• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • ٹینیسی ولیمز روح اور جسم کی تجریری روحانی محبت کا لایعنی ڈرامہ نگار اور انکے ڈرامائی متن کا ردِتشکیلی نظریہ۔۔۔احمد سہیل

ٹینیسی ولیمز روح اور جسم کی تجریری روحانی محبت کا لایعنی ڈرامہ نگار اور انکے ڈرامائی متن کا ردِتشکیلی نظریہ۔۔۔احمد سہیل

ڈرامہ نگار ٹینیسی ولیمز{Tennessee Williams} مسیسپی، کولمبس میں، 26 مارچ، 1911 میں پیدا ہوئے۔. کالج کی تعلیم کے بعد ریاست نیو اورلینز منتقل ہو گئے جہان ان کا خیال تھا کہ  یہاں ان کے ڈراموں کی زیادہ سے زیادہ حوصلہ افزائی کی جائے گی۔ جب وہ 28 برس کے تھے تو انھوں نے اپنا نام تبدیل کیا۔
. 31 مارچ، 1945 میں ان کا ایک ناٹک ” شیشے کے آئینے” نے ان کی  شہرت دور دور پھیلا دی۔ اور ان کے لیے براڈوے کے دروازے کھول دئیے۔ دو سال بعد ان کا معرکتہ آرہ ڈرامہ “A Streetcar Named Desire” کو پولیٹرز انعام ملا۔. ٹینسی ولیمز کے اس ڈرامے پر فلم بھی بنی جس میں مارلن برانڈو اور الزبتھ ٹیلر نے کمال کی اداکاری کی تھی .1960 میں ٹینسی ولیمز پرمشکل وقت آیا تھا جب ان کے ڈراموں پر نقادوں نےمنفی اور خراب قسم کے تبصرے لکھے اور وہ آہستہ آہستہ ڈرامہ اور تھیٹر سےغائب ہو گئے۔ اور تیزی سے یہ عظیم ڈرامہ نگار شراب اور منشیات کی علت کا شکار ہوگیا۔

ٹینسی ولیمز نےاپنے تحریروں کو حقیقت سے دور رکھا۔ پھر بھی ایسا کرتے ہوئے انہوں نے حقیقت کا ایک ایسا ورژن تخلیق کیا جو اکثر اس صورتحال کا انکشاف کرتا تھا جس سے وہ فرار ہونے کی کوشش کر رہے تھے۔ اس کے سارے کردار ایماندارانہ اور شریفانہ ماحول اور مقام میں پیدا ہوئے تھے۔ یہاں نہ تو کوئی عظیم ہیرو ہے ، نہ کوئی ولی، سنت، پارسا اور نہ ہی بدمعاش یا ولن ہے۔ بس یہ لوگ دنیا میں یا محض کسی اور شخص کی نظر میں اپنا مقام محفوظ رکھنے کی کوشش کرنے والے عیب دار لوگ ہوتے ہیں۔

tripako tours pakistan

اسی سبب ولیمز کو روزمرہ ،نامساعہ اور ناممکن حالات سے نمٹنے والے عام لوگوں کی طنز و مزاح اور مزاحیہ مکالمات کے ذریعے تصویر کشی کی ہے ۔ ان کے کردار طوائفوں اور ان کے دلالوں سے لے کر پودوں کے مالکان سے لےکر جوتوں کی فیکٹری میں کام کرنے والے شاعروں تک ہیں ، پھر بھی سب کو ایک پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ زندگی میں بعض اوقات ایسے وقت بھی آتے ہیں جب چاہیں اور ذمہ داریاں ایک جیسی ہیں ، لیکن کسی وقت بھی یہاں تک کہ عارضی طور پر بھیوہ سوچتے ہیں کہ ایک دوسرے سے اپنا قد بڑھانے کے چکر میں پڑ جاتے ہیں۔

فیصلے کے یہی وہ لمحے ہیں جہاں ٹینیسی ولیمز نے اپنے ڈرامے ترتیب دیئے اور ہر کردار سے یہ حقیر فیصلہ کرنے کی اشد امید پیدا کی ہے جس کو وہ جاری رکھے ہوئے ہے۔ اگرچہ ان کے کردار ہمیشہ روایتی معنوں میں فتح حاصل نہیں کرتے اور ناکامی ان کا مقدر بن جاتی ہے،اور یہ بات سمجھ سے باہر ہو جاتے ہیں ان کے ڈراموں کو ان کا قاری اور ناظرین ان کے ڈراموں کو کیسے برداشت کرلیتا ہے۔ – مگر ان کے کھیلوں میں انسانی روح قابل ذکر ہے جو ہر شخص میں رہتی ہے۔ جیسا کہ ولیمز کا سب سے زیادہ ان کے سوانح حیات نگار ٹام ونگ فیلڈ کا کہنا ہے ” ہم سب تاخیر سے لیکن ہمیشہ کسی ایسی چیز کی توقع کرتے ہیں جس کے لئے ہم زندہ رہتے ہیں۔”جو انسان کی لایعنی صورتحال کا عندیہ دیتے ہیں۔

ولیمز اپنی فلموں سے ذیادہ مطمئن  نہیں تھے۔ براہ راست فلموں کے لیے نہیں لکھا کرتے تھے۔ نہ تو لکھا تھا اور نہ ہی ان کو فلم کی پروڈکشن پرکوئی کنٹرول تھا۔ تاہم ، انھوں نے اپنے ڈراموں کی سالمیت کو برقرار رکھنے اور فلموں کے مجموعی فنی معیار میں کامیابی کی مختلف ڈگریوں کے باوجود ، اسکرین پر مستقل موضوعاتی ویژن فراہم کرنے میں ولیمز دوسرے ڈرامہ نگاروں کی نسبت زیادہ کامیابی حاصل کی۔ ایک اکائی کے طور پر کوئی پندرہ فلمیں ولیمز کی فکری اور اخلاقی کائنات کا یکجا احساس دیتی ہیں ، جس میں مضبوط موضوعاتی تسلسل کی نشاندہی کی جاتی ہے۔

ولیمز کی فلموں میں معاشرے سے چھٹکارا حاصل کرنے والے کرداروں کے بارے میں اخلاقی کہانیاں ملتی ہیں  ۔ ان کی آخری فلمیں گہری فکر لیے ہوئے اور واضح طور پر مذہبی ہیں۔ پھر بھی اس کے کرداروں کی اخلاقیات کی وضاحت معاشرتی طبقے کے اعتبار سے نہیں کی جاسکتی ، جس طرح سے آرتھر ملر کے ہیرو متوسط طبقے کی ثقافت اور بورژوا نظریہ کے حوالے کرسکتے ہیں۔ اور نہ ہی اس کے مرکزی کردار کو دوسرے صفات جیسے کام یا پیشے کے لحاظ سے بیان کیا جاسکتا ہے۔ بلکہ ، ان کی جوہر ان کی مخصوص روحانیت اور محو نما شخصیات کے لحاظ سے پوری طرح گرفت میں لی جاتی ہے۔ موضوعی طور پر ، ان کی فلموں میں اخلاقی اور جسمانی خاتمے اور اخلاقی اور جسمانی تخلیق نو کی ضرورت کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ در حقیقت ، ولیمز کی فلمیں سب سے آفاقی اور وجودی امور سے وابستہ ہیں: تنہائی ، جنسی جبر ، بدکاری ، زوال اور مایوسی کی انسانی حالت ان کے ڈراموں اور فلموں کا بنیادی مقولہ ہے۔
اب ہم ٹینیسی ولیمز کے ‟ڈراموں کے ردتشکیلیت کے متنی تجزیہ کی جانب آتے ہیں۔ جو ان کے ڈرامائی آفاق کی دلیل ہے۔

Advertisements
merkit.pk

ٹینیسی ولیمز حقیقت میں بڑی سچائی سے زندگی کےمناظر{ پینورما} کے روشن پہلو کے بارے میں اپنا نقطہ نظر پیش کرتے ہیں یہ ان کےموضوعی آفاق کے اندھیرے میں چھپا بیٹھا ہے
جوپہلو ان ڈراموں میں استحصال اور معاشرتی بگاڑ کے خلاف مستقل مزاحمت کی صورت میں موجود ہے۔
جہاں جدید زندگی کی غیر انسانی قوتیں زندگی کی تصدیق کرنے والی قوتوں کو کچلنے میں ناکام ہیں۔
وہ پرامید کی موجودگی پر بحث کرنے کے لیے تخریبی نظریاتی بنیاد کا استعمال کرتے ہیں۔
ناقدین اور محققین کی طرف سے زور دیا گیا مایوسی پر مبنی گفتگو۔
ٹینیسی ولیمز کی. غیر فعال خاندان اور اس کی دردناک حرکیات کی تشکیل کے ذریعے فرد پر کمزور اور اعصابی تناو کے اثرات ولیمز کے ڈراموں پر حاوی ہیں۔ جس میں خاندانی سا خت کے انتشار اور بحرانوں کو واضح طور پر ان کے ڈراموں مرکزی خیال اور اصل کرب اور دکھ بھی کہا جاتا ہے۔
مکمل تباہی سے اندر سے آنے والے اشارے کی متحارب قوتوں سے محتاط چھیڑ چھاڑ کے ذریعے۔
ولیمز کے ڈرامے غیر مرئی دکھائی ہیں اور اور فرد حاشیائی نظر آتا ہے۔
ولیمز اپنے ڈراموں میں جدید معاشرے کے بغیر کئی خرابیوں کے بارے میں بات کرتے ہیں۔
ڈرامہ نگار مختلف معنی اور تشریحات کو آگے لانے کے لیے اسی طرح ، مختلف۔
معنی اور مفاہیم تشکیل دیتا ہے جو ایک ترتیب سے ولیمز کے مختلف ڈراموں کے ساتھ ساتھ ساتھ سامنے آتے ہیں۔
جولیا کرسٹیوا نے بین متنی {انٹر ٹیکسٹولٹی) کے حوالے سے ان ڈراموں کو سمجھنے کی کوشش کی ہے اور ان کے ڈراموں کے بیانیہ کو مربوط اور منطقی انداز میں ان کی تشخیص کا جواز پیش کیا ہے
ان کے لیے ذاتی اور تعلیمی جواب ، محقق کو نظریاتی عنصر کا ردشکیّل پر انحصار کرتا ہے۔
ماہرین کا خیال میں ایک متن میں لاتشکیلت کی فکریات خاصی ہے۔ تقریباً تمام تفسیریں اور دعوے محققین کے تعصب پر مبنی عقائد کو ختم کرتی ہیں۔
وہ نئی ثنوئی یا جڑوان تصاد کی بنیاد پر نئے نقطہ نظر سے ایک متن دیکھتے ہیں۔ ڈیریڈا ،deconstructionism کے حامیوں کا کہنا ہے کہ ردتشکیل کی قرات کا ادبی نقطہ نظر ہے۔
تجزیہ ایک طریقہ کار سے زیادہ اسٹریٹجک ڈیوائس ہے ،مگر دریڈا زیادہ حکمت عملی یا نقطہ نظراور ادب یا تنقید کا نظریہ پر اصرار کرتے ہیں۔
deconstructionism یہ محضرد تشکیّل کا نظریہ {تھیوری} نہیں ہے ، بلکہ حکمت عملی کا ایک مجموعہ ہے یا متن کی قرات کا یک طریقہ کار ہے۔۔
متن جو ایک نیا فلسفہ قائم کرنے کے بجائے ایک نیا ادبی نظریہ  تجزیہ یا ادبی تنقید کا نیا دبستان ہے۔ یہاں ردتشکیل قرات کا نیا نظریہ سامنے لاتا ہےجس سے ٹینیسی ولیم کے ڈراموں کی کئی گرہیں کھلتی ہیں۔
ان کے ڈراموں کا انداز نگارش، تحریری حکمت عملی ، جوبہرحال قاری کو مختلف سطحوں کے بارے میں انتخاب کرنے کی اجازت دیتی ہے۔
تشریح جو ہم کسی متن میں متحرک دیکھتے ہیں۔ ان کے بارے میں الیس لگتا ہے کہ یہ تمام سطحوں کی صداقت ہے۔ وہ بھی یقین ہے کہ ان کا پڑھنے کا انداز قاری کو نظریاتی وفاداریوں سے آزاد کرتا ہے۔
متن میں معنی کے فہم کو محدود کریں۔ (بریسلر 2011: 116-17)۔
یہ مطالعہ ولیمز اور کے ڈراموں میں کام کرنے والی بائنری مخالفتوں کو تلاش کرتا ہے۔
یہ ثنوئی تصادات اس طرح بنیادی ڈھانچے بناتی ہے جس کے ذریعے ولیمز مرکزی کردار اپنی دنیا میں سوچتے اور کام کرتے ہیں۔ یہ اس پر پہلے رکھے گئے خیالات کو ختم کرتا ہے۔
موجودہ ثنوئی تصادات کی وظائفیت کو الٹ کر ولیمز کے ڈرامے میں مختلف سطحوں کو تخلیق کرتا ہے۔
نئےثنوئی تضادات پر ان ڈراموں میں معنی کی ” امید” تالش کی جاسکتی ہے
یوں ان ڈراموں کی مایوسی پر مبنی گفتگو کے عناصر ، جو توجہ سے بچ گئے ہیں۔
ناقدیں ولیمزبرسوں ۔ ولیمز کے ڈراموں میں مایوسی کے عنص پر مبنی گفتگو کرتے رہیں ہیں۔ ۔
اور اس طرح کی تصویر کشی کی گئی ہے کہ اسے ‘ لا رموز'{ ڈیکوڈ} کیا جائے اور پر امید بنایا جائے۔
ان کا احساس. اسٹیفن جے گرین بلیٹ کا خیال ہے کہ ایک متن ، ادبی یا تاریخی میں سے ایک ہے۔
گفتگو۔۔۔۔ جو کسی خاص دور کی نظریاتی مصنوعات یا ثقافتی مصنوعات پر مشتمل ہوتی ہے۔
{گرین بلیٹ 1990: 50)۔ ڈانسورس }، جان بلومارٹ کےخیال میں یہ معنی خیز ” معنیات” {سیمیٹک} کی تمام شکلیں ہیں۔
سرگرمی جو معاشرتی ، ثقافتی اور تاریخی نمونوں اور پیش رفت کے سلسلے میں دیکھی جاتی ہیں۔
استعمال ، اور ہماری معاشرتی زندگی کے تانے بانے بنانے میں اہم کردار ادا کرتا ہے
گفتگو ہی کس طرح معاشرے میں معنی پیدا کرتی ہے ،
ولیمز کی جنسی ، نفسیاتی اور معاشی دنیا۔
مایوسی، امید پر مبنی ڈرامائی مکالمہ ہے۔
یہ ایک ثابت شدہ حقیقت ہے کہ ولیمز ‟دنیا موت ، تباہی سے بھری ہوئی ہے ،
فریب ،یا التباس ، انحطاط ، غیر فعال خاندان ، پاگل پن ، بیگانگی ، لنچنگ ، کاسٹریشن ،
بانجھ پن ، کینسر اور کینابیلزم لیکن موجودہ مطالعے کا مقصد ایک متوازی وضع کی تشکیلتیت ہے۔
پرامید جو کہ اس کے فن میں متوازی گفتگو کی سطح کو حاصل کرنے کے لیے بھی حرکت کرتا ہے۔ یہ اسے تلاش کرتا ہے۔
اور کس طرح محبت ، ہمدردی ، برداشت ، بقا ، جوان پن وغیرہ اس کے پورے وجود میں پائے جاتے ہیں۔
کام. ولیمز کے یہان ‟دنیا قابل رحم ہے لیکن پی ٹی بی کی طرح اس راستے میں مٹھاس ہے۔جیسے برطانوی شاعر شیلے
کہتے ہیں: “ہمارے سب سے پیارے گانے وہ ہیں جو ہمیں افسوسناک خیالات بتاتے ہیں” (شیلی 1909: 558)۔
اس کے فن کا اعلیٰ معیار انتشار کو منظم کرنے کے لیے اس کی مسلسل جدوجہد میں مضمر ہے۔ وہاں
مخالف قوتوں کے درمیان ایک مستقل تنازعہ ہے لیکن ،ٹینسی ولیمز کےیہاں یہ مخالف قوتیں ہیں۔۔
جو ہمیشہ ایک ہی سکے کے دو رخ مخالف کے بائنری جوڑوں پر توجہ مرکوز کرنا جیسے۔
ہوش/بے ہوشی ، زرخیزی/بانجھ پن ، امید/ناامیدی ، روح/جسم ، خود/دیگر۔
ان کے بھائی نے انھیں 1969 میں منشیات کے ہسپتال میں داخل کروادیا اور کچھ دنوں بعد وہ صحت یاب ھوکر واپس آگئے اور دوبارہ ڈرامہ نویسی شروع کی۔ ساتھ ھی اپنی ازیت ناک اور دردناک کہانی کو یاداشتوں کی صورت میں بھی لکھا۔ 1975 میں انھوں نے کئی ڈرامے لکھے اسی دوران ٹینسی ولیمز کثرت شراب خوری ، منشیات اور امرد پرستی اس قدر مبتلا ھوئے کی ان کی صحت روز بہ روز بگڑتی رھی اور 25 فروری 1983 میں نیویارک کے سٹی ھوٹل کے ایک کمرے میں انتقال ھوا۔
ٹینسی ولیم نے دو ناولز، انیس مختصر کہانیاں، اور دو نظموں کے کتابیں شائع ہو چکی ہیں۔ ان کی ڈراموں کی فہرست یہ ہے:
The Glass Menagerie (1944)
A Streetcar Named Desire (1947)
Summer and Smoke (1948)
The Rose Tattoo (1951)
Camino Real (1953)
Cat on a Hot Tin Roof (1955)
Orpheus Descending (1957)
Suddenly Last Summer (1958)
Sweet Bird of Youth (1959)
Period of Adjustment (1960)
The Night of the Iguana (1961)
The Eccentricities of a Nightingale (1962, rewriting of Summer and Smoke)
The Milk Train Doesn’t Stop Here Anymore (1963)
The Mutilated (1965)
The Seven Descents of Myrtle (1968, aka Kingdom of Earth)
In the Bar of a Tokyo Hotel (1969)
Will Mr. Merriweather Return from Memphis? (1969)
Small Craft Warnings (1972)
The Two-Character Play (1973)
Out Cry (1973, rewriting of The Two-Character Play)
The Red Devil Battery Sign (1975)
This Is (An Entertainment) (1976)
Vieux Carré (1977)
A Lovely Sunday for Creve Coeur (1979)
Clothes for a Summer Hotel (1980)
The Notebook of Trigorin (1980)
Something Cloudy, Something Clear (1981)
A House Not Meant to Stand (1982)
In Masks Outrageous and Austere (1983
{احمد سہیل}:::📗✍

  • merkit.pk
  • merkit.pk

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply