چکن کا رشتہ۔۔۔۔عامر صدیقی

کہنے کو تو یہ یقیناً ہفتے کا دن تھا، اس دن گو کہ بہت سے کاروباری مراکز، ملٹی نیشنل کمپنیوں کے دفاتر اور تعلیمی ادارے وغیرہ بند ہی ہوتے ہیں، مگر شاہراہوں اور اسکی ذیلی سڑکوں پر چہار سُو پھیلا اور بے ترتیبی سے بہتا، بے ہنگم اور منہ زور ٹریفک ، اپنے پورے زور وشور سے اپنی اپنی منزلوں کی جانب رواں دواں تھا، یا یوں کہنا شاید زیادہ مناسب ہوگا کہ خود کورواں دواں رکھنے کی سعیء لاحاصل کر رہا تھا۔دھواں چھوڑتی باواآدم کے زمانے کی بسیں، جو روز رات کو اپنے مکینکوں کے آپریشن تھیڑوں میں ایک کبھی نہ ختم ہو سکنے والی مرمتوں ، اوور ہالنگ اور جگاڑ کے عمل سے گذرتی ہیں، چلتی کا نام گاڑی کی عملی تصویر بنی، پریشر ہارنوں کا بھیانک راگ الاپتی، دھیرے دھیرے چل رہی تھیں۔ان کی پیروی میں چمچماتی کاریں، سوزوکی کیری ڈبے اورپک اپس تھیں مگر جس قسم کی مخلوق کی سب سے زیادہ بھرمار تھی، وہ تھے چنگ چی ،رکشے اور موٹر سائیکلیں اور اس پر مستزاد ان کی من مانیاں اور بدمعاشیاں تھیں ۔ ہر دستیاب ہو سکنے والی جگہ پراپنے آپ کو گھسیڑنے کی کوشش کرتی یہ مخلوق ٹریفک کوجام کرنے کے لئے سونے پر سہاگے کا کام سر انجام دیتی نظر آ رہی تھی۔ہر کوئی جلد بازی کا شکار نظر آرہا تھا،کہ جیسے یہ اسکا آخری سفر ہو یا پھر سفرِآخرت۔ہر ایک کی خوہش تھی کہ وہ فوراً سے پیشتر اپنی منزلِ مقصود تک پہنچے۔ اسی خواہش کے نتیجے میں سبھی آپس میں گتھم گتھاسے ہو گئے تھے۔لگتا تھا کہ کسی غیر مرئی گوند کی بہت سی پھوار ڈال کر انہیں آپس میں چپکا دیا ہو۔چند منٹوں کے سفر کا دورانیہ بڑھ کر گھنٹوں پر محیط ہوتا نظر آرہا تھا۔
کسی قدر دیر سے ہی سہی مگر ایک معجزانہ طریقے سے میں نمائش چورنگی تک پہنچنے میں کامیاب ہو ہی گیا۔مگر اب جب آگے ایم اے جناح روڈ پر نظر پڑی، تو دور تک گاڑیوں کا اژدھام دیکھ کر رہے سہے اوسان بھی خطا ہوتے نظر آئے،ہاں آسمان تو بہر حال خالی ہی تھا۔” اب تو مارا گیا۔” میرا صبر کا بند ٹوٹ گیا اور میرے منہ سے اچانک نکلا” اب کیا ہو گا” ؟۔اگرچہ میرا آفس جوکہ صدر، ایمپریس مارکیٹ کے پاس واقع ایک پرانی بلڈنگ میں تھا،یہاں سے صرف پانچ منٹ کی دوری پر تھا، مگراس رش کی وجہ سے لگتا نہیں تھا کہ میں ایک گھنٹے سے بھی پہلے آفس پہنچ پاؤں۔میرا ذہن سرپٹ دوڑنے لگا،” سوچو۔۔ سوچو”۔دفعتاً میرے دماغ کی پھرکی گھومی اور مجھے یاد آیا کہ اگر میں گاڑی گھما کر اور تھوڑا رانگ وے جا کر ، اگر لائنز ایریا سے شارٹ کٹ لوں، تو وقت پر آفس پہنچ سکتا ہوں۔
لائنز ایریا، میری جنم بھومی،
میرے معصوم بچپن کو سہارا دینے والی
میری پالن ہار
مجھے اس کٹھور دنیا سے مقابلہ کرنے کی ہمت دینے والی
میرے سوچوں کو مہمیز کرنے والی
میری ماں، ایک ایسی ماں جس کو اس کے ناخلف بچے اولڈ ہوم میں رکھ کر، اسے بھول کر، سالوں سے اپنی دنیا میں مگن ہو چکے ہوں۔
یا چڑیوں کے بچوں کی طرح ہوں،جو ایک باراڑنے کی طاقت پانے پر، پھر کبھی اس گھونسلے کی جانب مڑ کر نہیں دیکھتے،جہاں انہوں نے پرواز کرنا سیکھا تھا۔اس آسمان کی وسعتوں کو جانا تھا۔خود کو پہچان دی تھی۔
میں نے جلدی سے اپنی سوچ پر عمل کیا ، ورنہ میرے پیچھے اور آجانے والی گاڑیوں کے سبب یہ بھی نا ممکن ہوجاتا۔اب میں لائنز ایریا والی مین سڑک پر تھا۔اس پر ٹریفک کا فِلو کافی کم تھا۔میں نے سکون کی ایک بھرپور سانس لی۔ پورے سینے میں ٹھنڈک سی اتر گئی،ایسا لگا جیسے ابھی تک میں سانس روکے ہی بیٹھا تھا۔انسان بھی کتنا عجیب ہے،ذرا ذرا سی باتوں پر پریشان ہو جاتا ہے اور معمولی باتوں پر خوش ہو اٹھتا ہے۔
آج سالوں بعد میں اس سڑک پر آیا تھا،میں نے ہی اس جگہ سے تعلق توڑا تھا، میں ہی بے وفا نکلا تھا۔ اچانک میری نظر اپنی دائیں جانب کی دکانوں پر پڑی۔ ایک طریقے سے اس علاقے کی سوغات کی دکانیں۔ریوڑی، گجک،تل کے لڈو، دیسی مٹھائیوں اور اسی طرح کی دیگر اشیاء بنانے والی دکانیں۔ اب ان کی تعداد مجھے پہلے سے کافی کم لگ رہی تھیں۔ اور کمی کیوں نہ ہوتی، ؟اب وہ پہلے والی مانگ جو نہیں رہی ہوگی۔ اب بچے اور بڑے طرح طرح کے غیر ملکی ذائقوں اور لذتوں سے آشنا جو ہو گئے ہیں۔ اوپر سے مارکیٹنگ کا ہشت پا ہم سبھی کو کچھ ایسے جکڑے ہوئے ہے کہ اب اس سے بچنا محال ہے، جو یہ چاہیں گے، ہمیں اسی پر چلنا پڑے گا۔ جو یہ کھلانا چاہیں گے ، وہ ہی ہمارا قومی پکوان بن جائیگا۔ پرانی شرابیں اب نئی بوتلوں میں، دیدہ زیب پیکنگ میں پیش کی جا رہی تھیں۔پرانا بن کباب اب متروک ہوتا جارہا تھا، اسکا کوئی اسپاؤنسر جو نہیں تھا، اسکی کوئی فوڈ چین جو نہیں تھی،اس کے ٹی وی پر اشتہار جو نہیں چلتے تھے۔ہاں اب اسکا موڈیفائیڈ ورژن برگر ، ہر ایک کی اولین ترجیح ضرور بنا ہوا تھا۔ پسندیدہ کھانوں کی ٹاپ فائیو لسٹ میں براجمان، وجہ وہی ہے، جو اوپر بیان کی جا چکی ہے۔
میری پہلی چیخ اسی علاقے میں سنائی دی تھی،میری آنکھیں اسی علاقے کے ایک بوسیدہ سے کوارٹر میں کھلیں تھیں۔ اسی کی پرپیچ گلیوں میں میرا بچپن گذرا تھا،یہیں میں نوجوانی کی سرحد تک پہنچا تھا۔ سسک سسک کر، تڑپ تڑپ کر۔
میں اور میرا بڑا بھائی، اپنے ماں باپ کی فقط یہی دو نشانیاں تھیں۔ہم ان کی پوری زندگی کے دو اہم کارناموں میں شمار ہوتے تھے ۔ایک پسماندہ علاقے کے ٹوٹے پھوٹے، بوسیدہ کوارٹر کے غریب ، لاچار اور مجبور بچے کن کن تکلیفوں اور احساسِ محرومی کا شکار ہوتے ہیں، میں اس سے بخوبی آشنا ہوں۔ اردگرد پھیلی بھوک پیاس،غربت، افلاس، ناداری، بے چارگی اور ذلت کے گھناؤنے، ڈراؤنے،مضبوط پنجے تلے دبے تھے سسکتے، روتے،چیختے ،کراہتے ہوئے بھوکے پیاسے، غریب، نادار، لاچار، ذلیل کیڑے مکوڑے نما بے شمار انسان!
شاید میرا حشر بھی ان تمام لوگوں سے کچھ جدا نہ ہوتا، اگر میرا بڑابھائی احمد نہ ہوتا۔میرے ماں باپ نے تو صرف مجھے پیدا کر دینے کوہی کا فی جانا۔ اُس مالکِ حقیقی نے فقط اتنی ذمے داری دے کر انہیں اتارا تھا کہ وہ جب اس کٹھور دنیا میں دو مزید افراد کا اضافہ کر دیں تو ان کاکام ختم، ان کی ذمے داری مکمل ۔ اب واپسی کی راہ پکڑو۔اوران کے بعد یہ ذمے داری اٹھائی تھی، مجھ سے دس سال بڑے میرے بھائی احمد نے۔کہنے کو تو میرا بھائی تھا، مگرکئی رشتوں کی الگ الگ محبتیں، اس کے ایک مہربان وجود میں موجزن تھیں۔ وہ میرا بھائی تھا، ، ماں بھی اور باپ بھی۔ وہ میرا مربی بھی تھا، میرا استاد بھی۔وہ میرا نگہبان بھی تھااور قدردان بھی۔ مگر ان سب سے بڑھ کر رہا اس سے دوستی کا رشتہ۔
وہ سا ت سال کی عمر سے علاقے کی ایک ریوڑی گجک بنانے والے کارخانے میں کام پر لگ گیا تھا۔سات سال کا بچہ کر بھی کیا سکتا ہے۔؟ چھوٹے گیری سے شروع ہونے والی اس نوکری میں، کام سیکھنے سے پہلے شروع شروع کے کئی سالوں تک صرف استاد کی لاتیں، گھونسے، مار کٹائی اور گالیاں ہی رنگروٹوں کا مقدر ٹھہرتے ہیں بہت سے اس آزمائشی کٹھن دور میں بھاگ جاتے ہیں، لیکن جو استقامت سے جمے رہتے ہیں وہ ہی مقدر کے سکندر بنتے ہیں ، یعنی استاد کے سینے اور ہاتھوں میں موجود غیر کتابی علم اور ہنر کے اگلے وارث، مستقبل میں استاد بن کر اسی استادی شاگردی کے سائیکل کو گھمانے کے لئے ایک دم تیار۔!
مجھے اچھی یاد ہے ، اس وقت شاید میری عمر کوئی لگ بھگ چھہ سال کی رہی ہو،روزانہ کارخانے سے واپسی پر بھائی مجھے نہلاتا ، پھر خود نہا دھو کر صاف کپڑے پہنتا،پھر ہم دونوں اکٹھے کھانا کھاتے، پھر وہ مجھے باہر گھمانے لے جاتا،پھر کسی سنسان سے تھڑے پر بیٹھ کر اپنی جیب پر ہاتھ مار کر کہتا۔
“بتا منے میںآ! ج تیرے لئے کیا لایا ہوں۔؟”
میں چھہ سال کا توتھا ،مگر اتنا بھی بھولا یا اللہ میاں کی گائے ٹائپ بچہ نہیں تھا، جتنے آج کے ممی پاپا ٹائپ بچے ہوتے ہیں،میں لائینز ایریا کی گلیوں میں پرورش پاتا بچہ تھا، جہاں بقا اسی میں ہے کہ آپ جلد از جلد بچپنے کے بھولپنے کو خیرباد کہہ دیں۔ ورنہ آپ کی خیر نہیں۔گدھ تو چاروں جانب ہی ہیں
بھائی کے اس ہر روز پوچھے جانے والے سوال کا جواب مجھے ازبر تھا۔ مگر میں معصوم بن جاتا اور نہیں میں سر ہلا دیتا۔ بھائی میرے اس انداز سے نہال ہو جاتا،پھر وہ اپنی جیب سے وہ سوغاتیں ، وہ من وسلوی نکالتا، جو اسکی جیب میں چھپی ہونے کے باوجود اپنی مہک سے اپنے ہونے کا ، اپنے وجود کا پتہ دے رہی ہوتیں تھیں۔ریوڑی، گجک، الائچی دانے،مصری کی ڈلیاں، رنگ برنگی سونف،سنگترے کی قاشوں والی مٹھائی،میووں بھری پاپڑیاں۔ انکا ذائقہ ، انکی لذت آج اتنے سال گزرنے کے باوجود میرے ذہن کے کسی نہاں خانے میں چھپی بیٹھی ہے۔ آج بھی میرے منہ میں اپنی مٹھاس بھر دیتی ہیں۔اس پر روز بھائی کا یہ پوچھنا۔ “بتا منے میںآج تیرے لئے کیا لایا ہوں۔”
علاقے کی مروجہ روایت سے ہٹ کر اس نے مجھے ایک انگلش میڈیم اسکول میں داخل کرایا۔گو وہ خود تو چاہتے ہوئے بھی تعلیم حاصل نہ کر سکا تھا، اور بچپن سے ہی دیہاڑی کمانے اور کام سیکھنے پر لگ گیا تھا، مگر اسے بہرحال تعلیم کی اہمیت کا اندازہ تھا۔ وہ اپنی تشنہ خواہشوں کی تکمیل مجھ میں پوری ہوتے دیکھنا چاہتا تھا۔
میں اسکول جاتارہا تھا اور وہ ریوڑیاں،گجک بناتا رہا۔ بچپن میں ملی میری ہر آسودگی اسی کی مرہونِ منت تھی۔ہر خوشی کے پیچھے اسی کا ہاتھ تھا۔ہر آرام ، ہر آسائش کے عقب میں اسی کی ان تھک محنت تھی۔میٹرک کے بعد کالج اور پھر یونیورسٹی تک وہ مجھے پڑھاتا رہا اور مجھے ایم بی اے کراکے ہی اس نے سکون کی سانس لی۔گویا اپنی زندگی کا مقصود پا لیا ہو۔مجھے یاد ہے وہ دن، جب میری ایم بی اے میں دوسری پوزیشن آئی تھی اور یونیورسٹی کے کانووکیشن میں وہ میرے مرحوم والدین کی نمائندگی میں موجود تھا۔میڈل اور ڈگری وصول کرتے ہوئے میں نے اسٹیج سے نیچے مسکراتے ہوئے دیکھا، بھائی کے خوشی دیدنی تھی اورچہرہ تمتما رہا تھا۔بھائی کی آنکھوں میں یہ پہلی بار تھا جب جگنو چمکے۔
میرے شاندار تعلیمی پس منظر کی وجہ سے جلد ہی ایک ملٹی نیشنل کمپنی میں مجھے اچھے عہدے کی پیش کش ہوئی اور میں نے اسے قبول کر لیا۔ابھی نوکری کرتے تھوڑے ہی دن ہوئے تھے کہ ایک دن بھائی نے بڑے دُلار سے کہا۔
“اب تمہاری نوکری لگ گئی ہے۔ اب تمہاری شادی ہو جانی چاہئے۔”
“اور تم کب تک سنیاس لیتے رہو گے۔ پہلے بھائی تمہاری شادی ہوگی پھر میری۔”میں نے جوابی وار کیا۔” مجھے بھی ایک عدد بھابھی چاہئے۔” اور پھر اسکے پینتیس سالہ جوان، مگر الاؤ کی تپش اور گرم گرم چپکتی چاشنی گزیدہ، مرجھائے ہاتھوں کو پکڑ لیا۔
“چلو دیکھتے ہیں۔ اس نا کارہ ، جاہل کو کوئی اپنی بیٹی دیتا ہے یا نہیں۔”
“تم بس ہاں کرو۔، باقی مجھ پر چھوڑ دو۔میں خالہ نصیبن سے بات کرتا ہوں۔”، نصیبن خالہ علاقے کی جگت خالہ تھیں۔ اور ہم دونوں پر خاص مہربان بھی۔
“ٹھیک ہے، جو تمہاری مرضی، مگر اس کے بعد تمہیں بھی دیر نہیں کرنی۔” اس نے سرنڈر کرتے ہوئے کہا۔
پھر جلد ہی ایک شریف مگر غریب گھرانے میں، خالہ نصیبن نے ایک رشتہ نکال لیا۔ اتفاق سے لڑکی کا باپ بھی دیسی مٹھائیوں کے کاروبار سے ہی وابستہ تھا اور بھائی کی شرافت اور کام میں اس کی مہارت کا معترف بھی،سوسارے معاملات آسانی سے طے ہوتے چلے گئے اور حلیمہ میری بھابھی بن کر اس کوارٹر میں آگئیں۔بھائی کی آنکھوں میں دوسری بار جگنو چمکے تھے ۔
حلیمہ بھابھی گو واجبی صورت اورنیم خواندہ تھیں۔مگر سگھڑاپے اور سمجھداری میں ان کا کوئی ثانی نہ تھا۔ چھڑوں کے بے ترتیب، کام چلاؤ اور بے ترتیب رہن سہن کوانہوں نے بہت جلد ایک منظم، مر تّب گرہستی میں تبدیل کر دیا۔زندگی بہت دنوں بعد ایک ڈگر پر آگئی۔ اور بھائی کو ان کے ایثار و قربانی کا بھرپور صلہ خدا نے انہیں بھابھی کی شکل میں اس دنیا میں بھی دے دیا۔
بھابھی گو عمر میں مجھ سے کچھ خاص بڑی نہیں تھیں۔ مگر میں ان سے اُس بے تکلفی سے بات نہیں کر تا تھا، جیسے میں اپنے بھائی سے تم وغیرہ کہہ کر بات کرتا تھا۔ لیکن بھابھی کو میں ہمیشہ آپ جناب سے مخاطب کرتا اور انہیں ہمیشہ ایک ماں کی عزت دیتا۔
زندگی اپنے راستے رواں دواں تھی۔ اور میرا شادی کو ٹالنا بھی برقرار تھا تبھی اسی دوران مجھے کمپنی نے ایک پیکج کے تحت بنگلہ اور گاڑی آفر کی۔بنگلے کے لئے شادی کی بھی شرط تھی۔اور اس پیکج سے فائدہ نہ اٹھانے کی کوئی وجہ نہیں۔یہ بات تو کفرانِ نعمت کی مصداق ہوتی۔میں نے بھائی بھابھی کو اس کے متعلق بتایا۔ان کی کی باچھیں کِھل گئیں۔
” اب اونٹ آیا پہاڑ تلے”، بھائی کے پہلے الفاظ یہ ہی تھے۔
“دیکھنا میں اپنے بھائی کے لئے کیسی حور پری تلاشتی ہوں۔”بھابھی کی مسرت دیکھنے کے قابل تھی۔
” پہلے اس سے تو پوچھ لو کیا پتا کوئی چکر چلا کر بیٹھا ہو، ویسے ایسا ہے تو نہیں ۔اپنے بھائی کی طرح ہی سیدھا سادا ہے۔” بھائی نے یہ کہہ کر استفہامیہ نظروں سے میری طرف دیکھا۔/
بھابھی بھی اس بات پر مسکرا اٹھیں،اور کہا۔”ہاں بھئی، اب کوئی دیکھ رکھی ہے تو بتاؤ، تاکہ ہمارا کام بھی آسان ہو اورفضول کی گدھا مزدوری سے بچیں۔ کیوں جی؟” بھابھی نے بھائی کو آنکھ ماری۔
ان باتوں کے دوران میں حمیرا کے بارے میں سوچ رہا تھا۔
حمیرا ایک اعلی تعلیم یافتہ، خوبصور ت اور بولڈ لڑکی تھی۔ آفس میں میرے ساتھ ہی کام کرتی تھی۔ اپر مڈل کلاس سے تعلق رکھنے والی حمیرا، بہادرآباد کے ایک ہزار گز کے کوٹھی نما بنگلے میں رہتی تھی۔روپے پیسے کی اسے کوئی تمنا نہیں تھی، یہ اسکا جاب کرنا بھی اس کے ٹائم پاس کا فقط ایک ذریعہ تھا یا شایدخودانحصار ہوکر اپنی زندگی اپنے انداز میں جینے کا حصول۔ اس سے ہوئی پہلی ملاقات میں ہی ،میں نے محسوس کیا کہ یہ میرے لئے پوری طرح پرفیکٹ ہے۔ اور شاید ایسی ہی سوچ لئے وہ بھی بیٹھی تھی۔ یہاں کوئی محبت کا اظہار توکرنا نہیں تھا، الفت کی کوئی پینگیں تونہیں بڑھانی نہیں تھیں۔ ٹو دی پوائنٹ بات کرنی تھی۔ اوروہ میں نے کی اور اثبات میں جواب پایا۔پھر جلد ہی ہماری شادی طے ہوگئی۔ شادی والے دن بھابھی تو مجھ پر اورحمیرا پر نہال ہوئی جا رہی تھیں۔ اور رہے بھائی ،تو یہ تیسری بار تھا جب انکی آنکھوں میں جگنو چمکے۔
شادی طے ہوتے ہی کمپنی نے اپنا وعدہ پورا کیا اور نارتھ ناظم آباد میں ایک دو سو چالیس گز کا بنگلہ اور ایک نئے ماڈل کی کار مجھے دے دی۔ چنانچہ میں حمیرا کو رخصت کراکے یہیں لایا۔ شاندار جہیز سے یہ پہلے ہی سیٹ کیا جا چکا تھا۔زندگی ایک دم حسین ہو گئی تھی۔ اسٹیٹس والی ۔ ماڈرن اور اپر لائف اسٹائل والی بھی۔
حمیرا نے شادی کے بعد جاب چھوڑ دی۔ اب اس کا زیادہ تر وقت فیشن میگزینوں کے مطالعے یا فوڈ چینلز سے طرح طرح کے پکوانوں کی آزمودہ ترکیبوں کو نوٹ کرنے اور ان کو بنانے، اور پھر ان کو گھر میں آئے دن ہونے والی مہمانداریوں اور پارٹیوں میں پیش کرنے میں لگنے لگاتھا۔حمیرا کو اچھے کھانے اور انہیں بنانے کا جنون کی حد تک شوق تھا۔مجھے امید تو نہیں تھی کہ اس نے یہ کہاوت سنی ہوئی ہو کہ شوہر کے دل کا راستہ اسکے پیٹ سے ہوتے ہوئے گذرتا ہے، مگر اس کی عملی تصویر بہرحال وہ تھی۔نئے نئے دیسی کھانوں اور بدیسی پکوانوں کی وہ بڑی ماہر ہوتی جا رہی تھی،ایک بار جو بھی اس کی ڈشیں ٹرائی کرتا، اس کی تعریف کئے بنا نہ رہتا۔ تقریباً روز ہی کوئی نہ کوئی مہمان آتا۔ کبھی اسکے بھائی فارن سے آرہے ہیں، کبھی اس کی بہنیں اسلام آباد یا لاہور سے آرہی ہیں۔کبھی اس کے ممی ڈیڈی کی شادی کی سالگرہ ہے،کبھی کچھ توکبھی کچھ۔ غرض کہ زوردار دعوت چلتی۔روزانہ کی بنیاد پر بنائی جانے والی ڈھیر ساری اسکی ڈشوں کے لئے یہ ضروری بھی تھا۔
شادی کے بعد، شروع شروع کے چند مہینوں تک بھائی اور بھابھی بھی کبھی کبھار چکر لگا لیتے تھے۔ مگر جلد ہی انہوں نے محسوس کیا کہ حمیرا کی آنکھوں میں چھپی بیٹھی ہے، دبی دبی سی ایک شکا یت کہ تم لوگ کیوں آتے ہو۔ اوپر سے سر جھاڑمنہ پہاڑ۔ نہ اپنے حلیہ کی پروا ہے نہ دوسروں کی عزت کی۔ محلے دار، عزیز رشتے داروں، گھر آئے مہمانوں کی تو بات ہی کیا، ماسیاں ، نوکرانیاں تک سوالیہ اور طنزیہ نظروں سے دیکھنے لگتی ہیں۔ منہ پر تو کوئی نہیں بولتا، مگر کسی کی سوچ کا گلہ بھلاکون گھونٹ سکتا ہے۔ کیا سوچتے ہوں گے کہ میرے شوہر کے ایسے رشتے دار ہیں۔یہ بات بھائی بھابھی نے بھی محسوس کر لی تھی، رفتہ رفتہ انہوں نے آنا کم کر دیا، پانچ سال پہلے ،وہ آخری بار تھا،جب وہ دونوں موناکی پیدائش کی تقریب میں آئے تھے۔مجھے ان کا نہ آنا بڑا کھلتا تھا، شاید ایک بار میں خود ہی ان سے ملنے گیا بھی، مگرقیمتی کار پر پڑی لکیروں نے اس علاقے کو ہمیشہ کے لئے نو گو ایریا بنا دیا تھا۔ پھر آہستہ آہستہ رشتوں کی گرمی پراسٹیٹس اور کلاس ڈیفرینس کی برف کی تہہ دبیز سے دبیزتر ہوتی چلی گئی اور وقت دبی چاپ آگے بڑھتا رہا۔
مجھے اچانک بریک لگانا پڑا، کار کو بھی اور اپنی سوچوں کو بھی۔”لعنت ہو۔”۔ ایک سبزی والا اپنا ٹھیلا لے کر نجانے کہاں سے نمودار ہوا کر، اچانک گاڑی کے سامنے آگیا تھا۔ اور اب الٹا مجھے ہی خشمگیں نظروں سے دیکھ رہا تھا۔جیسے میں اس کے ذاتی باغیچے میں اس کی مٹرگشتی کے دوران دخل در معقولات دے بیٹھا ہوں۔ ابھی میں اِسے کچھ سنانے کا ارادہ باندھ ہی رہا تھا کہ مجھے اسکی بغل میں کھڑا ایک شناسا چہرہ نظر آیا۔ میرے بھائی کا چہرہ۔ وہ میری ہی طرف کچھ اچنبھے بھری نظروں سے دیکھ رہے تھے۔شاید اپنے تخیل کا دھوکا سمجھ رہے ہوں۔ پھر وہ پر یقین ہوکر، مجھے پہچان گئے تھے کیوں کہ ایک ملکوتی چمک سے ان کا چہرہ منور تھا۔
” میرے بھائی۔” انہوں نے بے اختیار آواز لگائی۔ میں نے بھی انکی طرف دیکھ کر ہاتھ ہلایا۔مگر دو وجوہات سے رکنامیرے بس میں نہیں تھا۔ایک تو پیچھے آتی گاڑیوں کے ہارن، جو ذرا سا رکنے پر ہی بجنا شروع ہو گئے تھے۔دوسرے آفس میں میٹنگ ،جو خاص طور پر چھٹی والے دن رکھی گئی تھی، کیوں کہ آج شام ہمارا ایک خاص کلائنٹ انگلینڈ جا رہا تھا۔ ا س لئے یہ میٹنگ کسی اور دن ٹالی نہ جاسکتی تھی۔
” بھائی میں آپ کو فون کرتا ہوں۔ ابھی آپ دیکھ ہی رہے ہیں۔”میں چِلایا اور گاڑی بھگاتا ، آفس کی جانب رواں دواں ہو گیا۔
آفس میں روز کا روٹین ورک تو تھا نہیں، بس ایک میٹنگ ہی نبٹانی تھی۔ میٹنگ کے دوران ہوئے بریک میں ،میں نے اپنا موبائل نکالا،حمیرا کا مسیج آیا تھا۔”ایمپریس مارکیٹ سے ، گوشت اور گروسری کا دیگرسامان لانا نہ بھولنا۔ لسٹ میں نے رات ہی آپ کے وا لٹ میں رکھ دی ہے اور ساتھ پیسے بھی۔”، میں نے اپنا والٹ نکالا۔ اس میں ایک چھوٹا سا لفافہ تھا، میں نے لفافہ کھولا۔ سامان کی لسٹ کے ساتھ بیس ہزار روپے رکھے تھے۔گوشت اور گروسری کا سامان میں ایمپریس مارکیٹ سے ہی لیا کرتا تھا۔ایک تو چیزیں اچھی مل جاتیں، دوسرا کچھ بچت بھی ہو جا کرتی تھی۔پھر سارا سامان بھی ایک ہی جگہ سے مل جاتا تھا۔میں نے ٹائم پاس کے لئے لسٹ کھولی۔ لکھاتھا۔
” علی بھائی آ رہے ہیں وِد فیملی،کچھ انکی سالی کی شادی وغیرہ کا معاملہ ہے۔ رات آپ کے سونے کے بعد فون آیا تھا انکا۔ ابھی ابھی کراچی پہنچے ہیں۔سسرال میں ٹھہریں گے۔پھر انہیں وقت ملے یا نہ ملے، اس لئے آج رات کا کھانا وہ ہمارے ہاں کریں گے۔ ہفتے کو میری جلدی آنکھ نہیں کھلتی، اسی لئے لسٹ بنا کر رکھ رہی ہوں۔ ساتھ پیسے بھی ہیں۔ اور ہاں جلد از جلد آنے کی کوشش کرنا ہوگی۔ آپ جلدی آئیں گے تو میں دعوت کی صحیح طرح تیاری کر سکوں گی۔” علی، حمیرا کے بڑے بھائی تھے اور کینیڈا میں اپناایک بڑا بزنس چلا رہے تھے۔ اب تقریباً تین سال بعد پاکستان آ ئے تھے۔
میں نے آگے نظریں دوڑائیں، نیچے سامان کی تفصیل لکھی تھی۔
بیف کے روکھے پارچے” اسٹیک کے لئے چاہئیں قصائی کو بول دیجئے گا”۔ آدھا کلو سائز کے چار عدد
مٹن چاپیں۔تین کلو
روکھا مٹن کا گوشت دو کلو
چکن کا گوشت چار کلو
پاپلیٹ مچھلی دو کلو
جھینگے “آپ جانتے ہیں کس سائز کے لینے ہیں” دو کلو
ابھی میں دیگر سامان بھی دیکھنا چاہ رہا تھا کہ باس نے بریک ختم ہونے کا اشارہ کیا ۔ میں نے جلدی سے لسٹ اورپیسوں کو والٹ میں رکھا اور اٹھ کھڑا ہوا۔
میٹنگ خلافِ توقع ایک بجے تک نپٹ گئی۔ایک مشن تو بخیروخوبی نبٹ گیا تھا۔ اب دوسرا مشن درپیش تھا یعنی خریداری کا۔ میں نے سامان زیادہ ہونے کی وجہ سے چپراسی کو روک لیا تھا۔اس کو ساتھ لئے میں ایمپریس مارکیٹ کی طرف چل پڑا۔سب سے پہلے میں نے ننھے قصا ئی سے بیف کے روکھے پارچے نکلوانے کا کہا ، وہ ران ہی کھول رہا تھا۔ اسٹیک کے پارچے ران میں موجود گوشت سے ہی بنتے ہیں، جنہیں قصابوں کی زبان میں گولے کا گوشت کہا جاتا ہے ۔ ننھا قصائی میرا خاص خیال کرتا ہے ۔کبھی اتفاق سے میں گوشت لینے آؤ ں اور گوشت اچھا نہ ہو،وہ مجھ سے کہتا ہے کہ بھائی تم گھر جاؤ میں خود لے کر آتا ہوں، یہ ایک طریقے سے اسکا کوڈتھا کہ آج گوشت آپکے مطلب کا نہیں ہے۔ آج بھی اس نے ران کھولتے ہوئے مجھے آنکھ ماری اور کہا ۔
“آپ تو لیٹ آئیں ہیں، صفائی کے بعد بچا توآپ کو دوں گا۔ان باجیوں کا پہلا حق ہے۔ یہ پہلے سے کھڑی ہیں۔” اس پر وہاں کھڑی بے شمار عورتوں نے مجھے فاتحانہ نظروں سے دیکھا۔ جب کہ انہیں نہیں معلوم تھا کہ ننھاقصائی کیا کوڈ ورڈ بول گیا۔ قصائیوں کی ایک الگ ہی زبان ہوتی ہے، یہ ان کے کام میں بڑی معاون بھی ہوتی ہے ۔بہرحال ابھی ننھے کا مفہوم تھا کہ ذرامیں ران کے اوپر کے نرّے، چربی، چھچھڑے اور آڑا سیدھا گوشت ،ان عورتوں کو ٹکا دوں تو آپ کو اندر سے صاف گوشت کے پارچے نکال کر دیتا ہوں۔ اسی بارے میں ایک کہاوت بھی مشہور ہے کہ نانبائی کی اگاڑی اور قصائی کی پیچھاڑی اچھی ہوتی ہے۔ مطلب یہ کہ تنور میں اگر جلدی جاؤ گے تو اچھی، صاف ،بِنا دھویں والی، بنا جلی روٹیاں ملیں گی۔ اور کیوں کہ قصائی اچھا گوشت آخر دم کر بچا کر رکھنا چاہتا ہے، وہ چاہتا ہے کہ پہلے سارا بیکار گوشت بک جائے ، ہڈیاں ٹھکانے لگ جائیں،توآخر میں اپنے انمول رتن نکالوں گا۔ ہر کوئی یہ بات نہیں سمجھتا اور جلدی مچاتا ہے۔ورنہ اصول یہ ہے دکان پر جا کر خاموشی سے کھڑے ہو جاؤ، قصائی کے لاکھ پوچھنے پر بھی خاموش رہو اور جہاں دیکھو کہ اب اپنے مطلب کا گوشت ہے جھٹ آرڈر دے دو،اب سستی کرنا مناسب نہیں۔
“ٹھیک ہے تم ان باجیوں کو دو اور بچے تو میرے لئے پیک کرکے رکھ دینا۔ جب تک میں تمہارے بھائی کے درشن کرکے آتا ہوں۔”
اس کا بھائی اسی مارکیٹ میں ہوتا تھا مگر مٹن کا کام کرتا تھا۔اس کے پاس مجھے زیادہ دیر نہیں لگی۔اس سے فارغ ہو کر میں مچھلی اور جھینگے لینے چلا گیا۔ اب فقط چکن کا گوشت بچا تھا۔چنانچہ میں نے اسے بھی لے لیا۔ فارمی چکن کا گوشت، دیگر گوشتوں کی فہرست میں سب سے نیچے جگہ پاتا ہے۔ سب سے سستا گوشت اور سب سے بے سواد بھی یہی گوشت ہوتا ہے۔جہاں مجھے بیف پارچے پانچ سوروپے پر کلو ، مٹن سات سوروپے، مٹن روکھا ہزار روپے،پاپلیٹ بڑے سائز کی پندرہ سو روپے، ٹائیگر جھینگے بارہ سوروپے پرکلو پڑے تھے۔وہی چکن ڈھائی سو روپے پر کلو ملا تھا۔ گو کہ یہ دعوت سے تعلق نہیں رکھتا تھا۔ اور مرغوب بھی نہیں تھا۔مگر اسے لینا بھی ضروری تھا۔گھر میں یہ ماسیوں اور دیگر نوکروں کا کھابا تھا۔وقت گذرنے کے خیال سے میں جلدی سے ننھے قصائی کے پاس دوبارہ پہنچا ، اب تک وہ اپنی دکان بڑھا چکا تھا اور ہاتھ میں میرا شاپر ہی پکڑے بیٹھا تھا۔ اس سے فارغ ہو کر میں نے لسٹ کا دیگر سامان لیا ، پھر پیون کو لئے پارکنگ تک پہنچا، جہاں ایک پارکنگ مافیا کی زیرِنگرانی میں روز اپنی گاڑی کھڑی کرتا تھا۔سامان گاڑی میں رکھ کر میں نے پیون کا فارغ کیا اور ساتھ ہی سو کا ایک نوٹ بھی اسے دے دیا۔ اَن آفیشل کام کرنے پر بیچارے کا اتنا حق تو بنتا ہی ہے۔شکر ہے واپسی میں روڈ کھلا ملا اور میں سکون سے گھر پہنچ گیا۔
“شکر ہے آپ ٹھیک ٹائم پر آگئے۔” حمیرا نے بیقراری سے کہا۔”سب لسٹ کے مطابق لائے ہیں نا۔”
” ایسا کبھی ہوا ہے۔ آپکا حکم ہو اور پھر اس میں کوتاہی ہو جائے۔ ”
” اوکے اوکے ابھی سوال جواب کا وقت نہیں۔ آپ فریش ہو جائیں۔ اتنی دیر میں ، میں سامان نکلواتی ہوں اور پھر کھانا لگواتی ہوں۔ ”
” ایز یو وش۔ارے ہاں مونا کہاں ہے؟”
” آج اس کی بیسٹ فرینڈ سوہا کی برتھ ڈے ہے۔ہمارا بھی بلاوا تھا۔ مگر علی بھائی کے آنے کی وجہ سے کینسل کر دیا۔ میں ابھی ابھی اسے چھوڑ کر آرہی ہوں۔شام کو پارٹی ختم ہونے سے پہلے ہی، وہ اسے اپنے ڈرائیورکے ساتھ بھیج دیں گے۔”
” ٹھیک ہے۔ ویسے بھی اس کے ماموں آ رہے رہیں۔آج پہلی بار ان سے ملے گی۔ پہلے جب وہ مونا سے ملے تھے، تو وہ دو سال کی تھی۔”
حمیرا نے جواب میں صرف سر ہلایا اور پھر اپنے کاموں میں مصروف ہو گئی۔
کھانے وغیرہ سے فارغ ہو کر میں نے سوچا تھوڑا سو لیا جائےتاکہ تازہ دم ہو جاؤں ۔
شام کو چھ بجے تک مہمان آگئے۔علی بھائی ،بھابھی اور انکی سب سے چھوٹی بیٹی نور جو لگ بھگ ہماری مونا کی عمر کی تھی ۔ اتنے دنوں بعد ان لوگوں سے ملاقات ہو رہی تھی۔ خوب رنگ جما۔ ہر دو جانب نے اپنی اپنی پٹاریاں کھول دیں۔ وقت گزرنے کا احساس ہی نہ رہا۔اور پھر ان سب کے بعد طرح طرح کے لذیذ ڈشوں سے بھرپور ڈنر۔حمیرا نے لگتا تھا کہ آج اپنی تمام ترصلاحیتوں کو بروکار لائی تھی۔اسکے تجربہ کار اور ہنر مند ہاتھوں نے کھانوں کو گویا نئی جہت دی تھی۔کیا کیا نہیں تھا ڈائیننگ ٹیبل پر۔مٹن چوپس،المونیم فوائل بیکڈ پوپفریٹ، سیزلنگ ٹرے پر رکھے فل ڈن اسٹیگ وِد ساس اینڈ ویجی،مٹن پلاؤ، مٹن کے ریشمی گلاوٹی کباب،مٹن قورمہ ،پران کری، فرائیڈپران، ساتھ میں رائتہ، رشین سلاد، چٹنیاں، لچھے دار پراٹھے اور اوون میں بنے قلچے۔ساتھ کولڈ ڈرنک اور میٹھے میں لوکی کا حلوہ، ٹرائفل اور آئس کریم۔ غرض کہ سبھی کو لطف آگیا۔ سبھی نے سیر ہو کر کھایا، اور ساتھ ساتھ حمیرا کی تعریفیں بھی ہوتی رہیں جو وہ مسکرا مسکرا کر قبول کرتی رہی۔
ابھی کھانے سے فارغ ہوکر ڈرائنگ روم میں بیٹھے ہی تھے، مونا بھی آگئی۔گھر آئے اجنبیوں کو دیکھ کر پہلے تو تھوڑا ہچکچائی ،پھر اپنی تربیت کے مطابق قریب آئی اور ادب سے سب کوسلام کیا اور میری گود میں چڑھ گئی۔اور نور کی طرف دیکھنے لگی۔
“بیٹا، شرماؤ نہیں۔” علی بھائی نے اسے اپنے پاس بلایا۔
“یہ آپکے ریلَیٹِو ہیں۔ آپکے ماموں جو کنیڈا میں رہتے ہیں۔ یہ آپکی ممانی اور یہ آپکی کزن نور۔” میں نے سب کا مونا سے تعارف کروایا۔
“ہاں ہم آپ کے ریلَیٹِو ہیں یعنی رشتے دار۔ اور رشتے میں آپ کے ماموں لگتے ہیں اور نام ہے علی۔ “علی بھائی نے کسی پرانی فلم کا ایک مشہور ڈائیلاگ مزاحیہ انداز میں بولا۔اس پر ایک مشترکہ قہقہہ بلند ہوا۔ جو دونوں بچیوں کی ہچکچاہٹ کے لئے اکسیر ثابت ہوااور پھر تھوڑی دیر بعد،وہ دونوں ہاتھوں میں ہاتھ ڈالے ایسے بیٹھیں تھیں۔ جیسے بہت پرانی دوست ہوں۔
ایک بجے علی بھائی نے جانے کی اجازت مانگی۔ان کو رخصت کرکے ہم اندر آگئے۔ اچانک مونا اپنے کمرے سے باہر نکلی اور دوڑتی ہوئی ہمارے پاس آگئی۔
“ارے تم ابھی تک سوئی نہیں۔ بہت بری بات ہے۔”حمیرا نے کہا ۔
“ماموں لوگ گئے۔” مونا نے کہا۔
“ہاں بیٹا۔مگر اتنی رات کو بھی آپ جاگ رہی ہیں۔ دیکھیں ممی کتنی ناراض ہیں۔ “میں نے مونا سے کہا۔
“ارے ممی پاپا ناراض ناہوں۔ہم آپ کے ریلَیٹِو ہیں یعنی رشتے دار۔ اور رشتے میں آپ کی بیٹی لگتے ہیں اور نام ہے مونا۔ “مونا نے علی بھائی اسٹائل میں کہا۔میں مونا کی پِک کرنے کی صلاحیت سے حیران رہ گیا۔
” توبہ ہے ۔ یہ آج کل کے بچے بھی۔” حمیرا نے تیوری چڑھائی۔” چلو اپنے روم میں ۔ مجھے ابھی کافی سارے کام کرنے ہیں۔” پھر وہ اسے کھنچتی ہوئی چلی گئی۔ میں نے بھی موقع غنیمت جانا اور سگریٹ پینے چھت پر چلا آیا۔ میں کوئی عادی سگریٹ نوش تو نہیں ہوں۔ مگر آج کے بھرپور کھانے کے بعد سوچا ۔ چند کش لے لئے جائیں۔چھت کا بلب خراب تھا، اسی لئے موبائل کی ٹارچ جلا لی۔ چھت پر کتنا سکون اور شانتی تھی۔پیکٹ سے ایک سگریٹ منتخب کر کے جلائی اور ایک طویل کش اندر اتارا۔ رُوتھ مینز لائٹ کا خوشبودار دھواں جیسے ہی سینے میں اترا ، طمانیت بھرا ایک احساس تمام رگ و جاں میں پھیل گیا۔ ٹھیک اسی وقت میرا موبائل بجا ۔ دیکھا تو ایک میسیج تھا، احمد بھائی کا میسیج۔میں نے اسے کھولا ،لکھا تھا۔
“میں آج تمام دن تمہارے فون کا انتطار کرتا رہا۔آج جب کئی سال بعد تم کو دیکھا، تو بڑا اچھا لگا۔تمہاری بھابھی سے بھی تمہارا بتایا۔وہ نیک بخت تو نہال ہی ہو گئی۔ تمہارے متعلق پوچھنے لگی۔ میں نے کہا کہ اس نے فون کر نے کا کہا ہے ،اسی سے پوچھنا۔سارا دن ہم دونوں تمہارے فون کا انتظار کرتے رہے۔ تمہیں ڈسٹرب تو نہیں کرنا چاہتے تھے۔ مگر پھر یاد آیا آج اتوار کی رات ہے شاید تم جاگ رہے ہو۔ہو سکے تو کبھی ملاقات کرنا۔ تمہاری بھابھی تمہیں بہت یاد کرتی ہے۔ ”
میسیج پڑھ کر میں شرمندہ سا ہو گیا۔ میں اپنی دنیا میں اتنا مگن ہو گیا تھا کہ اپنے باپ جیسے بھائی کو بھی بھول بیٹھا۔ اس کی قربانی، اسکے ایثار، اسکی محبت ، غرض اس سے جڑی ہر چیز کو اپنی زندگی سے مٹا چکا تھا۔تف ہے مجھ پر۔ مانا حمیرا کو انکا آنا پسند نہیں مگر وہ منہ سے تو بہرحال کچھ نہیں کہتی تھی اور رہا میں،تو میں اس علاقے میں جا نہیں سکتا تھا۔ مگر کہیں اور تو بھائی بھابھی سے ملاقات ہو سکتی تھی۔کتنے سالوں تک میں نے ان کی کوئی خیر خبر بھی نہ لی۔انہوں نے تو جب مجھے اپنی زندگی جیتے دیکھا تو چپکے سے اس سے نکل گئے۔اپنے وجود کو گندہ سمجھ کر، میرے چمکدار لائف اسٹائل سے دور ی اختیار کر لی کہ کہیں انکی غربت کا کوئی داغ اس پر نہ لگ جائے۔اپنی بے حسی، احسان فراموشی اور گھٹیا پن پر مجھے رونا آگیا ۔تبھی نیچے سے حمیرا کی آواز آئی، وہ مجھے بلا رہی تھی۔ میں نے جلدی جلدی ایک میسیج لکھا۔اور انہیں بھیج دیا۔
“بھائی بھابھی میں کل دن میں آپ سے تفصیل سے بات کرتا ہوں، خدا حافظ۔”، پھر نیچے اتر آیا۔
اتوار والے دن میں تھوڑا دیر سے اٹھتا ہوں۔مگر آج خلافِ توقع میں نو بجے ہی اٹھ بیٹھا۔ عجیب خالی پن کا احساس نس نس میں سرائیت کئے ہوئے تھا۔ ماضی کی ایک حسین یاد، بھائی کا ایک انمول جملہ میری زبان پر آگیا۔”بتا منے میںآج تیرے لئے کیا لایا ہوں۔”
بستر سے اٹھتے ہوئے میں ایک نکتے تک پہنچ گیا تھا۔باتھ روم سے فریش ہو کر نکلا تو دیکھا، حمیرا ابھی تک سوئی ہوئی ہے۔ میں نے موبائل اٹھا یااور کچن آگیا۔ کافی مکسچر سے کافی نکال کر میں لان میں آگیا۔آرام کرسی پر بیٹھ کر ، کافی پیتے ہوئے میں نے بھائی بھابھی کو فون لگایا اور ان سے دل کھول کر باتیں کیں۔ لبِ لباب یہ کہ سارے گلے شکوے دور کئے اور ساتھ ساتھ آج رات کے کھانے کی دعوت بھی، میں نے انہیں دے ڈالی۔ پہلے تو وہ دونوں آمادہ نہ ہوئے پھر میرے اصرار پر، اپنی رضامندی ظاہر کردی۔ میں نے سکون کا سانس لیا اور اندر چلا آیا۔ اب بارہ بج رہے تھے۔ حمیر ابھی جاگ گئی تھی اور مونا کو ناشتہ کرا رہی تھی۔
“صبح ہی صبح کوئی بڑا خاص فون آیا تھا۔ میں نے کئی بار جا کر دیکھا، پھر ڈسٹرب کرنا مناسب نہیں سمجھا۔”
“ہاں احمدبھائی اوربھابھی سے بات ہو رہی تھی۔آج رات کے کھانے پر انہیں بلایا ہے۔انتظام کر لینا۔کوئی مسئلہ تو نہیں۔” میں نے حمیرا کی آنکھوں میں دیکھتے ہوئے کہا۔
“مجھے کوئی مسئلہ نہیں ۔نہ پہلے تھا ۔ نہ اب ہے۔ڈونٹ وری۔” اس نے سادہ لہجے میں کہا۔
” تھینکس۔” اس کی اسی بات پر میں خوش ہو گیا۔
آج مونا نے بھی اپنی چند اسکول فرینڈز کو دعوت دی ہوئی تھی۔وہ اور اسکی دوستیں مل کر، مونا کے کمرے میں دھما چوکڑی مچا رہی تھیں۔ چار بجے تک بھائی بھابھی بھی آگئے۔ میں نے مین گیٹ پر انکا استقبال کیا۔ اور آگے بڑھ کر بھائی کے گلے لگ گیا۔پھر نم آنکھوں سے ماں جیسی بھابھی کو سلام کیا۔ پھر انہیں لئے ساتھ لئے ڈرائنگ روم میں آگیا۔ ابھی بیٹھے تھوڑی ہی دیر ہوئی تھی کہ حمیرا نے بھی کمرے کے اندر جھانکا اور دور سے ہی بھائی بھابھی کو سلام کیا۔پھر کہا۔” میں ذرا کچن میں مصروف ہوں۔ “اور الٹے قدم لوٹ گئی۔ میں نے تھوڑی شرمندگی سے بھائی کے چہرے کی طرف دیکھا۔ چہرے پر خوشی کا اظہار ضرور تھا مگر ان کی آنکھوں میں آج کوئی جگنو نہیں چمک رہا تھا۔کچھ تھا تو فقط پاتال سا گھپ اندھیرا۔
“اصل میں، جب سے آپ کا سنا ہے ، کچن میں ہی لگی ہوئی ہے۔” مجھ سے خود اپنی آواز نہیں پہچانی گئی۔
جواب میں دونوں مسکرا دیئے۔
“مونا کہاں ہے۔ اب تو ماشاء اللہ کافی بڑی ہوگئی ہوگئی۔”
“جی ابھی اس کو بلاتا ہوں۔ اصل میں اس کی دوستیں آئی ہوئی ہیں۔ تو ان کے ساتھ مصروف ہے۔”
باتوں کا رسمی سلسلہ جاری ہو گیا تھا۔
پھر باتوں میں وقت کا پتہ ہی نہیں چلا، یہ سلسلہ کام والی نے آ کر منقطع کیا۔
” صاحب ، کھانا لگ گیا ہے۔ بی بی جی بلا رہی ہیں۔”
“آئیے آئیے۔ کھانا کھاتے ہیں۔” پھر وہ میری معیت میں ڈائننگ ٹیبل تک پہنچے۔ میں نے ٹیبل پر نظریں گھمائیں کہ دیکھو کیا کیا ہے۔ ٹیبل پر موجود تھا۔ چکن بریانی، چکن قورمہ،نان اور زردہ۔میں نے زخمی نگاہوں سے کچن کے دروازے سے جھانکتی حمیرا کی طرف دیکھا۔ اس کاچہرہ بے تاثر اور بے سواد تھا۔فارمی چکن کے گوشت کی طرح۔
تبھی ناجانے کدھر سے مونا ٹپک پڑی، مگر پھرمہمانوں کی موجودگی محسوس کرکے میری گود میں چڑھ گئی اور ٹکر ٹکر انہیں دیکھ کر پہچاننے کی کوشش کرنے لگی۔پھر میری طرف منہ کرکے بولی۔” پاپا،کیا یہ بھی ریلَیٹِو ہیں یعنی رشتے دار، ان سے ہمارا کون سا رشتہ ہے؟” مونا کے جملے میں ، علی بھائی کے کل بولے جانے والے ڈائیلاگ کی باقیات تھیں۔
میں نے ایک زخمی نظر بھائی بھابھی پر ڈالی اورپھر ٹیبل کی طرف دیکھتے ہوئے کہا۔
“بیٹا ان سے ہمارا چکن کا رشتہ ہے

عامر صدیقی
عامر صدیقی
لکھاری،ترجمہ نگار،افسانہ نگار،محقق۔۔۔ / مائکرو فکشنسٹ / مترجم/شاعر۔ پیدائش ۲۰ نومبر ۱۹۷۱ ؁ ء بمقام سکھر ، سندھ۔تعلیمی قابلیت ماسٹر، ابتدائی تعلیم سینٹ سیوئر سکھر،بعد ازاں کراچی سے حاصل کی، ادبی سفر کا آغاز ۱۹۹۲ ء ؁ میں اپنے ہی جاری کردہ رسالے سے کیا۔ ہندوپاک کے بیشتر رسائل میں تخلیقات کی اشاعت۔ آپ کا افسانوی مجموعہ اور شعری مجموعہ زیر ترتیب ہیں۔ علاوہ ازیں دیگرتراجم و مرتبہ نگارشات کی فہرست مندرجہ ذیل ہے : ۱۔ فرار (ہندی ناولٹ)۔۔۔رنجن گوسوامی ۲ ۔ ناٹ ایکیول ٹو لو(ہندی تجرباتی ناول)۔۔۔ سورج پرکاش ۳۔عباس سارنگ کی مختصرسندھی کہانیاں۔۔۔ ترجمہ: س ب کھوسو، (انتخاب و ترتیب) ۴۔کوکلا شاستر (ہندی کہانیوں کا مجموعہ ) ۔۔۔ سندیپ میل ۵۔آخری گیت اور دیگر افسانے۔۔۔ نینا پال۔۔۔۔ (انتخاب و ترجمہ) ۶ ۔ دیوی نانگرانی کی منتخب غزلیں۔۔۔( انتخاب/ اسکرپٹ کی تبدیلی) ۷۔ لالٹین(ہندی ناولٹ)۔۔۔ رام پرکاش اننت ۸۔دوڑ (ہندی ناولٹ)۔۔۔ ممتا کالیا ۹۔ دوجی میرا (ہندی کہانیوں کا مجموعہ ) ۔۔۔ سندیپ میل ۱۰ ۔سترہ رانڈے روڈ (ہندی ناول)۔۔۔ رویندر کالیا ۱۱۔ پچاس کی دہائی کی بہترین ہندی کہانیاں(۱۹۵۰ء تا ۱۹۶۰ء) ۔۔۔۔(انتخاب و ترجمہ) ۱۲۔ ساٹھ کی دہائی کی بہترین ہندی کہانیاں(۱۹۶۰ء تا ۱۹۷۰ء) ۔۔۔۔(انتخاب و ترجمہ) ۱۳۔ موہن راکیش کی بہترین کہانیاں (انتخاب و ترجمہ) ۱۴۔ دس سندھی کہانیاں۔۔۔۔ (انتخاب و ترجمہ) ۱۵۔ قصہ کوتاہ(ہندی ناول)۔۔۔اشوک اسفل ۱۶۔ ہند کہانی ۔۔۔۔جلد ایک ۔۔۔۔ (انتخاب و ترجمہ) ۱۷۔ ہند کہانی ۔۔۔۔جلد دوم۔۔۔۔ (انتخاب و ترجمہ) ۱۸۔ ہند کہانی ۔۔۔۔جلد سوم ۔۔۔۔ (انتخاب و ترجمہ) ۱۹۔ہند کہانی ۔۔۔۔جلد چہارم ۔۔۔۔ (انتخاب و ترجمہ) ۲۰۔ گنگا میا (ہندی ناول)۔۔۔ بھیرو پرساد گپتا ۲۱۔ پہچان (ہندی ناول)۔۔۔ انور سہیل ۲۲۔ سورج کا ساتواں گھوڑا(مختصرہندی ناول)۔۔۔ دھرم ویر بھارتی ۳۲ ۔بہترین سندھی کہانیاں۔۔۔ حصہ اول۔۔۔۔ (انتخاب و ترجمہ) ۲۴۔بہترین سندھی کہانیاں ۔۔۔ حصہ دوم۔۔۔۔ (انتخاب و ترجمہ) ۲۵۔سب رنگ۔۔۔۔ حصہ اول۔۔۔۔(مختلف زبانوں کی منتخب کہانیاں) ۲۶۔ سب رنگ۔۔۔۔ حصہ دوم۔۔۔۔(مختلف زبانوں کی منتخب کہانیاں) ۲۷۔ سب رنگ۔۔۔۔ حصہ سوم۔۔۔۔(مختلف زبانوں کی منتخب کہانیاں) ۲۸۔ دیس بیرانا(ہندی ناول)۔۔۔ سورج پرکاش ۲۹۔انورسہیل کی منتخب کہانیاں۔۔۔۔ (انتخاب و ترجمہ) ۳۰۔ تقسیم کہانی۔۔۔۔حصہ اول۔۔۔۔(انتخاب و ترجمہ) ۳۱۔سورج پرکاش کی کہانیاں۔۔۔۔(انتخاب و ترجمہ) ۳۲۔ذکیہ زبیری کی بہترین کہانیاں(انتخاب و ترجمہ) ۳۳۔سوشانت سپریہ کی کہانیاں۔۔۔۔(انتخاب و ترجمہ) ۳۴۔منتخب پنجابی کہانیاں ۔۔۔۔حصہ اول۔۔۔۔(انتخاب و ترجمہ) ۳۵۔منتخب پنجابی کہانیاں ۔۔۔۔حصہ دوم۔۔۔۔(انتخاب و ترجمہ) ۳۶۔ سوال ابھی باقی ہے (کہانی مجموعہ)۔۔۔راکیش بھرامر ۳۷۔شوکت حسین شورو کی سندھی کہانیاں۔حصہ اول۔۔۔۔(انتخاب و ترجمہ) ۳۸۔شوکت حسین شورو کی سندھی کہانیاں۔حصہ دوم۔۔۔۔(انتخاب و ترجمہ) ۳۹۔شوکت حسین شورو کی سندھی کہانیاں۔حصہ سوم۔۔۔۔(انتخاب و ترجمہ) تقسیم کہانی۔ حصہ دوم(زیرترتیب ) گناہوں کا دیوتا(زیرترتیب ) منتخب پنجابی کہانیاں حصہ سوم(زیرترتیب ) منتخب سندھی کہانیاں حصہ سوم(زیرترتیب ) کبیر کی کہانیاں(زیرترتیب )

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *