• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • اسلام آباد: شہری 22 سال بعد ٹرانسفارمر ہٹانے کی قانونی جنگ جیت گیا

اسلام آباد: شہری 22 سال بعد ٹرانسفارمر ہٹانے کی قانونی جنگ جیت گیا

اسلام آباد: وفاقی دارالحکومت میں شہری 22 سال بعد گھر کے باہر سے ٹرانسفارمر ہٹانے کی قانونی جنگ جیت گیا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ میں ٹرانسفارمر ہٹانے کے کیس کی سماعت ہوئی۔ عدالت نے بنیادی انسانی حقوق متاثر کرنے پر آئیسکو پر ایک لاکھ روپے کا جرمانہ عائد کر دیا۔ عدالت نے آئیسکو اور نیپرا کو ایک ہفتے میں جگہ کا تعین کر کے ایک ماہ کے اندر ٹرانسفارمر ہٹانے کا حکم دے دیا۔

عدالت نے تحریری حکم میں کہا کہ سی ڈی اے اور آئیسکو 7 روز میں ٹرانسفارمر کے لیے نئی جگہ کا تعین کریں اور 30 روز میں ٹرانسفارمر کو نئی جگہ منتقل کر کے رپورٹ جمع کرائی جائے۔

جسٹس بابر ستار نے جی 10 کے رہائشی کی درخواست پر فیصلہ جاری کیا۔

عدالت نے ریمارکس دیئے کہ شہری کے مطابق ٹرانسفارمر گھر کے باہر لگنے سے گھر والوں کی جان کو خطرہ ہے اور درخواست گزار کے مطابق آئیسکو نے ٹرانسفارمر ہٹانے کا خرچ ادا کرنے کا کہا۔ چارجز مانگنے پر وفاقی محتسب نے آئیسکو کو مسئلہ حل کرنے کا حکم دیا۔

Advertisements
julia rana solicitors london

فیصلے میں کہا گیا کہ آئیسکو کی اپیل پر صدر پاکستان نے کیس چیئرمین نیپرا کو بھیج دیا اور نیپرا نے 27 دسمبر 2018 کو سائل کی درخواست مسترد کر دی تھی۔

Facebook Comments

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply