پی ایس ایل 4: ٹکٹس کے حوالے سے بڑی خبر

کراچی: وزیرِ بلدیات سندھ سعید غنی نے کہا ہے کہ اس سال پاکستان سپر لیگ کے 5 میچز کراچی میں منعقد کئے جارہے ہیں اور فائنل بھی 17 مارچ کو کھیلا جائے گا۔ ان میچوں کے انعقاد میں سیکورٹی کے تمام انتظامات کو حتمی شکل دے دی گئی ہے اور 15 فروری سے 17 مارچ تک کراچی میں میلا سجھانے کے لئے بھی تیاریاں کی جارہی ہیں۔

جمعہ کے روز کراچی میں PSL کے حوالے سے منعقدہ ایک اعلیٰ سطح کے اجلاس کے بعد پریس کانفرنس کرتے ہوئے سعید غنی کا کہنا تھا کہ تمام میچوں کے لئے ٹکٹ کا اجراء 20 فروری سے کیا جائے گا اور اس سال پی سی بی  کو کہا گیا ہے کہ وہ ٹکٹوں کی فروخت کے مراکز زیادہ سے زیادہ تعداد میں بنائے تاکہ عوام کو ان کی خریداری میں مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے۔

tripako tours pakistan

انہوں نے بتایا بتیس ہزار شائقین کی گنجائش والے نیشنل اسٹیڈیم میں سیکورٹی کے ساتھ ساتھ دیگر تمام انتظامات کو بھی یقینی بنایا جارہا ہے اور موبائل اسپتالوں کے ساتھ ساتھ اسٹیڈیم میں ایک اسپتال بھی قائم کیا جارہا ہے۔ اس موقع پر سیکرٹری داخلہ کبیر قاضی بھی ان کے ہمراہ موجود تھے۔

سعید غنی نے کہا کہ PSL کا انعقاد ایک خوش آئند اقدام ہے اور اس سے زیادہ خوشی اس کے 5 میچز کا کراچی میں انعقاد ہونا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے وزیر اعلیٰ سندھ نے ایک کمیٹی تشکیل دی ہے، جس کے چیئرمین انہیں نامزد کیا گیا ہے اور آج اس کمیٹی کا اجلاس منعقد ہوا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ گذشتہ PSL میں صرف ایک میچ کراچی میں منعقد ہوا تھا، لیکن اب ہماری رینجرز، پولیس اور دیگر امن و امان کے اداروں کی کاوشوں سے کراچی میں امن کی جو فضا قائم ہوئی ہے اس کے نتیجہ میں رواں سال ویسٹ انڈیز کی ٹیم نے بھی دورہ کیا اور کچھ دنوں قبل ویسٹ انڈیز کی خواتین کرکٹ ٹیم نے بھی کراچی میں میچز کھیلے۔

سعید غنی نے کہا کہ غیر ملکی کھلاڑیوں کا اعتماد بحال ہوا ہے اور اس بار کراچی میں فائنل کے ساتھ ساتھ اس ایونٹ کے 5 میچز کھیلے جارہے ہیں۔ ان میچوں اور کھلاڑیوں کی سیکورٹی کے حوالے سے تمام پلان مرتب کرلیا گیا ہے اور اس بار ہم نے کوشش کی ہے کہ کم سے کم سڑکوں کو بند کیا جائے اور خصوصاً اس بار یونیورسٹی روڈ کو عوام کے لئے کھلا رکھا جائے گا۔ جبکہ اسٹیڈیم کے اطراف واقع دو بڑے اسپتالوں میں مریضوں کو کسی قسم کی کوئی تکلیف نہ ہو اس کے لئے بھی انتظامات کئے جارہے ہیں۔

وزیر بلدیات نے کہا کہ پارکنگ کے لئے 7 جگہوں کو مختص کیا گیا ہے جبکہ وہاں سے عوام کو اسٹیڈیم میں لانے کے لئے شٹل سروس بھی چلائی جائے گی اور پارکنگ میں بھی تمام ضروری ضروریات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے گا۔ وزیر بلدیات سعید غنی نے کہا کہ تمام ٹیمیں 7 سے 17 مارچ تک کراچی میں ہوں گی اور اس دوران وہ پریکٹس بھی کریں گے اور میچز بھی کھیلے گی اس لئے ان کو لے جانے اور لے آنے اور ان کی سیکورٹی کے لئے بھی تمام پلان کو مرتب کیا گیا ہے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ اسٹیڈیم کے اندر اور باہر کے تمام سیکورٹی کے انتظامات رینجرز اور پولیس سنبھالے گی جبکہ پاک فوج کو اسٹینڈ بائی رکھا جائے گا۔ سیکورٹی کے لئے فضائی نگرانی کے لئے نائٹ وڑن ہیلی کاپٹرز کے لئے وفاقی حکومت کو خط لکھا جارہا ہے۔

سعید غنی نے کہا کہ 15 فروری سے کراچی بھر میں اس میچز کے حوالے سے بیوٹیفیکیشن کے کام کا بھی آغاز کیا جارہا ہے اور یہ میلا 17 مارچ تک جاری رہے گا۔ اس ایونٹ کی کوریج کے لئے ملکی اور غیر ملکی میڈیا کے لئے بھی پی سی بی خصوصی انتظامات کررہی ہے۔

ایک سوال کے جواب میں سعید غنی نے کہا کہ وزیر کھیل بھی اس کمیٹی کا حصہ ہیں اور آج انہوں نے اس مٹینگ میں بھی شرکت کرنا تھی تاہم ان کی والدہ کی طبعیت کی ناسازی کے باعث انہوں نے شرکت سے معزرت کی ہے بصورت دیگر وہ بھی اس میں مکمل طور پر شامل ہیں۔

Advertisements
merkit.pk

ٹکٹوں کے سوال پر انہوں نے کہا کہ گذشتہ فائنل میں بھی پی سی بی نے واضح طور پر مفت ٹکٹوں کی فراہمی بند کی تھی اور اس بار بھی کوئی فری ٹکٹ یا پاسز جاری نہیں کئے جائیں گے، البتہ اس کے آرگنائزرز اس سے مستثنیٰ ہوسکتے ہیں، میں بھی اپنے بچوں کے ساتھ ضرور میچ دیکھنے جاؤں گا لیکن ٹکٹ خرید کر جاؤں گا۔ گذشتہ PSL میں پانی سمیت کچھ دیگر خامیوں کے سوال کے جواب میں سعید غنی نے کہا کہ ان تمام خامیوں کو اس بار دور کرنے کے لئے کمیٹیاں تشکیل دی گئی ہیں جس میں ٹریفک، پارکنگ، صحت سمیت دیگر تمام معاملات کو دیکھا جارہا ہے اور گذشتہ کی کوتاہیاں اس بار نہ ہوں اس کے انتظامات کئے جارہے ہیں۔

  • merkit.pk
  • merkit.pk

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply