نذر غالب، نظم آنند(۳)۔۔۔ڈاکٹر ستیہ پال آنند

؎ از درختان ِ ِ خزاں دیدہ نہ باشم کیں ہا

   ناز بر تازگی ٔ برگ و نوا نیز کنند

 ۰۰

خزاں کا موسم تو آ گیاہے

میں ٹُنڈا مُنڈا سا ، ایک جو گی ہوں

ہاتھ میں ایک کہنہ کشکول تھام کر یوں کھڑا ہوا ہوں

کہ جیسے میرے بدن کی یہ ٹوٹ پھوٹ ۔۔۔

قطع و بریداک دن تو ختم ہو گی

خزاں اگر میرے سارے بخیے ادھیڑ دیتی ہے ۔۔۔

میرے پتوں کو نوچ لیتی ہے۔۔۔

کیا ضروری نہیں ہے، اک دن بہار آئے

مجھے مرا انتفاع دے۔۔۔

کہ میں بھی افزوں، سوا، سوایا

ہرا بھرا ہو کے جھوم اٹھوں

کہ یہ تو قدرت کا ایسا دستور ہے کہ جس سے مفر نہیں ہے

 بہار تو وہ پیام ِ ِ صبح ہے

سوکھے پیڑوں کو جو پنپنے کا اذن دیتا ہے!

مگریہ کیا گل کھلا دیا ہے نظام ِ قدرت نے میرے حق میں

(کہ میرے اتلاف میں؟)، بتائو!

خزاں تو چھائی ہوئی ہے مجھ پر

 مگر

 ورائے قیاس ہے کہ بہارآئے

کہ میں بھی روئیدگی پہ اپنی یہ فخر سے کہہ سکوں

کہ میں بھی ہرا بھرا ہوں

عجیب دستور ہے یہ میرے لیے کہ میں نے

خزاں ہی دیکھی ہے ۔۔۔سالہا سال

 ایک رُت ہی مرے مقدر کی خاصیت ہے!

   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

*اردو میں اس شعر کا آزاد ترجمہ کچھ یوں ہو گا۔’’ میں ایک خزاںگزیدہ شجر بھی تو نہیں ہوں، کہ سارے اشجار پر اگر خزاں آتی ہے، تو بہار کے آنے کا امکان رہتا ہے، اور ایسا درخت اپنے ہرے بھرے ہونے پر ناز کر سکتا ہے،: میں تو وہ پیڑ ہوں جس پر خزاں آئی تو پھر ٹھہری ہی رہی، بہا ر کے آنے کا کوئی امکان نہیں ہے۔ـ

** غم اور خوشی، خزاں اور بہار ۔۔۔۔قرآن میں یہ تفسیر ملتی ہے جس میں تاکیداً ایک آیۃ دہرائی گئی ہے ۔ اِن ً مَعَ العُسرِ یُسُرَاً، اِن ً مَع َالعُُسرِ یُسُراً (بلا شبہ مشکل کے ساتھ آسانی ہے ۔۔۔یقینا مشکل کے ساتھ آسانی ہے) اس شعر کے خلق ہونے کے لمحے میں شاید غالبؔ کے ذہن میں یہ آیۃ موجود ہو۔

ڈاکٹر ستیہ پال آنند پاکستان کے بیٹے ہیں اور ہمارا فخر۔ 

مکالمہ
مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *