• صفحہ اول
  • /
  • کالم
  • /
  • کیا مریم حساب برابر کر پائے گی؟۔۔ڈاکٹر ابرار ماجد

کیا مریم حساب برابر کر پائے گی؟۔۔ڈاکٹر ابرار ماجد

مریم نے پہلے بھی ایک دفعہ اپنے بیانات میں احتساب نہیں حساب مانگنے کا دعویٰ کیا تھا اور کل کے جلسے میں ایک بار پھر سے سارے حساب برابر کرنے کا اعلان کیا ہے۔

جو بیٹی ماں کو بستر مرگ پر چھوڑ کر باپ کی انگلی تھامے جیل جاسکتی ہے، جو مردانہ وار تمام مشکلات اور بد اخلاقیوں کا مقابلہ کرتے ہوئے عدالتوں کا سامنا کر سکتی ہے، بےیار و مدد گار عوامی جلسوں کو گرما سکتی ہے، جماعت کو ختم کرنے کی دھمکیوں کے چیلنج کو شرمندہ کر سکتی ہے، جس کو عوام کی نبض شناسی اور مرض کی تشخیض کا ہنر آتا ہو، جو احتساب کی کال پر عوام کے طوفان کے سنگ پیشی کی مثال بنا سکتی ہے۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

جو مفاہمت کی سیاست کو مزاحمت سے جیت سکتی ہے۔ جو “ووٹ کو عزت دو” پر اپنے جان، مال اور آبرو کو قربان کرنے کی قربانی دے سکتی ہو، جو جان جانے کی دھمکی پر بھی نہ رکی ہو، باپ کو اپنے جزبہ ایمانی سے لاجواب کردیا ہو، جس نے جماعت کے مشکل وقت کے اندر، پورے ملک کے طول عرض میں، تن تنہا عوام اور ورکرز کے ساتھ کھڑے ہوکر مقبول ترین سیاستدان کا درجہ پایا لیا ہو، جس نے انتخابات میں دن رات ایک کرکے کامیابی کو گلے لگا لیا ہو، وہ یقیناً حساب برابر کرنے کی اہلیت بھی رکھتی ہے۔

آج پاکستان نہیں پوری دنیا پاکستان کی سیاست میں اس خاتون آہن کی سرگرمیوں کو بہت غور سے دیکھ رہی ہے اور اس کی صلاحیتوں کا اعتراف کر رہی ہے۔

اس کی جارحانہ سیاست کو اگر اپنے بزرگوں کے ادب اور تعظیم کا سامنا نہ ہوتا تو شائد پاکستان کے سیاسی میدان کا درجہ حرارت کچھ اور ہوتا مگر اس کے سر پر ایک انتہائی مدبرانہ، حوصلہ مند اور گہری سوچ کا سایہ ہے جو اس کو ہر قدم پر راہنمائی مہیا کئے ہوئے ہے۔ میری دعا ہے کہ وہ ہمیشہ قائم رہے۔

مریم جزباتی سیاست کا توڑ بھی ہے اور علاج بھی، موجودہ افراتفری کی سیاست میں مختلف حلقوں سے آوازیں نکلنا شروع ہوگئیں کہ اس طوفان بدتمیزی کا ایک ہی توڑ ہے اور وہ ہے مریم، جو عوام کو سمجھانے، بہلانے اور گرمانے کا ہنر جانتی ہے۔ اور اگر مسلم لیگ نے اس مدمقابل اکھڑ مزاج کا مقابلہ کرنا ہے تو وہ مریم ہی کر سکتی ہے۔ جب انتقامی سیاست کا تاثر دیتے احتساب نے سر اٹھایا تو اس نے جماعت کے کارکنوں کے ساتھ پیشی بھگتنے کا اعلان کیا تو پھر احتساب کا طوفان بھی تھم گیا اور اس کی طاقت کا اندازہ بھی جم گیا۔

مسلم لیگ کی سیاسی تاریخ شروع میں انتقامی رہی ہے لیکن میثاق جمہوریت کے بعد انہوں نے انتہائی سنجیدہ سیاست کی ہے جس کی بنا پر ان کو مک مکا کی سیاست کا طعنہ بھی دیا جاتا رہا۔ پیلز پارٹی اور مسلم لیگ نے انتہائی سنجیدہ سیاست کی مثال قائم کی اور وہ اس پر قائم بھی ہیں۔

میں نہیں سمجھتا کہ مریم نواز سیاست میں کوئی ایسا قدم اٹھائیں گی جس سے ملک میں بدنظمی کا خدشہ ہو اور جمہوریت کو نقصان ہو، وہ آئینی اور قانونی احتساب اور حساب کی بات کرتی رہیں گی جو ان کا حق بھی ہے اور پاکستان کی سیاست کا ایک روائتی رنگ بھی مگر وہ اس کی حساس حدود کو کبھی بھی کراس نہیں کریں گی اور نہ ہی اپنے سیاسی کیرئیر پر انتقام کا داغ لگنے دیں گی۔۔

ان کی جماعت کا سیاسی سرمایہ کارکردگی ہے اور انہوں نے ہر دور میں مشکلات کا مقابلہ کرتے ہوئے، ملک کو ترقی کی راہ پر گامزن کیا ہے اور یہی ان کا جماعتی اثاثہ ہے۔

میں سمجھتا ہوں کہ اس دفعہ جو ان کو موقعہ ملا ہے وہ صرف اور صرف ملک کی ابتر معاشی حالت کے تقاضے اور عالمی سطح پر ان پر کئے جانے والے اعتماد کی مجبوری کے پیش نظر ہے کہ ان کو حکومت سازی کے لئے برداشت کیا گیا ہے۔

یہ پھولوں کی سیج نہیں بلکہ ایک کڑا امتحان سونپا گیا ہے اور شہباز شریف کی بہادری کو میں داد دیتا ہوں کہ انہوں نے رسک لیتے ہوئے یہ چیلنج قبول کیا ہے اور اپنی سیاست کو داؤ پر لگایا ہے اگر تو وہ عوام کی غربت، مہنگائی اور بے روزگاری کے خلاف کچھ دینے میں کامیاب ہوگئے تو عوام کا ان پر اعتماد اور بھی بڑھ جائے گا اور اگر وہ خدانخواستہ، بدامنی کی سیاست کے ہاتھوں ٹریپ ہوکر، ڈلیور کرنے میں ناکام ہوگئے تو ان کی سابقہ کارکردگی کا کریڈٹ بھی ضائع ہونے کا خدشہ ہے۔

لہذا میں سمجھتا ہوں کہ مریم، پاکستان مسلم لیگ نون اور دوسری اتحادی جماعتوں کو اس تذبذب والے ماحول کو ختم کرنے میں اپنا کردار ادا کرنا چاہیے اور جب انسان اقتدار میں ہوتا ہے تو اس وقت اس کی شخصیت کا اندازہ ہوتا ہے کہ وہ کس سوچ اور کردار کا مالک ہے۔ انہی تحریک انصاف کو بھی ایک دفعہ پھر یہ دعوت دینی چاہیے کہ جو ہوگیا سو ہوگیا اور اب جب پاکستان کے ادارے بھی پاکستان کو صحیح جمہوری ریاست دیکھنا چاہتے ہیں تو کیوں نہ سب مل کراپنی حکمت عملی سے تمام سازشوں کا پالیسی اور حکمت عملی سے مقابلہ کرتے ہوئے ملک و قوم کی فلاح کے لئے کام کیا جائے۔

ماضی میں تمام اتحادی جماعتیں بھی انتہائی کشیدگی کے ماحول سے گزری ہیں اور اب ملک و قوم کی ضرورت کے پیش نظر ایک ہوگئی ہیں تو پھر تحریک انصاف کیوں ان کا حصہ نہیں بن سکتی۔ حالانکہ تحریک انصاف کے قائد خود نواز شریف کے معترف رہے ہیں۔

Advertisements
julia rana solicitors

پاکستان اس وقت نفرت، کشیدگی اور افراتفری کی سیاست کا متحمل نہیں ہوسکتا۔ اب وقت کی ضرورت ہے کہ تمام سیاسی قائدین میثاق جمہوریت ہی نہیں بلکہ میثاق معیشت بھی ترتیب دیں اور اس پر پکا اعادہ کریں کہ وہ اپنے ملک کو دنیا کی ایک مضبوط، مستحکم اور ترقی یافتہ ریاست بنائیں گے۔ اللہ سب کا حامی و ناصر ہو۔

  • julia rana solicitors
  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply