منتخب حکومتوں کو باقاعدگی سے پٹڑی سے اتارنے والے۔۔عامر حسینی

حسن نثار پاکستانی میڈیا کی واحد گندی مچھلی نہیں ہے – ریاض ملک
جمہوریت کے حامی کارکنوں کے لیے حسن نثار کا پرتشدد نسخہ شاید ہی حیران کن ہو۔ وہ وہی بوسیدہ باتیں کر رہا ہے جو ڈرائنگ روم ڈسکورس کی پہچان ہیں۔
بہر حال، ذوالفقار علی بھٹو اور بے نظیر کو جمہوریت کی جنوبی ایشیائی تفہیم “عوامی راج” کی وکالت کرنے پر دھمکیاں اور قتل کیا گیا ہے۔
زرداری 11 سال جیل گئے اور آج بھی منتخب پارلیمنٹ کو اقتدار سونپنے پر ہر کوئی طعنہ دے رہا ہے۔ بلاول کو ٹی ٹی پی سے خطرہ ہے۔
اور پاکستان کا گٹر اسٹیبلشمنٹ میڈیا جو کہ ہاؤس آف شریف اور بنی گالہ کے درمیان بٹا ہوا ہے، حسن نثار سے مختلف نہیں۔
2009-11 کے درمیان، نجم سیٹھی اور سیرل المیڈا جیسے پی ایم ایل این کے میڈیا ہیکس جنرل کیانی کو پیپلز پارٹی کی منتخب حکومت کا تختہ الٹنے پر اکساتے تھے۔
پاکستان کے لبرل اور بوتیک بائیں بازو کے عزیز افتخار چوہدری نے جنرل مشرف جیسے فوجی آمروں سے حلف لے کر کئی بار آئین کی خلاف ورزی کی۔
سول سوسائٹی کے ایک اور عزیز جسٹس منیر نے پاکستان میں پہلی باضابطہ فوجی بغاوت کی توثیق کی۔
گاؤن اور وگ پہنے ججز اور ہتھوڑے لہراتے ہوئے معاوضے کے طور پر پی پی پی کی منتخب حکومتوں کو باقاعدگی سے پٹڑی سے اتارتے رہے ہیں۔
اسی عدلیہ نے بھٹو کے قتل میں بھی تعاون کیا اور اب بھی بینظیر کے قتل کی پردہ پوشی میں تعاون کر رہی ہے۔
ڈکٹیٹر اور ججز، بیوروکریٹس اور میڈیا جنہوں نے انہیں سہولت فراہم کی، پاکستان میں آج بھی پوجا جاتا ہے۔
کاشف عباسی اور طلعت حسین کا کوئی بھی کلپ دیکھ لیں اور ان کے قبض زدہ تاثرات اس وقت مشکل ہو گئے جب وہ ٹی وی پر پی پی پی پر طعن و تشنیع کر رہے تھے۔
حامد میر نے اسامہ بن لادن کا موازنہ بلوچ قوم پرستوں سے کیا۔ مہر بخاری نے قتل سے پہلے پیپلز پارٹی کے پنجاب کے گورنر سلمان تاثیر کے خلاف اکسایا تھا۔
کل وہی حسن نثار اور حامد میر بھی جمہوریت کے حامی بیان دے سکتے ہیں جیسا کہ وہ ماضی میں دیتے رہے ہیں۔ لیکن اس سے کسی کو مرکزی دھارے کے میڈیا کے بارے میں سنجیدگی سے شکوک و شبہات سے باز نہیں آنا چاہیے۔
یہ وہی میڈیا ہے جو پیپلز پارٹی کے منتخب لیڈروں کا یک طرفہ ٹرائل کرتا ہے اور ریاست کی جانب سے جمہوریت کو دبانے کا جواز فراہم کرتا ہے۔
یہ وہی میڈیا ہے جو جماعت اسلامی اور ایم کیو ایم کے فاشسٹوں کے خلاف زبان بند کر دیتا ہے۔ یہ وہی میڈیا ہے جو پی ٹی آئی اور پی ایم ایل (ن) کے نمائندوں کو بلا تعطل ہوا کا وقت دیتا ہے جبکہ پی پی پی کے مہمانوں پر مسلسل مداخلت اور حملے کرتا ہے۔
اگرچہ کسی کو خوشی ہے کہ حسن نثار نے اپنے عدم برداشت کے سلسلے کو بے نقاب کیا اور اپنی عدم مطابقت کو بڑھا دیا، ایسا نہیں ہے کہ وہ اپنی حماقت میں غیر معمولی ہیں۔ وہ اصل میں کافی معمول ہے.

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london

عامر حسینی
عامر حسینی قلم کو علم بنا کر قافلہ حسینیت کا حصہ ہیں۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply