• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • حامد میر، اسد طور اور آزادی اظہار رائے۔۔چوہدری عامر عباس ایڈووکیٹ

حامد میر، اسد طور اور آزادی اظہار رائے۔۔چوہدری عامر عباس ایڈووکیٹ

تین روز قبل ایک سوشل میڈیا ایکٹیویسٹ اسد طور پر کچھ نامعلوم افراد کی جانب سے تشدد ہوا۔ پولیس ایف آئی آر  درج ہوئی، جس پر تحقیقات جاری ہیں۔

اسد طور کے حق میں گزشتہ روز سینئر صحافیوں نے احتجاج کیا۔ دورانِ احتجاج ایک معروف صحافی نے ملکی اداروں پر بغیر کسی ثبوت کے اور بلاجواز ہرزہ سرائی کی جو کہ انتہائی افسوسناک ہے۔ مانا کہ آپ بہت بڑے صحافی ہیں۔ مانا کہ آپ کے  ذرائع بہت بڑے ہیں، لیکن آپ بغیر ثبوت کسی پر براہ راست کیسے الزامات لگا سکتے ہیں؟

tripako tours pakistan

اگر کوئی ثبوت ہیں تو وہ متعلقہ تحقیقاتی اداروں کو دیں تاکہ مزید کارروائی ہو سکے۔ اگر وہاں آپکی تسلی نہیں ہوتی تو ملکی عدالتیں موجود ہیں۔

بہت سے دوست آزادیِ  اظہارِ  رائے کی بات کرتے ہیں لیکن وہ اس کی اصل روح کو نہیں سمجھتے۔ کسی بھی ملک کا آئین و قانون اپنے تمام شہریوں کو بلاتفریق اظہار ِرائے کی آزادی کا حق دیتا ہے۔ لیکن یہ حق بھی کچھ حدودِ و قیود کے تابع ہے۔ کچھ پابندیاں ہیں جن کے اندر رہ کر ہم اپنی رائے کا اظہار کر سکتے ہیں۔ آزادی اظہار رائے کی آڑ میں کسی دیگر ادارے یا شخص کی پگڑیاں اچھالنے کا حق قطعاً نہیں دیا جا سکتا۔

آئین و قانون ہمیں کہتا ہے کہ آپ اس آزادی کو پبلک میں آ کر منافرت، فرقہ واریت، انبیاء کرام، قرآن مجید اور دیگر الہامی کتب کی توہین، بغیر ثبوت کسی ادارے یا شخص کے خلاف ذاتی عناد پر مبنی مہم اور مخصوص ذاتی مقاصد کیلئے قطعاً استعمال نہیں کر سکتے۔

پاکستان میں آزادی اظہار رائے کی بات کرتے وقت دیگر ممالک کی بات کی جاتی ہے۔ ان ممالک میں بھی آزادی اظہار رائے کے بارے مکمل قانون سازی موجود ہے اور تمام شہری اور میڈیا اس قانون کے تابع ہیں۔ دوسرا یہ کہ ایسی بات کرنے والے لوگ یہ بھول جاتے ہیں کہ ان ترقی یافتہ ممالک میں سوشل میڈیا بارے عوام کو مکمل طور پر ایجوکیٹ کیا گیا ہے کہ اس کا استعمال کب اور کیسے کرنا ہے۔آزادی اظہار رائے کی آڑ میں کسی کو شتر بے مہار آزادی قطعاً نہیں دی جا سکتی کیونکہ اس طرح تو ریاست کا پورا نظام درہم برہم ہو جائے گا۔

سیاسیات کے طالبعلم کے طور پر معروف فلاسفر ہیگل کی تھیوری میں پڑھ چکا ہوں کہ  “غیر مشروط آزادی معاشرے میں خوف و دہشت پیدا کرتی ہے”۔ ہیگل کی اس تھیوری کی تائید میں بہت سے ریسرچ پیپرز اور آرٹیکل لکھے جا چکے ہیں اور یہ تھیوری آج بھی طلباء کو پڑھائی جا رہی ہے۔ کسی کے ہاتھ میں بندوق نما قلم دے کر آپ اسے یہ آزادی نہیں دے سکتے کہ وہ جو چاہے لکھے اور جو چاہے بولے۔ اس طرح تو ریاستی اداروں اور ریاست کے اندر بسنے والے شہریوں کا جینا حرام ہو جائے گا اور انارکی پھیلنے کا قوی امکان ہے۔

آزادی کی کچھ حدود و قیود ہیں، ہر شہری جس کے تابع ہے۔ کسی کی عزت پر انگلی اٹھانا بہت آسان ہے لیکن جب انسان کو خود اس ساری صورتحال سے گزرنا پڑے تو پھر اسے اندازہ ہوتا ہے۔

Advertisements
merkit.pk

آئین و قانون کے تابع رہ کر مفاد عامہ کیلئے بولنا اور لکھنا ہر شخص کا بنیادی حق ہے جس سے کسی کو محروم نہیں کیا جا سکتا البتہ میری آزادی رائے وہاں ختم ہو جاتی ہے جہاں دوسرے شہریوں اور ملکی اداروں کے حقوق شروع ہوتے ہیں۔ بصورت دیگر مادر پدر آزاد معاشرہ  زیادہ دیر تک اپنا وجود قائم نہیں رکھ سکتا۔ یہی بات نہ صرف ماہرین کہتے ہیں بلکہ عدلیہ بھی اپنے کئی فیصلوں میں واضح طور پر کہہ چکی ہے۔ اصول فطرت ہے کہ ہم سب کی آزادی ایک دوسرے کے حقوق کیساتھ جڑی ہوئی ہے۔

  • merkit.pk
  • merkit.pk

چوہدری عامر عباس
کالم نگار چوہدری عامر عباس نے ایف سی کالج سے گریچوائشن کیا. پنجاب یونیورسٹی سے ایل ایل بی کی ڈگری حاصل کرنے کے بعد ماس کمیونیکیشن میں ماسٹرز کی ڈگری حاصل کی. آج کل ہائی کورٹ لاہور میں وکالت کے شعبہ سے وابستہ ہیں. سماجی موضوعات اور حالات حاضرہ پر لکھتے ہیں".

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply