یواے ای حکومت کا دبئی کے سیلاب سے پہلے کلاؤڈ سیڈنگ سے لاتعلقی کا اعلان

اخباری اطلاعات کے مطابق متحدہ عرب امارات (یو اے ای) ان دنوں غیر معمولی بارشوں کے نتیجے میں کافی مشکلات کا شکار ہے، جس کے بعد  مختلف علاقوں میں خطرناک حد تک سیلاب آ گیا ہے۔ سیلاب اور طوفانی بارشوں کے بعد کے حالات انتہائی مشکل ہوگئے ہیں۔ موسم کے ان شدید واقعات کو بڑھانے یا کم کرنے میں کلاؤڈ سیڈنگ کے کردار کے حوالے سے مختلف سوالات پیدا ہوئے ہیں۔ نیشنل سینٹر آف میٹرولوجی (NCM)، جو کہ متحدہ عرب امارات میں موسمیاتی سرگرمیوں کی نگرانی کا ذمہ دار ہے نے خود کو ان مباحثوں اور تنقید کی زد میں پایا ہے۔

بے شمار اخباری رپورٹس منظر عام پر آئی ہیں جن سے پتہ چلتا ہے کہ ملک میں آنے والی  تیز بارشوں اور طوفانوں سے قبل ایک سرکاری ٹاسک فورس کلاؤڈ سیڈنگ مشن میں مصروف تھی۔ تاہم این سی ایم کے ڈپٹی ڈائریکٹر جنرل عمر علی یزیدی نے فوری طور پر ان دعوؤں کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ مذکورہ طوفانوں کے دوران یا اس سے پہلے کوئی کلاؤڈ سیڈنگ آپریشن نہیں کیا گیا تھا۔ عمر یزیدی کے مطابق کلاؤڈ سیڈنگ کے بنیادی اصول متوقع بارش سے پہلے ہی بادلوں کو نشانہ بنانے کا حکم دیتے ہیں۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ طوفان یا اس کے آغاز کے دوران اس طرح کی کارروائیاں کرنا بادل کی نشوونما کے جدید مرحلے کی وجہ سے بیکار ہوجاتا ہے۔

یہ تردید موسمیات کے ماہر احمد حبیب کے پہلے دعووں کی تصدیق کرتی ہے، جنہوں نے ابتدائی طور پر شدید بارشوں کو انسانی مداخلت کے بجائے قدرتی بادلوں کی حرکیات سے منسوب کیا ہے۔ حبیب نے بعد میں واضح کیا کہ جب چھ پائلٹوں کو طے شدہ پروٹوکول کے تحت بھیجا گیا تھا تو اس مشن کے دوران کلاؤڈ سیڈنگ کی سرگرمیاں نہیں کی گئیں تھیں بلکہ روک دی گئیں تھیں۔
بلومبرگ کی ایک رپورٹ کے بعد کلاؤڈ سیڈنگ کے بارے میں شکوک و شبہات نے زور پکڑا ہے جہاں حبیب نے اس بات پر روشنی ڈالی ہے کہ منگل کو ہونے والی بارش مصنوعی ہیرا پھیری کے بجائے کلاؤڈ بویانسی کا نتیجہ تھی۔ حبیب کی پیش گوئی ماحول کے حالات اور مقامی موسمی مظاہر کے درمیان پیچیدہ تعامل کی نشاندہی کرتی ہے، جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ بادل کی بیجائی ہمیشہ موسم کے موجودہ نمونوں کے ساتھ مطابقت نہیں رکھتی۔

متحدہ عرب امارات کی آب و ہوا کے وسیع فریم ورک کے اندر اس گفتگو کو سیاق و سباق کے مطابق پیش کرنا بہت ضروری ہے۔ ملک میں عام طور پر 140 سے 200 ملی میٹر تک سالانہ بارشیں ہوتی ہیں۔ اس کے باوجود حالیہ سیلاب کی وجہ سے العین میں 250 ملی میٹر اور دبئی میں 100 ملی میٹر سے زیادہ بارش ریکارڈ کیا گیا ہے۔

کلاؤڈ سیڈنگ سے متعلق تنازعہ موسم میں تبدیلی کے چیلنجوں اور موسمیاتی مداخلتوں میں شفافیت کی ضرورت کو اجاگر کرتا ہے۔ جیسا کہ یو اے ای غیر متوقع طوفانی بارشوں کے بعد طوفانوں کا سامنا کیا ہے، کلاؤڈ سیڈنگ پر گفتگو موسم سے متعلق خطرات کے انتظام کی پیچیدگیوں اور شواہد پر مبنی موسمیاتی طریقوں کی ضرورت پر روشنی ڈالتی ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors

خلاصہ کلام یہ ہے کہ متحدہ عرب امارات کی حکومت کی جانب سے حالیہ سیلاب سے قبل کلاؤڈ سیڈنگ آپریشنز سے انکار قدرتی موسمی نمونوں کو متاثر کرنے میں انسانی مداخلت کے کردار کے بارے میں متعلقہ سوالات کو جنم دیتا ہے۔ جیسا کہ حالیہ طوفانی بارشوں کے بارے میں تحقیقات جاری ہیں اور ماہرین کو بھی جان بوجھ کر سنسنی خیز گفتگو سے اجتناب کرنا چاہئیے۔ موسم کی تبدیلی کی پیچیدگیوں اور مستقبل کے موسمیاتی چیلنجوں کے بارے میں مزید جاننے کے لیے ہمیں سائنسی معلومات سے بھی فائدہ اٹھانے کی اشد ضرورت ہے۔

Facebook Comments

ڈاکٹر رحمت عزیز خان چترالی
*رحمت عزیز خان چترالی کا تعلق چترال خیبرپختونخوا سے ہے، اردو، کھوار اور انگریزی میں لکھتے ہیں۔ آپ کا اردو ناول ''کافرستان''، اردو سفرنامہ ''ہندوکش سے ہمالیہ تک''، افسانہ ''تلاش'' خودنوشت سوانح عمری ''چترال کہانی''، پھوپھوکان اقبال (بچوں کا اقبال) اور فکر اقبال (کھوار) شمالی پاکستان کے اردو منظر نامے میں بڑی اہمیت رکھتے ہیں، کھوار ویکیپیڈیا کے بانی اور منتظم ہیں، آپ پاکستانی اخبارارت، رسائل و جرائد میں حالات حاضرہ، ادب، ثقافت، اقبالیات، قانون، جرائم، انسانی حقوق، نقد و تبصرہ اور بچوں کے ادب پر پر تواتر سے لکھ رہے ہیں، آپ کی شاندار خدمات کے اعتراف میں آپ کو بے شمار ملکی و بین الاقوامی اعزازات، ورلڈ ریکارڈ سرٹیفیکیٹس، طلائی تمغوں اور اسناد سے نوازا جا چکا ہے۔ کھوار زبان سمیت پاکستان کی چالیس سے زائد زبانوں کے لیے ہفت پلیٹ فارمی کلیدی تختیوں کا کیبورڈ سافٹویئر بنا کر عالمی ریکارڈ قائم کرکے پاکستان کا نام عالمی سطح پر روشن کرنے والے پہلے پاکستانی ہیں۔ آپ کی کھوار زبان میں شاعری کا اردو، انگریزی اور گوجری زبان میں تراجم کیے گئے ہیں، اس واٹس ایپ نمبر 03365114595 اور rachitrali@gmail.com پر ان سے رابطہ کیا جاسکتا ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply