پاکستان میں جنسی زیادتی کی دردناک کہانی

اساتذہ طلباء کے روحانی باپ ہوتے ہیں ، لیکن اگر استاد حیوان بن جائے اور مدرسہ کے طالب علم کے ساتھ جنسی زیادتی کا ارتکاب کرے تو اور کیا باقی رہ جاتا ہے۔  ۔
سیشن کورٹ نے مفتی عزیز الرحمن اور ان کے پانچ بیٹوں پر ان کے مدرسے کی طالبہ کے ساتھ جنسی زیادتی کے مقدمے میں فرد جرم عائد کی ہے۔
مولوی اور اس کے بیٹوں عطاء الرحمن ، عتیق الرحمن ، لطیف الرحمن ، الطاف الرحمن اور وصی الرحمن نے قصوروار نہ ہونے کا دعویٰ کیا اور مقدمہ لڑنے کا فیصلہ کیا۔ ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج رانا راشد علی نے پولیس کو ہدایت کی کہ استغاثہ کے گواہوں کو 18 اکتوبر کو پیش کیا جائے۔
جوڈیشل مجسٹریٹ کی جانب سے گرفتاری خارج ہونے کے بعد مفتی عزیز ابھی تک سلاخوں کے پیچھے ہیں جبکہ ان کے بیٹے ضمانت پر رہا ہو چکے ہیں۔
مفتی نے اپنی ضمانت مسترد ہونے کے خلاف سیشن کورٹ سے رجوع کیا جہاں ان کی درخواست ابھی زیر التوا تھی۔
نارتھ کنٹونمنٹ پولیس نے جامعہ منظور الاسلام ، چھاؤنی کے طالب علم صابر شاہ کی شکایت پر مفتی رحمان کے خلاف جنسی زیادتی اور مجرمانہ دھمکی کے الزامات پر پہلی معلوماتی رپورٹ درج کی تھی۔
طالبہ نے جنسی زیادتی کا ویڈیو کلپ بطور ثبوت پولیس اور مدرسے کی انتظامیہ کے ساتھ شیئر کیا تھا۔
اپنی شکایت میں طالب علم نے الزام لگایا کہ رحمان نے اسے اور ایک اور طالب علم کو وفاق المدارس کے امتحانات میں دھوکہ دہی کے الزام میں تین سال کے لیے نکال دیا۔
اس نے دعویٰ کیا ہے کہ مولوی نے اپنے نام کی بحالی کے لیے جنسی احسانات طلب کیے اور اس کے پاس اپنے مطالبے کو تسلیم کرنے کے سوا کوئی چارہ نہیں تھا۔
دوسری جانب مولوی نے الزامات کو غلط اور بے بنیاد  قرار دیا۔ اس نے الزام لگایا کہ شکایت کنندہ مدرسے میں مخالفین کے ساتھ  ملا ہوا  تھا۔ اس نے مبینہ واقعے کی ویڈیو کو بھی  جھوٹ قرار دیا۔

  • merkit.pk
  • merkit.pk

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply