• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • مختصرتذکرہ حیات عاشق رسولﷺ امام احمد رضا خان۔۔۔حافظ کریم اللہ چشتی

مختصرتذکرہ حیات عاشق رسولﷺ امام احمد رضا خان۔۔۔حافظ کریم اللہ چشتی

جب بھی دین میں کوئی بگاڑپیداہوتاہے تواللہ تعالیٰ اپنے بندۂ مومن کوبھیجتاہے جواللہ تعالیٰ کی مددسے دین ِ متین کااحیاء کرتاہے ۔۔  ۔سرکاراعظم صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کی مُردہ سنتوں کو زندہ کرتاہے ۔دین ِ متین کی جوشکل مسخ کردی گئی ہوتی ہے اس کوصحیح حالت میں لاکرحق اورباطل کے درمیان فرق واضح کرتاہے۔ ایسے ہی خاصان ِ خدامیں سے ایک ہستی اعلیٰ حضرت امام احمدرضاخانصاب محدّث بریلی ؒ کی ذات ہے ۔
قرآن مجیدفرقان حمیدمیں ارشادپاک ہے ۔وَتُعِزَِّرُوْہُ وُتُوَقّرُہُ وَتُسبحوہُ بُکْرَۃَََ وَاصِیْلاَ۔ترجمہ کنزالایمان ’’اوررسول صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کی تعظیم وتوقیرکرو۔اورصبح شام اللہ پاک کی پاکی بولو‘‘۔ (پارہ۲۶سورۃ الفتح )درج بالاآیت کریمہ کے پہلے حصے میں اللہ رب العزت نے یہ حکم دیاہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کی تعظیم وتوقیرکروان کاادب واحترام کرو۔اس لئے کہ اگرادب ہے توسب کچھ درست ہے اگرایک مسلمان کے دل میں آقادوجہاں سرورکون مکان صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کاادب نہیں ہے، توچاہے وہ لاکھوں نمازیں پڑھے کروڑوں روپے کی سخاوت کرے ، کعبۃ اللہ کاحج کرے ،قربانی کرے الغرض جتنی بھی عبادت وریاضت کرے توسب کچھ بے کارہے ۔کیونکہ آقائے دوجہاںسرورکون ومکاں صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کی محبت دین حق کی شرط اّول ہے۔
اسی میں ہواگرخامی توسب کچھ نامکمل ہے۔
اعلیٰ حضرت امام احمدرضاخان بریلوی ؒ نے لوگوں کوبارگاہ خداوندی اوردربارمصطفی صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کاادب سکھایا۔آپؒ نے قرآن پاک کا جوترجمہ “کنزالایمان” کیاہے وہ اس بات کی گواہی دیتاہے ۔قرآن پاک کے ترجمہ کنزالایمان کامطالعہ کیاجائے توالحمدسے لیکروالناس تک ایک ایک آیت بلکہ ایک لفظ میں ادب کے پہلونظرآتے ہیں۔ چودہویں صدی ہجری میں کچھ بے ادب اورگستاخوں نے سرکارمدینہ راحتِ قلب وسینہ صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کی شان اقدس میں بے ادبیاں اورگستاخیاں شروع کیں تواللہ رب العزت نے احمدرضاکوپیداکیا۔آپؒ نے قرآن وسنت کی روشنی میں تحریراََ گویاہر لحاظ سے عظمت مصطفیٰ صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کواجاگرکر کے بتایاکہ ارے! بے ادب اورگستاخ نام نہادمسلمانو سنو!وہ عیب ونقص والاکوئی تمہارا نبی ہوگا ہمارا نبی صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم ہرقسم کے عیب سے پاک ہے ۔وہ توعظمتوں رفعتوںاورشانوں والارسول صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم ہے ۔
وہ کمالِ حسن حضورہیں کہ گمان نقص جہاں نہیں

یہی پھول خارسے دورہیں یہی شمع ہے کہ دھواں نہیں۔
علم وحکمت کے بے تاج بادشاہ، مجدددین وملت اعلیٰ حضرت الشاہ امام احمدرضاخان بریلوی رحمۃ اللہ علیہ 10شوال المکرم 1272ہجری بمطابق14جون 1856؁ ہفتہ کے دن ظہرکے وقت ہندوستان کے مشہورشہربریلی شریف کے محلہ جسولی میں رئیس المتکلمین مولانانقی علی خان علیہ رحمۃ الرحمٰن کے گھرمیں پیداہوئے ۔آپؒ کا پیدائشی نام محمداور تاریخی نام “المختار”ہے۔آپ ؒکے جدامجدمولانارضاعلی خان ؒ نے آپؒ کانام احمدرضارکھا اورآپؒ اسی نام سے مشہورہوئے (الملفوظ حصہ اول ص۳) آپ ؒکے والدمولانانقی علی خان ورآپؒ کے جدامجدمولانارضاعلی خان صاحب بھی اپنے وقت کے جلیل القدرعلمائے کرام میں شمارکیے جاتے تھے۔ امام اہلسنت امام احمدرضاخان بریلوی ؒبچپن ہی سے مذہب کی طرف راغب تھے۔ آپؒ اپنے دورکے معتبرعالم دین اورعاشق رسول صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم ہونے کے ساتھ ساتھ علوم قدیمہ وجدیدہ پرگہری نظررکھتے تھے ۔آپؒ نے قرآن وسنت کی ترویج واشاعت اوردینی اقدارکے تحفظ میں اہم کرداراداکیا۔آپؒ عالم شباب میں ہی فنون عربیہ اورعلوم دینیہ کے ماہرکے طورپرمشہورہوئے۔ آپؒ اپنی خدادادصلاحیتوں اورحیرت انگیز حافظہ کی بناء پرصرف تیرہ سال دس ماہ چاردن کی عمرمیں علم تفسیرواصول تفسیر،علم حدیث واصول حدیث،فقہ و اصول فقہ،صرف نحو،علم الکلام ، منطق و فلسفہ وغیرہ تمام علوم دینیہ کی تکمیل کی۔

آپؒ بچپن ہی سے تقویٰ طہارت ،اتباع سنت،حسن وسیرت کے اوصاف جلیلہ سے مزین ہوچکے تھے ۔ آپؒ کے خادم بیان کرتے ہیں کہ امام صاحب چوبیس گھنٹوں میں صرف ڈیڑھ یادوگھنٹے آرام(وہ بھی سنت رسول صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم پرعمل کی وجہ سے) فرماتے اورباقی تمام وقت تصنیف وتالیف،درس وتدریس،کتب بینی، افتاء اوردیگرخدمات دینیہ  میں صرف فرماتے تھے۔برصغیرکے علمائے کرام آپؒ سے استفادہ کرتے تھے۔ آپؒ کوعربی فارسی ہندی اورمختلف زبانوں پرعبورحاصل تھاآپؒ نے مختلف عنوانات پرکم بیش ایک ہزار(1000) کتابیں لکھی ہیں۔آپؒ کی تصانیف تفسیرواصول تفسیر،حدیث واصول حدیث،فقہ اصول فقہ، صرف نحو،علم الکلام ، منطق و فلسفہ ،ادب،ریاضی ،معاشرتی اصلاح ،اخلاقی و روحانی اذکار،فتاویٰ اورسائنس جیسے موضوعات کا احاطہ کرتی ہیں۔ آپؒ نے لاکھوں فتاوٰی لکھے ان میں سے بعض کونقل نہیں کیاجاسکاجتنے فتاوٰی نقل کیے گئے ان کانام ـ”العطایاالنبویہ فی الفتاوٰی رضویہ”رکھاگیاہے آپؒ کوعلم توقیت میں اس قدرکمال حاصل تھاکہ دن کوسورج اوررات کو ستارے دیکھ کرگھڑی ملالیتے تھے وقت بھی صحیح ہوتاتھا۔ اورکبھی ایک منٹ کابھی فرق نہ ہوا۔آپؒ نے ساری زندگی نمازباجماعت اداکی ۔آپؒ رحم دل انسان تھے غرباء کوکبھی خالی ہاتھ نہیں لوٹاتے بلکہ ان کی ہمیشہ امدادکرتے تھے ۔
؎کروں تیرے نام پرجاں فدانہ بس ایک جاں دوجہاں فدا

دوجہاں سے بھی نہیں جی بھراکروں کیاکروڑوں جہاں نہیں
اعلیٰ حضرتؒ کی ساری زندگی درس وتدریس ،وعظ تقریرافتاء اورتالیف وتصنیف میں بسرہوئی۔آ پؒ سرتاپاجذبہ عشق رسول صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم سے سرشاررہتے تھے۔ آپؒ کونبی کریم صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم سے والہانہ محبت تھی ۔آپؒ کی حیات مبارکہ کاایک ایک لمحہ کتاب و سنت کی پیروی میں گزرا۔آپؒ نے عالم بیداری میں محبوب خدا صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کادیدارکیا۔ جب آپؒ فریضہ حج کے لئے حرمین جاتے تووہاں کے علماء جوق درجوق آپ ؒسے استفادہ کرنے آتے تھے۔جب آپؒ دوسری بارحج بیت اللہ کے لئے تشریف لے گئے توزیارت نبوی صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کی آرزولئے روضہ اطہر کے سامنے دیرتک صلوٰۃ وسلام پڑھتے رہے مگرپہلی رات قسمت میں یہ سعادت نہ تھی اس موقع پرآپؒ نے معروف نعتیہ غزل لکھی۔
؎ وہ سوئے لالہ زارپھرتے ہیں

تیرے دن اے بہارپھرتے ہیں
یہ غزل عرض کرکے آپؒ دیدارمصطفی صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کے انتظارمیں ادب کے ساتھ بیٹھے ہوئے تھے کہ قسمت جاگ اٹھی جان کائنات محمدمصطفی صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کی چشمان سرسے بیداری میں زیارت اقدس سے مشرف ہوئے ۔(بحوالہ حیات اعلیٰ حضرت)آپؒ کے اندرعشق رسول صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کوٹ کوٹ کربھراہوا تھا آپؒ فنافی الرسول کے اعلیٰ منصب پرفائزتھے آپؒ کانعتیہ کلام اس بات کی گواہی دیتاہے ۔آپؒ علوم دینیہ کے عالم وفاضل ہونے کے ساتھ شعروسخن کابھی اعلیٰ ذوق رکھتے تھے ۔آپؒ نے جس والہانہ عقیدت سے اورجذبہ عشق میں ڈوب کرجونعتیں کہیں ان کا ایک ایک لفظ دل کی اتھاہ گہرائیوں سے نکلاہے اوردل میں ہی اترجاتاہے آپؒ کے مشہورزمانہ “سلام”کی گونج پورے عالم اسلام میں سنائی دیتی ہے۔
مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

شمع بزم ہدایت پہ لاکھوں سلام
آپؒ فرمایاکرتے تھے کہ اگرکوئی میرے دل کے دوٹکڑے کرے توایک پرلاالٰہ الااللّٰہ اوردوسرے ٹکڑے پرمحمدرسول اللّٰہ صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم لکھاہواپائے گا(سوانح امام احمدرضا)آپؒ اس پرفخرکیاکرتے تھے کہ باری تعالیٰ نے اِس دورمیں مجھے ناموسِ رسالت مآب صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کے لئے ڈھال بنایاہے۔
آپؒ کی زندگی کاایک اورپہلوبھی بہت اہم ہے کہ آپؒ کے دانش وعلم کامرکزصرف عبادت گاہیں ،مدرسے ہی نہ تھے بلکہ آپؒ کی نگاہ برصغیرپاک وہنداوردنیاکی سیاست پربھی تھیں آپؒ نے برصغیرمیں اسلامی اقدارکوبرسرنوزندہ کرنے اورمسلمانوں کوان کی گمشدہ میراث واپس دلانے کے لئے بہت جدوجہدکی ۔آپؒ کے زندہ کارناموں میں سے ایک کارنامہ یہ بھی ہے کہ آپؒ تحریک آزادی کے علمبرداراور دوقومی نظریہ کے نقیب تھے اس لئے آپؒ نے تحریک عدم تعاون اورترکِ موالات کے زمانے میں متحدہ قومیت کے نظریے کوباطل قراردیااور مسلمانانِ برصغیرکوہندئووں اور انگریزوں کی سازشوںسے خبردارکیاآپؒ نے کبھی کسی انگریزیاہندوکی عدالت میں حاضری نہیں دی تھی حتیٰ کہ آپ ڈاک کاٹکٹ ہمیشہ الٹا چسپاں کیاکرتے تھے۔اس ٹکٹ کوالٹاچسپاںکرنے کی اہم وجہ یہ تھی کہ اس ڈاک کے ٹکٹ پرانگریزملکہ یابادشاہ کی تصویرہواکرتی تھی ۔
ایک دن جمعۃ المبارک کی نمازکے بعداعلیٰ حضرت امام احمدرضاخانؒ تشریف فرماتھے حاضرین کامجمع تھا۔لوگ مسائل پوچھتے جارہے تھے اوراعلیٰ حضرت جواب دیتے جارہے تھے۔ اس وقت خلیفہ اعلیٰ حضرت ،مولاناسیدحافظ محمودجان صاحب نے عرض کیاحضورمیں دیکھتاہوں کہ ہرمسئلے کا جواب آپکی نوکِ زبان پرہے کبھی کسی مسئلے کے متعلق آپؒ کویہ فرماتے نہیں سناکہ کتاب دیکھ کرجواب دیاجائے گاجب اعلیٰ حضرت نے یہ بات سنی توآپؒ کی آنکھوں سے آنسوجاری ہوگئے اورفرمایا،سیدصاحب!جب قبرمیں مجھ سے سوال ہوگاتووہاں کتابیں کہاں سے لائوں گا۔جب آپؒ کی وفات کاوقت قریب آیاتوآپؒ نے مریدین کوبلاکرفرمایاجب میراانتقال ہوجائے تویادرکھومیری قبراتنی گہری کھودناکہ جس میں میں کھڑا ہو سکوں، غلاموں نے عرض کیاحضورحسب معمول توقبراتنی گہری کھودی جاتی ہے کہ جس میں آدمی بیٹھ سکے آپؒ نے فرمایاکہ سرکاردوعالم نور مجسم صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کی حدیث پاک ہے کہ جب آدمی فوت ہوجاتاہے تواس کی قبرمیں خودکملی والے صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم تشریف لاتے ہیں۔ لہٰذامیں چاہتاہوں کہ میری قبر اتنی گہری ہوکہ جب امام الانبیاء محمدمصطفی صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم!میری قبرمیں جلوہ گرہوں تومیں کھڑاہوکرآپ صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کااستقبال کروں اورآپ صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کی خدمت اقدس میں صلوٰۃ وسلام کانذارانہ پیش کروں۔
اعلیٰ حضرت عظیم المرتبت امام احمدرضاخان بریلویؒ نے ایک طویل مدت تک تشنگان علم ومعرفت کواپنے کمالات ظاہری وباطنی سے مستفیدکرکے عالم ِاسلام میں روحانیت ،تقریب الٰہی علم وحکمت اورعشق رسول صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کاذوق پیداکرکے 25صفرالمظفر1340ہجری بمطابق28اکتوبر1921؁ بروزجمعۃ المبارک ہندوستان کے وقت کے مطابق2بج کر38منٹ پر آپؒ نے داعی اجل کولبیک کہا۔ادھرمئوذن نے “حی علی الفلاح”کی صدابلندکی ادھر آپؒ نے جان جان آفریں کے سپردکردی ۔اناللّٰہ واناعلیہ راجعون۔آج بھی آپؒ کامزارپرُانواربریلی شریف میں خاص وعام کے لئے زیارت گاہ بناہواہے۔جہاں پرآپؒ کاسالانہ عرس پاک24,25صفرالمظفرکومنایاجاتاہے۔25صفرالمظفرکوبیت المقدس میں ایک شامی بُزرگ ؒنے خواب میں اپنے آپ کودربارِرسالت مآب صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم میں پایاتمام صحابہ کرام علیہم الرضوان اوراولیاء عظام ؒ دربارمیں حاضرتھے لیکن مجلس میں سکُوت طاری تھااورایسامعلوم ہوتاتھاکہ کسی آنے والے کاانتظارہے ۔شامی بزرگ ؒ نے بارگاہ رسالت مآب صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم میں عرض کی حضور صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم! میرے ماں باپ آپ پرقربان ہوں کس کاانتظارہے ؟سید عالم صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم نے ارشادفرمایاہمیں احمدرضاکاانتظارہے شامی بزرگ نے عرض کی حضور! احمدرضاکون ہیں ؟ ارشادہواہندوستان کے مشہورشہربریلی کے رہنے والے ہیں ۔بیداری کے بعدوہ شامی بزرگؒ مولانااحمدرضاخانؒ کی تلاش میں ہندوستان کی طرف چل پڑے اورجب وہ بریلی شریف آئے توانہیں معلوم ہواکہ اس عاشقِ رسول صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کااسی روزیعنی25صفرالمظفر 1340ہجری کووصال ہوچکاہے ۔جس روزانہوں نے خواب میں سرورکائنات فخرموجوادت احمدمختار محمدمصطفیٰ صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کویہ کہتے ہوئے سناتھاکہ ہمیں “احمد”کا انتظارہے ۔(سوانح امام احمدرضا)
محسن ملت اسلامیہ ڈاکٹرعبدالقدیرخان اعلیٰ حضرت امام احمدرضاخان کے بارے میں فرماتے ہیں آج سے سوسال قبل جب انگریزہندوئوں کے ساتھ سازبازکرکے ہندکی معیشت پرقابض ہوئے تومسلمانوں کے تشخص اورتعلیمی نظام کوزبردست دھچکالگا۔استعماری طاقتوں کے مذموم عزائم کی بدولت مذہبی قدریں زوال پذیرہونے لگی تھیں اس پرآشوب دورمیں اللہ رب العزت نے برصغیرکے مسلمانوں کوامام احمدرضاجیسی باصلاحیت اورمدبرانہ قیادت سے نوازاکہ جن کی تصانیف،تالیفات اورتبلیغی کاوشوں نے شکست خوردہ قوم میں ایک فکری انقلاب برپا کردیا۔امام صاحب کی شخصیت جذبہ عشق رسول صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم سے لبریزتھی۔

آپکی ساری زندگی کومدنظررکھتے ہوئے یہ بات وثوق سے کہی جاسکتی ہے کہ آپؒ کی ذات نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم کے ساتھ وفاشعاری کانشان مجسم تھی۔ آپ کی ہمہ جہت شخصیت کاایک پہلوسائنس سے شناسائی بھی ہے سورج کوحرکت پذیراورمحوگردش ثابت کرنے کے ضمن میں آپؒ کے دلائل بڑی اہمیت کے حامل ہیں آج جبکہ دوسری طرف ہمارادشمن ہمیں تباہ وبرباد کرنے کے لئے گھات میں بیٹھاہے۔تومیں سمجھتاہوں کہ امام صاحب ؒ کی تعلیمات سے بہرورہوکرہم آج بھی ایک سیسہ پلائی ہوئی دیواربن سکتے ہیں۔ مصورپاکستان ڈاکٹرعلامہ اقبالؒ فرماتے ہیں ؛ہندوستان کے دورآخرمیں ان جیساطبّاع اورذہین فقیہہ پیدانہیں ہوا۔میں نے ان کے فتاوٰی کے مطالعہ سے یہ رائے قائم کی ہے ۔ان کے فتاوٰ ی ان کی ذہانت ،فطانت،جودت طبع،اورعلوم دینیہ میں تبحرعلمی کے شاہدعادل ہیں ۔ مولاناایک دفعہ جورائے قائم کرلیتے اس پرمضبوطی سے قائم رہتے تھے ۔یقیناًوہ اپنی رائے کااظہاربہت غوروفکرکے بعدکیاکرتے تھے ۔لہٰذا انہیں اپنے شرعی فیصلوں اورفتاوٰی میں کبھی کسی تبدیلی یارجوع کی ضرورت نہیں پڑی ۔(حوالہ ہفت روزافق کراچی 22تا28جنوری 1979)
اللہ پاک سے دعاگوہوں کہ اللہ رب العزت ہماری تمام جانی مالی عبادات کواپنے حبیب کریم صلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کے صدقے اپنی بارگاہ میں قبول فرماکرہمارے لئے ذریعہ نجات بنائے ۔ ملکِ پاکستان کوامن وسلامتی کاگہوارہ بنائے۔ آقائے دوجہاں سرورکون ومکاںصلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کی بروزقیامت شفاعت نصیب فرمائے مسلمانوں کوآپس میں اتفاق واتحاد نصیب فرمائے ۔اللہ رب العزت عالمِ اسلام اورملک پاکستان کی خیرفرمائے۔اللہ رب العزت آقائے دوجہاں سرورکون ومکاںصلی اللہ علیہ والہٖ وسلم کی سچی اورپکی غلامی نصیب فرمائے۔آمین بجاہ النبی الامین

 

حافظ کریم اللہ
مصنف، کالم نگار، اسلامی سیاست کا طالب علم

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *