ﺁﺭﺍﻡ ﯾﺎ ﺳﮑﻮﻥ؟ — اشتیاق حجازی

ﻣﯿﺮﯼ شاہ جی ﺳﮯ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺖ ﮐﮯ ﺗﻮﺳﻂ ﺳﮯ ہوئی۔ ان کی ﺷﺨﺼﯿﺖ ﮐﯽ ﮔﮩﺮﺍئی ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﻑ ﮐﮭﯿﻨﭻ ﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ-۔ وہ ﺩﺭﻭﯾﺶ ﺗﻮ ﻧﮧ ﺗﮭﮯ ﭘﺮ ﺩﺭﻭﯾﺸﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ضرور ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺻﻞ ﭨﮭﮑﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﭘﺘﮧ ﻧﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻭﺳﺖ ﮐﻮ ﺗﮭﺎ ﻧﮧ ﻣﺠﮭﮯ۔ ویسے ہم نے یہ ﺟﺎﻧﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ بھی نہیں کی۔ ﮨﻢ بس ﺍﺗﻨﺎ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ شاہ جی ﺟﻤﻌﮯ ﮐﯽ ﺷﺎﻡ ﺩﺭﯾﺎ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﭨﮩﻠﺘﮯ ﮨﻮﮰ ﻣﻞ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ شاہ جی کا حلیہ عام تھا مگر ہمارے لیے وہ خاص تھے۔ ان کے ﺳﺎﺗﮫ ﺩﺭﯾﺎ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﭼﮩﻞ ﻗﺪﻣﯽ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﻋﻠﻢ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻟﯿﮱ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﺏ ﺗﮏ ﮐﺘﺎﺑﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﻨﮓ ﻣﯿﻞ ﻋﺒﻮﺭ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﮰ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﺍﺻﻒ ﻋﻠﯽ ﻭﺍﺻﻒ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺍﮐﺜﺮ ﯾﮩﯽ ﮐﮩﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﻭﮦ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻭ ﺟﻮ ﮐﺘﺎﺏ ﺳﮯ ﻧﮧ ﭘﻮﭼﮫ ﺳﮑﻮ، ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﮐﺘﺎﺏ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﮯ ﮔﮱ ﺳﻮﺍﻟﻮﮞ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﮐﺘﺎﺏ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﮨﯽ ﻣﻞ ﺟﺎﺗﺎ ہے۔


ﺍﺱ ﺟﻤﻌﮯ ﮐﯽ ﺷﺎﻡ ﺑﮭﯽ ﮨﻢ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ ﮐﯽ ﺁﺱ لیے ﺩﺭﯾﺎ ﮐﻨﺎﺭﮮ پہنچ ﮔﮱ۔ شاہ جی ﺣﺴﺐ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﻭﮨﯿﮟ ﺗﮭﮯ۔ ﺟﺎﮔﻨﮓ ﺳﻮﭦ ﭘﮩﻨﮯ، ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺗﺴﺒﯿﺢ ﻟﯿﮱ، ﭨﮩﻠﺘﮯ ﮨﻮئے، کچھ ورد کرتے، ﺍﭘﻨﯽ ﺩﮬﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮫ مگن۔ ﮨﻢ نے قریب پہنچ کر سلام کیا۔ “ﭼﻠﻮ ﺑﯿﭩﺎ ﺁ ﺟﺎﺅ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﻭﺍﮎ ﭘہ”۔ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﺷﻔﯿﻖ ﻣﺴﮑﺮﺍﮨﭧ ﺳﺠﺎﮰ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﻼﻡ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﮩﺎ۔


“ﻧﮩﯿﮟ شاہ جی، ﺁﭖ ﻭﺍﮎ ﮐﺮﯾﮟ، ﮨﻢ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ”۔ ﮨﻢ ﻧﮯ معذرت ﺧﻮﺍﮨانہ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﺍﺏ دیا ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﮨﻮ ﮐﺮ ان کا ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﮐﺮﻧﮯلگے۔


ﺩﺭﯾﺎ ﺍﭘﻨﯽ ﺭﻭﺍﻧﯽ ﺑﺮﻗﺮﺍﺭ ﺭﮐﮭﮯ ﮨﻮﮰ ﺗﮭﺎ۔ ﻓﻀﺎ ﻣﯿﮟ ﺑﺲ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮﻭﮞ ﮐﻮﻭﺍﭘﺲ ﻟﻮﭨﺘﮯ ﭘﺮﻧﺪﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺗﮭﯽ۔ ﺩﻭﺭ ﮐﮩﯿﮟ ﮐﺮﮐﭧ ﮐﮭﯿﻠﺘﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺑﮭﯽ ﺳﻨﺎﺉی ﺩﮮ ﺭﮨﯽ تھی۔


ﭼﻨﺪ ﻣﻨﭧ ﻭﺍﮎ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ شاہ جی ﮨﻤﺎﺭﮮ ﭘﺎﺱ آئے ﺍﻭﺭ ﺁﻟﺘﯽ ﭘﺎﻟﺘﯽ ﻣﺎﺭ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮫ گئے۔

‘ہاں ﺑﮭﺊ ﺁﺝ ﮐﯿﺎ ﺳﻮﺍﻝ ﻻﮰ ﮨﻮ ﺗﻢ ﻟﻮﮒ “. ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﻨﺪﮬﮯ ﮐﻮ ﺗﮭﭙﺘﮭﭙﺎﺗﮯ ﮨﻮﮰ ﮐﮩﺎ۔
شاہ جی ﺁﺝ ﺍﺷﺘﯿﺎﻕ ﮐﭽﮫ ﭘﻮﭼﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺁﺻﻒ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺍﺷﺎﺭﮦ ﮐﺮﺗﮯ ہوئے کہا۔
ﮨﺎﮞ ﮨﺎﮞ ! ﭘﻮﭼﮭﻮ , ﺁﭖ ﭘﻮﭼﮭﻮ ﺍﺷﺘﯿﺎﻕ ! ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﻣﺨﺎﻃﺐ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﮰ ﮐﮩا۔


‘ ﺳﺮ ﺟﯽ ﯾﮧ ﺁﺭﺍﻡ ﻭ ﺳﮑﻮﻥ ﮐﯿﺴﮯ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ؟’ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ
‘ ﺑﯿﭩﺎ ﭘﮩﻠﯽ ﺑﺎﺕ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺳﻤﺠﮭﻮ ﮐﮧ ﺁﺭﺍﻡ ﺍﻭﺭ ﺳﮑﻮﻥ ﺩﻭ ﺍﻟﮓ ﺍﻟﮓ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﮨﯿﮟ۔ ﺩﻭﻧﻮﮞ آپ کو ﺍﯾﮏ ﺳﺎﺗﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻞ ﺳﮑﺘﮯ۔ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ کے الٹ ﮨﯿﮟ۔ ﺁﺭﺍﻡ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺟﺎﺅ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺳﮑﻮﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ۔ ﺳﮑﻮﻥ ﮐﮯ ﺳﻔﺮ ﻣﯿﮟ ﺁﺭﺍﻡ ﻣﺸﮑﻞ ﺳﮯ ﮨﯽ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ’۔  ﺑﺎﺕ ﺳﻤﺠﮫ ﺁﺉی؟

ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺳﻮﺍﻟﯿﮧ ﭼﮩﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﻮﮰ ﭘﻮﭼﮭﻨﮯ ﻟﮕﮯ۔  ﻣﺘﻀﺎﺩ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮ ﮔﺌﯿﮟ ﺳﺮ؟’ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﭽﮫ ﻧﮧ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﻮﮰ ﮐﮩﺎ۔
‘ﻣﯿﮟ ﺳﻤﺠﮭﺎﺗﺎ ﮨﻮں’۔


‘ ﺁﺭﺍﻡ ﺟﺴﻢ ﮐﯿﻠﯿﮱ ﮨﮯ ﺟﺒﮑﮧ ﺳﮑﻮﻥ ﺭﻭﺡ ﮐﯿﻠﯿﮱ ﮨﮯ۔ ﺁﺭﺍﻡ ﺟﺴﻢ ﮐﯿﻠﯿﮱ ﺗﻮ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﻣﻨﺪ ﮨﮯ مگر ﺭﻭﺡ ﮐﯿﻠﯿﮱ ﻧﻘﺼﺎﻧﺪہ۔ ﮨﻢ ﺳﺎﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺁﺭﺍﻡ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮱ ﮔﺰﺍﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺁﺭﺍﻡ ﻣﻞ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﺳﮑﻮﻥ ﺑﮭﯽ ﻣﻞ ﺟﺎہے ﮔﺎ۔ ﺍﭼﮭﺎ ﮔﮭﺮ ﻟﮯ ﻟﯿﺎ، ﺍﭼﮭی ﮔﺎﮌﯼ ﻟﮯ ﻟﯽ، ﻧﺮﻡ ﻭ ﮔﺪﺍﺯ بستروں ﭘﺮ ﺭﺍﺕ ﺑﺴﺮ ﮐﺮﻟﯽ، ﺍﭼﮭﮯ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﺎ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﮭﺎ ﻟﯿﺎ، ﺑﯿﻨﮏ ﺑﯿﻠﻨﺲ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ سب کے ﺑﻌﺪ وہ ﺳﻮﭼﺘﮯ ﮨﯿﮟ کہ ﺍﺏ ﮨﻢ ﭘﺮﺳﮑﻮﻥ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮔﺰﺍﺭﯾﮟ ﮔﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺳﮑﻮﻥ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ’۔ ﻭﮦ ﺳﺮ ﺟﮭﮑﺎئے ﺍﭘﻨﯽ ﺩﮬﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭے۔


ﮐﺒﮭﯽ ﻏﻮﺭ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﯿﻮﮞ ﮨﮯ؟ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺳﺮ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ہوئے کہا۔

۔‘‘ﺁﭖ ﮨﯽ ﺑﺘﺎﺋﯿﮟ شاہ جی؟”ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﮐﺴﯽ ﺗﺎﺳﻒ ﮐﮯ ﮐﮩا

 

” ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺳﮑﻮﻥ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﺭﻭﺡ ﺳﮯ ﮨﮯ ” ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﺎﺕ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﻮﮰ ﮐﮩﺎ۔ ﺳﮑﻮﻥ ﺭﻭﺡ ﮐﯽ ﻍﺫﺍ ﮨﮯ۔ ﺟﺴﻢ ﮐﻮ ﺁﺭﺍﻡ ﮐﯽ ﻃﻠﺐ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺡ ﮐﻮ ﺳﮑﻮﻥ ﮐی۔  ﺁﻗﺎء ﮐﺮﯾﻢ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺩﻧﯿﺎﻭﯼ ﺁﺭﺍﻡ ﻃﻠﺐ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ، ﻧﮧ ﺍﭼﮭﺎ ﮐﮭﺎﻧﺎ، ﻧﮧ ﺍﭼﮭﺎ ﮔﮭﺮ ﻧﮧ ﺍﭼﮭﮯ ﮐﭙﮍﮮ، ﻧﮧ ﻋﯿﺶ ﻭ ﻋﺸﺮﺕ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮔﺰﺍﺭﯼ۔ ﯾﮧ ﺳﺐ ﮐﺮﮐﮯ ﮨﻤﯿﮟ ﺳﺒﻖ ﮐﯿﺎ ﺩﯾﺎ؟ ﯾﮩﯽ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺳﮑﻮﻥ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺁﺭﺍﻡ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻣﺖ ﺑﮭﺎﮔﻮ۔ ﺑﺎﺕ ﻭﺍﺿﺢ ﮨﻮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﮨﻢ ﺁﺭﺍﻡ ﻭ ﺳﮑﻮﻥ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﭼﯿﺰ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﮨﻢ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻧﮩﯽ ﺩﻧﯿﺎﻭﯼ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﺳﮯ ﮨﻢ ﭘﺮﺳﮑﻮﻥ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ گے۔
” ﺍﺏ ﺗﻢ ﭘﻮﭼﮭﻮ ﮔﮯ ﮐﮧ ﺷﺎﮦ ﺟﯽ ﺑﺘﺎﺋﯿﮟ ﺳﮑﻮﻥ ﻣﻠﺘﺎ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﮯ ” ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮔﻮﯾﺎ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺳﻮﺍﻟﯿﮧ ﭼﮩﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﭘﮍﮪ ﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔


ﻣﯿﮟ ﺑﺘﺎﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﺗﻤﮩﯿﮟ، ﺳﻨﻮ!


‘ﺳﮑﻮﻥ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﻼﻧﮯ ﺳﮯ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﮯ . ﺧﺪﻣﺖ ﮐﺮﻭﺍﻧﮯ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺧﺪﻣﺖ ﮐﺮﮐﮯ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺳﮑﻮﻥ ﺁﺭﺍﻡ ﺩﮦ ﺑﺴﺘﺮﻭﮞ ﭘﺮ ﺳﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﺨﺖ ﭼﭩﯿﻞ ﺯﻣﯿﮟ ﭘﺮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﯾﺎﺩ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﺴﻮ ﺑﮩﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺳﮑﻮﻥ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺳﮑﻮﻥ ﺳﻤﯿﭩﻨﮯ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺎﻧﭩﻨﮯ ﺳﮯ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﮯ، ﭼﺎﮨﮯ ﺩﻭﻟﺖ ﮨﻮ، ﻋﻠﻢ ﯾﺎ ﻃﺎﻗﺖ‘۔
‘ﺗﻮ ﺩﻋﺎ ﮐﺮﻭ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﮑﻮﻥ ﺩے۔’


شاہ جی کی بات ختم ہوئی اور ﺍﺗﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﻐﺮﺏ ﮐﯽ ﺍﺫﺍﻥ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮگئی۔
‘ﺁچلو ﺣﻘﯿﻘﯽ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭼﻠﯿﮟ، ﮐﻮﺉی ﮨﻤﯿﮞﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﻼ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ، ﮐﻮﺉی ﮨﻤﺎﺭﺍ ﻣﻨﺘﻈﺮہے’۔


ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮئے ﮐﮩﺎ ﺍﻭﺭ ہمیں ساتھ ﻟﯿﮱ ﻣﺴﺠﺪ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭼﻞ ﺩﯾﮱ۔

Advertisements
julia rana solicitors london


ان کی کی ﺑﺎﺕ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﻣﻌﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﻝ ﮐﻮ ﻟﮕﯽ ﺗﮭﯽ۔ شاہ جی ﻧﮯ ﻋﻠﻢ ﮐﯽ ﺩﻭﻟﺖ ﺑﺎﻧﭧ ﮐﺮ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﭘﺮﺳﮑﻮﻥ کیا اور ساتھ ہی ﮨﻤﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﻃﻤﯿﻨﺎﻥ ﮐﯽ ﺩﻭﻟﺖ ﺩﮮ ﺩﯼ ہو۔ ہم نماز کی جانب پرسکون روح کے ساتھ گامزن تھے۔

Facebook Comments

مہمان تحریر
وہ تحاریر جو ہمیں نا بھیجی جائیں مگر اچھی ہوں، مہمان تحریر کے طور پہ لگائی جاتی ہیں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply