بانو مر گئی۔۔۔۔نیلم ملک

ﺑﺎﻧﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﭼﻨﺪ ﮔﻬﻨﭩﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﺯﺭﺩ ﺭﻭ ﻻﻏﺮ ﺍﻭﺭ ﮐﻤﺰﻭﺭﯼ ﮐﮯ ﻣﺎﺭﮮ ﺑﮯﺳﺪﮪ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﭽﮯ ﮐﻮ ﭼﻮﺭﯼ ﮐﮯ ﻣﺎﻝ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﻐﻞ ﻣﯿﮟ ﺩﺑﺎﺋﮯ ﮨﻤﻮﺍﺭ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﺳﮯ ﭼﻠﺘﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﭽﯽ ﺑﺴﺘﯽ ﺳﮯ ﻧﮑﻞ ﮐﺮ ﺍﺏ ﺷﮩﺮ ﮐﯽ ﺑﮍﯼ ﺳﮍﮎ ﭘﺮ ﺭﻭﺍﮞ ﺗﻬﯽ۔۔

ﺁﺝ ﻧﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﺭﻭﺯﺍﻧﮧ ﻭﺍﻻ ﺗﻬﺎ ﺟﺲ ﭘﺮ ﻭﮦ ﺗﻬﮑﮯ ﺗﻬﮑﮯ ﺍﻭﺭ ﺳُﺴﺖ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﺳﮯ ﭼﻼ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﻬﯽ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﻨﺰﻝ ﻭﮦ ﺑﮍﯼ ﺑﮍﯼ ﮐﻮﭨﻬﯿﻮﮞ ﻭﺍﻟﯽ ﺁﺑﺎﺩﯼ ﺗﻬﯽ ﺟﮩﺎﮞ ﻭﮦ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﮔﻬﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻋﺮﺻﮯ ﺳﮯ ﮐﺒﻬﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﺒﻬﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﻬﯽ .
ﺁﺝ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮨﺮ ﺍُﭨﻬﺘﮯ ﻗﺪﻡ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻋﺠﯿﺐ ﺳﯽ ﺩﻫﻤﮏ ﺗﻬﯽ، ﺟﯿﺴﮯ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﻮ ﭘﻬﺎﮌ ﮈﺍﻟﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﮨﻮ ۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

ﺍﺱ کَل ﯾُﮓ ﻣﯿﮟ ﺟﮩﺎﮞ ﻟﻮﮒ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﻣﺠﺒﻮﺭﯾﻮﮞ ﮐﺎ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﺍﭨﻬﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺫﺭﮦ ﺑﻬﺮ ﻋﺎﺭ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ،ﻭﮨﯿﮟ ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﺷﺨﺺ ﺩﮐﻬﺎﺋﯽ ﺩﮮ ﺟﺴﮯ ﻭﺍﻭﯾﻼ ﻣﭽﺎ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺠﺒﻮﺭﯼ ﮐﺎ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﺍﭨﻬﺎﻧﺎ ﺑﻬﯽ ﮔﻮﺍﺭﺍ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺣﯿﺮﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ . بانو بھی ایسی ہی تھی لیکن آج نجانے کیسے اس کا صبر ٹوٹ گیا۔
ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﺁﺗﮯ ﺁﺗﮯ ﮐﺌﯽ ﺑﺎﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺍﭨﻬﯽ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﺷﮑﻮﮦ ﺗﻬﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻟﺘﺠﺎ، ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﻏﺼﮧ ﺗﻬﺎ ﺍﯾﮏ ﺍﻧﺘﻘﺎﻡ ﺗﻬﺎ ایک ہٹ تھی.جیسے جو ٹھان لیا ہے اس سے کسی طور پیچھے نہیں ہٹے گی۔

ﮐﭽﮫ ﺩﯾﺮ ﭘﮩﻠﮯ ﺗﺨﻠﯿﻖ ﮐﯽ ﺍﺫﯾﺖ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﮐﯽ تھکن ﮐﺎ ﺷﺎﺋﺒﮧ ﺗﮏ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻧﮧ ﺗﻬﺎ ۔
ﻭﮨﺎﮞ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﺳﺨﺘﯽ ﺍﯾﮏ ﺟﻤﻮﺩ ﺗﻬﺎ ﯾﺎ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺯﺭﺩ ﺁﻧﮑﻬﻮﮞ ﺳﮯ ﺟﻬﻠﮑﺘﯽ ﻭﺣﺸﺖ۔۔
ﺍﺱ ﺑﭽﮯ ﮐﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﻭﮦ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﺮ ﭼﮑﯽ ﺗﻬﯽ ﮐﮧ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﺟﺲ ﺑﻬﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺟﻞ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺑﭽﮯ ﮐﻮ ﺍﺱ ﺑﻬﭩﯽ ﮐﺎ ﺍﯾﻨﺪﻫﻦ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﺍﺱ ﺁﮒ ﮐﻮ ﺍﻭﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻬﮍﮐﺎﺋﮯﮔﯽ ۔ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﯿﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﮍﯼ ﺍﻥ ﮔﻮﺷﺖ ﭘﻮﺳﺖ ﮐﯽ ﺯﻧﺠﯿﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮐﺮﮮ ﮔﯽ ﺟﻮ ﺍﺳﮯ ﺍﺱ ﺑﻬﭩﯽ ﮐﯽ ﺁﮒ ﻣﯿﮟ ﺟﮑﮍﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﻬﯿﮟ ۔۔

ﺟﻮ ﺧﻮﺩ ﺑﻬﯽ ﺟﻠﺘﯽ ﺗﻬﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﺑﻬﯽ ﺍﺱ ﺁﮒ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﻨﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﯽ ﺗﻬﯿﮟ ۔
ﺟﻠﺘﯽ ﭘﮕﻬﻠﺘﯽ ﺑُﻮ ﭘﻬﯿﻼﺗﯽ ﻣﮕﺮ ﺭﺍﮐﮫ ﻧﮧ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﯾﮧ ﺑﯿﮍﯾﺎﮞ ﺍﺏ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻝ ﮐﻮ ﺑﻬﯽ ﺟﻼ ﺟﻼ ﮐﺮ ﭘﮕﻬﻠﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻻﻭﮮ ﻣﯿﮟ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﮐﺮ ﭼﮑﯽ ﺗﻬﯿﮟ ۔
ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﺑﺎﻗﯽ ﺭﮨﺎ ﺗﻬﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻃﻠﺐ، ﻓﻘﻂ ﺍﯾﮏ ﺁﮒ ﺗﻬﯽ ﺟﻮ ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﻟﭙﯿﭧ ﻣﯿﮟ ﻟﮯ ﻟﯿﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﺗﻬﯽ۔
اس کے حالات نے اس کے اس یقین کو بھی اس کے بچوں کی طرح بیمار اور کمزور کر دیا تھا کہ ہر ذی روح جب دنیا میں آتا ہے تو اپنے حصے کا رزق اپنے ہمراہ لے کر آتا ہے۔

ﮔﻬﺮ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ ﮐﺮﺍﺋﮯ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﻤﺮﮮ ﮐﮯ ﭨﻮﭨﮯ ﭘﻬﻮﭨﮯ ﮐﺒﺎﮌ ﺧﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻠﮯ ﺳﮯ ﺍﻭﻻﺩ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﯿﻦ ﻧﺎﮐﺎﺭﮦ ﭘﻮﻟﯿﻮ ﺯﺩﮦ ﻭﺟﻮﺩ ﺍﻭﺭ ﮔﻬﺮ ﮐﺎ ﺳﯿﺎﮦ ﯾﺮﻗﺎﻥ ﺯﺩﮦ ﻧﺸﮯ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﻟﮍﺗﺎ ﻣﺮﺗﺎ ﺳﺮﺑﺮﺍﮦ ، مستقل ایک آسیب کی طرح گھر کی خستہ دیواروں سے چمٹی ہوئی ﻏﺮﺑﺖ، ﮐﻮﭨﻬﯿﻮﮞ ﻭﺍﻟﯽ ﺑﯿﮕﻤﺎﺕ ﮐﯽ ﻣﮩﺮﺑﺎﻧﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺁﺋﮯ ﺩﻥ کی بےروزگاری،اور دہلیز پر کسی مشاق اور تنومند چوکیدار کی طرح ڈیرہ جمائے ہوئے ﻓﺎﻗﮯ جو رزق کو دہلیز پار کرنے کی اجازت دینے کو کسی طور راضی نہ تھے ان سب چیزوں کی ستائی بانو ﺍﺱ ﻧﺌﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﯾﮧ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﺮ چکی تھی ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﺱ ﺑﭽﮯ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﻓﻼﺣﯽ ﺍﺩﺍﺭﮮ ﮐﮯ ﺟﻬﻮﻟﮯ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﺁﺋﮯ ﮔﯽ ۔
ﻟﯿﮑﻦ ﺁﺝ ﺟﺐ ﯾﮧ ﺑﭽﮧ ﺍﺱ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻭﭘﭩﮯ ﮐﮯ ﭘﻠﻮ ﻣﯿﮟ ﺷﮩﺮ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﭘﺮ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺍﺩﺍﺭﮮ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﻨﮯ کے لیے محفوظ کیے ہوئے چند روپے بھی دائی کی نظر ہو چکے تھے،جو اس نے اپنی مجبوری کی خاطر لیے کہ آج اس اکیلی جان کا بھی دو دن سے فاقہ تھا ورنہ وہ بانو سے یہ چند روپے کبھی نہ لیتی، آخر ان کا برسوں کا بہناپا تھا۔

ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺘﻨﮯ ﭘﮩﺮ ﮐﺎ ﻓﺎﻗﮧ ﺍﻭﺭ ﺯﭼﮕﯽ ﮐﮯ ﻣﺮﺣﻠﮯ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﮐﯽ تھکان  ﻧﮯ بانو کو ﭘﯿﺪﻝ ﭼﻞ ﮐﺮ ﺍﺩﺍﺭﮮ ﺗﮏ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺳﻮﭼﻨﮯ ﺳﮯ ﺑﻬﯽ ﺑﺎﺯ ﺭﮐﻬﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺑﮯﺣﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺭﺍﺩﮮ ﭘﺮ ﻋﻤﻞ ﮐﺮ ﮔﺰﺭﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﯾﺴﺎ ﺟﻨﻮﻥ ﺳﻮﺍﺭ ﺗﻬﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﺴﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﭘﺮ ﺍﺱ ﺑﭽﮯ ﮐﻮ ﮔﻬﺮ ﻟﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﭘﺮ ﺗﯿﺎﺭ ﻧﮧ ﺗﻬﯽ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻭﮨﯿﮟ ﮐﻬﮍﮮ ﮐﻬﮍﮮ ﻟﻤﺤﮧ ﺑﻬﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﻣﯿﻢ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﺷﮩﺮ ﮐﯽ ﺑﮍﯼ ﻣﮕﺮ ﺳﻨﺴﺎﻥ ﺳﮍﮎ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﭘﮍﮮ ﮐﻮﮌﮮﺩﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﺍﺱ ﺣﺼﮯ ﮐﻮ ﺍﺩﮪ ﻣﻮﺋﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ ﺑﻨﺎ ﭘﯿﭽﻬﮯ ﻣﮍ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﻬﮯ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺯﻣﯿﻦ ﮐﻮ ﭨﻬﻮﮐﺮﯾﮟ ﻣﺎﺭﺗﯽ ﮔﻬﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭼﻞ ﭘﮍﯼ ۔
ﺍﺱ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﺍﯾﺴﯽ ﺗﻬﯽ ﺟﯿﺴﮯ ﮐﺴﯽ ﺟﺎﺩﻭ ﮐﮯ ﺍﺛﺮ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺍﯾﺴﯽ ﺫﮨﻨﯽ ﺳﻄﺢ ﭘﺮ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺍﺋﮯ ﺍﺱ ﺍﯾﮏ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﮯ ﺑﺎﻗﯽ ﮨﺮ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﺳﮯ ﻋﺎﺭﯼ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﮨﻮ ۔۔ﮐﻮﺋﯽ ﺳﻮﭺ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻤﺘﺎ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮧ ﺗﻬﺎ ﺟﻮ ﺍﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺭﺍﺩﮮ ﺳﮯ ﺑﺎﺯ ﺭﮐﻬﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﮨﻮﺗﺎ ۔
ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﻧﻨﻬﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﻨﯽ ﺳﮑﺖ ﮨﻮﺗﯽ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﺱ ﻇﻠﻢ ﭘﺮ ﺍﺣﺘﺠﺎﺟﺎًﭼِﻼ ﺍﭨﻬﺘﺎ ﯾﺎ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺱ ﺑﮯﺣﺮﻣﺘﯽ ﭘﺮ ﭼﯿﺦ ﭘﮍﺗﺎ ﺗﻮ ﺷﺎیدﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﮍﻫﺘﮯ ﻗﺪﻡ ﺭﮎ ﺟﺎﺗﮯ، ﺷﺎید ﻭﮦ ﺍﺳﮯ ﺍﭨﻬﺎ ﮐﺮ ﺳﯿﻨﮯ ﺳﮯ ﻟﮕﺎ ﻟﯿﺘﯽ ۔
ﻣﮕﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﭽﮫ ﻧﮧ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﯾﻮﻧﮩﯽ ﭼﻠﺘﮯ ﭼﻠﺘﮯ ﮔﻬﺮ ﺗﮏ ﺁ ﭘﮩﻨﭽﯽ ۔۔
ﮔﻬﺮ ﭘﮩﻨﭽﯽ ﺗﻮ ﻭﮨﺎﮞ ﺍﺳﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮔﻬﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﭘﮍﻭﺳﻦ ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺭﮮ ﮐﺌﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﻣﻠﮯ ﺟﻠﮯ ﺳﮯ ﮐﻬﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﻬﯽ ﺟﻮ ﺍﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﯿﮕﻢ ﺻﺎﺣﺒﮧ ﮐﮯ ﮔﻬﺮ ﺳﮯ ﻣﻼ ﺗﻬﺎ ﺟﮩﺎﮞ ﭘﭽﻬﻠﯽ ﺭﺍﺕ ﮐﺴﯽ ﺩﻋﻮﺕ ﮐﺎ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﺗﻬﺎ ۔
ﭘﮍﻭﺳﻦ ﭘﮩﻠﮯ ﺳﮯ ﺟﻠﺪﯼ ﻣﯿﮟ ﺗﻬﯽ ﺑﺎﻧﻮ ﮐﮯ ﺁﺗﮯ ﮨﯽ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﻬﺎﻧﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﺎﻟﯽ ﮐﻮﮐﮫ ﺍﻭﺭ ﻭﺣﺸﺖ ﺳﮯ ﺑﻬﺮﯼ ﺁﻧﮑﻬﻮﮞ ﭘﺮ ﺩﻫﯿﺎﻥ ﺩﯾﺌﮯ ﺑﻨﺎ ﺑﺎﮨﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮍﮪ ﮔﺌﯽ۔
ﺑﺎﻧﻮ ﻧﮯ ﻧﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﻬﻮﮐﮯ ﺑﮯ ﺣﺎﻝ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﻬﺎ ﻧﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﺍﻭﺭ ﻧﺸﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﮨﻮﺵ ﭘﮍﮮ ﺑﺎﭖ ﭘﺮ ﺩﻫﯿﺎﻥ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮨﯿﮟ ﺑﯿﭩﮫ ﮐﺮ ﭘﮍﻭﺳﻦ ﮐﮯ ﺩﺋﯿﮯ ﮐﻬﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﻔﺎﻓﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮐﻬﺎﻧﺎ ﻧﮑﺎﻝ ﻧﮑﺎﻝ ﮐﺮ ﮐﻬﺎﻧﮯ ﻟﮕﯽ ۔
ﮐﻬﺎﻧﺎ ﮐﻬﺎ ﮐﺮ ﺟﺐ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﺗﻮﺍﻧﺎﺋﯽ ﺁﺋﯽ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﯾﻮﮞ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺍ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭼﻬﺎﺗﯽ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺩﮪ ﺍﺗﺮﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﮨﻮ۔۔
ﺩﻭﺩﮪ ﮐﯽ ﺍﻥ ﺑﻮﻧﺪﻭﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺟﯿﺴﮯ ﻣﻤﺘﺎ ﮐﮯ ﺳﻮﺗﮯ ﭘﻬﻮﭦ ﭘﮍﮮ ﺟﻮ ﭘﻞ ﺑﻬﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﺑﻠﺘﮯ ﺑﮯﺣﺴﯽ ﮐﮯ ﻻﻭﮮ ﮐﻮ ﺳﺮﺩ ﮐﺮ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺩﻡ ﺍﭨﻬﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﻨﺎ ﺳﺮ ﭘﺮ ﭼﺎﺩﺭ ﺍﻭﮌﻫﮯ ﻧﻨﮕﮯ ﭘﺎﺅﮞ ﻧﻨﮕﮯ ﺳﺮ ﺩﯾﻮﺍﻧﮧ ﻭﺍﺭ ﺍﺱ ﮐﻮﮌﮮ ﺩﺍﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﻭﮌ ﭘﮍﯼ .
ﺭﺍﺳﺘﮯ ﺑﻬﺮ ﻧﮧ ﺍﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﺮﮨﻨﮕﯽ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮨﻮﺍ ﻧﮧ ﭘﯿﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﺒﻬﺘﮯ ﮐﻨﮑﺮ ﭘﺘﻬﺮ ﺍﺳﮯ ﺭﻭﮎ ﺳﮑﮯ ۔
ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺩﯾﺮ ﮐﺮ ﺩﯼ ﺗﻬﯽ ﺟﺐ ﻭﮦ ﻭﺍﭘﺲ ﺍﺱ ﮐﻮﮌﮮ ﺩﺍﻥ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﯽ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺯﻧﺪﮦ ﺳﻼﻣﺖ ﺳﺎﻧﺲ ﻟﯿﺘﺎ ﺑﭽﮧ ﮐﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﺑﻬﻨﻬﻮﮌ ﮐﮯ ﭘﻬﯿﻨﮑﺎ ﮨﻮﺍ ﮔﻮﺷﺖ ﮐﺎ ﻟﻮﺗﻬﮍﺍ ﺑﻦ ﭼﮑﺎ ﺗﻬﺎ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﯽ ﺣﺮﺍﺭﺕ ﺑﺎﻗﯽ ﺗﻬﯽ ﻧﮧ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﺁﻏﻮﺵ ﮐﯽ ﻃﻠﺐ ۔

Advertisements
julia rana solicitors

ﻭﮦ ﮐﺘﻨﯽ ﮨﯽ ﺩﯾﺮ ﺳﺎﮐﺖ ﮐﻬﮍﯼ ﺍﺱ ﮔﻮﺷﺖ ﮐﮯ ﺑﮯﺟﺎﻥ ﻟﻮﺗﻬﮍﮮ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﻬﺘﯽ ﺭﮨﯽ۔۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﻬﺘﮯ ﮨﯽ ﺩﯾﮑﻬﺘﮯ ﮐﻮﮌﮮ ﺩﺍﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﮐﻮﮌﺍ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺩﯾﻮ ﮨﯿﮑﻞ ﭨﺮﮎ ﻭﮨﺎﮞ ﺁ ﮐﺮ ﺭﮐﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺸﯿﻨﯽ ﮨﺎﺗﻬﻮﮞ ﺳﮯ ﮐﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﭼﺒﺎﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﺱ ﺑﮯﺟﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺍﺩﻫﻮﺭﮮ ﻭﺟﻮﺩ ﺳﻤﯿﺖ ﺍﺱ ﮐﻮﮌﮮﺩﺍﻥ ﮐﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﺁﻻﺋﺶ ﺍﭘﻨﮯ ﻏﻠﯿﻆ ﺁﮨﻨﯽ ﺷﮑﻢ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺎﺭ ﮐﺮ ﺟﺎ ﺑﻬﯽ ﭼﮑﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻧﮧ ﺍﺱ ﺳﺎﺭﮮ ﻋﻤﻞ ﮐﻮ ﺭﻭﮐﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﻧﮧ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﺍﺱ ﮔﻮﺷﺖ ﮐﮯ ﻟﻮﺗﻬﮍﮮ ﮐﻮ ﺍﭨﻬﺎﻧﺎ ﭼﺎﮨﺎ ﺟﺴﮯ ﮐﭽﮫ ﮔﻬﻨﭩﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﺴﻢ ﺳﮯ ﮐﺎﭦ ﮐﺮ ﺍﺱ ﮐﻮﮌﮮ ﺩﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﻬﯿﻨﮏ ﮔﺌﯽ ﺗﻬﯽ ۔
ﺑﺲ ﺳﺎﮐﺖ ﮐﻬﮍﯼ ﺍﺱ ﺳﺎﺭﮮ ﻋﻤﻞ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﻬﺘﯽ ﺭﮨﯽ . ﻗﺮﯾﺐ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﺗﮯ ﺍﮐﺎ ﺩﮐﺎ ﻣﺴﺎﻓﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﭘﻞ ﺑﻬﺮ ﮐﻮ ﺭﮎ ﮐﺮ ﺣﯿﺮﺕ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﻬﻨﮯ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﺭﺗﮑﺎﺯ ﮐﯿﺎ ﭨﻮﭨﺘﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺗﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﭨﻬﺘﮯ ﻃﻮﻓﺎﻥ ﮐﯽ ﺯﺩ ﭘﺮ ﺗﻬﯽ ﺟﺲ ﮐﺎ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺩﯾﺮ ﻣﻘﺎﺑﻠﮧ ﻧﮧ ﮐﺮ ﭘﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﯽ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮈﻫﯿﺮ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ۔

  • julia rana solicitors
  • julia rana solicitors london
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • merkit.pk

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست ایک تبصرہ برائے تحریر ”بانو مر گئی۔۔۔۔نیلم ملک

Leave a Reply