پرویز مشرف کی واپسی۔۔ڈاکٹر ابرار ماجد

پرویز مشرف کے عنوان سے پاکستان کی ایک تاریخ ہے جو آزادی کی تاریخ کے بعد کا تقریباً ساتواں حصہ ہے جس کا آغاز نواز شریف ان کی بحیثیت چیف آف آرمی سٹاف سے کرتے ہیں اور پھر ان کے درمیان اختلافات سے ایک نئے باب کی شروعات ہوتی ہیں اور اس کے بعد مشرف اپنی تقدیر خود لکھنے کا آغاز کرتے ہوئے ایک آئینی عہدے کی طاقت کے استعمال سے پرموٹ ہو کر چیف ایگزیکٹو بن گئے اور پھر اقتدار کے اعلیٰ ایوان صدر پاکستان کے عہدے پر بھی پہنچ گئے۔

دس سال وہ پاکستان کی سیاسی تاریخ جس میں منتخب وزیراعظم کی سبکدوشی، قید، ملک بدری اور آخر میں این آر او بھی ہوا بڑے دبنگ انداز میں مکے لہرا کر لکھتے رہے۔ بالآخر وہ اپنے اختیارات کا استعمال کرتے کرتے عدلیہ پر وار کرنے سے اپنا توازن کھو بیٹھے۔ اسی دوران میں وجود پانے والا میثاق جمہوریت اب توانا ہو چکا تھا جس نے مناسب وقت پا کر اپنا وار کر دیا اور اس طرح ایک دفعہ پھر سے جمہوری دور کا آغاز ہوتا ہے۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

پرویز مشرف کی طاقت کے زور پر مرتب کردہ تاریخ کے کئی ابواب کی جمہوری حکومتی ادوار میں غیر متوازی آئینی اصلاحات ریورس ہوئیں اور ایوان عدل نے بھی کچھ پیمانے مرتب کئے اور یوں سابقہ صدر پرویز مشرف اقتدار کے دور سے گزرتے مجرم کے کردار تک پہنچ جاتے ہیں اور پھر اپنی مرضی سے ملک سے چلے بھی جاتے ہیں۔ سزا ہوتی ہے اور سزا دینے والی عدالت بھی اپنی ہی ہم مرتبہ عدالت سے تکنیکی بنیادوں پر اپنا وجود کھو بیٹھتی ہے۔

مگر مشرف پھر بھی اپنے پاکستان واپسی کے سفر کو محفوظ نہ سمجھتے ہوئے ملک سے باہر ہی رہنے کا فیصلہ کرتے ہیں۔ ان کو سزا دینے والی عدالت تو اپنا وجود فیصلے سمیت کھو بیٹھتی ہے مگر ان فیصلوں کے خلاف اپیل اب بھی مناسب وقت کے انتظار میں عدالت عظمیٰ میں زیر التوا ہے۔ اس وقت ان کی واپسی بارے سیاسی راہنماؤں کے ہمدردانہ بیانات دانشمندانہ سوچ کے عکاس ہیں۔ بعض لوگ ان کو تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں اور یہ بھی ایک جمہوری ریاست کے اندر حق اظہار رائے کے حق کا استعمال ہے۔

سیاستدانوں کو کبھی بھی کشمکش والا ماحول پیدا کرنے کی کوشش نہیں کرنی چاہیے اور ان کا ہر عمل آئین و قانون کے تحت ہونا چاہیے۔ پرویز مشرف کو پاکستان آنے میں پہلے بھی کوئی رکاوٹ نہیں تھی، بلکہ وہ اپنی ماں کی تیمار داری کے لئے گئے تھے اور پھر صحت کی خرابی کے باعث انہوں نے واپسی کا ارادہ ملتوی کر دیا۔ عدالتوں میں ان کے مقدمات اب بھی زیر التوا ہیں اور عدالتوں کی طرف سے ان کو پیش ہو کر اپنا موقف دینے کے لئے بلایا بھی جاتا رہا ہے۔

فوج کی طرف سے ان کو واپسی کے لئے سہولیات مہیا کرنے کی پیشکش بھی ہوئی ہے مگر اس میں بہرحال وزیر دفاع پہل کر چکے ہیں جس پر ان کو تنقید کا سامنا بھی کرنا پڑا۔ اس کی بازگشت سینٹ تک بھی پہنچ چکی ہے۔ ایوان بالا کے ممبران کا اپنا اپنا ذوق ہے مگر وطن واپسی تو بحیثیت شہری ان کا بنیادی حق ہے۔ ان کے مقدمات اور ان کی کاروائی عدالتی معاملہ ہے جس کا فیصلہ بہرحال عدلیہ کا صوابدیدی اختیار ہے۔

حکومت کے پاس انتظامی امور ہوتے ہیں اور اگر عدالت کی طرف سے معلومات کے حصول یا کسی حکم کی تعمیل کے لئے ہدایات ملیں تو ان پر من و عن عمل کرنا حکومت کی ذمہ داریوں میں شامل ہوتا ہے۔ کسی بھی جمہوری ریاست کے اندر اس کا آئین ہی سپریم ہوتا ہے۔ اور آئین ہی ہر شہری کو اس کے بنیادی حقوق کی ضمانت دیتا ہے۔ زندگی، صحت، آزادی انسان کی بنیادی حقوق ہیں جن کی پاسداری بھی حکومت کے فرائض میں شامل ہے۔

اگر ان کی واپسی میں کوئی قانونی قدغن ہے تو اس کے لئے بھی ان کی فیملی عدالت سے رجوع کر سکتی ہے۔ اور انصاف کا یہ تقاضہ ہے کہ کسی بھی شہری کے رجوع کرنے پر عدالتیں اس کے حالات اور قانونی صورتحال کا جائزہ لیتے ہوئے اس پر اپنی ہدایات جاری کرے جس پر اگر کسی متاثرہ فریق کو اعتراض ہو تو اس کا بھی لائحہ عمل قانون میں موجود ہے۔

تو میں سمجھتا ہوں کہ محض جزبات کی بنیاد پر آئین، انصاف اور فرائض کو پس پشت ڈالتے ہوئے کوئی بھی تبصرہ نہیں کرنا چاہیے جس سے کسی فضول اور بے فائدہ بحث کا آغاز یا اسے طول ملے۔صحت انسان کی پہلی ضرورت اور ترجیح ہے اور اس پہلو کو کسی بھی صورت نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔ میرے خیال میں اس طرح کے موضوعات پر سیاسی جماعتوں کے سربراہان، حکومتی عہدیداران، وزراء اور ممبران اسمبلی کو ذاتی حیثیت میں بیان دینے یا تبصرہ کرنے سے اجتناب برتنا چاہیے یا پھر انتہائی محتاط الفاظ کا استعمال کرنا چاہیے۔

حقائق کی موجودگی اپنی جگہ مگر پارلیمان کی توقیر کو بہر صورت ملحوظ خاطر رکھنا چاہیے تاکہ بحث سے ابھرنے والا تاثر منفی نہ ہو اور نہ اس سے سیاسی کشیدگی جنم لے۔ خاص کر حکومتی عہدیداران اور وزراء کو تو بہت ہی محتاط رویہ اختیار کرنا چاہیے اور ہمیشہ آئین و قانون اور حکومتی پالیسی کو سامنے رکھ کر بولنا چاہیے اور اگر کسی امر پر فیصلہ مقصود ہو تو وزراء کو ذاتی حیثیت میں کرنے کی بجائے کیبنٹ سے کروانا چاہیے تاکہ اس سے متفقہ قومی سوچ کا تاثر ملے۔

یہ تدبیر اور مشق بہت ساری سیاسی مشکلات سے بچاؤ کا بہتریں ذریعہ ہے۔ اس سے سیاسی ماحول میں پختگی، سنجیدگی اور دانشمندی سے فیصلے کرنے کا ماحول بنتا ہے اور ملکی سیاست بارے عالمی سطح پر اچھا تاثر ابھرتا ہے جس کے ریاست کے بین لاقوامی تعلقات پر مثبت اور گہرے اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ جیسے سیاستدانوں اور عوامی قائدین کی طرف سے ہر آئے روز غداری اور غلامی کے الزامات لگا دیے جاتے ہیں یہ بھی کوئی مدبرانہ فعل نہیں اور اس کے سیاست پر بہت ہی منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں جس کا خمیازہ ملک و قوم کو بھگتنا پڑتا ہے۔

ہمارے ملکی سطح کے فیصلوں میں طاقت کے استعمال سے ابھی بھی انکار نہیں کیا جا سکتا جو کہ بہر حال اچھی روایت نہیں۔ تمام ادارے ملکی وسائل سے بہم سہولیات کی بنیاد پر ہی یہ اہلیت اور طاقت کے حامل ہوتے ہیں جو پاکستان کے عوام کی ملکیت اور حقیقی اختیار ہے۔ حقوق اور اختیارات میں توازن آئین و قانون کی پاسداری سے ہی ممکن ہوتا ہے اور اسی سے ملک کے اندرونی باہمی اور بیرونی تعلقات اور قوم و ملک کی عالمی سطح پر عزت و تکریم کا انحصار ہوتا ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors

کارکردگی کی پہچان آئینی ذمہ داریوں کی ادائیگی سے ہوتی ہے نہ کہ اختیارات کی طاقت کے استعمال سے۔ سب ایک ہی دھرتی ماں کے بچے ہیں اور سب کو یہیں سے وسائل مہیا ہوتے ہیں جس میں سب شہری برابر کے شریک ہیں کوئی بڑا یا چھوٹا نہیں۔ ہر فرد اور ادارے کو سمجھنا ہو گا وگرنہ اس میں عدم توازن کی صورت میں ابھرنے والا تاثر کبھی بھی قوموں کی عالمی سطح پر عزت و تکریم کا سبب نہیں بنتا۔ طاقت کے بل بوتے پر وقتی مقاصد تو حاصل کئے جا سکتے ہیں مگر حقیقی محبت اور عزت و تکریم کا حصول اس سے ممکن نہں ہوتا۔

  • julia rana solicitors
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply