مسئلہ کفو اور سیدہ سے غیر سید کی منکحت۔۔۔۔سیدعدیل رضا عابدی

کفو کیا ہے۔۔۔ ارشاد ہوا۔۔۔ ﻭﻟﻢ ﯾﮑﻦ ﻟﮧ ﮐﻔﻮﺍﺣﺪ ” ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﻔﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ “۔۔۔ ﯾﻌﻨﯽ ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮐﻔﻮ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﺳﮑﯽ ﺑﮭﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﮨﻮﺗﯽ ﺟﯿﺴﺎ ﮐﮧ ﻋﯿﺴﺎﺋﯽ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻋﯿﺴﯽٰ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺑﯿﭩﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﻟﯿﮯﺍ ﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﻔﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﯿﺮﺍ ﺑﯿﭩﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺑﺎﭖ ﮨﻮﮞ۔
ﺗﻮ ﭘﺘﮧ ﭼﻼ ﮐﮧ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﻔﻮ ﮐﺎ ﮨﻮﻧﺎ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﮔﺮ ﮐﻔﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮔﺎ ﺗﻮ ﺷﺎﺩﯼ ﺑﺮﺑﺎﺩﯼ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ۔۔۔۔
علامہ ابن الجوزی کا بیان ہے  کہ۔۔۔
الکفء النظير والمساوي ومنہ الکفاۃ في النکاح وھو ان يکون الزواج مساويا للمراۃ في حسبھا ودينھا ونسبھا و بيتھا غير ذالک۔۔۔۔ ’’کفو کا مطلب نظیر اور برابری ہے۔ اسی سے نکاح میں کفایت سے مراد ہے وہ یہ ہے کہ خاوند کا حسب، دین، نسب اور گھر وغیرہ میں عورت کے برابر ہونا۔‘‘
کفو کا معنیٰ ہے صفات مخصوصہ ممتازہ میں مساوی اور نظیر ہونا، نکاح میں یہ دیکھا جاتا ہے کہ لڑکا، لڑکی کے معیار سے کم اور نیچا تو نہیں ہے کیونکہ جو لڑکی صفات مخصوصہ ممتاز کے اعتبار سے اعلیٰ ہو وہ اس لڑکے کا فراش بننے کو ناپسند کرے گی۔ جو اس سے صفات میں ادنیٰ ہو تو لڑکی کے وارث بھی اس بات کو اپنے لئے باعث عار سمجھتے ہیں۔
حضورکریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کا فرمان ِ ذیشان ہے کہ ’’ کفو لڑکی میں ہوتا ہے لڑکے میں نہیں‘‘ یعنی کہ لڑکی کا رشتہ تلاش کرتے وقت ہر لحاظ سے اس کا ہم پلہ رشتہ تلاش کیا جائے‘‘ جبکہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے مردوں کیلئے یہ بھی فرمایا کہ ’’مومن اللہ کے تقویٰ کے بعد جو اپنے لیے بہتر تلاش کرے وہ نیک بیوی ہے کہ اگر اسے حکم دے تو اطاعت کرے، اس کی جانب دیکھے تو خوش ہو، اگر وہ کسی بات کے کرنے پر قسم کھا لے تو اسے پوری کر دے۔ اگر شوہر کہیں چلا جائے تو اس کی غیر موجودگی میں اپنی جان و مال کی نگہبانی کرے‘‘۔
کفایت میں چھ معاملات کا اعتبار ہے  جن میں نسب، مذہب، پیشہ، حریت، دیانت اور مال دیکھا جاتا ہے اور یہی ہر انسان کی خواہش ہوتی ہے کہ وہ جس کسی عورت یا مرد سے نکاح کرے اس خاندان میں کفایت کے اعتبار سے یہ تمام خوبیاں بھی پائی جائیں۔
اکثر دیکھنے میں آیا ہے  کہ شریف اور اعلیٰ خاندان کی لڑکی صرف اپنے جوشِ عشق میں کسی ایسے لڑکے سے نکاح کرلیتی ہے، جو حسب و نسب، عزّو شرف، دِین و تقویٰ، علم و فضل، مال و جاہ کے لحاظ سے کسی طرح بھی اس کے جوڑ کا نہیں، اور یہ عقد والدین اور اقربا کی رائے کے علی الرغم ہوتا ہے، تو چونکہ رشتہٴ ازدواج میاں بیوی کو دو بکریوں کی طرح باندھ دینے کا نام نہیں، بلکہ اس کے کچھ حقوق و فرائض بھی ہیں، اور اسلام یہ دیکھتا ہے کہ ان حالات میں اس مقدس رشتے کے نازک ترین حقوق اپنی تمام وسعتوں کے ساتھ ادا نہیں ہوسکیں گے، اس لئے والدین اور اولیاء کی رضامندی کے بغیر اسلام اس بے جوڑ عقد کو ناروا قرار دے کر ان تمام فتنوں اور لڑائی جھگڑوں کا دروازہ بند کردینا چاہتا ہے، جو اس بے جوڑ عقد کے نتیجے میں پیدا ہوسکتے ہیں۔
رشتہٴ ازدواج چونکہ محض ایک نظریاتی چیز نہیں، بلکہ زندگی کی امتحان گاہ میں ہر لمحہ اسے عملی تجربوں سے گزرنا ہوتا ہے اور اسلام جو ’’ دین ِ فطرت ھے‘‘، انسانی فطرت کی کمزوریوں کو بھی نظرانداز نہیں کرتا اس لئے اسلام نے اپنے ”اُصولِ مساوات“ کے مطابق موقع دیا کہ مسلمان خاتون رنگ و نسل، عقل و شکل اور مال و وجاہت کے معاملے میں کسی مسلمان سے نکاح وہیں اس نے انسانی فطرت کو ملحوظ رکھتے ہوئے یہ پابندی بھی عائد کی ہے کہ اس عقد سے متأثر ہونے والے اہم ترین افراد کی رضامندی کے بغیر بے جوڑ نکاح نہ کیا جائے، تاکہ اس عقد کے نتیجے میں ناخوشگواریوں، تلخیوں اور لڑائی جھگڑوں کا طوفان برپا نہ ہوجائے۔ اور اسلام میں مسئلہ کفو کی اہمیت کا یہی حاصل ہے ، بصورت دیگر والدین و دیگر اولیا کی مرضی کے بغیر غیر کفو میں نکاح باطل ہے۔
مندرجہ بالا تمام گفتگو کو سمیٹ کر اگر جزِ عنوان سیدہ کی غیر سید سے منکحت کی طرف لایا جائے تو سیدوں کے اجداد یعنیٰ حضرات ِ محمد و آل محمد علیھم السلام کی جانب دیکھنا پڑے گا کہ اس حوالے سے انہوں نے کیا روش اختیار کی، نہ کہ کسی امتی مجتہد، فقہی، فلسفی کے احکام یا رائے تو ملحوظ خاطر رکھا جائے۔
حضرت ﺍﻣﺎﻡ ﺟﻌﻔﺮ ﺻﺎﺩﻕ علیہ السلام ﻧﮯ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ :
ﺗﻤﺎﻡ ﻣﻮﻣﻨﯿﻦ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﮯ ﮐﻔﻮ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺴﺮ ﮨﯿﮟ۔۔۔۔ ﮐﺘﺎﺏ ﻣﻦ ﻻﯾﺤﻀﺮﮦ ﺍﻟﻔﻘﯿﮩﮧ ﺟﻠﺪ ﺳﻮئم صفحہ نمبر 241۔۔۔۔ ﺍﺏ ﺍﮐﺜﺮ ﻣﻮﻣﻨﯿﻦ ﯾﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﺩﮬﻮﮐہ ﮐﮭﺎ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺪ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮ ﺳﯿﺪ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﯿﺰ ﮐﻮ ﺑﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻮ ﻟﮍﮐﯿﺎﮞ ﺩﯾﻨﮯ ﺑﮭﯽ ﻟﮓ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﻟﯿﻨﮯ ﺑﮭﯽ ﻟﮓ ﮔﺌﮯ۔ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ذﮨﻦ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮫ ﻟﯿﮟ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺣﺪﯾﺚ عامۃ المومنین کے لئے ھے نہ کہ سادات کے لئے۔۔
ﺍﺏ ﺳﺎﺩﺍﺕ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﯿﺎ ﺣﮑﻢ ﮨﮯ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮨﻤﯿﮟ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺹ ﮨﯽ ﺑﺘﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﻧﮧ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺧﻮﺩ ﺳﮯ ﮨﯽ ﻗﯿﺎﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮓ ﺟﺎﺋﯿﮟ۔۔۔۔ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺗﻢ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺟﯿﺴﺎ ﺍﯾﮏ ﺑﺸﺮ ﮨﻮﮞ ، ﺗﻢ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﯿﭩﯿﺎﮞ ﻟﻮﮞ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﺗﻢ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﯿﭩﯿﺎﮞ ﺩﻭﻧﮕﺎ، ﺳﻮﺍﺋﮯ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺯﮨﺮﺍ سلام اللہ علیہا ﮐﮯ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺳﮑﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺎ ﺣﮑﻢ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﺳﮯ ﻧﺎﺯﻝ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ، ﺍﮔﺮ ﻋﻠﯽ علیہ السلام ﻧﮧ ﮨﻮﺗﮯ ﺗﻮ ﺭﻭﺋﮯ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﯿﭩﯽ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺯﮨﺮﺍ سلام اللہ علیہا ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﻔﻮ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺴﺮ ﻧﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﺧﻮﺍﮦ ﺁﺩﻡ ﮨﻮﮞ ﯾﺎ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ”
ﺍﺏ ﺟﻮ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ﮐﯽ 4 ﺑﯿﭩﯿﺎﮞ ﻣﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﭼﻠﻮ ﻭﮦ ﺗﻮ ﺳﯿﺪ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮ ﺳﯿﺪ ﻣﯿﮟ ﮐﺮﻟﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﺟﻮ حضرات ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ صلی اللہ علیہ والہ وسلم ﮐﯽ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﺑﯿﭩﯽ ﻣﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﯾﮧ ﺣﻖ ﮐﺲ ﻧﮯ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﻭﻻﺩ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺳﮯ ﻧﮑﺎﺡ ﮐﺮﯾﮟ۔
ﺗﻮ ﺟﺐ ﺟﻨﺎﺏ ﺳﯿﺪﮦ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺯﮨﺮﺍ سلام اللہ علیہا ﮐﺎ ﮐﻔﻮ ﻋﻠﯽ ابن ابی طالب ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺍﻭﻻﺩ ﺯﮨﺮﺍ سلام اللہ علیہا ﮐﺎ ﮐﻔﻮ ﺍﻣﺘﯽ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ؟
” ﺍﯾﮏ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ صلو علیہ و آلہ ﻧﮯ ﺍﻭﻻﺩ ﻋﻠﯽ ﻭ ﺟﻌﻔﺮ علیھم السلام ﭘﺮ ﻧﻈﺮ ﮈﺍﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺑﯿﭩﯿﺎﮞ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺑﯿﭩﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺑﯿﭩﮯ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺑﯿﭩﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﯿﮟ۔ ‏کتاب ﻣﻦ ﻻﯾﺤﻀﺮ ﺍﻟﻔﻘﮩﮧ ﺟﻠﺪ سوئم صفحہ 421 ۔۔۔
ﺍﺱ ﺣﺪﯾﺚ ﻣﯿﮟ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻭﺍﺿﺢ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺳﺎﺩﺍﺕ ﮐﺎ ﮐﻔﻮ ﺳﺎﺩﺍﺕ ﮨﮯ، ﺍﻣﺘﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻭﺍﺿﺢ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﺳﯿﺪ ﺯﺍﺩﯼ ﮐﺎ ﻧﮑﺎﺡ ﻏﯿﺮ ﺳﯿﺪ ﺳﮯ ﺣﺮﺍﻡ ﮨﮯ۔۔۔۔ کیوں کہ ہر حرام و حلال کی علت محمد صلیٰ اللہ علیہ والہ وسلم کی ذات مقدس ہی ہے۔۔۔!
ﺁﺝ ﮐﻞ ﺷﺎﺩﯾﺎﮞ محض ﺣﺴﻦ ﻭ ﺟﻤﺎﻝ یا مال ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﮨﻮﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﺍﯾﺴﯽ ﺷﺎﺩﯾﺎﮞ ﺳﻮﺍﺋﮯ ﭘﭽﮭﺘﺎﻭﮮ ﮐﮯ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﯾﺴﯽ ﺷﺎﺩﯾﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺬﮨﺐ ﺍﻭﺭ ﻋﻘﯿﺪﮮ ﮐﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺟﺎﺭﮨﺎﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﻣﺮﺩ ﻭ ﻋﻮﺭﺕ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﺑﻨﺪﮬﻦ ﻣﯿﮟ ﺑﻨﺪﮪ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﺮﺩﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﺍﺱ ﺟﯿﺴﯽ ﮨﻮ ﻋﻘﯿﺪﮮ ﺍﻭﺭ ﻣﺬھﺐ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﻋﻮﺭﺕ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺳﮑﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﺍﺱ ﺟﯿﺴﯽ ﮨﻮ ﻣﺬھﺐ ﺍﻭﺭ ﻋﻘﯿﺪﮮ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ۔ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺟﮩﺎﮞ ﻣﺬھﺐ ﺍﻭﺭ ﻋﻘﯿﺪﮦ ﭨﮑﺮﺍﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﻭﮨﺎﮞ ﺑﺪﺳﻠﻮﮐﯽ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﻃﻼﻕ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭻ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﭘﮩﻠﮯ ذﮨﻦ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮﯾﮟ ﺟﺲ ﺳﮯ ﻋﻘﯿﺪﮦ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﻮ۔
اس حوالے آئمہ اہل بیت میں سے امام جعفر الصادق علیہ السلام نے روایت کی ہے  کہ رسول اللہ نے فرمایا: ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﺨﺺ ﮐﺴﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﺳﮯ ﻧﮑﺎﺡ ﺍﺳﮑﮯ ﻣﺎﻝ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﯾﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺟﻤﺎﻝ ﯾﻌﻨﯽ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺗﯽ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ ﺗﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺭﻭﺯﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﻭﮦ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﯾﻦ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻧﮑﺎﺡ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ ﺗﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻣﺎﻝ ﻭ ﺟﻤﺎﻝ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺭﻭﺯﯼ ﺩﮮ ﮔﺎ۔ ‏ﮐﺘﺎﺏ ﻣﻦ ﻻﯾﺤﻀﺮﺍﻟﻔﻘﯿﮧ ﺟﻠﺪ سوئم 241 ۔۔
ﺣﺴﯿﻦ ﺑﻦ ﺣﺴﻦ ﮨﺎﺷﻤﯽ ﻧﮯ ﺍﺑﺮﺍﮨﯿﻢ ﺑﻦ ﺍﺳﺤﺎﻕ ﺍﺣﻤﺮ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﻋﻠﯽ ﺑﻦ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﺑﻨﺪﺍﺭﺳﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﯿﺎﺭﯼ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﻌﺾ ﺑﻐﺪﺍﺩﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻋﻠﯽ ﺑﻦ ﺑﻼﻝ ﺳﮯ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮐﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﺸﺎﻡ ﺑﻦ ﺣﮑﻢ ﮐﯽ ﮐﺴﯽ ﺧﺎﺭﺟﯽ ﺳﮯ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ، ﺍﮮ ﮨﺸﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻋﺠﻢ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﺰ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻋﺮﺑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮﯾﮟ؟
ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ، ﮨﺎﮞ،
ﭘﮭﺮ ﺧﺎﺭﺟﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﮐﯿﺎ ﻋﺮﺏ ﻗﺮﯾﺶ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ؟
ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮨﺎﮞ،
ﭘﮭﺮ ﺧﺎﺭﺟﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﻗﺮﯾﺶ ﺑﻨﻮ ﮨﺎﺷﻢ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ؟
ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮨﺎﮞ،
ﺧﺎﺭﺟﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﻢ ﻧﮯ ﯾﮧ ﮐﺲ ﺳﮯ ﻟﯿﺎ ﮨﮯ ؟
ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : امام ﺟﻌﻔﺮ ﺑﻦ ﻣﺤﻤﺪ علیہ السلام سے ﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺳﻨﺎ ﮨﮯ، ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ! کیا ﺗﻢ ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﺑﺮﺍﺑﺮﯼ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﻮ ﻣﮕﺮ ﻓﺮﻭﺝ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﺍﺑﺮﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﮯ؟
ﺭﺍﻭﯼ ﮐﮩﺘﺎﮨﮯ ﮐﮧ ﺧﺎﺭﺟﯽ ﻭﮨﺎﮞ ﺳﮯ ﻧﮑﻼ ﺍﻭﺭ امام جعفر الصادق ﺍﺑﻮﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﺳﻼﻡ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺁﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﻋﺮﺽ ﮐﯽ، ﻣﯿﮟ ﮨﺸﺎﻡ ﺳﮯ ﻣﻼ ، ﺍﺱ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﯾﮧ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺳﻨﺎ ﮨﮯ۔
ﺁﭖ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ : ﮨﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﮐﮩﯽ ﮨﮯ۔
ﺗﻮ ﺧﺎﺭﺟﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﺍﮔﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﻋﻠﯿﮧ ﺳﻼﻡ ﺳﮯ ﺭﺷﺘﮧ ﻟﯿﻨﮯ ﺁﯾﺎ ﮨﻮﮞ ،
ﺗﻮ ﺍﺑﻮﻋﺒﺪﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﺳﻼﻡ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ : ﺗﻮ ﺧﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺣﺴﺐ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﺎ ﮨﻤﺴﺮ ﺍﻭﺭ ﮐﻔﻮ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﮨﻤﯿﮟ ﺻﺪﻗﮯ ﺳﮯ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﺭﮐﮭﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﯿﻞ ﮐﭽﯿﻞ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﯿﮟ ﭘﺴﻨﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺱ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺩﯼ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺷﺮﯾﮏ ﮐﺮﯾﮟ ﺟﻮ ﮐﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻃﺮﺡ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻨﺎﯾﺎ۔
ﻭﮦ ﺧﺎﺭﺟﯽ ﺍﭨﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺘﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻗﺴﻢ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺷﺨﺺ ﺟﯿﺴﺎ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ۔ ﺧﺪﺍ ﮐﯽ ﻗﺴﻢ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﻠﭩﺎﯾﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﺳﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﭘﻨﮯ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﮯ ﻗﻮﻝ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺧﺎﺭﺝ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ۔
ﮐﺘﺎﺏ : ﺍﻟﮑﺎﻓﯽ ﺟﻠﺪ 5 ﺣﺼﮧ ﺩﻭﺋﻢ
ﺍﻣﺎﻡ علیہ السلام ﻧﮯ ﺧﺎﺭﺟﯽ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺩﻟﯿﻞ ﺩﯼ ﮐﮧ ﺗﻢ ﮨﻢ ﺟﯿﺴﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﻢ ﺗﻢ ﺟﯿﺴﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺗﻢ ﭘﺮ ﺻﺪﻗﮧ ﺣﻼﻝ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﭘﺮ ﺣﺮﺍﻡ ﮨﮯ ﻟﺤﺎﻇﮧ ﯾﮧ ﺭﺷﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ۔
ﺍﺏ ﭼﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ قرآن کی ﻃﺮﻑ ﮐﮧ اللہ ﮐﯿﺎ ﻓﺮﻣﺎﺗﺎ ﮨﮯ :
ﺍﺭﺷﺎﺩ ﺑﺎﺭﯼ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮨﮯ :
ﻣﺮﺩ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﭘﺮ ﺣﺎﮐﻢ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﻮ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﭘﺮ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﺩﯼ ﮨﮯ۔ ﺳﻮﺭﮦ ﻧﺴﺎﺀ آیت 34
ﺍﺏ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﯾﮧ ﻣﺮﺩ ﻋﻮﺭﺕ ﭘﺮ ﺣﺎﮐﻢ ﮨﻮﮔﺎ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮐﯿﺴﮯ ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺳﯿﺪﺯﺍﺩﯼ ﭘﺮ ﻏﯿﺮ ﺳﯿﺪ ﺣﺎﮐﻢ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ؟
ﮐﯿﺎ ﻭﮦ حجتہ الوداع پر مقام ﻏﺪﯾﺮ ﺧﻢ میں ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ صلی اللہ علیہ والہ وسلم ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺍ ﻋﮩﺪ ﺑﮭﻮﻝ ﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﺟﺐ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ
” ﮐﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﭘﺮ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺟﺎﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺣﻖ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﺎ؟ ﺗﻮ ﺳﺐ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺁﭖ ﺑﮯ ﺷﮏ ﮨﻢ ﭘﺮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺟﺎﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺣﻖ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ”
ﺗﻮ ﺟﺐ ﺍﻣﺘﯽ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﺎﻥ ﺗﮏ ﮐﺎ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے نسب کی لڑکی پر ﮐﯿﺴﮯ ﺧﻮﺩﻣﺨﺘﺎﺭ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ؟
ﺍﺏ ﺁﻝ ﻣﺤﻤﺪ ﺹ ﮐﻮﻥ ﮨﯿﮟ؟
ﺗﻮ ﺍﻣﺎﻡ ﺟﻌﻔﺮ ﺻﺎﺩﻕ جداعلیٰ علی ابن ابی طالب سے روایت ﻓﺮﻣﺎﺗﮯﮨﯿﮟ ﮐﮧ
” ﺁﻝ ﻣﺤﻤﺪ ﺹ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ ﻭﮦ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﺳﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ صلی اللہ علیہ واآلہ وسلم ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻧﮑﺎﺡ ﮐﺮﻧﺎ ﺣﺮﺍﻡ ﮨﮯ ”
ﺍﺏ ﺟﻮ ﺧﻮﺩ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺹ ﮐﺴﯽ ﺳﯿﺪ ﺯﺍﺩﯼ ﺳﮯ ﻧﮑﺎﺡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺳﮑﺘﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ امتی ﮐﯿﺴﮯ ﺳﯿﺪ ﺯﺍﺩﯼ ﺳﮯ ﻧﮑﺎﺡ ﮐﺮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ یہاں ﺳﺎﺩﺍﺕ ﮐﻮ ﮐﻢ ﺍﺯ ﮐﻢ ﺳﻮﭼﻨﺎ ﭘﮍﮮ ﮔﺎﮐﮧ ﻭﮦ ﻏﯿﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯿﺎﮞ ﻧﮧ ﺩﯾﮟ۔ مسلمانوں میں تقدیس محمد و آل محمد کے باب میں تقصیر کیلئے کچھ ایسے علماء و مجتہد و مفتی نما عناصر گھس بیٹھے ہیں جو ﺳﯿﺪ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮ ﺳﯿﺪ ﻣﯿﮟ ﻧﮑﺎﺡ ﺟﺎﺋﺰ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﻘﻠﺪﯾﻦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻓﺘﻮﯼٰ ﭘﺮ ﻋﻤﻞ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ اختتام کیلئے ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ۔
ﺣﺴﻦ ﺑﻦ ﻣﺤﺒﻮﺏ ﻧﮯ ﺳﻠﯿﻤﺎﻥ ﺣﻤﺎﺭ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﻣﺎﻡ ﺟﻌﻔﺮ ﺻﺎﺩﻕ ﺳﮯ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮐﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ :
” ﺗﻢ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺟﻮ ﻣﺮﺩ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺴﯽ ﺯﻥ ﻧﺎﺻﺒﯿﮧ ‏( ﺩﺷﻤﻦ ﺍﮨﻞ ﺑﯿﺖ ‏) ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﻭﺟﯿﺖ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﻨﺎ ﺟﺎﺋﺰ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﻣﺮﺩﻧﺎﺻﺒﯽ ﮐﯽ ﺯﻭﺟﯿﺖ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﭘﻨﯽ ﻟﮍﮐﯽ ﭼﮭﻮﮌﻧﺎ ﮐﺘﺎﺏ ۔ ﻣﻦ ﻻﯾﺤﻀﺮﺍﻟﻔﻘﮩﮧ جلد سوئم صفحہ 250
اب مکتب آل محمد کے مطابق ایک ناصبی جو علی ابن ابی طالب علیہ السلام کی ولایت و مولائیت کا دشمن ہے (کیوں کہ علی ابن ابی طالب پیمانہ ہیں ایمان و نفاق جانچنے کا) اس سے کوئی علی والا ﺭﺷﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮐﮫ ﺳﮑﺘﺎ ﺗﻮ ﺳﺎﺩﺍﺕ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮ ﺳﺎﺩﺍﺕ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﺭﺷﺘﮯ ﮐﯿﺴﮯ ﺟﻮﮌ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ؟
ﺍﺏ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﯾﮩﺎﮞ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺭﻭﺍﺝ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺬھﺐ ﻭ ﻋﻘﯿﺪﮦ ﮐﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﺑﺲ ﺟﮩﺎﮞ ﻟﮍﮐﺎ ﯾﺎ ﻟﮍﮐﯽ ﭘﺴﻨﺪ ﺁﺋﯽ ﺗﻮ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮﻟﯽ جاتی ہے۔ لہذا ضرورت اس بات کی ہے کہ سادات اپنے اجداد محمد و آل محمد کے مکتب و فکر کی پیروی کرتے ہوئے اپنے ہی ہم کفو میں شادی کریں اور یہ لحاظ ضرور رکھیں کہ روز آخرت انہیں حضور کریم صلیٰ اللہ و علیہ و الہ وسلم کے سامنے پیش ہونا ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست 2 تبصرے برائے تحریر ”مسئلہ کفو اور سیدہ سے غیر سید کی منکحت۔۔۔۔سیدعدیل رضا عابدی

  1. It’s entirely fabricated image of a society of which they desire to be predators already they gained it in subcontinent for a long time please we all have to design our society sa said in Quran no such restriction is there
    I

  2. بے سروپا باتیں. لگتا ہے کہیں آپ کو کافی فرق پڑا ہے. تبھی دل کی بڑاس نکالی. تاریخ اسلام دیکھیں. حضرت عمر رضی اللہ عنہ کا نکاح حضرت علی رضی اللہ عنہ کی بیٹی سے… سیدنا عثمان کا نکاح بنات رسول اکرم صلی اللہ علیہ و سلم سے… سیدہ سکینہ بنت حسین بن علی کا نکاح مصعب بن عمير رضی اللہ عنہ کے خاندان کے قریبی فرد سے… کالم میں فاطمی و غیر فاطمی اولاد کی تفریق کس دلیل سے کی آپ نے… ایویں خود ڈسٹرب ہیں تو کسی اور کو کنفیوز مت کریں. فقہ جعفریہ کی کتابوں کے حوالے دیئے آپ نے. انصاف تو موضوع سے تب ہوتا. ج مجب کتب اہل سنت سے بھی حوالے دے جاتے

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *