فریضہ حج کی ادائیگی سے پہلے۔۔ڈاکٹر مجاہد مرزا

مجھے 8 اکتوبر 2013 کو حج کی سعادت پانے کی خاطر ارض مقدس کے لیے روانہ ہونا ہے۔ مجھے کچھ اعترافات، انکشافات اور شکایات کا اظہار کرنا ہے، جس کے لیے اس سے اچھا موقع نہیں ہو سکتا۔ میں ایک زیادہ ہی مذہبی گھرانے کا فرد تھا، جہاں کروڑوں مسلمانوں کی طرح مذہب کے ساتھ وابستگی کی بنیاد عقلیت پسندی کی بجائے عقیدت پرستی تھی اور ہے۔ گھرانہ خالص دیوبندی تھا، مذہب سے شیفتگی کی وجہ میری والدہ تھیں جو ایک معروف عالم گھرانے سے تعلق رکھتی تھیں۔
ہمارے والد کوئی اتنے زیادہ مذہبی نہیں تھے البتہ نماز پڑھ لیتے تھے اور روزے بھی رکھ لیتے تھے۔ میرے والد کا اس زمانے کے لاکھوں کا کاروبار، جسے کہتے ہیں ایک رات میں بیٹھ گیا تھا۔ بتدریج گھر میں غربت آن بسی تھی لیکن سفید پوشی کا دھیان رکھا جاتا تھا جس میں دنیا داری زیادہ ہوتی تھی۔ میں بچہ تھا مجھے تب سے دنیا داری زہر لگنے لگی تھی۔ کچھ اللہ سے گلہ تھا کہ ایسا ہمارے ساتھ ہی کیوں ہوا۔ تب میں ساتویں جماعت میں تھا۔ کہیں گیارھویں جماعت میں جب میں گورنمنٹ کالج لاہور میں ایف ایس سی کا طالبعلم تھا تو مذہب میں عقیدت پرستی کے عنصر سے چڑ ہونے لگی تھی۔ اسی اثناء میں ذوالفقار علی بھٹو منصہ شہود پہ نمودار ہوئے تھے اور پہلی بار سوشلزم کی اصطلاح سے شناسائی ہوئی تھی مگر اس نظام معیشت کے بارے میں سرسری آگاہی کے باوجود میرا میلان مذہب کی جانب ہی زیادہ رہا تھا۔ نشتر میڈیکل کالج کے پہلے سال میں “تبلیغی جماعت” کے ساتھ وابستگی ہو گئی تھی۔ دوسرے سال میں پشاور یونیورسٹی کی مسجد میں ایک باقاعدہ ڈاکٹر تبلیغی بھائی نے جب گفتگو کے دوران میرے ہاتھوں اور رانوں کو سب کے سامنے “اکرام مسلم” میں ایسے سہلانا شروع کیا تھا جیسے اظہار شفقت کر رہے ہوں مجھے پہلی بار جھرجھری آئی تھی۔ اس سے پہلے بھی مساجد میں میں اس قسم کی معیوب حرکات دیکھ چکا تھا لیکن خود پہلی بار ایسی حرکت کا شکار ہو رہا تھا۔ مارے خوف اور کراہت کے میں باہر نکل گیا تھا اور کہیں رات ایک بجے لوٹ کر مسجد میں چپکے سے سو گیا تھا۔ واپسی پہ ہماری ویگن گوجر خاں کے نزدیک کھائی میں جا گری تھی۔ چھت کے بل گری ویگن میں میں فرنٹ سیٹ پر تھا لیکن مجھے کوئی چوٹ نہیں آئی تھی۔ تاہم جونہی میں نے کہنی سے کھڑکی کا شیشہ توڑ کر باہر نکلنا چاہا تھا تو کوئی گرم گرم مائع میرے چہرے پہ آ گرا تھا۔ میری آنکھوں میں بیٹری کا تیزاب چلا گیا تھا۔ میں کئی ماہ نابینائی، کم بینائی اور چکا چوندھ بینائی کے غیر عمومی عمل میں مبتلا رہا تھا۔ اب میں مذہب اور وجود خدا کے بارے میں مشکوک ہو گیا تھا۔ نماز پڑھنا چھوڑ دی تھی۔ ایک خاص واقعے کے بعد اقدام خود کشی کر لیا تھا اور پس از مرگ تحریر میں لکھا تھا،”میں خود مر رہا ہوں مجھے خدا نہیں مار رہا” لیکن ان دو دوستوں کی دوستی جو دونوں اب مرحوم ہیں ایک جوانی میں خود کشی کے باعث اور دوسرا چند روز پیشتر طبعی موت کے باعث اور ڈاکٹروں کی محنت کے طفیل مرنے سے بچا لیا گیا تھا۔ ظاہر ہے کہ اللہ نے ہی بچایا تھا۔ اس شرمندگی نے مجھے اور ڈھیٹ کر دیا تھا۔ اب میں مذہب مخالف ہو گیا تھا اور ساتھ ہی مزدور دوستی کی جانب راغب بھی۔ البتہ اس سارے عرصے میں اللہ گواہ ہے، میں نے کبھی نہ تو مذہب کی اور نہ ہی اس سے وابستہ شخصیات کی توہین کرنا تو درکنار ایسا کرنے بارے سوچا تک نہیں تھا، جس کی وجہ جو میں سمجھتا تھا وہ یہ تھی کہ میں انسان اور الوہ کے تعلق کو لوگوں کا ذاتی مسئلہ سمجھتا ہوں لیکن دراصل یہی شے مذہب کی وہ رمق تھی جو مجھ میں باقی رہ گئی تھی۔ وقت گذرتا گیا، علم ،دلیل، عقلیت پسندی پہ تکیہ کیا اور لہو لعب سے بھی غافل نہیں رہا۔
9 مارچ 1999 آ گیا۔ تب میں ماسکو میں تھا۔ کسی نے دن چڑھے سر راہ عقب سے میرے سر پہ وار کیا تھا۔ میری کھوپڑی تین جگہ سے چٹخ گئی تھی۔ خون میرے حرام مغز تک سرایت کر گیا تھا۔ ڈاکٹروں نے کہا تھا کہ چوبیس گھنٹوں کے دوران موت واقع ہو سکتی ہے لیکن مجھے یقین تھا کہ میں نہیں مروں گا۔ مجھ پہ عالم بیہوشی میں کچھ آشکار ہو گیا تھا۔ میں نے ماورائیات اور کونیات پڑھنا شروع کر دیے تھے بلکہ پیرا سائینس کا ایک کورس بھی کر لیا تھا۔ روس چھوڑ کر امریکہ چلا گیا تھا۔ ماہرین نفسیات کا کہنا ہے کہ بعض اوقات سر پہ گہری چوٹ لگنے کی وجہ سے انسان روحانیات کی جانب راغب ہو جاتا ہے لیکن مجھے روحانیات کی جانب کوئی رغبت نہ ہو پائی تھی ، ہاں البتہ میں یہ سمجھ چکا تھا کہ شعور سے آگے بھی کچھ ہے ضرور۔
امریکہ میں رہتے ہوئے کچھ کچھ مذہب کی جانب لوٹ آیا تھا۔ لیکن مجھے مکمل طور پر مذہب کی جانب لوٹانے میں، شاید آپ کو یقین نہ آئے امریکہ کے سابق صدر جارج بش جونیر نے بہت بڑا کردار ادا کیا تھا جب انہوں نے نو ستمبر کے واقعے کے بعد ہمارے تمدن یا تہذیب کو مطعون کیا تھا۔ اسلام کو اگر صرف مذہب نہ بھی لیا جائے تو وہ ہمارے ملک کی ثقافتی تہذیب کا ایک اہم ترین حصہ ہے۔ یوں بش نے ہماری ثقافت کو چیلنج کیا تھا۔ میں شاید اپنے رویوں میں انتہا پسند ہوں اپنے گھر والوں کی طرح۔ میں نے یکسر دوسری جانب زقند بھر لی تھی۔ اب میرا لہو لعب سے کوئی سروکار نہیں تھا۔ میں ملا نہیں بن گیا تھا لیکن نماز پڑھنا اور روزے رکھنا باقاعدہ عمل ہو گئے تھے۔ روس میں رہتے ہوئے مجھے احساس تک نہیں ہوتا کہ یہاں شراب بھی عام بکتی ہے۔
اب ایک نیا مسئلہ کھڑا ہو گیا تھا ۔ میرا حلقہ دوستاں اگرچہ خاصا وسیع ہے لیکن خیالات کی ہم آہنگی انہیں کے ساتھ تھی جو خود کو میری طرح روشن خیال سمجھتے ہیں، لیکن میں ان کے لیے تقریبا” بیگانہ ہو چکا تھا کیونکہ نہ تو میں ان کے بہت سے خیالات سے ان کی طرح متفق ہو سکتا ہوں اور نہ ہی ان کی ان محفلوں میں شامل ہو سکتا ہوں جن میں خالی خولی گفتگو نہیں ہوتی اور نہ ہی میں محتسب کا کردار ادا کر سکتا ہوں۔ پہلے پہل تو انہوں نے سمجھا کہ جو کچھ میرے ساتھ ہو رہا ہے وہ ایک عارضی دور ہے، ختم ہو جائے گا مگر جب سالہا سال بیت گئے تو وہ مجھ سے دور ہو گئے بلکہ ملا، مولوی، پاگل، دماغ خراب وغیرہ کہنے لگے۔ وہ لوگ جو مذہب کو محض عقیدت تصور کرتے ہیں اور مذہب سے متعلق اجتہادانہ نکات کو سنتے ہی کانوں کو ہاتھ لگا لیتے ہیں یا خشمگیں ہونے لگتے ہیں ان کے ساتھ میری نہیں بن پاتی۔ تیسرے وہ ہیں جو تمام مذہبی عوامل سے بھی بہرہ ور ہوتے ہیں اور دنیاوی اعمال کو بھی من و عن وطیرہ بنائے رکھتے ہیں ان کی مجھے سمجھ نہیں آتی کہ وہ اللہ تعالٰی کو محض رحمٰن و رحیم ہی کیوں سمجھتے ہیں جو ان کے خیراتی اعمال کی وجہ سے ان کے برے عمل بخش دے گا مثلا” مجھے سمجھ نہیں آتی کی وہ لوگ جو خود کو شدومد سے مسلمان ثابت کرتے ہیں اور عیوب سے بھی ہاتھ نہیں آٹھا پاتے وہ پھر کیونکر مسلمان ہیں۔
ایسے لوگ بہت زیادہ ہیں جو ملک سے باہر آتے ہیں تو کھلتے ہیں۔ اگر پاکستان میں بھی شخصی آزادی ہوتی تو وہ سب کچھ عیاں ہورہا ہوتا جو آج مخفی ہو رہا ہے۔ مجھے ذاتی طور پہ ان لوگوں پہ اعتراض نہیں ہے، صرف اعتراض ہے تو یہ کہ وہ خود کو مسلمان کیوں کہتے ہیں۔ کیا مسلمان ہونا صرف کلمہ پڑھ لینے کا نام ہے؟ میں ان پہ تو معترض ہوں لیکن خود حج پہ جاتے ہوئے میری سوچ کس قدر خلجان کا شکار ہے، میں جانتا ہوں لیکن لوگ تو عقیدت میں دیوانے ہیں چنانچہ وہ باتیں کیا کرنی جنہیں میں اجتہادی نکات کہتا ہوں۔ آج تو زمانہ طالبان کے اسلام کا ہے جنہیں یہ پتہ نہیں کہ ان کے جانی دشمن بش کے ایک عمل سے میرے جیسے کتنے لوگ اسلام کی جانب لوٹے ہیں۔ طالبان ایک تنظیم کا نام نہیں بلکہ ایک رویے کا نام ہے جو عقیدت پرست ہیں جنہیں، عقل، استدلال، رواداری اور اتحاد بین المذاہب کے بارے میں کچھ بھی معلوم نہیں ہے۔ چنانچہ آپ سے یہی درخواست ہے کہ میرے ساتھ ساتھ طالبان کے لیے بھی دعا کریں کہ وہ انسان بن جائیں اور انسان دوستی کو شعار بنائیں جو کسی بھی مذہب کی اصل الاساس ہے۔
سوویت یونین کے دارالحکومت ماسکو کو اشتراکیت نواز افراد کا مکہ کہا جاتا تھا۔ اس کی وجہ مکہ کا لوگوں کے لیے مکہ ہونا تھا کیونکہ کم علم مسلمانوں کا جم غفیر مکہ کی تعظیم کو تقدیس کا چولا پہنانے کا مرتکب پوتا ہے۔ ماسکو سے متعلق بھی بائیں بازو کے عقیدہ پرستوں کا تصور کچھ اسی قسم کا ہوا کرتا تھا۔ اصل میں مکہ وحدانیت پرستی کا مرکز تھا اور ماسکو کو اشتراکیت پرستی کا مرکز سمجھا جاتا تھا۔
تعظیم اور تقدیس میں اتنا ہی فرق ہوتا ہے جتنا عقیدے اور عقیدت میں۔ عقیدہ یا ایمان منطقی یا الوہی (یاد رہے الوہیت بالکل بھی منطق سے مبرّا نہیں، یہ اور بات ہے کہ منطق کے کچھ زاویے شعور سے بالا تر ہیں) اصولوں کو تسلیم کرکے ان پر عمل درآمد کرنے کی دیانت دارانہ سعی کا نام ہے جبکہ عقیدت کسی فرد، مقام یا معاملے سے بلاجواز والہانہ بلکہ مجنونانہ وابستگی سے عبارت ہوتی ہے۔ چونکہ عقیدت احترام سے فروتر ہوتی ہے اس لیے وہ بیشتر اوقات عقیدے یا ایمان کی اصل ہئیت کو مسخ کرنے کا موجب بن جایا کرتی ہے۔ کیا کبھی کسی نے کسی کو یہ کہتے سنا ہے کہ اسے اللہ تعالٰی سے عقیدت ہے یا کسی ملک میں توہین الٰہی سے متعلق کوئی قانون ہے؟ نہیں ناں۔ اس کی وجہ یہی ہے کہ اللہ سے پیار کیا جا سکتا ہے، لو لگائی جا سکتی ہے، احترام و تعظیم پیار کا جزو ہوتے ہیں مگر عقیدت کوئی بہت ہی دنیاوی قسم کی شے ہے۔ میں نے اس دور میں بھی جب میں باقاعدہ پاکستان کی کمیونسٹ پارٹی کا رکن تھا، ماسکو سے عقیدت روا نہیں رکھی تھی چہ جائیکہ کسی شہر کا احترام کرنے کی بدعت کا مرتکب ہوتا۔
لیکن اب میں اس شہر کا احترام کروں گا کیونکہ مجھے اس شہر سے ہی مدینہ منورہ اوروہاں سے مکہ مکرمہ جانے کی سعادت نصیب ہوئی ، جس کے بارے میں میں نے سوچا تک نہیں تھا۔ یوں میرے لیے یہ بدعت “نعمت البدعۃ” یعنی اچھی بدعت ہوگی۔ ایمان کی ضرورت اور اہمیت بھی مجھ پر ادھیڑ عمری میں اسی شہر میں منکشف ہوئی تھی۔ میں نے کچی عمر میں ہی آباء کے مذہب کو بقول وراثت قبول کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ 9 مارچ 1999 کو پیش آنے والے ایک حادثے کے بعد میری چولیں جو مقام سے ہٹی ہوئی تھیں بتدریج اپنے درست مقام پہ واپس آنا شروع ہو گئی تھیں جبکہ میرے سابق ہم خیال لوگوں کے مطابق میری چولیں پہلے درست مقام پر تھیں اور اب ہلنا شروع ہو گئی ہیں۔ بہر حال ایک یکسر تبدیلی کا عمل جاری ہے، سفر حج بھی اسی تبدیلی کا حصہ تھا۔

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors
  • julia rana solicitors london
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

ڈاکٹر مجاہد مرزا
ڈاکٹر مجاہد مرزا معروف مصنف اور تجزیہ نگار ہیں۔ آپ وائس آف رشیا اور روس کی بین الاقوامی اطلاعاتی ایجنسی "سپتنک" سے وابستہ رہے۔ سماج اور تاریخ آپکے پسندیدہ موضوع ہیں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply