• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • خیبرپختونخوا کی سیاست وسیع تر رجحان کی عکاس/ قادر خان یوسف زئی

خیبرپختونخوا کی سیاست وسیع تر رجحان کی عکاس/ قادر خان یوسف زئی

پاکستان انتخابات کے ایک اور دور کی تیاری میں، صوبہ خیبر پختونخوا ایک اہم میدان جنگ کے طور پر ابھر رہا ہے جہاں سیاست کا رخ ہمیشہ غیر یقینی رہا۔ قائم کردہ روایت کو توڑتے ہوئے، پاکستان تحریک انصاف نے کے پی میں مسلسل دو بار اقتدار حاصل کیا ۔ تاہم، جیسے جیسے سیاسی ہوائیں بدلتی رہتی ہیں، صوبے کو منفرد چیلنجوں کا سامنا ہے جو اسے اس کے ہم منصبوں سے ممتاز کرتے ہیں۔ روایتی طور پر، کے پی اپنے سیاسی تنوع اور مختلف جماعتوں کے درمیان متبادل طاقت کے ل جانا جاتا ہے۔ پی ٹی آئی کی لگاتار دوہری کامیابیوں نے اس تاریخی طرز کو درہم برہم کیا، جس سے صوبے میں ابھرتے ہوئے سیاسی منظر نامے پر سوالات اٹھے۔ پی ٹی آئی کے لیے چیلنج نا صرف تیسری بار جیتنا ہے بلکہ اپنی صفوں میں اندرونی تقسیم کو سنبھالنا بھی ہے۔ سابق حکمران جماعت کی سیاسی میدان میں غیر موجودگی سے دیگر سیاسی جماعتوں کو اپنی حکمت عملیوں کا از سر نو جائزہ لے کر عوام کی حمایت حاصل کرنا ہوگی۔

عوامی نیشنل پارٹی ، ایک قوم پرست جماعت، جس کی جڑیں اس خطے میں گہری ہیں۔ تاہم، اس کے رہنما اسفند یار ولی خان کی ملکی سیاسی منظر نامے سے عدم موجودگی نے پیچیدگی کی ایک پرت کو بڑھا دیا ہے، اور پارٹی کو آئندہ انتخابات میں موثر طریقے سے مقابلہ کرنے کے لیے ایمل ولی کی قیادت پر غیر یقینی کی فضا چھائی ہوئی ہے ، گو کہ بیشتر کارکنان انہیں’ ولی باغ‘ کا جانشین سمجھتے ہیں لیکن درپیش چیلنجز میں ان کے مقابل خود پارٹی کے وہ سینئر رہنما بھی ہیں جن کی سیاسی خدمات و قربانیوں کی طویل تاریخ ہے، صوبہ خیبر پختونوا میں مذہبی محاذ جے یو آئی ( ف) خود کو ایک دوراہے پر پاتی ہے ، جہاں مولانا فصل الرحمان کا میاں نواز شریف سے محتاط رویہ بذات خود سوالیہ نشان ہے۔ پاکستان مسلم لیگ ، پاکستان پیپلز پارٹی جماعت اسلامی کو اب موجودہ بکھری ہوئی پی ٹی آئی کے خلاف مقابلہ کرنا ہے جہاں مختلف علاقائی سیاسی اتحاد کا مقابلہ واضح طور پر کے پی میں سیاسی بیانیے میں ایک دلچسپ جہت کا اضافہ کرتا ہے۔ بالخصوص ان پیچیدگیوں کے درمیان، پی ٹی آئی خود اندرونی چیلنجوں سے محفوظ نہیں ہے۔ پی ٹی آئی کے اند ٹوٹ پھوٹ کے بعد یہ داخلی تقسیم صوبے میں پارٹی سیاست کی پیچیدگی کو واضح کرتی ہے اور انتخابی مساوات میں غیر متوقع ہونے کے عنصر کو متعارف کراتی ہے۔ اس سیاسی کشمکش میں کے پی کو جو چیز الگ کرتی ہے وہ عوامی جذبات میں خاص طور پر نوجوان نسل میں واضح تبدیلی ہے۔ روایتی سیاسی جماعتیں اور قوم پرست خود کو نئی نسل کے نظریات اور امنگوں سے ہم آہنگ کرنے کے لیے کوشاں ہیں۔ چیلنج صرف ووٹ حاصل کرنے میں نہیں بلکہ اس عوام کے ساتھ گونجنے میں ہے جو سیاسی رہنماں سے اپنی توقعات اور مطالبات کے بارے میں تیزی سے آواز اٹھا رہا ہے۔

عوامی نیشنل پارٹی، ایک سیاسی جماعت جو کبھی دہشت گردی کے خلاف ایک علامت تھی، اپنے آپ کو ایک ایسے دوراہے پر پاتی ہے جس میں اثر و رسوخ میں واضح کمی واقع ہوئی ہے، خاص طور پر سندھ اور عملی طور پر خیبر پختونخوا میں جماعت کا مستقبل کئی سوالات اٹھا رہا ہے ۔ نئے لیڈر کے طور پر ایمل ولی کا ابھرنا اے این پی کے چیلنجوں کا علاج ثابت نہیں ہوا۔ مرکزی قائدین کی سندھ میں غیر فعالیت اور کے پی میں ورچوئل غیر موجودگی ایک مخصوص رجحان کی نشاندہی ہے، جس سے ایک ایسا خلا پیدا ہوا جسے دوسرے سیاسی کھلاڑیوں، نے پُر کیا ۔ اے این پی کے ووٹروں اور حامیوں کا مختلف سیاسی حلقوں میں منتقل ہونا پارٹی کی قیادت کی تاثیر، بدلتی ہوئی سیاسی حرکیات کے ساتھ گونجنے کی اس کی صلاحیت، اور ووٹرز کے لیے اس کی اپیل کے بارے میں اہم سوالات اٹھاتا ہے۔ ان خطوں میں اے این پی جیسی جماعتوں کو ان وسیع تر چیلنجوں کا سامنا سیاسی جماعتوں کو عوامی جذبات کے مطابق ڈھالنے میں ہے۔
ووٹر، خاص طور پر کے پی جیسے علاقوں میں، سمجھدار ہے وہ ایک ایسی قیادت کا مطالبہ کر رہا ہے جو نہ صرف ان کی تاریخی جدوجہد کی نمائندگی کرے بلکہ ان کی موجودہ دور کی توقعات کے مطابق ہو۔ بدلتے ہوئے سیاسی دھاروں میں بکھری ہوئی سیاسی جماعتوں کی اس منظر نامے میں مطابقت کے بارے میں سوالات اٹھایا جارہا ہے جسے نئے بیانیے اور ابھرتی ہوئی سیاسی قوتوں کے ذریعے تبدیل کیا گیا۔ جیسا کہ ہم ان علاقوں میں اے این پی ، جے یو آئی ، مسلم لیگ ، پی پی پی کے زوال پر غور کرتے ہیں جہاں کبھی ان کا غلبہ تھا، یہ ضروری ہو جاتا ہے کہ قیادت کے پیچیدہ باہمی عمل، سیاسی حکمت عملیوں اور ووٹرز کے ابھرتے ہوئے مطالبات کو تسلیم کیا جائے۔ سیاسی اداروں کو ان لوگوں کی امنگوں کے مطابق ڈھالنے، جڑنے اور گونجنے کی ضرورت پر زور دیا جاتا ہے جن کی وہ نمائندگی کرنا چاہتے ہیں۔ خیبر پختونخوا کے عوام کو آج بھی ایسے لیڈروں کی تلاش ہے جو انہیں ان کے ابھرتے ہوئے خوابوں اور امنگوں کے مطابق مستقبل کی طرف لے جا سکیں۔

Advertisements
julia rana solicitors

مختصراً، خیبرپختونخوا کی سیاست ایک وسیع تر رجحان کی عکاسی کرتی ہے جہاں روایتی پارٹی لائنوں کو چیلنج کیا جا رہا ہے، اور ایک نئی نسل زیادہ ترقی پسند، جوابدہ اور جوابدہ سیاسی قیادت کا مطالبہ کرتی ہے۔ یہ صوبہ پاکستان میں ابھرتی ہوئی سیاسی حرکیات کے مائیکرو کاسم کے طور پر کھڑا ہے، جہاں عوام کی امنگوں کے ساتھ موافقت اور گونج سیاسی ہواؤں کے رخ کا تعین کرے گی۔

Facebook Comments

قادر خان یوسفزئی
Associate Magazine Editor, Columnist, Analyst, Jahan-e-Pakistan Former Columnist and Analyst of Daily Jang, Daily Express, Nawa-e-Waqt, Nai Baat and others. UN Gold medalist IPC Peace Award 2018 United Nations Agahi Awards 2021 Winner Journalist of the year 2021 reporting on Media Ethics

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply