پروپیگنڈااور موجودہ سیاسی صورت حال۔۔محمد جنید اسماعیل

ڈی جی آئی   ایس پی آر جنرل بابر افتخار نے 14 اپریل بروز جمعرات صحافیوں کو بریفنگ دی ۔اس بریفنگ میں بہت سے اہم سوالات کا جواب دیا گیا جو مختلف لوگوں کے اذہان میں پنپ رہے تھے ۔ملک کا سب سےذمہ دار اور حساس ادارہ ہونے کے ناتے ڈائریکٹر جنرل تعلقاتِ عامہ بابرافتخار کا بیان دبے الفاظ میں بہت سی چیزوں کی نشاندہی کرگیا ۔سب سے پہلے صحافیوں کو دی گئی  اس نیوز بریفنگ کے اہم نکات پربات کرلیتے ہیں پھر اس پر تنقیدی نگاہ سے بات کرلیتے ہیں۔

افواجِ پاکستان کے ترجمان نے واضح کیا ہے کہ نیشنل سکیورٹی کمیٹی کے اعلامیے میں سازش کا کوئی ذکر نہیں ہے۔ امریکہ نے نہ پاکستان سے فوجی اڈے مانگے تھے اور نہ ہی ان سے انکار کیا گیا بلکہ سابق وزیراعظم نے ایک صحافی کو ایک انٹرویو دیتے ہوئے اپنی رائے کا اظہار کیا لیکن بالفرض اگر ایسا کوئی  مطالبہ کیا بھی جاتا تو آرمی کی طرف سے بھی انکار ہی ہوتا ۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

سابق وزیرِ اعظم کو اسٹیبلشمنٹ نے کوئی آپشن نہیں دیا تھا بلکہ سابق وزیراعظم عمران خان کی طرف سے چیف آف آرمی سٹاف کو اپروچ کیا گیا اور پھر آرمی چیف اور وزیراعظم کے درمیان تین آپشن زیرِ بحث لائے گئے جس میں سے عمران خان نے اسمبلیاں تحلیل کرکے جلد الیکشن کرانے والے آپشن کو مناسب قرار دیا ۔متحدہ اپوزیشن سے بات کی گئی  لیکن اپوزیشن نے کہا کہ عدم اعتماد کی تحریک کو لے کر آگے بڑھنا چاہتے ہیں۔

جمعرات کو صحافیوں کو بریفنگ دیتے ہوئے فوج کے شعبۂ تعلقاتِ عامہ کے سربراہ میجر جنرل بابر افتخار نے کہا کہ پاکستان میں اب کبھی مارشل لاء  نہیں لگے گا۔ پاکستان کی بقاصرف اور صرف جمہوریت میں ہے۔سابق وزیرِ اعظم عمران خان کو ملنے والے دھمکی آمیز مراسلے سے متعلق ترجمان کا کہنا تھا کہ ڈی مارش صرف سازش پر نہیں دیا جاتا۔ اس کی بہت سی وجوہات ہوتی ہیں۔اُن کا کہنا تھا کہ اس حوالے سے فوج اپنی وضاحت دے چکی ہے اور نیشنل سکیورٹی کمیٹی کے اعلامیے میں بھی کسی غیر ملکی سازش کا ذکر نہیں ہے۔عمران خان کے ایٹمی پروگرام کے بارے بیان کے متعلق سوال پر اُن کا کہنا تھا کہ پاکستان کے ایٹمی پروگرام کے بارے بات کرنے سے پہلے سیاستدانوں کو سوچنا چاہیئے اور ایٹمی پروگرام پر سیاست کرنے سےگریز کیا جانا چاہیئے ۔ایٹمی پروگرام میں سب جماعتوں نے دیانت داری کے ساتھ اپنا حصہ ڈالا ہے ۔

میجر جنرل بابر افتخار کا کہنا تھا کہ بار بار کہہ چکے ہیں کہ فوج کو سیاست میں نہ گھسیٹا جائے، ہمارا سیاست سے کوئی لینا دینا نہیں، ہم آئین اور قانون کی عمل داری پر یقین رکھتے ہیں۔اُن کا کہنا تھا کہ گزشتہ چند روز سے سوشل میڈیا پر فوج پر تنقید کی جا رہی ہے اور سابق فوجی افسران کے فیک پیغامات وائرل کیے جا رہے ہیں جس کی ہرگز اجازت نہیں دی جا سکتی۔ میجر جنرل بابر افتخار نے کہا کہ اگر کسی کے پاس فوج کی سیاسی معاملات میں مداخلت سے متعلق کوئی ثبوت ہے تو سامنے لائے۔ اُن کا کہنا تھا کہ افواہوں کی بنیاد پر افواج کی کردار کشی کسی صورت قابلِ قبول نہیں ہے۔انہوں نے کہا  کہ چیف آف آرمی اسٹاف نہ تو ایکسٹینشن کے خواہش مند ہیں اور نہ ہی اپنے عہدے کی میعاد میں توسیع قبول کریں گے بلکہ وہ رواں برس انتیس نومبر کو اپنی مدت پوری کر کے ریٹائرڈ ہو جائیں گے۔

ڈی جی آئی  ایس پی آر کا یہ اعتراف بھی معنی خیز ہے کہ پروپیگنڈہ نئی  مشکلات یا برائیوں کو جنم دینے کی بجائے پہلے سے موجود برائیوں کو بڑھاوا دیتا ہے ۔ان کا یہ اعتراف کہ پہلے کچھ دڑاریں تو موجود ہوتی ہیں اور پروپیگنڈہ ان دڑاروں کو بس بڑھاتا ہے ۔ڈی جی آئی  ایس پی آر کے بیان نے واضح الفاظ میں سیاست سے لاتعلقی کا اعلان کیا اور ہم سب کو یہ باور کرایا کہ پاک فوج کی عدم مداخلت کا اظہار پچھلے چند انتخابات سے میں دیکھا جاسکتا ہے جب ضمنی اور بلدیاتی انتخابات میں کسی سیاسی حلقے کی طرف سے بھی فوج کی مداخلت کا بھی الزام نہیں لگایا گیا۔
ہم مستقبل میں بھی اپنے آئینی کردار ادا کرنے کی طرف بڑھ رہے ہیں۔

Advertisements
julia rana solicitors

یہاں یہ امر قابلِ ذکر ہے کہ سوشل میڈیا پہ کل سے ایک پروپیگنڈہ شروع ہوگیا ہے ،میمز اور ٹوئیٹر ٹرینڈز کے ذریعے ایک طوفانِ بدتمیزی کھڑا کردیا گیا ہے جس میں نشانہ پاک فوج کو بنایا جارہا ہے۔سازش اور مداخلت کے فرق پر ہزاروں میمز بن چکی ہیں۔حالاں کہ ڈی جی آئی  ایس پی آر نے سازش اور مداخلت کا لفظ دو الگ الگ مقامات پر ادا کیا ۔اس سے صاف تاثر لیا جاسکتا ہے کہ جو جو پارٹی اپنی اکثریت کھونے لگے گی اور پارلیمنٹ میں ہارنے لگے گی تو وہ پاک فوج کے خلاف پروپیگنڈہ شروع کرادےگی اور مزاحمت کارڈ کھیلنا شروع کردے گی۔امریکہ کارڈ اور مزاحمت کارڈ سب سے زیادہ مضبوط کارڈ رہے ہیں جو پاکستان میں کھیلے جاتے ہیں۔عمران خان بھی یہی کارڈ کھیلنے لگے ہیں اور اپنا جمہوری سفر جس اسٹیبلشمنٹ کے ہوتے ہوئے پورا کیا اور بناء مداخلت کےپورا کیا ،پارلیمنٹ میں اکثریت ختم ہوتے ہی انہی کے خلاف ہی محاذ آرائی  پر اتر آئے ہیں ایک طرف ان کی اعلیٰ قیادت کا یہ بیانیہ ہے کہ آئی  ایس پی آر کی طرف سے ان کے بیانیے کی حمایت کی گئی  ہے اور دوسری طرف انہی کے سوشل میڈیا اکاؤنٹس کی طرف سے ذو معنی جملوں اور میمز کے ذریعے طوفانِ بدتمیزی شروع کیا جاچکا ہے۔

  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • merkit.pk

محمد جنید اسماعیل
میں محمد جنید اسماعیل یونی ورسٹی میں انگلش لٹریچر میں ماسٹر کر رہا ہوں اور مختلف ویب سائٹس اور اخبارات میں کالم اور آرٹیکل لکھ رہا ہوں۔اس کے علاوہ وزیر اعلیٰ پنجاب کے ٹیلنٹ مقابلہ جات میں افسانہ نویسی میں پہلی پوزیشن بھی حاصل کرچکا ہوں،یونیورسٹی کی سطح تک مضمون نویسی کے مقابلہ جات میں تین بار پہلی پوزیشن حاصل کرچکا ہوں۔مستقبل میں سی ایس ایس کرنے کا ارادہ رکھتا ہوں ۔میرے دلچسپی کے موضوعات میں کرنٹ افیئرز ،سیاسی اور فلاسفی سے متعلق مباحث ہیں۔اس کے علاوہ سماجی معاملات پر چند افسانچے بھی لکھ چکا ہوں اور لکھنے کا ارادہ بھی رکھتا ہوں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply