• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • تخت لاہور پر حمزہ شہباز کی حکمرانی برقرار،ق لیگ کے ووٹ مسترد

تخت لاہور پر حمزہ شہباز کی حکمرانی برقرار،ق لیگ کے ووٹ مسترد

لاہور: وزیراعلی پنجاب کا انتخاب ہو گیا، ن لیگ کے امیدوار حمزہ شہباز کو ہونے والی ووٹنگ میں 179 ووٹ ملے ہیں۔ اس بات کا اعلان ڈپٹی اسپیکر پنجاب اسمبلی دوست محمد مزاری نے کیا جنہوں ںے اجلاس کی صدارت کی۔ انہوں نے ق لیگ سربراہ چودھری شجاعت حسین کی جانب سے لکھا جانے والا خط دکھایا اور اس کے بعد ق لیگ کے اراکین اسمبلی کی جانب سے ڈالے جانے والے ووٹوں کو مسترد کردیا۔

وزیراعلیٰ پنجاب کے انتخاب کے لیے ہونے والی ووٹنگ میں سب سے پہلا ووٹ پی ٹی آئی سے تعلق رکھنے والے سابق وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی کے صاحبزادے زین قریشی نے ڈالا۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

پی ٹی آئی رہنما زین قریشی رکن قومی اسمبلی تھے لیکن حالیہ ضمنی انتخاب میں انہوں نے پنجاب اسمبلی کی نشست پر الیکشن لڑا تھا جس میں انہیں کامیابی ملی ہے۔

پنجاب اسمبلی کا اجلاس شیڈول کے مطابق شام چار بجے شروع ہونا تھا لیکن دو گھنٹہ 50 کی تاخیر کے بعد پونے سات بجے ڈپٹی اسپیکر کی زیرصدارت شروع ہوا۔

صوبائی اسمبلی کے اجلاس میں سب سے پہلے پی پی 7 راوالپنڈی سے کامیاب ہونے والے مسلم لیگ (ن) کے امیدوار راجہ صغیر احمد نے حلف اٹھایا۔

امن و امان کے قیام کو یقینی بنانے کے لیے پولیس کے اہلکاروں کو ایوان کے اندر تعینات کر دیا گیا ہے جب کہ پولیس اہلکار ڈپٹی اسپیکر کی نشست کی پشت پر بھی متعین کیے گئے ہیں۔ جاری اجلاس کے لیے پولیس اہلکاروں کو سارجنٹ ایٹ آرمز کے خصوصی اختیارات دیئے گئے ہیں۔

اجلاس کی صدارت کرنے والے ڈپٹی اسپیکر دوست محمد مزاری نے واضح کیا ہے کہ سپریم کورٹ کے حکم کی روشنی میں اجلاس کیا جا رہا ہے، دوبارہ ووٹنگ ہو گی۔

انہوں نے کہا کہ 25 منحرف ارکان کے ووٹ ختم کرنے کے بعد حمزہ شہباز کو 172 ووٹ حاصل ہیں اور ووٹنگ کا طریقہ کار وہی رہے گا جو پہلے اختیار کیا گیا تھا۔

دوست محمد مزاری نے کہا کہ کوئی بھی رکن 186 ووٹ حاصل نہیں کر سکا، اس لیے رن آف الیکشن ہو گا اور رن آف الیکشن میں 186 ووٹ کی ضرورت نہیں بلکہ سادہ اکثریت رکھنے والا وزیراعلیٰ بنے گا۔

اجلاس شروع ہونے سے قبل وزیر اعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز اپنی جیت کے حوالے سے پرامید نظر آئے۔ انہوں نے کہا کہ جو ہو اللہ بہتر کرے گا، ہمارے نمبرز پورے ہیں اور کوئی غیر قانونی کام نہیں کیا جائے گا۔

پی ٹی آئی رہنما فیاض الحسن چوہان نے اس موقع پر کہا کہ عدالتی فیصلے کے مطابق جب فلور مکمل ہو گا تب ووٹنگ ہو گی، ہم یہاں پر پہرہ دے رہے ہیں، رات 12 بجے تک بھی یہیں بیٹھنا پڑا تو بیٹھیں گے۔
واضح رہے کہ ضمنی الیکشن کے بعد اسمبلی میں پارٹی پوزیشنیں تبدیل ہو گئی ہیں، مسلم لیگ ن اور اتحادیوں کے پاس اس وقت 178 ارکان موجود ہیں جب کہ تحریک انصاف اور ق لیگ کے ارکان کی تعداد 188 ہے، 15 نئے ایم پی ایز کے حلف کے بعد پی ٹی آئی ارکان کی تعداد 178 ہو گئی ہے۔

مسلم لیگ ق کے 10 ارکان اسمبلی ہیں، تحریک انصاف کے رکن ، ڈپٹی اسپیکر پریذائڈنگ افسر کے فرائض سرانجام دیں گے اور ان کا ووٹ شمار نہیں کیا جائے گا۔

تحریک انصاف کے ایک رکن چودھری مسعود احمد بیرون ملک جا چکے ہیں، اس طرح ، پرویز الہٰی کو اپنے اتحاد کی طرف سے زیادہ سے زیادہ 186 ووٹ مل سکتے ہیں۔

Advertisements
julia rana solicitors london

مسلم لیگ ن کے تین ارکان اسمبلی کے حلف کے بعد حکومتی اتحاد کی تعداد 178 ہو گئی ہے، مسلم لیگ ن کے ارکان کی تعداد 166 ہے، پیپلز پارٹی کے 7 ارکان ہیں، 4 آزاد اراکین اور ایک راہ حق پارٹی کا رکن ملا کر حمزہ شہباز کے حامیوں کی تعداد 178 بنتی ہے۔ ضمنی انتخاب میں لودھراں سے جیتنے والے رکن پیر رفیع الدین اور چودھری نثار ابھی تک غیر جانبدار ہیں۔

  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors
  • julia rana solicitors london

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply