مفاد کی سیاست/ محمد علم اللہ

اروندر سنگھ لولی، دہلی کانگریس کے صدر کے عہدے سے سبکدوش ہونے کے ایک ہفتہ سے بھی کم وقت کے اندر ہی4 مئی 2024 کو بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) میں شامل ہو گئے۔ 2018 میں کانگریس میں دوبارہ شامل ہونے کے بعد بی جے پی میں یہ ان کی دوسری اننگ ہوگی۔ اس سے قبل 2019 کے بعد سے، بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) میں کانگریس کے ممتاز رہنماؤں کی بھیڑیا دھنسان کا مشاہدہ کیا گیا ہے، جو سیاسی وفاداریوں میں ایک قابل ذکر تبدیلی کی نشاندہی کرتا ہے۔ ان میں کرناٹک کے سابق وزیر اعلیٰ جگدیش شیٹر، کانگریس کے رہنما اور سابق مرکزی وزیراے کے انٹونی کے بیٹے انل انٹونی اور گجرات میں پائیدار برادری کے ایک سرکردہ رہنما ہاردک پٹیل شامل ہیں۔ اس رجحان میں آر پی این سنگھ، سابق مرکزی وزیر، سنیل جاکھڑ، سابقہ پنجاب کانگریس کے سربراہ اور امریندر سنگھ، پنجاب کے سابق وزیر اعلیٰ جیسی شخصیات بھی شامل ہیں۔ ان میں قابل ذکر جیوترادتیہ سندھیا ہیں، جنھوں نے بی جے پی میں شامل ہونے کے لیے کانگریس کے ساتھ اپنی تقریباً دو دہائیوں کی رفاقت ختم کردی، جس سے پارٹی میں عہدوں سے استعفوں کا سلسلہ وار ردِ عمل شروع ہوا۔ یہ انحرافات نا صرف انفرادی تبدیلیوں کی طرف اشارہ کرتے ہیں بلکہ ہندوستان کے سیاسی منظر نامے میں وسیع تر سیاسی صف بندیوں کی بھی نشاندہی کرتے ہیں جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ ہندستان میں نظریاتی سیاست کا فقدان ہے۔

پالا بدلنے کی یہ روایت ہندوستان کی سیاسی ثقافت میں سرائیت کر چکی ہے اور اس عمل کو عام طور پر’’آیارام گیارام‘‘والی سیاست کہا جاتا ہے۔ یہ اصطلاح 1976میں اس وقت رائج ہوئی جب گیا لال نے بار بار پارٹی چھوڑی اور یہاں سے وہاں اور وہاں سے یہاں آوا جاہی کرتے رہے۔ پچھلے پانچ برسوں میں تقریباً 500 ایم ایل اے یا ایم پی (ہندوستان کی 4664 قانون ساز نشستوں میں سے 9 فیصد) نے دوسری پارٹیوں میں شمولیت اختیار کی اور دوبارہ انتخاب لڑا۔ برازیل اور جنوبی افریقہ جیسے ترقی پذیر ممالک میں جمہوریتوں میں بھی اس طرح کے انحراف اور’’پالا بدلنے‘‘کی روایت عام ہے۔

میں ذاتی طورپر ایم ایل اے اور پارٹی کے ارکان کی اپنی پارٹی کے ساتھ وفاداری کو ہندوستانی تناظر میں ایک کمزور جانبدارانہ رشتہ سمجھتا ہوں۔ میرا ماننا ہے کہ پارٹی کے ساتھ کمزور جانبدارانہ تعلقات سیاسی مرکزیت کو فطری بناتے ہیں اور ہندوستانی سیاست میں عام ہو گئے ہیں۔ خاص طور پر سیاسی طاقت کی مرکزیت کے ذریعے پارٹی اور رائے دہندگان کے درمیان براہ راست سیاسی اتحاد پارٹی چھوڑنے کے منفی انتخابی نتائج کو کم کرتا ہے۔ درحقیقت یہ ملک کی علاقائی جماعتیں ہی تھیں جنھوں نے اس طرح کی انتہائی سیاسی مرکزیت میں سب سے پہلے حصہ لیا۔ اس لحاظ سے موجودہ صورتحال قومی سیاست کی ’’علاقائیت‘‘کی عکاسی کرتی ہے، یعنی علاقائیت کے عناصر قومی سیاست میں داخل ہو رہے ہیں۔

1990 کی دہائی میں کانگریس پارٹی کے زوال کا آغاز ہوا ، جو اب تک کا سب سے زیادہ غالب جماعتی نظام تھا ، جس میں بہت سی علاقائی جماعتوں نے انتخابات جیتے تھے۔ ایک سرسری جائزے سے پتہ چلتا ہے کہ ریاستی سطح پر قانون سازوں کے لیے پارٹیوں (ای این پی) کی مؤثر تعداد – ہر پارٹی کی جیتی ہوئی نشستوں کے طبقاتی تناسب کے مقابلے میں – 1986 میں تقریباً چار سے بڑھ کر 1996 میں آٹھ سے زیادہ ہوگئی۔ جنتا دل (سیکولر)، جنتا دل (یونائیٹڈ)،انڈین نیشنل کانگریس ، راشٹریہ جنتا دل اور ترنمول کانگریس سب سے زیادہ کامیاب نئی جماعتوں میں شامل ہیں۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ زیادہ تر نئی علاقائی پارٹیاں بنیادی طور پر ’’خاندانی کمپنیاں‘‘ رہی ہیں اور پارٹی کے بانی اور ان کے خاندان کے ارکان کے کنٹرول میں ہیں۔ ہم اس زوال پذیر عمل کی وضاحت کیسے کر سکتے ہیں جب کانگریس پارٹی کے کمزور ہونے کی تلافی جمہوری سیاست کی ترقی سے کی جانی چاہیے تھی؟

جب ممکنہ ایم ایل اے اپنی کمزور جانبدارانہ وابستگی کا مظاہرہ کرتے ہیں، تو کم برانڈ اقدار والی نئی پارٹیوں کے پارٹی میں شامل ہونے کا امکان زیادہ ہوتا ہے، خاص طور پر انفرادی امیدواروں سے۔ نتیجتاً ، نئی جماعتیں مستحکم پارٹی ووٹ شیئر حاصل کرنے کے لیے انفرادی امیدواروں کی مقبولیت پر انحصار کرنے سے بچتی ہیں۔ ایسی صورت حال میں ایک نئی پارٹی کے لیے بہترین حکمت عملی یہ ہوتی ہے کہ ’’سیاسی اختیار‘‘ کو مرکزیت دی جائے تاکہ ووٹر اور سیاسی جماعت کے رہنما کے درمیان براہ راست رابطہ قائم ہو اور ہر ایک امیدوار کا پارٹی کی اپیل اور انتخابی نتائج پر کم سے کم اثر ہو۔ یہ اکثر پارٹی تنظیم کو مضبوط بنانے کے ساتھ ساتھ حکومت اور میڈیا کے وسائل کو متحرک کرکے کیا جاتا ہے تاکہ کسی سیاسی جماعت کے سربراہ کی تعریف کی جاسکے۔ اگرچہ ایسا کرنے کا رواج ریاستی سطح کے انتخابات میں پہلے سے موجود ہے ، لیکن اب یہ حربہ بی جے پی اور مودی کی سطح پر قومی سطح پر بھی اپنایا جارہا ہے۔ اس سیاسی چال کا بنیادی مطلب یہ ہے کہ کسی سیاسی جماعت کی مقبولیت کا انحصار پالیسی نتائج اور وعدوں کی تکمیل کے بجائے اس کے رہنما کی دیانت داری پر ہوتا ہے۔لہٰذا ہم جس سیاسی مرکزیت کا مشاہدہ کر رہے ہیں وہ اس ماڈل کے برعکس ہے جس میں شہری اپنے براہ راست نمائندوں کو معاشی کارکردگی کے معیار کے لیے جوابدہ ٹھہراتے ہیں۔سیاسی طاقتوں کی مرکزیت کے عمل میں شہریوں کو براہ راست ٹارگٹڈ ٹرانسفر کی سہولت فراہم کرنے میں تکنیکی تبدیلیوں نے اہم کردار ادا کیا ہے۔ خاص طور پر، نئے فلاحی ڈھانچے نے فلاحی اسکیموں کی فراہمی کو برانڈ کرکے زیادہ مقامی رہنماؤں کے بجائے پارٹی کے سیاسی سربراہ کے ارد گرد سیاسی طاقت کو مرکزیت دینے کے عمل کو آسان بنا دیا ہے۔

ہندوستانی تناظر میں یہ پالیسی اور تکنیکی تبدیلی دو بڑی وجوہات کی بنا پر ممکن ہوئی ہے۔ پہلی بڑی وجہ ہندوستان کا یونیورسل آئیڈینٹیفکیشن پروگرام (آدھار) اور ہندوستان کی بڑی آبادی کو رسمی بینکاری نظام کے ساتھ ضم کرنے کے لیے’’ جن دھن یوجنا‘‘ بینک کھاتوں کی توسیع ہے۔ ’’جن دھن یوجنا‘‘کے تحت بینک کھاتوں کی اس توسیع کی وجہ سے حکومت بہت موثر طریقے سے کئی سرکاری اسکیموں کی فائدہ مند رقم براہ راست بینک کھاتوں میں منتقل کرنا شروع کر سکتی ہے۔ اس کی وجہ سے حکومت مقامی مڈل مین اور دیگر مقامی سیاستدانوں کو نظر انداز کر سکتی ہے اور انھیں معاشی فوائد فراہم کرنے کے کریڈٹ سے محروم کر سکتی ہے۔ جسے اروند سبرامنیم نے ’’ضروری نجی سامان اور خدمات کی عوامی فراہمی‘‘ کا نچوڑ قرار دیا ہے۔ دوسری بات یہ ہے کہ مختلف قسم کی جدت طراز برانڈنگ کے ذریعے پارٹی سربراہ نے احتیاط سے تیار کردہ اشتہارات، میڈیا مینجمنٹ اور پارٹی تنظیم پر اپنا کنٹرول مضبوط کرکے فلاحی اسکیموں کا کریڈٹ لینے میں کامیابی حاصل کی ہے۔ ایسا پہلے کبھی نہیں ہوا۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ مرکزیت کا یہ عمل مقامی سیاسی ثالثوں کے متحرک نظام کے متوازی چلتا ہے جو شہریوں کی جانب سے حکومت کے ساتھ مذاکرات کرتے ہیں۔ اس واضح تضاد کو منطقی شکل دینے کے لیے یہ دیکھنا ضروری ہے کہ ہندوستان کو وسیع پیمانے پر ’’کمزور ادارہ جاتی نظام‘‘ کے طور پر دیکھا جاتا ہے جس میں رائے دہندگان اور پارٹی کے درمیان تعلق ایک مضبوط نظام فکر پر نہیں بلکہ معاشی فراہمی پر مبنی ہے۔ اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ہندوستانی سیاست میں نظریے کی کوئی واضح جہت نہیں ہے۔ یہ نظریاتی اختلاف پارٹی کے مقابلے اور امیدواروں کے انتخاب میں واحد عنصر نہیں ہوسکتا ہے۔ اس کے باوجود ہندوستان میں بجٹ مختص کرنے اور فلاحی فنڈز مختص کرنے کا فیصلہ پارٹی اور حکومتی قیادت کرتی ہے۔ ان تکنیکی اختراعات نے الاٹمنٹ کے فیصلوں اور کریڈٹ لینے کے درمیان تعلق پیدا کیا ہے ، اور سیاسی طاقت کی زیادہ مرکزیت کا باعث بنا ہے۔

مزید برآں، پارٹی ٹکٹوں کی تقسیم اب بھی پارٹی قیادت کی طرف سے انتہائی مرکزیت رکھتی ہے (کسی بھی بڑی پارٹی کے پاس پرائمری انتخابات نہیں ہیں) اور اس طرح امیدواروں کی دوبارہ نامزدگی پارٹی قیادت کے وسیع مقاصد پر منحصر ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ مقامی کارکردگی کے باوجود’’بین الجماعتی جمہوریت کے فقدان‘‘والی مرکزی جماعتیں عام طور پر مقامی اقتدار کے بگڑتے ہوئے عمل کو روکنے کے لیے ایک ہی امیدوار کو دوبارہ نامزد کرنے کا امکان نہیں رکھتی ہیں۔

درحقیقت ہندوستان کے 2014 کے عام انتخابات میں، جس میں مودی اقتدار میں آئے تھے، پارلیمنٹ کے موجودہ ارکان کے پاس دوبارہ نامزدگی کا امکان صرف 53 فیصد ہے۔ یہاں تک کہ اگر انہیں دوبارہ نامزد بھی کیا جاتا ہے تو موجودہ امیدوار کے منتخب ہونے کے امکانات صرف 50 فیصد ہیں اور مجموعی طور پر 27 فیصد کی شرح اقتدار ہے اور یہ نمونہ ریاستی سطح پر بھی برقرار ہے۔

ہندستان کی سب سے بڑی ریاست اتر پردیش میں 1977 کے بعد سے کم از کم 60 فیصد ایم ایل اے رہے ہیں اور حالیہ ریاستی سطح کے انتخابات میں پہلی بار ایم ایل اے بننے والے ایم ایل اے کا تناسب 78 فیصد ہے۔ یہ عمل اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ مقامی رہنما مرکزی قیادت کے سیاسی اختیار سے دستبردار نہ ہوسکیں۔

Advertisements
julia rana solicitors

ان تمام حقائق کے باوجود اس بات سے انکار نہیں کیا جا سکتا کہ بی جے پی کی پارٹی تنظیم اور نریندر مودی کی ہندو قوم پرستی نے ہندوستان میں سیاسی مرکزیت کے عمل میں زیادہ کردار ادا نہیں کیا۔ تاہم، یہ تسلیم کرنا ضروری ہے کہ مرکز میں موجودہ سیاسی مرکزیت ریاستی سطح پر تیار کردہ ہندوستان کے موجودہ نظام کا جواب ہے۔ میں یہاں یہ دکھانا چاہتا ہوں کہ سیاسی مرکزیت کا عمل ایک سے زیادہ رہنماؤں یا پارٹیوں کے بارے میں نہیں ہے، بلکہ ملک بھر میں موجود تنظیمی حقیقت کے بارے میں ہے۔

Facebook Comments

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply