• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • انڈیا کے سخت گیر ہندو ’ایک مذاق بھی برداشت نہیں کر سکتے‘

انڈیا کے سخت گیر ہندو ’ایک مذاق بھی برداشت نہیں کر سکتے‘

انڈیا میں ایک کامیڈین کو ایک ایسے مذاق کی بنیاد پر جیل بھیجنے کے بعد جو انہوں نے کیا ہی نہیں، تھیٹر ڈائریکٹر اور  بلاک بسٹر ٹی وی ڈرامے کے خلاف دھمکیوں نے انڈیا کی فنون لطیفہ سے جڑی کمیونٹی کے آزادی اظہار رائے کے حوالے سے خدشات کو بڑھا دیا ہے۔

فرانسیسی خبر ایجنسی اے ایف پی کے مطابق فنکاروں، لکھاریوں اور طنز نگاروں کو مذہبی معاملات پر بات کرنے پر مجرمانہ الزامات اور تشدد کی دھمکیوں کا سامنا ہے۔ ایسے میں فنکار حیران و پریشان ہیں کہ کیا انڈیا کو اس کی سیکولر بنیادوں سے دور کیا جا رہا ہے۔

tripako tours pakistan

یہاں تک کہ پاپ گلوگارہ ریانہ کو ایک تصویر میں گنیش کا لاکٹ پہننے پر سوشل میڈیا پر سخت تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔ گنیش کا شمار ملک کے انتہائی معزز دیوتاؤں میں کیا جاتا ہے۔

کامیڈین منور فاروقی کو اندور شہر میں ایک پروگرام کے بعد ایک ماہ سے زائد وقت جیل میں گزارنا پڑا۔

ایک ہندو گروہ کے کارکن نے 30 سالہ منور فاروقی کے سٹیج پر آتے ہی ان پر الزام لگایا کہ وہ ہندو دیوتاؤں کی توہین کا ارادہ رکھتے ہیں۔

منور فاروقی ایک مسلمان ہیں اور اپنے مزاح میں حساس موضوعات کو چھیڑنے کے حوالے سے جانے جاتے ہیں۔ انہوں نے گجرات کے خون ریز فسادات کو بھی موضوع بنایا تھا جب ہندو قوم پرست وزیراعظم نرنیدر مودی تقریبا 20 سال قبل وہاں کے وزیراعلیٰ تھے۔

ایک فوٹو شوٹ کے دوران گنیش دیوتا کا لاکٹ پہننے پر گلوگارہ ریانہ کو انڈیا میں سخت تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔ (فائل فوٹو: اے ایف پی)

پروگرام میں موجود افراد میں سے ایک نے اے ایف پی کو بتایا انہوں نے شائستہ انداز میں اپنا دفاع کرنے کی کوشش کی لیکن وہ جارح مزاج مطمئن نہیں ہوا اور پولیس کو بلا لایا، جس نے منور فاروقی اور چار افراد کو گرفتار کر لیا۔

سپریم کورٹ سے ان کی عارضی رہائی کے حکم سے قبل منور فاروقی کی ضمانت کی در خواستیں تین دفعہ مسترد ہوئیں۔ جبکہ ایک نچلی عدالت نے کہا کہ انہوں نے ’مذہبی جذبات مجروح‘ کیے ہیں۔

جیل سے نکلنے کے بعد منور فاروقی نے ایک ویڈیو پوسٹ کی جس میں انہوں نے کہا تھا کہ ’میں ایک ایسی چیز سے متاثر ہوا ہوں جو میں نے کی ہی نہیں ہے۔‘

مذہب، ایک ارب 30 کروڑ کی آبادی والے اس ملک میں جہاں 80 فیصد افراد ہندو ہیں، ہمیشہ سے ہی ایک حساس موضوع رہا ہے۔ لیکن نریندر مودی کی 2014 سے دو انتخابات میں بڑی جیت نے ان کے سخت گیر حامیوں کو مضبوط کیا ہے۔

بہت سے افراد کا خیال ہے کہ مذہبی توہین کو روکنے کے لیے آزادی اظہار رائے پر پابندی ہونی چاہیے۔

جبکہ اتر پردیش میں بھارتیہ جنتا پارٹی کے سینیئر رہنما پرکاش شرما کا کہنا ہے کہ ’ابھی معاشرہ سو رہا ہے اور اسے برداشت کر رہا ہے۔ اگر انہوں نے اپنے طریقہ کار نہ بدلا تو ان کے  بچے انہیں اپنے ہی گھروں میں مار ڈالیں گے۔‘

اگرچہ بہت سے مزاحیہ فنکاروں نے منور فاروقی کی حمایت کی ہے لیکن ان کا بھی اس خطرے کی زد میں آنے کا امکان ہے۔

Advertisements
merkit.pk

اس حوالے سے سمیل شاہ نامی کامیڈین کا کہنا ہے کہ ’آپ کو مواد کے حوالے سے حساس ہونا ہو گا کیونکہ یہ واضح ہے کہ انڈیا عدم برداشت کا شکار ہوتا جا رہا ہے۔‘

  • merkit.pk
  • merkit.pk

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply