• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • ڈائنا چاویانو : کیوبا کی سائنس فکشن کی ناول نگار ( تعارف اور ان کا تخلیقی مزاج)۔۔احمد سہیل

ڈائنا چاویانو : کیوبا کی سائنس فکشن کی ناول نگار ( تعارف اور ان کا تخلیقی مزاج)۔۔احمد سہیل

ڈائنا چاویانو {DaínaChaviano} ہوانا {کیوبا } میں انیس فروری 1957 میں پیدا ہوئی۔ ان کے والد ماہر اقتصادیات تھے۔ ان کی والدہ نے فلسفہ اور ادب میں ڈاکٹریٹ کی سند حاصل کی اور ایک ڈگری نفسیات میں بھی حاصل کی۔ ڈائنا چاویانو اپنے ماں باپ کی چار اولادوں میں سب سے بڑی اولاد ہیں۔ انھوں نے ہوانا یونیورسٹی سے انگریزی زبان اور ادب میں ڈگری حاصل کی ہے۔
وہ 1991 سے ریاستہائے متحدہ میں مقیم فرانسیسی اور آسٹورین نسل کی کیوبا نژاد امریکی مصنفہ ہیں۔ اسے تین اہم ترین خواتین میں سے ایک تصور کیا جاتا ہے۔ جنھوں نےامریکہ میں معروف ہسپانوی زبان میں سائنس فکشن مصنفین، لبرو {امریکہ} انجیلیکا گوروڈیشر (ارجنٹینا) اور ایلیا بارسیلو (اسپین) کرامریکہ میں سائنس فکشن کی نسائی تثلیث” کا حلقہ تشکیل دیا ہیں۔ کیوبا میں انھوں نے کئی سائنس فکشن اورواہماتی {فینٹسی} کتابیں شائع کیں اور یوں کیوبا کے ادب میں ان انواع میں سب سے زیادہ مشہور اور سب سے زیادہ فروخت ہونے والی مصنفہ بن گئی۔
وہ بنیادی طور پر ایک ناول نگار ہیں، انھوں  نے خاص طور پر سائنس فکشن کی صنف کو پروان چڑھایا۔ حالانکہ وہ روایتی مسائل اور صحافت پر بھی کام کرتی ہیں ،وہ شاعری کی طرف راغب ہوئی۔ان افسانے کے اندرشاعرانہ لہجہ ملتا ہے۔ ، وہ افسانوی اظہار میں دور بینی / ماورائی نفسیات یا پیرا سائیکالوجی، جادوئی اور اساطیریت اور دیگر لاجواب موضوعات سے نمٹتی نظر آتی ہیں انھیں ہسپانوی زبان میں واہماتی یا فینٹسی اور سائنس فکشن ادب کی تین اہم ترین مصنفین میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔
کیوبا میں رہتے ہوئے، ان کی کئی واہماتی اور سائنس فکشن کتابیں شائع ہوئی، یوں  وہ اپنے ملک کی تاریخ میں سب سے زیادہ فروخت ہونے والی اور سب سے زیادہ پسند کی جانے والی مصنفہ بن گئیں۔ امریکہ نقل مکانی کے بعد، 1991 میں وہ ناولوں کی ایک سیریز لکھنے میں مصروف ہو گئی۔ جہاں ان کے مضبوط افسانوی اظہار اور لاجواب عناصر کے ساتھ زیادہ عصری اور تاریخی مسائل کو حل کرتا دکھائی دیتا ہے۔
اس کی نثر سلیس ، عام فہم اور لاجواب ہے جو روایتی طریقوں میں یکساں آسانی کے ساتھ تخلیقی سفر کرتی ہے۔ اور انھوں نے بین الاقوامی ایوارڈز حاصل کئے اوراپنی شناخت بنائی۔
اس کے مضامین میں افسانہ، شہوانی، قدیم تاریخ، عمرانیات ، پیرا سائیکالوجی، سیاست اور جادوئی عناصر شامل ہیں، جو ایک ہی وقت میں شاعرانہ اور حسی تمثالیت سے بھرے اسلوب کے ساتھ تشکیل پاتے ہیں ۔
ڈائنا چاویانو کو 1979 میں اسے لاس منڈوس کیو امو کے لیے سائنس فکشن کا ڈیوڈ پرائز ملا، جو 15 سے 19 سال کی عمر کے درمیان لکھی گئی مختصر کہانیوں کا مجموعہ ہے۔ اس کتاب کو ریڈیو کے لیے ڈھالا گیا تھا اور اس کا فوٹو نوول ورژن تھا جس نے دو ماہ سے بھی کم عرصے میں 200,000 کاپیاں فروخت کیں، جس نے کیوبا میں سائنس فکشن کی بڑے پیمانے پر پہچان شروع کی۔
1982 میں مصنف نے لاطینی امریکہ میں پہلی سائنس فکشن ادبی ورکشاپ کی بنیاد رکھی۔ بعد میں، اس نے بچوں، نوجوانوں اور بڑوں کے لیے ٹیلی ویژن پروگراموں کے لیے اسکرپٹ رائٹر کے طور پر کام کیا۔ وہ ٹیلی ویژن اور ریڈیو پریزینٹر تھیں۔ اس نے کچھ آزاد سنیما فلموں میں بطور اداکارہ بھی کی تھی۔
کیوبا میں رہتے ہوئے ڈائنا چاویانو نے سائنس فکشن اورفینٹسی کے کئی کام شائع کیے۔ ان کے عنوانات میں لونگ پلانیٹ (مختصر کہانیاں، 1983)، بالغوں کے لیے پریوں کی کہانیاں (ناول، 1986)، ایک ماورائے دنیا کی دادی کے افسانے (ناول، 1988)، دی اینونسیشن (فلم اسکرپٹ، 1990) اور دی واٹرنگ ہول آف دی ڈایناسور ( کہانیاں، 1990)۔ مشہور ہوئی۔
کیوبا سے باہر، اس نے شہوانی، شہوت انگیز اعترافات اور دیگر منتر (نظم)، کنٹری آف ڈریگنز (کہانیاں) اور ناولوں کی سیریز “لا حبانا اوکلٹا” شائع کی ہے، جس میں مرد، عورت اور بھوک، ہاؤس آف گیمز، گاتا اینسرراڈا شامل ہیں۔ اور لا آئی لینڈ آف انفینیٹ لوز، 25 زبانوں میں شائع ہوا اور جو اب تک کا سب سے زیادہ ترجمہ کیا جانے والا کیوبا ناول بن گیا ہے۔
ڈائنا چاویانو کو متعدد بین الاقوامی اعزازات اورانعامات ملے ہیں پرائز (Berlin Academy of Arts, Germany, 1990) for an Extraterrestrial grandmother; ازورین ڈی نویلا ایوارڈ (اسپین، 1998) مرد، عورت اور بھوک کے لیے؛ گولیارڈوس انٹرنیشنل فینٹسی ایوارڈ (میکسیکو، 2003)؛ فنٹاسٹک آرٹ کی 25ویں بین الاقوامی کانگریس میں مہمان اعزازی (فورٹ لاڈرڈیل، امریکہ، 2004)؛ اور ہسپانوی زبان میں بہترین کتاب کے لیے گولڈ میڈل (فلوریڈا بک ایوارڈز 2006، USA) La isla de los amores infinitos ملا۔
ڈائنا چاویانو کے ادبی اثرات بنیادی طور پر سیلٹک { Celtic }دنیا سے، متنوع افسانوں سے، اور قدیم لوگوں کےبنیادی روزمیہ سے اخذ ہوتے ہیں۔ ان ذرائع میں سے کوئی آرتھورین سائیکل{ Arthurian cycle; }تلاش کر سکتا ہے۔ یونانی، رومن، مصری، قبل کولمبیا اور افریقی کیوبا کے افسانے؛ اور بنی نوع انسان کی پہللا رزمیہ ہے، جس کا تعلق قبل از تاریخ سے ملتا ہے ۔
مصنفہ نے مشاہدہ کیا ہے کہ ان کا کسی بھی دور کے کیوبا کے ادب سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ چاویانو نے بیان کیا ہے کہ، مانوئل موجیکا لینیز اور ماریو ورگاس لوسا جیسے مصنفین کو چھوڑ کر لاطینی امریکہ کے ساتھ اس کا واحد رابطہ کولمبیا سے پہلے کا افسانہ ہے۔
ڈائنا چاویانو کا موقف ہے کہ اینگلو سیکسن ادب کے لیے اس کا جذبہ ہمیشہ اتنا مضبوط تھا کہ جب وہ یونیورسٹی میں داخل ہوئی تو اس نے انگریزی ادب میں میجر کرنے کا فیصلہ کیا تاکہ وہ ان میں سے بہت سے مصنفین کو ان کی اصل زبان میں پڑھ سکیں۔
عام اصطلاحات میں، اس کے ہم عصر اثرات یورپی اور اینگلوفون مصنفین جیسے مارگریٹ اٹوڈ، میلان کنڈیرا، ارسلا کے لی گِن، رے بریڈبری، ایناس نین، جے آر آر ٹولکین، اور ولیم شیکسپیئر وغیرہ سے آتے ہیں۔ کے ادبی اثرات بنیادی طور پر سیلٹک دنیا سے، متنوع افسانوں سے، اور قدیم لوگوں کے بنیادی رزمیوں سے اخذ ہوتے ہیں۔ ان ذرائع میں سے کوئی آرتھورین سائیکل تلاش کر سکتا ہے۔ یونانی، رومن، مصری، پری کولمبیا اور افریقی کیوبا کے افسانے؛ اور بنی نوع انسان کی پہلی رزمیہ ، جو قبل از تاریخ سے ملتی ہے، جیسے گلگامیش کی رزمیہ، مہابھارت، پوپول ووہ، اوڈیسی، اور اسی طرح کے دیگرقصص اور داستانون میں نظر آتا ہے ۔
ڈائنا چاویانو کا کہنا ہے کہ اینگلو سیکسن ادب کے لیے اس کا جذبہ ہمیشہ اتنا مضبوط تھا کہ جب وہ یونیورسٹی میں داخل ہوئی تو اس نے انگریزی ادب میں میجر کرنے کا فیصلہ کیا تاکہ وہ ان میں سے بہت سے مصنفین کو ان کی اصل زبان میں پڑھ سکوں ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
*ہسپانوی میں شائع شدہ تحریریں
*کیوبا سے باہر ان کی شائع ہونے والی کتابیں
2007: بالغوں کے لیے پریوں کی کہانیاں (مختصر ناول)۔ منوٹورو، اسپین۔
2006: لامحدود محبتوں کا جزیرہ (ناول)۔ ادارتی گرجالبو،ا سپین۔
2005: ڈائنوسار کی گرت (کہانیاں)۔ نئی تصویری ڈاک ٹکٹ، میکسیکو۔
2004: The worlds that I love (ناول)۔ ادارتی الفاگوارا، بوگوٹا، کولمبیا۔
2003: اجنبی دادی کے افسانے (ناول)۔ ادارتی اوقیانوس، میکسیکو۔
2001: ڈریگن کا ملک (کہانیاں)۔ ایسپاسا جوونیل، میڈرڈ، سپین۔
2001: کیٹ لاک اپ (ناول)۔ ادارتی پلینیٹا، بارسلونا، اسپین۔
1999: ہاؤس آف گیمز (ناول)۔ ادارتی پلینیٹا، بارسلونا، اسپین۔
1998: مرد، عورت اور بھوک (ناول)۔ ادارتی پلینیٹا، بارسلونا، اسپین۔
1994: شہوانی، شہوت انگیز اعترافات اور دیگر منتر (شاعری)۔ ادارتی بیطانیہ، میڈرڈ، اسپین۔
* کیوبا میں شائع ہونے والی ڈائنا چاویانو کی کتابیں
1990: ڈائنوسار کی گرت (کہانیاں)۔ کیوبا کے خطوط۔
1989: اعلان (فلم سکرپٹ)۔ ادارتی یونیورسٹی کی توسیع۔
1988: اجنبی دادی کے افسانے (ناول)۔ کیوبا کے خطوط۔
1986: بالغوں کے لیے پریوں کی کہانیاں (مختصر ناول)۔ کیوبا کے خطوط۔
1983: محبت کرنے والا سیارہ (کہانیاں)۔ کیوبا کے خطوط۔
۔1980: وہ دنیا جو مجھے پسند ہیں (کہانیاں)۔ یونین ایڈیشنز۔
ڈائنا چاویانو ایک توانا ادیبہ ہیں۔ اس کے سائنس فکشن کا جواب نہیں اس میں ان کا شاعرانہ اسلوب اور نظام تمثالت کا اظہار اورانھیں اپنے تخلیقی ادب میں اسے سمونے کا ہنر آتا ہے۔ یہی اسلوبیاتی فطانت اور زیرک پن ان کے افسانوی آفاق کو وسیع ہی نہیں کرتا بلکہ ناول کی فکریات کے کئی تنقیدی نظریات کو بھی دریافت کرتا ہے۔ انھوں نے ادب میں سائنسی فکشن میں تانیثی  رسائی اور مزاج کو بھی ایک نئے انداز سے متعارف کروایا۔

  • merkit.pk
  • merkit.pk

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply