• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • ارجنٹائن کی فرانس پر تاریخی فتح اور پاک و ہند کے اس چیمپین شپ سے باہر رہنے کے اسباب/احمد سہیل

ارجنٹائن کی فرانس پر تاریخی فتح اور پاک و ہند کے اس چیمپین شپ سے باہر رہنے کے اسباب/احمد سہیل

ایک کٹھن مقابلے کے بعد ارجنٹائن نے فرانس کو شکست دے کر 2022 کا فیفا ورلڈ کپ چیمپئن بن گیا۔ یہ فٹ بال کی تاریخ کا ایک یادگار میچ تھا جو تاریخ کے صفحات سے مٹ نہیں پائے گا۔
بلاشبہ ٹورنامنٹ کے سب سے دلچسپ کھیل کو ختم کرتے ہوئے ارجنٹائن نے فرانس کو 2022 فیفا ورلڈ کپ چیمپئن بننے کے لیے چونکا دیا۔ پہلے ہاف میں ابتدائی 2-0 کی برتری حاصل کرنے کے لیے غالب نظر آنے کے باوجود، دوسرے ہاف میں ارجنٹائن نے دباؤ میں کریک کرنا شروع کر دیا اور فرانس نے دو گول سے برابری کر دی۔

اضافی وقت میں جانے والا آٹھواں ورلڈ کپ فائنل بنتے ہوئے دونوں ٹیموں نے فتح سے ہمکنار ہونے کے لیے سخت جدوجہد کی۔ لیونل میسی نے 108 منٹ میں تباہ کُن گول کرکے برتری 3-2 پر لے لی، لیکن فرانس نے دباؤ جاری رکھا، کائیلین امباپے نے ایک بار پھر برابری کرتے ہوئے گیم 3-3 سے برابر کر دی اور گیم کو پنالٹی ککس میں لے لیا۔

پنالٹی شوٹ آؤٹ میں جانے کے لیے صرف تیسرا ورلڈ کپ فائنل، Mbappé نے ایک بار پھر ارجنٹائن کے گول کیپر Emiliano Martínez کے خلاف گول کر کے تناؤ کا سلسلہ شروع کیا۔ اگرچہ ایک محفوظ کوشش اور فرانس کی کمی نے ارجنٹائن کو 2014 کے فائنل میں جرمنی سے 1-0 سے ہارنے کے بعد ٹرافی اپنے گھر لے جانے کی پیشکش کی۔ میسی کی قیادت میں  ارجنٹائن نے 2022 فیفا ورلڈ کپ چیمپئن بننے کی اپنی تمام کوششوں پر ناقابل یقین حد تک گول کیا۔

2022 کے فیفا ورلڈ کپ فائنل میں اپنی کارکردگی کے ساتھ  لیونل میسی اسی ٹورنامنٹ میں گروپ مراحل  راؤنڈ آف 16  کوارٹر فائنل  سیمی فائنل اور فائنل میں گول کرنے والے تاریخ کے پہلے کھلاڑی بن گئے۔ 2022 کی چیمپئن شپ کی فتح فٹ بال اسٹار کی پہلی بار کپ جیتنے والی ہے اور یہ اس کی آخری ورلڈ کپ میں شرکت ہوگی۔

 ہندوستان اور فیفا ورلڈ کپب چیمئن شپ  
فیفا ورلڈ کپ 2022 قطر میں شروع ہوا اور شائقین اپنے ممالک کو کھیلتے اور کپ کے لیے مقابلہ کرتے ہوئے دیکھنے کے لیے پُرجوش ہیں۔ 32 ٹیمیں ورلڈ کپ کے لیے کوالیفائی کر چکی ہیں اور میچز ہمیشہ کی طرح شدید ہیں۔ فیفا ورلڈ کپ ہمیشہ سے ہی دنیا کے سب سے بڑے کھیلوں کے مقابلوں میں سے ایک رہا ہے اور ہر ملک کی خواہش ہوتی ہے کہ وہ ورلڈ کپ کا حصہ بنے تاکہ ان کی پہچان بن سکے۔

ہندوستان بھی ایک ایسا ہی ملک ہے جہاں شائقین چاہتے ہیں کہ ٹیم ورلڈ کپ تک پہنچے اور ٹاپ تک پہنچنے کا راستہ لڑے، لیکن ہندوستان برسوں سے ورلڈ کپ کے لیے کوالیفائی نہیں کر پایا ہے۔ اپنے کپتان سنیل چھیتری کی قیادت میں ہندوستانی ٹیم ورلڈ کپ کے لیے کوالیفائی کرنے کی بھرپور کوشش کر رہی ہے لیکن اب تک اس میں ناکام رہی ہے۔ ٹیم انڈیا کے ورلڈ کپ 2022 میں نہ پہنچنے کی بہت سی وجوہات ہیں۔ آئیے ان وجوہات پر ایک نظر ڈالتے ہیں۔

ہندوستان کے فیفا ورلڈ کپ 2022 میں نہ ہونے کی وجہ؟
سنیل چھتری کی کپتانی میں ہندوستانی فٹبال ٹیم کوالیفائنگ مرحلے کے دوسرے راؤنڈ میں ہی باہر ہوگئی۔ سرکاری درجہ بندی میں ہندوستان 106 ویں نمبر پر ہے۔ ہندوستان کا کھیل بھی انہیں ٹاپ 100 میں شامل نہیں کر سکا۔ بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ ہندوستان کے کوالیفائی نہ ہونے کی سب سے بڑی وجہ یہ ہے کہ فٹ بال ہندوستان میں کرکٹ کی طرح مقبول نہیں ہے۔ اس کی وجہ سے بہت سے لوگ فٹ بال پر کرکٹ کو ترجیح دیتے ہیں اس لیے ٹیلنٹ کو پہچانا نہیں جاتا۔ ہندوستانی فٹبال ٹیم بہترین ٹیم بننے کے لیے سخت محنت کر رہی ہے، لیکن میڈیا کی کم کوریج اور غلط اسپانسرشپ ہندوستانی ٹیم کے کھیل میں ایک بڑا عنصر بن گئی ہے۔

ہندوستان نے آخری بار فیفا ورلڈ کپ کے لیے کب کوالیفائی کیا تھا؟
ہندوستانی ٹیم نے 1950 میں برازیل میں منعقدہ فیفا ورلڈ کپ کے لیے کوالیفائی کیا تھا۔لیکن اس کے باوجود ٹیم ورلڈ کپ میں نہیں کھیلی۔ دراصل، ہندوستانی کھلاڑیوں کو ننگے پاؤں کھیلنے کی عادت تھی۔ ساتھ ہی فیفا کے قوانین کے مطابق ورلڈ کپ میں جوتے پہن کر کھیلنا لازمی قرار دیا گیا تھا۔

ہندوستانی کھلاڑیوں کو جوتوں سے کھیلنے کی عادت نہیں تھی اس لیے انہوں نے اس ٹورنامنٹ میں کھیلنے سے انکار کر دیا۔ اس کے علاوہ ٹیم سلیکشن میں تنازع، پریکٹس کی کمی، حکومت اور اسپورٹس ایسوسی ایشن کی جانب سے ٹورنامنٹ کے لیے ٹیم کے اخراجات برداشت کرنے سے انکار تھا اور اداروں میں فٹبال کی حوصلہ افزائی نہیں کی جاتی ہے۔ جبکہ مغربی بنگال، منی پور اور جنسبہ ہندوستان مین فٹ بال کے کئی اچھے کلب اور کھلاڑی موجود ہیں۔

 پاکستان فیفا  چمپئن شب سے کیوں محروم رہا  
قطر میں شروع ہونے والے ورلڈ کپ 32 سرفہرست اسکواڈزیا ٹیموں کے ساتھ میدان میں داخل ہوئیں، ہم پاکستان میں بہترین طور پر پاکستان میں فٹ بال کی حالت پر ایک نظر ڈال سکتے ہیں۔ یہ ہر لحاظ سے افسوناک اور دل دکھانے والا وقت ہوتا ہے جو ہر پاکستانی کو اداس کردیتا ہے۔ دنیا کے سب سے بڑے شو کے طور پر دو نمائندگیاں سیالکوٹ میں ہونے والے فٹ بال  میچ میں ہوں گی، اور پاکستان آرمی کا ایک دستہ ایونٹ میں سکیورٹی فراہم کرے گا۔ ان دونوں میں سے کسی کا بھی ملک میں کھیل کی حالت سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ یہ وہ پاکستان میں بنی فٹ بال ہوگی جس کو 32 ممالک کے کھلاڑیوں نے  اپنے پیروں سے ٹھوکریں لگائیں۔

پاکستان فٹ بال فیڈریشن (پی ایف ایف) کو گزشتہ سال انٹرنیشنل فیڈریشن آف ایسوسی ایشن فٹ بال (فیفا) نے ‘تیسرے فریق کی مداخلت’ اور ‘حریفانہ قبضے’ کی وجہ سے معطل کر دیا تھا۔ اس سال کے شروع میں معطلی ہٹا دی گئی تھی، لیکن حکام کے درمیان جھگڑے اور طاقت کی کشمکش کی وجہ سے پاکستان فٹ بال کو ابھی تک پٹڑی پر نہیں لانا ہے اور یہ معاملہ بد سے بدترین ہوگیا۔

فٹ بال عالمی سطح پر صرف ایک کھیل سے زیادہ نہیں ہے، اور اس کھیل سے محبت کرنے والوں یا حقیقی کھیل کے ہنر کے حامل افراد کی کوئی کمی نہیں ہے۔ لیکن پی ایف ایف میں اندرونی سیاست کھلاڑیوں کے اپنی صلاحیتوں کے اظہار کے راستے میں رکاوٹ بن رہی ہے، اور کھیل سے محبت کرنے والوں کا اپنی آنکھوں کے سامنے ایک دلچسپ فٹ بال کا کھیل دیکھنے کے راستے میں رکاوٹ ہے۔ یہ بلکہ ستم ظریفی ہے کہ ملک میں کھیل کو فروغ دینے والا ادارہ اس سلسلے میں سب سے بڑی رکاوٹ ہے۔

کراچی کے علاقے لیاری کے علاوہ، جس نے گزشتہ برسوں میں کئی نامور فٹبالرز پیدا کیے ہیں، بلوچستان میں بھی فٹ بال کے باصلاحیت کھلاڑیوں کی ایک بڑی تعداد موجود ہے، جنہیں اگر پیشہ ورانہ طور پر پرورش اور تربیت دی جائے تو وہ ملک کے لیے نام کمانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

پس نوشت 
پاکستان اور ہندوستان مین فٹبال کا زوال اس لیے آیا کہ یہاں فٹ بال میں بہت کھلی اور جارہانہ سیاست اور سازشیں  ہوتی رہی ہیں جو اب بھی ہورہی ہیں۔ ان دونوں ممالک میں نسلی، لسانی تعصبات نے فٹ بال کے کھیل  کو خراب کیا۔دودسری طرف نوکری شاہی  کو  اس کھیل کے فروغ میں کبھی دلچسپی نہیں رہی۔ مگر یہ ادارہ فٹ بال کے فنڈ کو لوٹتا رہا۔ ہمارے تعلیمی ارداروں ، تجارتی اور سرکاری اداروں میں فٹ بال کا نام و نشان نہیں رہا۔ شاید اس کی وجہ یہ ہے کہ کرکٹ کا جو جادو پاکستانی اور ہندوستاں میں ہے وہ کسی اور کھیل میں نہیں ہے۔ اس میں بہت شہرت اور دولت ملتی ہے۔ جو فٹ بال میں نہیں۔ کچھ لوگ فٹبال کو ان پڑھ اور غیر تہذیبی لوگوں کا کھیل کہہ  کر اس پر طنز بھی کرتے ہیں۔اور اس سے دور رہتے ہیں۔  70 کی دہائی میں جب پاکستان کے تمام بنکوں میں کھیلوں کی پذیرائی ہوتی تھی ان بنکوں سے کھیلوں کے کئی عالمی سطح کےکھلاڑی نکلے۔ اب کسی ادارے اور مخیر شخصیت فٹ بال کے اس یتیم کھیل پر نظر اٹھا کر نہیں دیکھتی۔ اور نہ  ان کھلاڑیوں کی کفالت کرنا چاہتی ہے۔ کیونکہ اس کھیل سے مزید پیسہ نہیں بنایا جاسکتا۔

Advertisements
julia rana solicitors london

ایک لچسپ واقعہ سناتا چلوں۔ کچھ سال قبل پاکستان کے جبیب بنک کے صدر دفتر میں ایک پاکستانی کرکٹ ٹیم کے نامور ٹیسٹ کرکٹر جواس زمانے میں  اس بنک کےاسسٹنٹ وائس پریزیڈنٹ تھے ان کےدفتر کے باہر اسٹول پر بیٹھے ہوئے چپڑاسی { نائب قاصد} جو پاکستان کی فٹ بال ٹیم کے کپتان تھے۔ اس کے علاوہ اس قسم کے  دکھ بھرے کئی واقعات لوگوں کی یادوں میں محفوظ ہیں۔

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors
  • julia rana solicitors london

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply