• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • زیر حراست ہندوستانی صحافیوں کی رہائی کے لیے کالز بڑھ رہی ہیں

زیر حراست ہندوستانی صحافیوں کی رہائی کے لیے کالز بڑھ رہی ہیں

ہندوستان کی شمال مشرقی ریاست تریپورہ میں “فرقہ وارانہ عدم ہم آہنگی پھیلانے” کے الزام میں حراست میں لیے گئے دو صحافیوں کی فوری رہائی کے لئے کالز بڑھ رہی ہیں۔وہ مسلمانوں کی ملکیت مساجد اور جائیدادوں پر حالیہ حملوں کے بعد تریپورہ میں مذہبی کشیدگی کی اطلاع دے رہے تھے۔صحافیوں اور ذرائع ابلاغ کے دائیں گروپوں نے ان کی حراست کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ ان کے آجر ایچ ڈبلیو نیوز نیٹ ورک نے عہدیداروں پر “ہراساں” کرنے کا الزام لگایا ہے۔ہندوستانی نیٹ ورک نے کہا کہ تریپورہ حکومت انہیں “سراسر ہراساں” اور “پریس کو نشانہ بنانے” کے ذریعے حقائق کی اطلاع دینے سے روک رہی ہے۔اطلاعات کے مطابق ان صحافیوں سمردھی کے ساکنیا اور سورنا جھا کو ایک مقامی ہندو دائیں بازو کے کارکن کی شکایت کے جواب میں گرفتار کیا جا رہا ہے جس کا الزام ہے کہ انہوں نے ایک ایسے علاقے میں ہندو برادری کے خلاف مسلمانوں کو “اکسانے” کی تقریر کی تھی جس کا انہوں نے دورہ کیا تھا۔

محترمہ ساکونیا کی جانب سے ٹوئٹر پر شیئر کی گئی پولیس شکایت کے مطابق ان الزامات میں مجرمانہ سازش اور مذہبی گروہوں کے درمیان “دشمنی کو فروغ دینا” شامل ہیں۔دونوں خواتین اپنی حراست کے ذریعے ٹویٹ کر رہی ہیں – محترمہ ساکونیا نے ٹویٹ کیا کہ انہیں پہلی بار ہفتے کی رات ہوٹل میں حراست میں لیا گیا تھا اور اتوار کی سہ پہر انہیں جانے کی اجازت

tripako tours pakistan
سمردھی کے سکنیا (بائیں) اور سورنا جھا کو ‘فرقہ وارانہ عدم ہم آہنگی پھیلانے’ کے الزام میں حراست میں لیا گیا ہے

دی گئی تھی۔لیکن اس دن بعد میں انہیں پڑوسی ریاست آسام میں دوبارہ حراست میں لے لیا گیا اور تریپورہ پولیس کے حوالے کر دیا گیا۔وہ اب بھی تحویل میں ہیں اور توقع ہے کہ وہ آج بعد میں مجسٹریٹ کے سامنے پیش ہوں گے۔بھارتی ریاست میں مسلم مخالف تشدد بھڑک اٹھا، انہوں نے اپنی رپورٹنگ کے دوران ان مساجد کی تصاویر اور ویڈیوز ٹویٹ کیں جن میں توڑ پھوڑ کی گئی تھی جو پولیس کے خلاف دکھائی دیتی ہیں جنہوں نے ایک واقعے کی تردید کی تھی۔محترمہ ساکونیا نے اتوار کے روز ٹویٹ کیا کہ تریپورہ میں رپورٹنگ کے دوران انہیں “دھمکی” کا سامنا کرنا پڑا۔ہندوستان کی وزارت داخلہ نے اسے “حقائق کی مکمل غلط بیانی” قرار دیا۔

لیکن تریپورہ میں مساجد پر حالیہ حملوں نے مذہبی کشیدگی کو جنم دیا ہے۔مسلمانوں کی ملکیت کی جائیدادوں میں بھی توڑ پھوڑ کی گئی کیونکہ دائیں بازو کے ہندو گروہوں نے پڑوسی ملک بنگلہ دیش میں ہندوؤں پر حالیہ حملوں اور مندروں کی توڑ پھوڑ کے خلاف احتجاج کرنے کی کوشش کی تھی۔تریپورہ کو بنگلہ دیش نے تین اطراف سے گھیر لیا ہے اور پڑوسی ہندوستانی ریاست آسام سے ایک پتلی راہداری سے منسلک ہے۔

13 نومبر کو محترمہ ساکونیا نے تصاویر ٹویٹ کیں جن میں پنی ساگر قصبے کی ایک مسجد کے اندر سے ٹوٹی ہوئی کھڑکیاں، مداح اور سوئچ بورڈ دکھائے گئے تھے- انہوں نے لکھا کہ مقامی لوگوں کو پولیس کے دعووں کے متضاد طور پر اس کی مرمت کرنی پڑی کہ یہ “محفوظ اور محفوظ” ہے۔انہوں نے لوگوں سے یہ بھی کہا کہ وہ مبینہ توڑ پھوڑ پر غیر مصدقہ سوشل میڈیا پوسٹس کو “پسند/ری ٹویٹ” نہ کریں کیونکہ یہ افواہ پھیلانے کے مترادف ہے۔محترمہ ساکونیا نے 12 نومبر کو ایک مسجد کی ویڈیو بھی ٹویٹ کی تھی جسے مبینہ طور پر 19 اکتوبر کو ایک مختلف ضلع میں جلا دیا گیا تھا- انہوں نے کہا کہ پولیس کی شکایت درج ہونے کے بعد سے کوئی کارروائی نہیں کی گئی ہے۔پولیس نے اس مخصوص رپورٹ کا جواب نہیں دیا

تریپورہ میں حالیہ تشدد میں مسلمانوں کی املاک کو نشانہ بنایا گیا

ہے حالانکہ انہوں نے کہا ہے کہ پانی سنگر یا ضلع جہاں یہ قصبہ واقع ہے میں کوئی مسجد جلا دی گئی نہیں ہے۔

لیکن اس کے بعد انہوں نے تشدد کی رپورٹنگ کرنے والے متعدد صحافیوں اور ان حملوں سے متعلق رپورٹ جاری کرنے والے وکلاء کے خلاف شکایات درج کرائی ہیں اور الزام لگایا ہے کہ وہ جعلی خبریں پھیلا رہے ہیں جس کے نتیجے میں امن خراب ہو رہا ہے۔انہوں نے انسداد دہشت گردی کے سخت قانون کے تحت 102 ٹویٹر ہینڈلز کے خلاف شکایات بھی درج کرائی اور دعویٰ کیا کہ یہ جعلی خبروں کے پھیلاؤ کو روکنا ہے۔سپریم کورٹ شکایات کو چیلنج کرنے والی درخواست پر سماعت کرنے پر رضامند ہوگئی ہے۔

Advertisements
merkit.pk

بشکریہ بی بی سی

  • merkit.pk
  • merkit.pk

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply