ارتھی ۔ رتھ بان۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

ڈھیلی ڈھالی انگلییوں سے
اپنے گھوڑوں کی لگامیں تھام کر
اک سارتھی ٹھہرا ہوا ہے
راستہ بھولا ہوا ہے
دھول سے چہرہ اٹا ہے
دھوپ کی ناقابلِ برداشت حدت
خشک پیاسے ہونٹ
آنکھوں میں کھلے سورج مکھی کے پھول
(دو چنگاریوں سے)
دھونکنی سی سانس گھوڑوں کی
جنہیں رتھ میں جُتے
صدیوں پہ پھیلے راستوں پر دوڑنا ہے۔
ریگ زار ِ عرصہ ٔ لا سمت
لا وقت و صدا و صوت و حرکت
یعنی کلجگ کا مہا بھارت
زمیں و آسماں کے درمیاں
ٹھہرا ہوا اک منجمد، بیدار لمحہ !

Advertisements
merkit.pk

سارتھی، آنکھوں پہ اپنی انگلیوں کے
سائباں کی اوٹ کر کے
دور تک نگراں ہے
شاید کوئی صدیوں کے خلا سے
زینہ در زینہ اتر کر
لوٹ آئے
ریگ ِ ہست و نیست کی
اس بے صدا، لا صوت تنہائی میں وارد ہو
جواں، معصومیت کا ایک پیکر
مضطرب، دل سوختہ
ژولیدہ ہونٹوں پر کشیدہ خط تحّیر کا
فقط اک ایسے استفہام کا
جو اپنے بود و ہست میں قائم تو ہے، جاری نہیں
لرزیدہ ہاتھوں میں کمان، ترکش ۔ مگر
خود سے گریزاں، سر بہ زانو
غرض بر لب ۔۔ لوٹ کر آئے، تو شاید پوچھ ہی لے:
“خود عدو ہوں، خود ہی اپنا دوست بھی ہوں
کیا کروں میں؟ سارتھی ، تم ہی بتائو!”
قرنہا سے
گوش بر آواز، لا صوت و صدا
ٹھہرا ہوا ہے
سارتھی، رتھ بان
جو خود ہی خداوند ِ کلام و صور تھا
اب چپ کھڑا ہے
پوچھنے والا کوئی ارجن نظر آتا نہیں ہے !!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ء1991 میں تحریر کردہ۔ “میری منتخب نظمیں” سے ماخوز1992

tripako tours pakistan
  • merkit.pk
  • merkit.pk

ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply