکہ پنچ مڑی کا اجلاس اس کے فوراً بعد ہی ہوا، اسلئے قرار داد میں طے پایا کہ پارٹی کسی اتحاد کے بغیر اپنے بل بوتے پر سیاسی زمین ہموار کرکے 1988کی پہلی والی پوزیشن میں آنے کی کوشش کرے گی۔ مگر متواتر انتخابات ہارنے اور خاص طور پر 2002میں گجرات کے مسلم کش فسادات سے دلبرداشتہ کمیونسٹ پارٹی آ ف انڈیا (مارکسسٹ ) کے لیڈر آنجہانی ہر کشن سنگھ سرجیت نے سونیا گاندھی کو قائل کیاکہ اکیلے چلنے کی حکمت عملی اور سیاسی زمین کی واپسی کی جدو جہد کے بجائے سیکولر اور لبرل فورسز کو اکٹھا کر کے ایک وسیع تر سیاسی اتحاد کی داغ بیل ڈا ل کر ہی اٹل بہاری واجپائی کی زیر قیادت بی جے پی اتحاد حکومت کا خاتمہ کیا جا سکتا ہے۔اسکے نتیجے میں کانگریس نے 2003کے شملہ اجلاس میں عہد کیا کہ ہم خیال سیکولر اور لبرل طاقتوں کے ایک اتحاد کی قیادت کرتے ہوئے بی جے پی کو اقتدار سے باہر کروایا جائے۔ اس کے نتیجے میں یونائٹڈ پروگر یسو الائینس یعنی یو پی اے وجود میں آیا اور 2004کے انتخابا ت میں بی جے پی کو شکست دیکردس سال تک حکومت کی۔ شملہ سنکلپ یا عہد میں بتایا گیا تھا کہ آرایس ایس کے نظریہ کے توڑ کیلئے پارٹی زمینی سطح سیکولراور لبرل نظریات کے فروغ کیلئے اسی طرح کا ایک نیٹ ورک قائم کریگی، مگر یہ وعدہ و ہ دس سال تک حکومت کرنے کے باوجود بھی پوری نہیں کرسکی۔(جاری ہے)

  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london
  • merkit.pk

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply