سو لفظوں کی کہانی ۔ سیلری

سب جا چکے آفس میں ہم دونوں تھے۔ ڈوڈو اپنے نئے فون میں مگن تھا
میں نے ڈوڈو سے پوچھا۔ چائے منگواؤں۔۔۔؟
ڈوڈو :ھممم۔۔۔
ڈوڈو چائے آگئی۔۔۔
ڈوڈو :ھممم۔۔۔
ڈوڈو آج موسم کافی اچھا ہے ناں۔۔۔؟
ڈوڈو :ھممم۔۔۔
ڈوڈو آج پیٹرول ایک روپیہ مہنگا ہوگیا۔۔۔
ڈوڈو :ھممم۔۔۔
ڈوڈو میری بلی نے تین بچے دیئے ہیں۔۔۔
ڈوڈو :ھممم۔۔۔
اور میرے جو تین طوطے تھے انہوں نے انگریزی بولنا بھی سیکھ لیا ہے۔۔۔
ڈوڈو :ھممم۔۔۔
ارے ڈوڈو میری سیلری آگئی۔۔۔
ڈوڈو چونکا۔۔۔ ھیں ۔۔؟ واقعی۔۔؟ اتنی جلدی۔۔؟ کب۔۔؟ کیوں۔۔؟ کیسے۔۔؟
میں: ھممم۔۔۔
زیدی بتا ناں۔۔۔
میں: ھممم۔۔۔
ارے زیدی یار بول ناں۔۔۔
میں: ھممم۔۔۔

مدثر ظفر
مدثر ظفر
فلیش فکشن رائٹر ، بلاگر

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *